»
یکشنبه 30 مهر 1396

7

 
امام حسین علیہ السلام قرآنک آینہ-07

عبدالحسین سنز آٹھم محرم 1435 مطابق 11نومبر 2013 امام بارہ ڈب گاندربل پرمژ مجلس

 

اَعُوذُ بِاللّهِ منَ الشّيطانِ الرَّجيم

بِسْمِ اللَّهِ الرَّحْمَنِ الرَّحِيمِ؛نحمده و نستعینه و نؤمن به و نتوکّل علیه و نستغفره و نصلّی و نسلّم علی حبیبه و نجیبه و خیرته فی خلقه حافظ سرہ و مبلغ رسالته سیّدنا و نبیّنا و طبیب نفوسنا و حبیب قلوبنا  ابی‌القاسم المصطفی محمّد(صلی اللہ علیه و آله  وسلم)[ اللَّهُمَّ صَلِّ عَلَى مُحَمَّدٍ وآلِ مُحَمَّدٍ وعَجِّلْ فَرَجَهُم] و علی آله الأطیبین الأطهرین المنتجبین المعصومین سیّما بقیّةاللَّه فی الارضین۔ و صلی علی ائمہ المسلمین حماۃ المستضعفین و ھداۃ المومنین علی امیرالمومنین علیہ آلاف تحیۃ والثناء۔

اما بعد؛قال اللہ سبحانہ و تعالی فی محکمہ کتابہ :

 بِسْمِ اللَّهِ الرَّحْمَنِ الرَّحِيمِ يا أَيهَا النَّاسُ قَدْ جَاءَكُمْ بُرْهَانٌ مِنْ رَبِّكُمْ وَأَنْزَلْنَا إِلَيكُمْ نُورًا مُبِينًا(النساء/174) صدق اللہ العلی العظیم۔

 اللَّهُمَّ صَلِّ عَلَى مُحَمَّدٍ وآلِ مُحَمَّدٍ وعَجِّلْ فَرَجَهُم

میون موضوع سخن یوس زن چھوء یہ چھوء؛قرآنک آئینہ امام حسین۔

یہ چھوء سلسلہ وار بحث ونہ کینس یتھ محرمس منز میہ اختصاص دیوتمت،کہ امام حسین علیہ السلام چھوء قرآنک آئینہ تہ قرآن چھوء امام حسین علیہ السلامن آئينہ۔

سورہ نساء آيت 174 یوس میہ  تلاوت کئر، پروردگار عالم فرماوان کہ :<يا أَيهَا النَّاسُ قَدْ جَاءَكُمْ بُرْهَانٌ مِنْ رَبِّكُمْ وَأَنْزَلْنَا إِلَيكُمْ نُورًا مُبِينًا>پروردگار عالم سند قرآن نور معرفی کرن کہ یہ چھوء نور یہ چھوء برہان ،یلہ زن ائس امام حسین علیہ السلامس تہء چھئي نور مانان ۔یتھي کئن " كامِلُ الزّيارات"تس منز اما م حسینس زیارت چھئي کران ، ونان چھئس " كُنْتَ نُوراً فِي الْأَصْلابِ الشَّامِخَةِ"امام حسین تہء چھوء نور قرآن تہء چھوء نور ۔نورچ کامی کیاہ چھئي ؟

[نورچ کامی چھئی]گاش انن۔

تاریکی ختم کرن۔

قرآنچ کامی چھئي تاریکی ختم کرن۔گٹہ زول موکہ لاوین۔گٹہ زولہ نورس منز تبدیل کرن۔گاشش منز تبدیل کرن۔

امام حسین علیہ السلام سنز کامی تہء چھی یی ،گٹہ زول دور کرن،سوء نورس منز تبدیل کرن۔

وین یوس زن پنن پان قرآنس ساتھی منسوب کرء یا حسینس ساتھی منسورب کرء دونونی صورتن منز چھوء تمس یہوے کردار نبھاون ۔ یہ ہیکہ تلے نبھایت یلہ زن امسند ارتباط قائم آسہ ۔اگر ائس دپو ائس تہء چھئی[بجلی] بَتہء ، قرآنچہ [بجلی]بَتہء چھئي ائس ،یا امام حسیننہء{بجلی] بَتہء چھئي ائس مگر اتھ چھنہ تار قرآنس ساتھی لاگت کہین،اتھ چھنہ تار امام حسینس ساتھی لاگت کہین یہ دیاہ گاش؟ ۔

