»
چهارشنبه 22 آذر 1396

امام حسین علیہ السلام قرآنک آینہ-10

عبدالحسین سنز بہمہ محرم 1435 مطابق 15نومبر 2013 جامع مسجد سونہ پاہ بیروء پرمژ مجلس

 

اَعُوذُ بِاللّهِ منَ الشّيطانِ الرَّجيم

بِسْمِ اللَّهِ الرَّحْمَنِ الرَّحِيمِ؛نحمده و نستعینه و نؤمن به و نتوکّل علیه و نستغفره و نصلّی و نسلّم علی حبیبه و نجیبه و خیرته فی خلقه حافظ سرہ و مبلغ رسالته سیّدنا و نبیّنا و طبیب نفوسنا و حبیب قلوبنا  ابی‌القاسم المصطفی محمّد(صلی اللہ علیه و آله  وسلم)[اللَّهُمَّ صَلِّ عَلَى مُحَمَّدٍ وآلِ مُحَمَّدٍ وعَجِّلْ فَرَجَهُم] و علی آله الأطیبین الأطهرین المنتجبین المعصومین سیّما بقیّةاللَّه فی الارضین۔ و صلی علی ائمہ المسلمین حماۃ المستضعفین و ھداۃ المومنین علی امیرالمومنین علیہ آلاف تحیۃ والثناء۔

اما بعد:

(جناب میرواعظ سید عبدالطفیف صئبس تہ مولانا فاروق صئب نس خدمتس منز چھوس بہء دل کہ عمیق گہرایوسان سلام تہء شکریہ ادا کران ،یوس زن امہ برونہہ کہ بہء کرء پننہ نس موضوعس متعلق یوس زن میہ از 10-12 مجلس واتہ "امام حسین علیہ السلام قرآنک آئينہ "تمہ کس تسلسلس منز پنن بحث یہ تین تہء برونہ کن پکہ ناوء ،یمہ مجلسء متعلق چھوء میہ باساس یہ چھئي "إِنْ شَاءَ اللَّهُ" یتھ زن ونو حسینی مجلس ۔

میہ یہ کہنژھا امام حسین علیہ السلام سند پورء انقلاب بک مطالعہ ووت کران ،میہ چھوء لوب مت کہ امام حسین علیہ السلام سنزعزاداری چھئي نا مکمل اگر نہ تتھ منز اہل سنت آسہ ۔یہ چھوس نہ بہء میرواعظ صئب چھئي یتن ، فاروق صئب چھئی یتن یہندء باپت ونان کینہ بلکہ میہ یہ تین یہ وننہ نوکھ موقعہ چھوء یوان بہء چھوس یہ ونان ۔خدا کئرنو زیارت امام حسین علیہ السلام نصیب ۔پانہ زانان تہء چھوئی تہء ائچھوء تہء وئچھیوی "إِنْ شَاءَ اللَّه"کہ امام حسین علیہ السلام سندین شہدان منز چھئي اہل سنت تہء شامل(یوس زن اسہ تقسیم کاری چھئی یہ ءچھئي سانی ، یہ چھئی نہ اہل بیت تن ہند تقسیم کاری کہین)۔"ظہیر قین بجلی"یہ اوس نا سنی ؟(ازکس اصطلاح ہس منز تتھ زمانس منز ائس نہ یتھی کئن شیعہ سنی ونان کینہ ،تمس ائس عثمانی ونان)۔سنی ونوس اتھ تصورس منز کہ امامت اوس نہ قبول کران کہین ۔ علی مرتضی علیہ السلامس اوس نہ گوڈنیوک امام مانان کہین ،حسن مجتبی علیہ السلامس اوس نہ دویم امام مانان کہین ،طبیعی چھوء کہ ترییمس امام تہء آسہ ہا نہ امام مانان کہین ۔مگر نہ چھوء امام حسین علیہ السلام تمس ونان کہ کیازء کہ ژء چھوکھ سنی میہ کتھ لگ گکھ ژء ۔ژء پانس بہء پانس ۔امام حسین علیہ السلام چھوء پیغام سوزان "ظہیرس"۔تہء یہ چھوء دپان بہء ژجوس امسندے بیمہ ،میہ بوز امی چھوء کورمت [خروج]یہ چھوء درامت خلیفس خلاف لڑنہ ،میہ دوپ میہ ساتھی گوژھ نہ گژھن امس آمنہ سامنہ کہین ،یے میہ پتے چھوء ۔امس چھئي زنانء روکاوان ،دپان چھئس یہ چھا  طریقہ رسول رحمت سندس پیغامس چھوکھ ژء یتھہ کئن ٹھکراوان ۔اگر ژء تمی دعوت دتوی ،ژء کیاہ حرجء چھئي اگر زن ژء گژھک امام حسین نس ساتھی کرکھ ملاقات ۔"ظہیر"چھوء نیران امام حسین علیہ السلام مس ساتھی ملاقات کرنہ اورء چھوء یوان یہ چھوء زنانہ دوان طلاق، دپان چھوس یہ میون سوری مال و متاع یوس زن چھوء یہ بخشوءمے ژیے ، میہ دیتوی ژء طلاق ۔ دوپنس یہ کیاہ...!اوتان اوسوکھ نہ مانان نی میے کورکھ ژء مجبور کہ توتہء کر آنحضور صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم سند احترام ،تمسند نواسہ چھئي ژء دعوت دوان ،ژء چھی نہ مانن ، تمس چھئي نہ یاری کرن مگر یہ تہء چھنہ طریقہ کینہ ،تمسندپیغام ٹھکراوکھ ژء ۔ژء چھئے نہ پسندتمسنز کتھ مگر دعوت کر قبول۔وین چھوکھ ژء میے دپان بہء گسے ،میہ لوب پنن مقصد تہ وین تراوکھ میہ وتہ ۔یہ چھنہ امس مانان کینہ ،دپان چھوس ،نہ ، ژء نیر ،پنن سوری مال بخشومے ژء ۔امسنز زنان تہء چھئي سیٹھا دور اندیش ائسمژ مؤمنہ ائسمژ ،امی دوپ اگر زن بہء امس یتھے کئن زارء پارء روز کرا ن یہ تہء بوزنہ یورکھ کہین ،لذا چلو بہء کرء طلاق قبول ،پتہ چھئس بہء آزاد۔کران چھئي تی۔