اگر زن ائس خبر  کائژاہ  تہ [بجلی]بَتہء تھاوو یتین لگائیت مگر یوس زن گرڈ سٹیشن پیٹھہ پاور سپلائی چھئی گژھان اگر تتھ ساتھی یہ آسنہ وصل ، [بجلی]بتہء ہند آسن نہ آسن چھنہ کانہ فایدء۔پتہء چھئی پنن پنن ظرفیت ۔انسانس متعلق چھوء خداین پانے وونموت <لَا يكَلِّفُ اللَّهُ نَفْسًا إِلَّا وُسْعَهَا>(البقرة/286)یمس یوتاہ [ظرف آسہ]یئژ واٹ تہند [بجلی]بلپ چھوء بہء دمہ تمس گاش تیوتی ۔10 واٹ چھوء تمس میلہ دہے واٹ،100 واٹ چھوء 1000 واٹ چھوء یہ چھوء ڈپنڈ کران کہ امس کپیسٹی کیاہ چھئي ۔

اگر زن 10وولٹ[بجلی] بتہ 1000 وولٹ لگاوو تتھ کیاہ گژھہ ؟

سوء پھٹہء۔

گو اسہ چھوء یہ تہء وچھن کہ سون ظرف کیاہ چھوء ائس کیاہ ہیکوو امہ گرڈ سٹیشن نشہ [حاصل کرتھ]یہ چھوء تیوتھ گرڈ سٹیشن ،خدا دپان اگر زن بہء یہ کوہس پیٹھ نازل کرء ہا سوء گژھہ ہا ریز ریزء۔< لَوْ أَنْزَلْنَا هَذَا الْقُرْآنَ عَلَى جَبَلٍ >توہی ووچھہ ہیوہ <لَرَأَيتَهُ خَاشِعًا مُتَصَدِّعًا> (الحشر/21)۔ امام حسین علیہ السلام یہ چھوء یہوے نور یہ چھوء تمہ ظرفیت اعتبارء امہ قرآنچ حقیقت اسہ پیٹھ عیاں کران کہ یہ کوتاہ بوڈ ایٹم بم اوس امام حسین علیہ السلام کہ دنیاہک تمام طاقت آو یہ نابود کرنچ کوشش کرنہ مگر یہ چھوء توتہء نیران ،یہ چھوء پرزلان توتہء ،یہ چھوء پنن نور افشانی توتہ کران ۔

لذا سانہ خاطرء یوس بئڑ ذمہ داری چھئی سوء گو یہوے کہ پنن پان نورانی بناون ۔نورانی بنہ تلیہء یلہء زن اسہ " لَا اِلٰهَ اِلَّا اللهُ مُحَمّداً رَسُولُ الله"(صلی اللہ علیہ وآۂہ وسلم)ہس رائچھ تگہء کرن۔اگر اتھ رائچھ تئج نہ کرن !کیازء کہ امام حسین علیہ السلام چھوء دپان یژی چھئی دلیل ۔

یمہ ساعتہ امام زین العابدین نس آو سوال کرنہ ؛ تل سا ون تتہ کمی زیون کربلاہس منز؟"منْ غلب؟"دوپنس ٹہر پیشن واتہ مؤذن پرء بانگ بہء ونے کمی زیون۔پیشن واتنس ، بانگ پرنہ ساتھی کیاہ چھوء کربلاہس ساتھی رابطہ ۔(اگر اسہ نشہ یہ سوال چھوء گو تلہ چھئي آئس سوئے [بجلی]بت یتھہ نہ کانہ تاری چھئي لاگت ،یوس نہ کنہ پاور سٹیشنس ساتھی لگہ تھی چھئی۔)امام زین العابدین علیہ السلام دپان بانگ پرن، بانگہ منز کیاہ پرکھ ژء "اَشهَدُ اَنْ لَا اِلٰهَ اِلَّا الله،اَشهَدُ اَنَّ مُحَمَّداً رَسُولُ الله"ادء تری فکرء کہ [کربلاہس منز زیون کئم]۔یعنی حسین سنز کامی آئس " لَا اِلٰهَ اِلَّا الله "زندء تھاون" مُحَمَّداً رَسُولُ الله "زندء تھاون سوء تھوو اسہ ۔توہیہ یوس یہ مسخ کرنچ کوشش کریوو تہند یہ مشن گو نہ کامیاب کہین۔یمہ ساعتہ توہیہ منز یوتاہ کامیابی گئی یقینی کہ توہیہ ہیوکو رسول رحمت کافر قرار دیتھ،تہ یزید بن معاویہ دتون مومن قرار۔امام حسین اوس معصوم بچہ رسول رحمتن وون یہ چھوء "سَيِّدَا شَبَابِ أَهْلِ الْجَنَّة" جنتہ کین جوانن ہند سردار۔قاضی شریح چھوء دپان یہ چھوء کافر۔یزید چھوء دپان[یہ چھوء]کافر،ابن زیاد چھوء دپان یہ چھوء کافر۔کمس چھئي ونان حسین بن علی یس یعنی یہ "لَا اِلٰهَ اِلَّا الله  مُحَمَّداً رَسُولُ الله " مسخ کرنک اوس منصوبہ مکمل گومت کربلا ساتھی گو یہ منصوبہ ناکام ۔گو یوس زن یہ کتھ واتناوان چھئي امس چھئي یہوے "لَا اِلٰهَ اِلَّا الله  مُحَمَّداً رَسُولُ الله "زندء تھاون ۔