ظہیر چھوء امام حسین علیہ السلام مس ساتھی گژھان پتہ چھوء تمسند عیال تہء اتھ [قافلس]ساتھی آسان ۔ظہیر قین نس نہ چھوء امام حسین علیہ السلام یہ معیار ونان کہ کیازء کہ ژء اوسکھ منکر امامتک ،ژء چھوکھ یوس زن عوامی خلافت تک تصویر چھئي ژء چھوگ امیوک معتقد ، یلہ زن امامتک معتقد گژھہ آسن یمن شرایطن ہند ۔گو یمی دلیلء چھئي ائس بناوان ۔اہل بیت چھنہ بناوان کینہ۔

اسہ چھوء حتی غئرمسلمان نس تان حق کک دعوت دیون ،چہ بسا کہ مسلمان آسہ ، کلمہ گو آسہ ۔لذا چھوس بہء ونان کہ امام حسین علیہ السلام سنزء عزاداری ہئنز مجلس چھئی نامکمل یوتان تہ تتھ منز اہل سنت آسہ ۔

ظہیر چھوی توہیہ کمی پہمت یاد ۔" حُر" تہء چھوی یاد؟"حُر"اوس نا سنی ؟

سوء اوس یزیدس امیرالمومنین ونان ،حسین نس باغی ونان ۔وتھ کمی رئٹ؟

"حُرن"

آب کئم کور بند؟

"حُرن"

اگر زن اصولا وچھوی ، یزیدن تہء ابن زیادن دیت فرمانی یاتی ،عملی پاٹھی یہ ء کہنژھا پیش اون سوء اون " حُرن " ۔یا تہء چھی ائس امام حسین علیہ السلامس کھوتہ زیادء دیندار،نتہ چھوء یا امام حسین غلط نعوذ باللہ ، نتہ چھئي ائس صحیح کہ یمہ تعصب کہ عئنکء چھئي ائس وچھان تہ چھوء صحیح (تلہء چھا اسہ ہوء مانن، تلہء چھا اسہ یہ مانن..)کننہ یہ زن اسہ اہل بیت تو تعلیم چھئي دژمژ ۔

حر ابن یزید ریاحی اگرچہ منکر چھوء ،مگر امام حسین علیہ السلام چھوء توتہء دعوت دوان۔امام حسین علیہ السلام سند دعوت تی چھوء سبب سپدان کہ حر ابن یزید ریاحی چھوء امام حسین علیہ السلام سندین شہدان تہ یارن منز شامل گژھان۔لذا یتین زن عزاداری ہئنز کتھ چھئی تتین گژھہ خاص اہتمام آسن اہل سنتن ہندء خاطرء کہ پننہ مجلس منزگژھہ ژھانڈن [اہلسنت]،[واگر آسنہ ]کمی ہند احساس کرن کہ اہل سنت چھنہ اتھی منز۔اگر زن قطعا امہ جذبہ ائس عزاداری ہند اہتمام کرو ،یقینا اہل سنتن منز لبیو کھ توہی حرابن یزید ریاحی تہ ۔یقینا لبیوی توہی ظہیر قین تہء ۔

وین یمہ بہء پننہ نس موضوعس کن"امام حسین علیہ السلام چھوء قرآنک آئینہ "یعنی شیشہ۔یمی چھئی بوتھہ اکھ اکس ۔شیشہ منزء وچھوتتہ یی قرآن لبنہ حسین نس منز وچھو تتہ یی قرآن اتھہ ۔قرآن نس منز تراوو نظر تتہ یی یہء حسین اتھہ۔لذا یوس زن دعویدار چھوء کہ بہء چھوس امام حسین علیہ السلام سند تعزیدار تہء محب ،امسندس کردارس منز یتھی کئن زن میرواعظ صئبن اشارء کور کہ کردار چھنہ ۔واریاہ چھئي تمی اسہ منز یمی زن ... از کی ایام چھئی جناب زینب سلام اللہ علیہا وونکھ" یا اَهْلَ الْکُوفَهِ، یا اَهْلَ الْخَتْلِ وَ الْغَدْرِ ... اَتَبْکُون "وین چھوی ودان ، تلہ کمی ماری ائس۔بعضی جاین چھئي ائس تتھی ودن والی ائس آسان ، آر چھوء یوان ۔

یمہ ساعتہ ازی اوس ، بہم محرم اوس یمہ ساعتہ کربلاہک قافلہ کوفہ ووت ۔ جناب زینب سلام اللہ علیہا وون کوفی ین یمہ ساعتہ تمی بیٹھی ودءنہء ،یہ بوزکھ آل رسول چھئی ،دوپ نکھ تلہ کموو ماری ائس ۔اگر زن کنہ ساعتہ ائسہ کینہ  گلہ کران چھئی کینہ اہل سنت کہ توہیہ مارووکھ پانے تہء پانے چھوے ودان ،کنہ اعتبار چھوء حق تہء، کیازء ائس چھہ پانے دوان ہاوتھ ،کیازء کردار چھنہ اسہ سوء چیز ونہ ناوان یتھی زن یہ معنی نیرء ۔شیعہ گئیوو سوء اپز گوژھ نہ زیوء پیٹھ آسنوی ،یعنی خاص کر اگر زن اصولا وچھوو شیعہ سنز پہچان چھئي مسجد،بس! ۔امسند امام زاو مسجدء منزء ، شہادت لبن مسجدء منز۔یعنی یہ چھوء سوء گور یمس زء پٹہ چھئی لئگت نہ چھوء دچھن وچھن نہ کھوور ،مسجدء بغئر چھنہ کہین وچھن۔کئژاہ چھئي مسجدء سانہ آباد۔

امام حسین علیہ السلامن 30 تیر رٹن 2 رکعتن ۔یعنی 30-40 کلمن[آین]رٹن 30 تیر۔2 رکعتن اگر زن 2 سورہ حمد ، 2 سورہ توحید ۔سورہ حمد 2 گئی 14[آیہ]سورہ توحید 2 گئی 10[آیہ]کئژگئی؟24۔