وین زن ہیمو ائس پننہ نس پانس سام ،ائس تلو یزیدس پیٹھ انگج ،مگر پانس کن دمو نظر، رسول رحمت صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم فرماوان:"مَنْ بَاتَ وَ فِی قَلْبِهِ غِشٌّ لاخِیهِ الْمُسْلِمِ بَاتَ فِی سَخَطِ اللَّهِ وَ أَصْبَحَ كَذَلِكَ حَتَّی یَتُوبَ"۔رسول رحمت صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم فرماوان کہ ؛ یوس اکھا ہ مسلمان بائیی سند حسد تہ کینہ تھاوء دلس منز شونگہ ، امسند دوہ تہ رات چھوء خدای سندس غضبس منز گذر بسر گژھان،یوت تان نہ توبہ کرء۔

وین دمہ ہو ائس پانس نظر یہ حسد تہ کینہ کوتاہ اسہ منز زیادء ،یتھی کئن زن میہ اوترء تیہ وون اکہ طریقہ از چھوس بہ اندازء اتھی کتھہ وضاحت کرن [یژھان]۔ اگر از ائس خدائی آسہ ہاو ، حسینی آسہ ہاو، ائس ہیکہ ہو سورے کینہ برداشت کرتھ مگر خدای سنز ناراضکی نہ برداشت گژھن کینہ ۔میہ مول گژھن ناراض، میہ موج گژھن ناراض ،ہمسایہ گژھن ناراض ، عالم گژھن ناراض ....یمس ناراض آسہ گژھن مگر میون خدا گژھنہ ناراض گژھن کینہ۔گو میون رشتے گوژھ بنیاد آسن[قُربَةً إلی الله] میانی مجلس گژھی " قُربَةً إلی الله" خاطرء آسن ۔بائژن ہند رشتہ گوژھ " قُربَةً إلی الله"خاطرء آسن ۔ زنان گژھہ خاندارس تابعداری امہ موجوب کرن " قُربَةً إلی الله"۔خاندار گژھہ زنانہ ہند حق ادا کرن " قُربَةً إلی الله" باپت نہ کہ وین چھوء گھرء پکناون ، ہوچھہ دپان یہ چھوء خرچ دوان۔ نہ!" قُربَةً إلی الله" باپت ۔یتھے کئن اولاد مالس ہمسایہ ہمسایس ...۔

یتھی یتھی کامہ منز سون " قُربَةً إلی الله"حاکم آسہ گو ائس چھئي حسینی بنیمت ،حسینی کردار چھئی نبھاوان ۔اسہء منزء ،سانس مجلس منزء ،تتھ علمہء منز گوژھ آسن یہوے جوش و خروش کہ بہء چھوس " قُربَةً إلی الله"باپت کران نہ کہ یہ چھئي ڈبچ علم امہ موجوب چھوء اتین میہ روزن میہ چھئي دہ کامہ درامژنہ میہ چھئي یہ امام زمان سنز علم ۔ وین یمہ ساعتہ اسہ رسول رحمت چھوء دپان اگر زن توہیہ کینہ حسد آستھ توہی شونگیو تہند دوہ تہ رات چھوء غضب خدایس منز گذر بسر گژھان۔(نماز ظہر چھوء نزدیک وقت دی نہ شاید اجازت بہ کیاہ کرء ونہ کہ کس موضوعس ساتھی انصاف ۔)کہ اگر زن ائس [سام ہیمو]سانہ خاطرء بئڑ ذمہ داری چھئی یمی زن ایام عزا چھئي ،یمی چھئی اسہ تجدید بیعت کرناوان ۔ممکن چھوء یمی سارے کتھہ چھئي اسہ پتہ یقیناً سارنے پتہ مگر قرآنی چھوء ونان:< وَذَكِّرْ فَإِنَّ الذِّكْرَى تَنْفَعُ الْمُؤْمِنِينَ>(الذاريات/55)یاد دہانی کرن،یاد دہانی ساتھی چھوء مؤمن نس فائدہ واتان۔