2رکوع 4 سجدء ۔ذکر تشہد ہتھ گو 35-37 یا 40کلمہ/آیہ

ہر کلمس خاطرء<إِياكَ نَعْبُدُ >خاطرء اکھ تیر روٹ تمی ۔کوتاہ چھوء میہ <إِياكَ نَعْبُدُ وَإِياكَ نَسْتَعِينُ>تورمت فکرء۔"سُبحَانَ الله"کوتاہ چھوء میہ فکرء تورمت۔کیازءکور امام حسین علیہ السلامن [تمیوک] اہتمام عملی طور چھنہ ائس تہء۔ وننہ اعتبار چھو ممکن ائس...مگر عملء اعتبار چھئی ائس واریاہ تمہ نش دوریمت ۔برونہہ کالہ اوس (کشیرء ہنزی کتھ کرو باقین جاین ہئنز کتھ کرو نہ کینہ)بینک وینک آئس نہ کہین مگر اگر امانت اوس آسان کانسہ نشہ تھاون سوء اوس آسان شیعہ یس نشہ تھاون۔کیازء کہ اطمنان اوس کہ اگر کنہ جایہ خیانت گژھہ امس نش گژھنہ خیانت کینہ۔مگر اگر از وچھو ائس پننہ نس سماجس کن ساروے کھوتہ خائن نیرو ائسی ۔میہ پیٹھ تہء کئر زیو نہ بھروسہ کہ اگر روپیہ دہ تھاویو تمی کیاہ میلن واپس ۔دکاندارن دیو نظر ،یوس زن بے نمازی آسہ سوء چھوء لحاظ کران...مثلا  سوء چھنہ  تیوتاہ سود یژھان کھالن کینہ ۔مگر یوس حسین حسین کران چھوء سوء چھوء....کیاز کہ تمی چھوء نیومت عیسائی ین ہند پاٹھی قبضہ کرتھ میہ وود امام حسین نس تہء میہ چھوء جنت ۔یلہء زن حقیقت چھنہ تہء..،اسہء خاطرء چھوء زیادء امتحان ،اہل سنتن آسہ سہل امتحان ۔یمن چھئی دور نظر تراوین[پنن رہنما چھوکھ نہ برنہہ کنہ]۔اسہ چھوء وینہ کینس تہء امام تہء برونہہ کنہ ،قائد تہء برونہہ کنہ تہء استاد تہء برونہہ کنہ ۔لذا سانی غلطی چھئی بئڑ غلطی ۔سانی معمولی غلطی تہء چھئي واریاہ بئڑ غلطی ،کیازء کہ سون دعوی چھوء بوڈ۔ائس چھئي دپان امام زمان چھوءاسہء وینہ کینس [پردے غیب بس منز]تمسندس قیادت تس منز چھئی ائس زندگی کران ۔یمی [اہلسنت]چھئی مثلا "حضرت ابو حنیفہ" سندس ،"حضرت امام شافعی" سندس، "امام حنبل" وغیرہ [سندس فقہ س تہ رہنمائی تحت] کہ یوتاہ چھوء فاصلہ زمانی یمن ۔مگر ژء تہء بہء چھوس ونان ۔ نہ ۔نہ۔سوء چھم  زندے ،تمسندس پردے غیبس منز چھوم نائب امام۔امام خامنہ ای چھوم وینہ کینس میون قائد۔بہ یہ کران چھوس میہ چھوء میون امام خامنہ ای ونان ۔مگر عملا چھا ائس تہ ء کران کنہ نہ؟

کہین چھنہ کران ۔)

اَعُوذُ بِاللّهِ منَ الشّيطانِ الرَّجيم.بِسْمِ اللَّهِ الرَّحْمَنِ الرَّحِيمِ

قال الله سبحان الله تعالی:

قَالَ يا قَوْمِ أَرَأَيتُمْ إِنْ كُنْتُ عَلَى بَينَةٍ مِنْ رَبِّي وَرَزَقَنِي مِنْهُ رِزْقًا حَسَنًا وَمَا أُرِيدُ أَنْ أُخَالِفَكُمْ إِلَى مَا أَنْهَاكُمْ عَنْهُ إِنْ أُرِيدُ إِلَّا الْإِصْلَاحَ مَا اسْتَطَعْتُ وَمَا تَوْفِيقِي إِلَّا بِاللَّهِ عَلَيهِ تَوَكَّلْتُ وَإِلَيهِ أُنِيبُ.