انسان اگر زن خبرکئژاہ تہ عبادت آسہ کران مگر اگر امس یہ ترء فکرء یہ حسینی کردار یہ بننہ نہ سڑکہ روکاونک سبب کینہ ۔مشکلات کھڑا کرنک سبب بننہ نہ کم سے کم حسینی کہین۔میہ چھئی علم کڑن ، قطعا چھئم کڑن ۔سڑکہء پیٹھ چھئم قطعا سڑکہ پیٹھے چھئم کڑن ۔ مگر کم سے کم یہ خیال تہ چھم تھاون کہ میہ چھا امہ ساتھی بیہ سندء خاطرء مشکلات کھڑا کرن ؟ بہء کیازء گنڈنہ دائرہ تتھ کئن کہ کم سے کم سوء عبور و مرور ممکن آسہ ،اگر زن کانہہ مجبور آسہ کامہ خاطرء ،سوء ہیکہ کامی کرتھ ۔

ابن عباس دپان بہ اوسس مسجدالحرام مس منز میہ ووچھ حسن بن علی ،امام حسن مجتبی علیہ السلام ووچھم معتکف" کُنتُ مَعَ الحَسَنِ بنِ عَلی فی المَسجِدِ الحَرَام "مسجدالحرامس منز اوسس امام حسن مجتبی  علیہ السلامس ساتھی " وَ هُوَ مُعتکَفِ "یہ اوس اعتکاف فس بیوٹھمت امام حسن مجتبی علیہ السلام " وَهُوَ یَطُوف حَول الکَعبَه فَعَرَضَ لَهُ رَجُلِ مِن شِیعَتِهِ"یہ اوس طواف کران ، اتھی منز آو اکھ شخصاہ ، شیعہ اوس یعنی تمسند طرفدار اوس " فَقَالَ یَابنَ رَسُولِ‌الله"صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم ۔ عرض کرن یابن رسول اللہ صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم " إن عَلَیَّ دِینَا لِفُلان فَإن رَأیتُ أن تَقضِیهِ عنّی"میہ چھوء فلانی سند قرض تمی کورس سیٹھا اسیر ۔چھا ممکن میہ کریو یہ مشکل برطرف" فَقالَ  علیہ السلام" امامن دیوت جواب :" وَ رَبِّ هَذَا البَیتِ مَا أصبَحَ عِندِی شَیء" یمسی صاحب [کعبس پتھ]یعنی خدای سند چھم قسم کہ چھمنہ ،اتھہ چھم خالی بہ کرء ہے نہ کوتاہی کہین ۔ " فَقَال إن رَأیتُ اَن تَستَهمِلهُ عَنِّی فَقَد تَهددنی بِالحَبس "وین اگر نہ توہی میہ ہیکوی یہ قرض ادا کرتھ بہء نیرء ہا امہ مشکل منزء ، یہ چھا ممکن کہ توہی بنیوو میانی ضامن ،تمی دژ میہ وین دھمکی  اگر نہ از ژء میون قرض واپس دتت بہء برناوت جیل۔"فَقَال ابن عَباس"ابن عباس ونان" فَقَطَعَ الإمَام الطواف"امامن روکوو پنن طواف "وَسَعَی مَعَهُ"یہ دراو امسی نفرس ساتھی۔" فَقُلتُ"میہ وونوس:" یَابنَ رَسُول الله؛ألستُ إنَّکَ مُعتَکِف"مگر ژء چھوکھ نا معتکف؟،ژء ہے چھوکھ اعتکافس بہت۔ فَقَالَ: بَلَی وَلکِن سَمِعتُ أبی علیہ السلام یَقُول سَمِعتُ رَسُول الله صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم  [آ]میہ چھوء بوزمت ،علی ابن ابیطالب علیہ السلام سندء زبان بوزم ،تمی وون کہ رسول رحمت صلی اللہ علیہ وآلہ وسلمو فرموو؛ یَقُول مَن قَضَی اَخَاهُ المُؤمِن حَاجَة کَانَ کَمَن عَبدالله تعالی تِسعَةَ آلاف سنة صَائماً نَهَارَه وَ قَائِماً لَیلَهُ "۔اللہ اکبر۔میہ بوز پننس مالس امام علی مرتضی ہن چھوء وونمت کہ رسول رحمتن فرموویوس اکھا مؤمن پننہ نس بایس تمسند حاجت پورء کرء تتھ حاجتس عوض دیس خدا نون ساسن وریہ ہن ہئنز عبادتک ثواب۔(اللَّهُمَّ صَلِّ عَلَى مُحَمَّدٍ وآلِ مُحَمَّدٍ وعَجِّلْ فَرَجَهُم)یمن نون ساسن ورءین منز آسہ روزء در رودمت دوہس تہ راتس آسہ اوسمت شب نمازء پران ۔(اللَّهُمَّ صَلِّ عَلَى مُحَمَّدٍ وآلِ مُحَمَّدٍ وعَجِّلْ فَرَجَهُم)یہ اتھہ روٹ کرن کرنک جذبہ کوتاہ چھوء اسہء حسینی ین ؟