(هود/88)

 صدق الله العلی العظیم۔

سورہ ہود چ آیہ 88یتھی منز زن یہ حضرت ہو د پننہ تبلیغ گوک مصداق چھوء بیان کران ،تی چھوء امام حسین علیہ السلام پننہ نس وصیت تس منز اعلان کران کہ یوس زن محمد حنیفہ یس لیکھان :

هذَا مَا اُوْصِی‏ بِهِ الْحُسَیْنُ بْنُ عَلِیٍّ اِلی اَخیهِ مُحَمَّداً الْمَعْروفَ بِابْنِ الْحَنَفِیَّةِ

پانے لیکھت مہر کرتھ اتھ وصیت تس منز ونان کہ :

اَنَّ الْحُسَیْنَ یَشْهَدُ اَنْ لا اِلهَ اِلا اللّه وَحَدهُ لا شَرِیْکَ لَهُ

حسین چھوء شہادت دوان چھنہ کانہہ خدا مگر اکھ پروردگار عالم ۔

وَاَنَّ مُحَمَّدا عَبْدُهُ وَرَسُولُهُ جاءَ بِالْحَقِّ مِنْ عِنْدِهِ

رسول اللہ صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم چھوء تمسند بندء تہء رسول ،سوء آو حق ہیتھ دین مبین اسلام ہیتھ ۔

وَاَنَّ الْجَنَّهَ حَقُّ وَالنّارَ حَقٌ وَالسَّاعَهَ آتِیَهٌ لارَیْبَ فیها

جنت چھوء حق ،جہنم چھوء حق، قیامت چھوء حق ۔

یہ کوس چھوء ونان ؟

امام حسین علیہ السلام ۔

پننہ نس وصیت تس منز توحیدک اقرار ،نبوت تک اقرار، قیامت تک اقرار ۔

امام مس کیاہ چھئي ضرورت ! امسے آنحضور صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم من " سَيِّدَا شَبَابِ أَهْلِ الْجَنَّةِ"امس کیازء جایہ جایہ ونن پنن موقف؟

ائس دپوو نہ سا اسہء واتی 1400وری اہل بیت تن ہند پیرو ونان اسہ چھنہ زہین پنن موقف واضح کرن ائس کتھ لانہ پیٹھ چھئي پکان ۔امام حسین علیہ السلام صبح قیامت تس تان پنن منشور اسہ برونہہ کنہ تھاوان ۔

وَاَنَّاللّه یَبْعَثُ مَنْ فِی الْقُبُورِ

کہ امہ ایمان کہ قبرء منزء چھوء بیہ دوبارء وتھن۔

گوو یوس تہء کانہہ عمل امام حسین علیہ السلام ہیجھہ ناوان چھوء ،یہ چھوء توحید مستحکم کران ، یہ چھوء نبوت تہء رسالت تس پیٹھ ایمان مستحکم کران ،یہ چھوء آخرت تس پیٹھ ایمان مضبوط کران ۔

ائس کمہ باپت چھئي ودان ؟

نہ کہ امام حسین کیازء آو شہید کرنہ ،یتھی کن کہ مولوی صوبن فرموو ؛شہادت چھوء بوڈ درجہ۔

کانہہ تہء عزادار نہ گژھہ نہ چھوء ودان امام حسین علیہ السلام سندس شہادتس پیٹھ ۔بلکہ اتھ پیٹھ کہ توحیدکس ناوس پیٹھ آو توحیدس ذبح کرنہ ۔رسالت کس ناوس پیٹھ آو رسالت تس ذبح کرنہ ۔قیامت کس ناوس پیٹھ آو قیامت تس ذبح کرنہ ۔

اگر زن غئر مسلمو آسہ ہا یہ حرکت کرمژ سوء اوس نہ واویلا کہین ۔آنحضرت صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم مس تہء چھوء گومت مقابلہ مشرکن ساتھی ، کفارن ساتھی ۔مگر یہ کہنژھا رسول رحمت تس ساتھی انتقام ہیوتوکھ افسوس چھوء کہ کینہ نام نہاد مسلمان یمی زن ونہ تہء چھئی سوئی آل ابو سفیان یوس انتقام تمن اسلام مس آوس ہیون سوء ہیوتوکھ اہل بیت اطہارن[تتھ چھئی گوڈ بران ]۔

اسہ چھوء گلہ گژھان کنہ  ساعتہ (مولوی فاروق صوبن کور اشارء مگر اسہ چھنہ اہل سنت گنزرائمت "ابن زیاد"لشکرس منز یا "یزید"لشکرس منز۔ائس چھئی ونہ ء کینس یمن تکفیری مسلمانن چھئی  [تہء ونان])۔اسہء چھوء تمن اہل سنتن ساتھی گلہ کہ تمی کیازء چھنہ تکفیری ین ساتھی پنن دامن الگ کڑان ۔

تمی کیازء چھنہ ونان یمی زن یمی اہل سنت تن بدنام چھئي کران یمی چھنہ اہل سنت ۔

وینہ کینس تہء چھوء "لَا إِلَهَ إِلاَّ الله"ونتھ شیعہ ین یوان ذبح کرنہ ۔اگر گلہ چھوء ،یہء چھوء۔نہ کہ خدا نخواستہ کانہہ شیعہ چھوء یہ ونان کہ توہی چھوی تمی یمو زن نعوذباللہ "یزید"س امیرالمومنین وون ۔نہ ۔ تمی چھئی تمے تکفیری۔یا وہابی ۔یمی زن ونہ کینس تہء سوئی سیرت چھئی [اپناوان]تمی چھئي سوئي انتقام رسول رحمت تس ہیوان ،ائس چھئي عزاداری امہ باپت کران ۔

سون چھوء یہ تظاہر امہ باپت سڑکہ پیٹھ[آسان]( دویہ طریقہ چھئي سانہ عزاداری آسان ۔یوس زن مجلسہ منز کران چھئي ،کوٹھین منز عزاداری کران چھئي ،یہ چھوء اسہ سمجھہ نئک آسان کلاس )۔ یوس زن ائس سڑکہ پیٹھ نیران چھئی یہ چھوء سمجھاونوک کلاس آسان ،ائس چھئی یہ الگ یژھان کرن ،تتین چھوء یہ گلہ اگر  آسان چھوء یہ کہ اتھ علمہء ساتھی اتھ دائرس ساتھی کیازء چھنہ اہل سنت تہ  آسان ۔ کیازء کہ امام حسین علیہ السلام فرماوان :

"وَ إِنّى لَمْ أَخْرُجْ أَشِرًا وَلا بَطَرًا وَلا مُفْسِدًا وَلا ظالِمًا"

بہء دراس نہ پنن دبدبہ قائم کرنہ باپت ،بہء دراس نہ فساد قائم کرنہ خاطرء ۔

"وَ اِنَّما خَرَجْتُ لِطَلَبِ الاِصْلاحِ فِی اُمَّهِ جَدِّی،صلى الله علیه وآله"

بہء دراس امت تس منز اصلاح کرنہ۔ امتی چھوء اہل سنت تہء ۔امتی چھوء اہل تشیع تہء۔لذا ائس چھئي امہ کہ اصلاح باپت وینہ کینس تجدید بیعت کران ۔نتہ امام حسین علیہ السلامس گئی از ہجری قمری کلنڈر مطابق 1374وری شہید گئمتس۔ یا عیسوی کلنڈر مطابق 1333وری شہید گئمتس ۔وینہ کینس کیازء چھوء تلہ اگر شہادتس یوتاہ درجہ چھوء ..۔نہ۔ ونتہ ء چھوء یزیدی کردارچھوء ونتہ اسلام کس ناو سی پیٹھ اسلامس بدنام کران۔لذا امام حسین علیہ السلام پننہ نس وصیت تس منز پنن یہ سیرت ونان ، میون  طریقہ کار کیاہ چھوء بہء کیازء چھوس درامت ۔

یہ پیوو مقدمہ موجوب ونن کہ امام حسین علیہ السلام قرآن نک ترجمان ۔قرآن امام حسین نن ترجمان ۔کیازء کہ عملی طور پر چھوء اسہ اکھ اکھ آيہ اکھ اکھ سورء تفسیر گژھان امام حسین علیہ السلام سندء کردارء ساتھی یوس زن تمی عملا دیوت ہاوتھ میدان کربلاہس منز۔

یتھی کئن زن ائس قرآنس منز پران چھئي :

<اسْتَحْوَذَ عَلَيهِمُ الشَّيطَانُ فَأَنْسَاهُمْ ذِكْرَ اللَّهِ أُولَئِكَ حِزْبُ الشَّيطَانِ أَلَا إِنَّ حِزْبَ الشَّيطَانِ هُمُ الْخَاسِرُونَ>

(المجادلة/19)

یہ چھوء امام حسین علیہ السلام یہ سورہ مجادلہ آیہ 19منز یوس زن ائس قرآنس منز پران چھئی یہوےکتھ چھوء جناب سکینہ ہس امام حسین علیہ السلام ونان کہ یوس زن یمن اشقیان ہند طریقہ ،یوتاہ تہء امام حسین علیہ السلام یمن نصیحت کران چھوء ،یمن چھنہ اثر کران کہین وجہ چھوء کہ یہ چھئي شیطان جماعت۔