اتھہ روٹ؛سوء گئی بئڑ کام ،سوء گئیو اگر حل کرء،دوپنس ژھوروی بن تہء میہ ضامن ۔

کانسہ چھوء مشکل ،کانسہ چھوء بیمار،کانسہ چھئي ڈیوٹی ، مگر بہء چھوس حسین سندس ناوس پیٹھ تمسندء خاطرء مشکلات فراہم کران ،بیہ چھئم آسان سینہ تان کے کہ" بہء چھوء سا تلیہ گندان تلہء"۔بہء چھوس جنتک داروغہ آسان بنیومت ،باقی چھئي جہنمس آسان۔کمہ جذبہ ؟

یہ چھوء میون "انا" آسان ونان  نہ کہ میون ایمان ۔اگر میون ایمان ؛تتین گوژھ قُربَةً إلی الله باپت۔

امام خامنہ ای فرماوان؛یمی زن یمی ذاکر چھئي یا عالم چھئي یا مبلغ چھئي  تاکید کران " ہے  بہء چھوس نہ ودنچ کریکھ بوزان کہین..."دپان ؛ اتھ پیٹھ کیازء چھوو اسرار کران ،کانسہ وودن آسہ ،سوء ودء،تمس اوش ہارن آسہ سوء ہارء ،کانسہ آسہ باکھ ژھٹن سوء ژھٹہ،یمہ مہء کریون تحریک کہ ژء کیازء چھوکھ نہ باکھ ژھٹان۔یہ گژھہ خود جوش آسن،آئس بوزو مجلس ،اسہ بوزی مصائب ژئر تہء گو نہ یا حسین تہء کور نہ کانسے ۔ امام خامنہ ای دپان ضروری چھنہ توہی دپیو مجلس گئي ضایعہ۔اتہء ووتھووی نہ دوگ ۔

اسہ چھوء باسان ....ہےمجلس چھیہ پتہ مجلس کیاہ گئی!"ہیاہ گئنٹس ژھیون نہ دوگوی"۔

دوگ نہ ژھینن چھنہ مجلس کھسن ،اگر اکسی نفرس تور فکرء کہ میہ توگا امام زمانس امام زمانس ساتھی از تجدید بیعت کرن ! میہ منز چھئي یہ یہ فلانی فلانی خامی از[پتہ]آسہ نہ وین میہ [کہین]۔پگاہ پیٹھہ آسہ نہ میہ منز یہ خامی کہین ۔اگر زن یہ صفت امس منز پادء گو ، مجلس ہند ثواب تہء گو حاصل ،سوء یوس ھدف اوس مقصدس اوس سوء تہء گو محقق۔

کیازء کہ یمن مجلسن منز چھوء اگر زن قُربَةً إلی الله آسہ فی نفرس چھوء اکھ اکھ حاجت اکھ اکھ شفاعت ، ضمانت اسلامن دژمژ۔اسہ گوژھ تگن سوی حاصل کرن کہ کم سے کم اسہ منز آسہ نا سوءاکھ نفر تہ یمس زن حاجتچ ضمانت چھئي ،ائسی منگو دعای خیئر آمین کرن ساری تمی تہء آسہ آمین کورمت اسہ میلہ حاجت ، سون مشکل گژھہ برطرف ۔گو یوتاہ سون اجتماع بڑء تتھ منز چھوء سونوی فائدہ۔

اگر یئتی ہن منز اکسی سوء مخلصانہ اوش قطرء وسہ کافی چھوء ۔ کیازء اسہ چھوء زمہ داری سانین شانن پیٹھ سخت ، کیازکہ سون دعوی چھوء بوڈ۔ غئر شیعہ سند چھنہ یوتاہ بوڈ دعوی۔اسہ سون قائد تہ زندے ، امام زمان چھوء زندے ، تمی سند نائب چھئی نظارت کران ، یہ تہ اسہ ووچھن چھوء کیا ہ اسہ چھا اتھ نائب امام ساتھی چھا اسہ  یہ تار وصل کنہ نہ ، ائس چھا تمسندء [گرڈ سٹیشنک]سوی پاور رٹان کنہ نہ ۔بلکہ ائس چھئي پننہ نس پانس دونکھہ دوان کہ یہ یوس زن یہ [بجلی]بئت چھئی یہ چھوء پاور دوان یلہ زن ائس چھئی وچھان اتھ سفید گلٹھ کرتھ یہء چھنہ پاور دوان کینہ ۔بلکہ ائس گژھو حقیقتا امہ نورک مصداق بنن۔