شیطان جماعتک اوٹ پوٹ کیاہ چھوء ؟امس چھنہ فائدہ میلان کہین ۔معاویہ علیہ ہاویہ ہن کریے تمام تر ترکیب کہ یزید گژھہ پورء عالم اسلام مس پیٹھ حکومت کرن۔مگر کئژ دوہ دراس؟۔

ترء وری داری تمس کل۔

یہ ترکیب یوس یہ کرء ،تمس میول نہ کہین ۔ مگر یمس امام حسین علیہ السلام یمس زن پارء پارء آو کرنہ مگر سوء چھوء وین کینس تہء 1374وری پتہ زن چھئي ازچ کتھ ۔یہ کمی چیزن کور؟۔

یہ چھوء قرآنی ونان ،قرآن کیازء چھوء ہر زمانس منز تازء گژھان ۔امام حسین علیہ السلام چھوء قرآن ،یہ چھوء ہر زمانس منز تازء گژھان ۔قرآن چھوء ہر زمانس منز پنن نوی تعبیر ونان ۔تعجب چھوء انسان کران یتھ زمانس منز قرآن پران چھوء یہ چھئي باسان نوی کتھ ازچ کتھ۔"القرآن یُفَسِّرُهُ الزَّمان"،" و الزَّمان یُفَسِّرُ  القرآن"امام حسین چھوء یتھے کئن وقتہ وقتہ مطابق چھوء یہ تازگی بیان کران ۔کیازء کہ امام حسین علیہ السلامن یہ کہنژھا سوری قرآنس منز بیان سپد۔پروردگار عالم یہ معجزء اسہ درمیان تھووی تمیوک عملی مظاہرہ کور امام حسین علیہ السلامن۔

ایمان کامل ؛

رسول رحمت تن ووچھ خدا معراج جس پیٹھ < فَتَدَلَّى، فَكَانَ قَابَ قَوْسَينِ أَوْ أَدْنَى> (النجم/8تہء9)  سوء مرتبہ لبن، پتہ خدایس تہء آنحضرت صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم مس درمیان رود نہ کانہہ فاصلے ، بلکہ اکھ کمان ،کمانء کھوتہ تہء کم۔<فَتَدَلَّى>(النجم/8)۔مگر امام حسین علیہ السلام چھوء انسانس تمی معراج چہ ائچھ بناوان ،تمی ائچھ یلہ تراوان سوء ساری پردء چھئي تھود وتھان۔

جناب زینب سلام اللہ علیہا یمہ ساعتہ پارء پارء بدن چھئي وچھان سوء چھئی دپان: "رَبَّنَا تَقَبَّلْ مِنَّا هَذَا القَلِیل"۔سانی یہ معمولی قربانی [کر قبول]..کیازء جناب زینب سلام اللہ علیہ چھئي وچھان اگر زن 1374وری تہء گژھہ اکھ دوہ آسہ سوء تہء یمہ ساعتہ حسین سنز ذکر گژھہ اکھ بے نمازی بنہ نماز گزار ،اکھ بے دین بنہ دیندار،میہ چھوء کافی یتوی۔خدایا یہ کر قبول سانی ادنی قربانی ۔

یہوے جناب زینب سلام اللہ علیہا فرمایہ:"مَا رَأَيْتُ إِلَّا جَمِيلًا" ۔یہ حسن کیاہ چھوء؟

یمی پردء چھئي تھود وتھان۔ائس کمہ باپت چھئي کران۔اسہ چھا فلم وتھا ، اسہ چھا کانہہ وچھان کنہ نہ ۔حسینی بنن گو ، امس چھوء انہ گھٹس منزتہء ایمان حاصل گژھان میہ چھوء خدا وچھان ۔

ائس چھئي حسین حسین کران کہ امام حسین علیہ السلام مس چھوء علی اصغر ذبح گژھان اتھن کیتھ ۔امام حسین چھنہ آئہی  وای کران ۔یہ چھوء ائچھ اسہ دوان ۔عرفان کیاہ چھوء دوان ،دپان:بار الہا !یہ مصیبت چھوء میانہ خاطرء آسان ، کیازء کہ ژء چھوکھ وچھان۔ژء اگر حسین حسین کررکھ یعنی ژء چھئی ایمانس ہوریر گژھان کہ میہ چھوء خدا وچھا ن۔