نورک مصداق بنو تیلے یلہ زن اسہ یہ حقیقت اسہ پیٹھ عیان گژھہ کہ سانی ذمہ داری کیاہ چھئی۔سیانی ذمہ داری چھئي ""لَا اِلٰهَ اِلَّا الله  "ہک احیاء "  مُحَمَّداً رَسُولُ الله"صلی اللہ علیہ وآلہ وسلمک احیاء،اتھی نمازء منز یوس زن اتھ منز حذف چھوء گومت سوء زندء تھاون ،گو"حَیِّ عَلی خَیرِ العَمَل"ہر عملء کھوتہ افضل عملاہ چھئي نماز ۔گو یہ نماز گذار گژھہ  آسن حسینی ۔علم آسہ کڑن تتھ منز گژھہ آسن واضح کہ یوس زن  یمیوک عنصر حاوی گژھہ آسن ، سوء گژھہ نماز ء ہند آسن۔نوحہ ہس ساتھی یمیوک فقدان چھوء سانہ محفلء روزان سوء گو قرآنچ ، آئس چھئي بوزان کہ سرروس بندن ،خود سرن کئر تلاوت امام حسینن،گو امام چھوء اوسمت تیوتاہ مانوس کہ لبنہ آو کہ امام چھوء تلاوت ونکینس تہء کران ۔یمہ ساعتہ یمی تہء امام حسین علیہ السلام سندیو یارو منزء حملہ کور میدانس منز ووتھ ، جہاد کورن ، قرآنچ تلاوت آئس زبانء پیٹھ جاری تھاوتھ۔لذا گژھہ نوحہ ہس ساتھی اسہ  قرآنچ تلاوت تہءمنزء منزء  دون دون منٹن ، پانژن پانژن منٹن آسن تاکہ سانی یوس زن یہ تحریک چھئي ولایتچ ،یہ نہ صرف پانس ترء مکمل طور فکرء بلکہ ائس گژھو باقین سمجھاونس منز تہء کامیاب۔

ظہر چھوء نزدیک بلکہ شرعی ظہر ووت ؛وین کروو امام زمانس عرض تسلیت ۔

راوی ونان :" إذ حضرت صلاة الظهر"پیشن ووت ،" فأمر الحسین عليه السلام زهير بن القين ، وسعيد بن عبد الله الحنفي أن يتقدّما أمامه مع نصف من تخلّف معه ، ثمّ صلّى بهم صلاة الخوف"۔پیشن یمہ ساعتہ ووت امام حسین علیہ السلامن وون زہیر قین نس (یوس بہء وزء وزء چھوس ونان ؛ زہیر قین اوس عثمانی مسلک یعنی شیعہ اوس نہ ،یہ چھوء امام حسین علیہ السلام سندین شہدان منز یعنی سانہ مجلسہ منزء گژھہ سنی تہء یقینا حاضر آسن، شامل آسن۔سانی عزاداری چھئي نامکمل اہلسنت تو بغئر۔بیہ یلہءزن امہ کردارک اہل بیت شناس آسن۔)امام حسین علیہ السلامن ظہیر قین تہء سعیدیمن دوپن توہی روزیو بوتھہ ۔ یعنی اورء یمہ ساعتہ یمی[یزیدی]اگر حملہ کرن ، تیر ، کان لاین توہی بنیو حائل۔ باقیو پئر نماز،اہل بیت تو گئنڈ۔ امام حسین علیہ السلامن یمہ ساعتہ نماز پئر،یتوتاہ  یمو جان بازو [اتھ دوران]یمی تیر روکاوتھ ہیک ،ظہیر قین نن تہء سعیدن تمی [روکاوکھ]مگر اتھ دوران " فوصل إلى الحسين عليه السلام سهمٌ " امام حسین علیہ السلامس تہء آئي اتھ دوران تیر۔

مقتل چھئي لیکھان کہ یمن دون رکعتن منز چھئي 30 تیر امام حسین علیہ السلامس آمت،دون رکعت خاطرء ، 2 رکعتن خاطرء۔یمن 2 رکعتن چھنہ 40 کلمہ تہء چھنہ یمی سمان کہین ۔سورہ حمد 2 سورہ توحید 2 ۔ سورہ حمدک گئے 7 تہء 7 گئي 14 آیہ ،سورہ توحیدچ گئي 5 تہ5 گئے 10 آيہ ء، 2 رکوع 4 سجدء ۔ کئژ گئي 30۔ اگر زن تشہد وغیرہ تہء گنزراوو یعنی گئی تقریبا 40 کلمہ۔یہ کیاہ امام حسین علیہ السلام ونان کہ ائس کاتیاہ امہ نمازء ہند دلدادء آسن ۔ سانہ نمازء منزء گژھہ بیس مسلمانس ترن فکرء کہ اتین چھوء عرفان حاصل گژھان ، اتین چھئي معرفت حاصل گژھان خدای سنز ، یمہ ساعتہ یمن حسینی ین منز نماز چھوء انسان پران ۔ سوء شعور گژھہ  آسن سوء معرفت گژھہ آسن ،تمہ معرفتہ سان گژھو ائس نماز پرن۔

۔اللہ اکبر۔

بہء چھوس معذرتخواہ وقت چھنہ اجازت دوان بالخصوص یہوے نمازء ہند وقت چھوء استقبال چھوء۔

اللہ اکبر۔"فخرج علی ابن الحسین علیہ السلام" وین ونہ یہ کہ یمہ ساعتہ امام حسین علیہ السلام سند اصحاب ، یار یمی گئي شہید ، کیازء کہ یمو دیوت نہ اجازت اہل بیت تن کہ یاتس کالس ائس  زندء چھئي ،سانہ ائچھ وچھن نہ اسہ برونہہ کنہ اہل بیت رسول اللہ پارہ پارہ گژھن۔لذا گوڈء چھوء دوستو ، یارو ، اصحابو ،غلامو پنن قربانی دژمژ امہ پتہ یوس زن اہل بیت تو منزء گوڈنیوک نفر مئدان دراو سوء آوس علی ابن الحسین علیہ السلام۔یمس علی اکبر ائس ونان چھئي ۔"فاستأذن أباه فی القتال"یہ آو وین امام حسین علیہ السلامس برونہہ کنہ ، مالس برونہہ کنہ آو جہادک  ہیوتن اجازت " فأذن له"مقتل چھنہ کہئن ہاوان کہ اجازت دنس منز چھوء امام حسین علیہ السلامن تاخیر کورمت ،یمی اہل بیتو منزء اسرار کور جہادس امام حسین علیہ السلامن دیوت نہ یتھی کئن صراحتا کانسہ [اجازت]وتھ نیر۔[علی اکبرن کور عرض]میہ چھئہز اجازت جہادس۔[جواب میولس]بسم اللہ۔

یہ چھوء واحد نفر جناب علی اکبر۔یلہء زن ائس یہ وننہ نس منز کوتاہی چھئي کران ۔مگر یمی چیزن پھوٹہ روو امام حسین سوء تہء اوس یہوے علی اکبر۔

مگر اتین تہء چھئي ائس غلط تشبیہ دوان ،اسہ چھوء باسان کہ یہ اوس پوترء دادء خاطرء یوتاہ محبت ۔نہ واللہ ۔تلہء اوس تمسندء کھوتہ عزیز علی اصغر ، تمسندء وزء کیازء گئی نہ تمس تژھ حالت مگر علی اکبر سندء وزء ....

امام حسین علیہ السلام اسہ پانے جواب دوان ۔یمہ ساعتہ علی اکبرس اجازت دتن " ثُمَّ نَظَرَ اِليهِ نَظَرَ آيسٍ مِنهُ"یہوے نا امیدی ہنز نظراہ کرن جناب علی اکبر علیہ السلامس  " ثُمَّ قال"وونن: اَللّهُمَّ اشهَد عَلي هؤلاءِ القَومِ"خدایا ژء چھوک گواہ " فَقَد بَرَزَ اِلَيهم غُلامٌ"خدایا پانے چھوکھ گواہ وین چھئي سوء بندء چیون نیران بندہ خدا یوس زن "اَشبَهُ النّاسِ خَلقاً وَ خُلقاً و مَنطِقاً بِرَسولِكَ"صلی اللہ علیہ وآلہ ،خدایا پانے چھوک گواہ ، وین کینس چھی  وین مئدان سوء نیران یوس زن شکلہ کن ، گفتار کن ، رفتار کن چیانس رسولس شبیہ چھوء ۔محمد مصطفی سند شبیہ ۔ یعنی امام حسین علیہ السلامس  یوس چیز ضعیف چھوء کران کہ وین چھوء میہ ائچھو ووچھن کہ ہم شبیہ پیمبرس کتھہ کن یی پارہ پارہ کرنہ۔رسول رحمت سندس کنہ تہء چھنہ یمی نا مسلمان اعتناء کران ۔ اللہ اکبر۔

کیازء کہ مقتلو چھوء لیوکھمت چھگ لج ،اڈیو دوپ یہ چھوء علی مرتضی ، بعضیو وون یہ چھوء پانے رسول خدا ووتھ مئدان ۔ یمہ ساعتہ کریکھ کئي رسول خدا ووتھ مئدان چھگ لج، بیے شقی ین وونک یہ چھنہ رسولخدا یہ چھوء حسین سند فرزند امس چھئي علی ونان،امس کریو محاصرہ ۔اللہ اکبر۔

معاویہ علیہ ہاویہ تہء چھوء ونان کہ اگر زن یمن ہندس گھرس منز کانس خلافت شوبہء ہا سوء شوبہء ہا حسین سندس نیچووس ، کیازء یمی اکہ لٹہ آسہ رسول خدا ووچھمت تمس گژھہ مغالطہ امس ساتھی ۔دشمن ترین دشمن چھوء اعتراف کران علی اکبر علیہ السلامس کیازء اوس ممتاز مقام اہل بیت تن منز ۔

امام حسین علیہ السلام پانے ونان کیازء ؟

"كُنّا اِذا اشتَقنا الي نَبِيِّكَ نَظَرنا الي وَجهِه " علی ژء کن ووچھت اوس رسول رحمت سند لول ژلان ۔

آہ واویلا۔ یمہ ساعتہ امسی علی اکبر سند فریاد چھوء بلند گژھان :"السَّلَامُ عَلَیکَ یَا اَبَتَاه اَدرِکنی"بابو جل کر میہ لب۔

آہ واویلا !یہ کمہ ساعتہ چھوء جناب علی اکبر یہ فریاد ژھٹان ،یمہ ساعتہ جناب علی اکبر علیہ السلام سندس سینس منز نیزء چھوء یوان پیوست کرنہء ۔علی اکبر چھوء از بر زمین پیوان ، یمہ ساعتہ فریاد ژھٹان  چھوء سوء[نیزءوول] شقی چھوء یژھان پنن نیزء کڈن تاکہ یہ گوژھنہ پتہ لگن کہ یہ نیزء کسند چھوء ۔اللہ اکبر۔

نیزء چھوء یژھان علی اکبر سندء سینہ منزء کڈن ،مگر سینہ منزء چھنہ نیزء نیران کینہ ، بلکہ نیزء چھوء پھوٹان پھل  تمیوک چھوء  روزان علی اکبر سندس سینس منز ۔ آہ واویلا۔

یمہ ساعتہ امام حسین علیہ السلام ہر کانسہ شہیدس گو ذوالجناح ہس پیٹھ سوار گژھت ووت توتن ، مگر علی اکبرس گو نہ ،[شاید] جناب رسول خدا ی سندس احترامس منز۔اللہ اکبر۔پیدل گو ۔فریاد چھوء دوان علی کتہء چھوک، علی ....

یمہ ساعتہ جناب علی اکبرعلیہ السلام چھوء لبان ، کلہ چھوس کوچھہ منز رٹان ۔ علی اکبر چھوء عرض کران ؛ بابہء سینس منز چھوم یہ پھوٹمت نیزء اذیت کران ، اگر ممکن سپدء یہء کئڑتو نبر ۔ امام حسین چھوء دون کوٹھین پیٹھ  بہت دویو اتھو اتھ پھوٹمت تس نیزس تھپ کران پران:"بِسْمِ اللَّهِ وَ بِاللَّهِ وَ عَلَى مِلَّةِ رَسُولِ اللَّهِ "نیزک پھل چھوء نیران یتھی زن قلب مبارک چھوء حمل آسان سپدیومت ۔أَلَا لَعْنَةُ اللَّهِ عَلَى الظَّالِمِينَ(هود/18)وَسَيعْلَمُ الَّذِينَ ظَلَمُوا أَي مُنْقَلَبٍ ينْقَلِبُونَ(الشعراء/227)

 امام حسین قرآنک آئينہ -07 PDF فایل ڈاونلوڈ کرنہ خاطرء

·        امام حسین علیہ السلام قرآنک آینہ -01

·        امام حسین علیہ السلام قرآنک آینہ-02

·        امام حسین علیہ السلام قرآنک آینہ-03

·        امام حسین علیہ السلام قرآنک آینہ-04

·        امام حسین علیہ السلام قرآنک آینہ-05

·        امام حسین علیہ السلام قرآنک آینہ-06

·        امام حسین علیہ السلام قرآنک آینہ-07

·        امام حسین علیہ السلام قرآنک آینہ-08

·        امام حسین علیہ السلام قرآنک آینہ-09

·        امام حسین علیہ السلام قرآنک آینہ-10

 


آپ کی رائے
نام:  
ایمیل:
عبارت:  500
قدرت گرفته از سایت ساز سحر