خدا چھنہ ووچھہءون چیز کہین ،مگر یہ کوت چھوء انسانس واتناوان ۔یہ چھوء اتھ توحیدس استحکام بخشان عملی طور پر ۔تلیہ کیاہ ووچھہ امام حسین علیہ السلام من ،امس یوتاہ کینہ تہ پیش آو ..امام حسین علیہ السلام یوتاہ شہادتس نزدیک چھوء گژھان تیوتاہ چھوء امس رخسار سرخ گژھان ۔تیوتاہ چھوء سوء حسن و جمالس منز اضافہ گژھان ،یہ چھوء تران فکرء یہ چھوء امام حسین تہء کہنژھاہ وچھان یموک زن پروردگار عالمن اتھ قرآنس منز سوری کینہ وعدء چھوء کورمت کہ یوس میانہ خاطرء حرکت کرء ۔

واویلا چھوء یمی زن اسہ ہدایت تک یہ آفتاب ،سانی یہ انہ گٹہ کرء ہا دور مگر آفتاب کس ناوس پیٹھ آو کائیناتس گٹہ زلہ دنہ ۔عزاداری چھئي اتھ پیٹھ۔

اللہ اکبر۔ یتھہ کئن گوڈء نیتھ تہء عرض کورم کہ اسہ پیٹھ چھئي بئڑ ذمہ داری ۔یہ زن عرض کورم اہل سنت گژھن حسینی دائرس منز آسن ۔اگر زن کانہہ غلط فہمی چھئي اسہ پزء سوء دور کرن ۔اگر زن کانہہ کتھ سمجھ نچ چھئي یہ چھوء برونہہ کنہ ونن ۔بہء ہیکہ ونہ کینس ،اگر زن اہل سنت تن خلاف تہء کتھ کرء یتین چھوء ۔یہ چھئي واحد سوء جای یتھہ جایہ ہیکو اہل سنت تن خلاف وننتھ ۔کیازء ؟

ونہ کینس چھئی میر واعظ صئب یتین۔مولوی فاروق صئب یتین ۔بہء اگر زن اہل سنت عقائدن خلاف کتھ کرء ،یمی ہیکن جواب دتھ۔ژء چھوءکھا یہ صحیح ونان کنہ غلط ونان۔یلہ زن اہل سنت عالم مجلس منز آسنہ سوء چھئي خیانت اگر زن اہل سنت تن خلاف یی کانہہ کتھ ونننہء۔اہل بیت ہنزء سیرتء خلاف۔امام صادق علیہ السلام فرماوان: يا مَعْشَر الشِّيعَةِ "سانیو شیعو!"إنَّکمْ قَدْ نُسِبْتُمْ إلَينا"توہیہ چھووی ہاژھ اسہ ساتھی،توہیہ چھوی اسہ ساتھی گنڈان،توہیہ چھیوی دپان سانی شیعہ" کونُوا لَنا زَيْناً"سانہء خاطرء بنیوی زینب " وَ لا تَکونُوا عَلَيْنا شَيْناً"سانہ خاطرء مہ بنیوی مندچھ۔مگر افسوس!مولا معافی دی زء ۔بہء اگر پنن کتھ کرء بہء تہء چھوس مندءچھان ڈیکہ شیعس خاطرء ،یہ چھئی مندچھہ بہء کرء دعوی بہء چھوس شیعہ ۔کیازء کہ سانس کردارس ،گفتارس ، رفتارس منز چھوء بالکل فرق ۔ائس چھئي زویہء ساتھی اہل بیت تن [ساتھی پنن]نسبت دوان مگر یہ کہنژھاہ تمو اسہ تلقین کئر کہ کتھہ کئن گژھی ائس قرآنک عامل آسن ۔کتھی کئن گژھی آئس اسلامی نمونہ عمل آسن ،تمہ نشہ چھئي ائس شرمندء۔" مَا یَمْنَعُکُمْ أَنْ تَکُونُوا مِثْلَ أَصْحَابِ عَلِیٍّ رِضْوَانُ اللَّهِ عَلَیْهِ فِی النَّاسِ"توہیہ کیاہ گو ! توہی کیازء چھوی نہ علی مرتضی علیہ السلام سندن اصحابن ہند پاٹھی یمن اہل سنت تن ساتھی وتھان بہوان ۔یمن ساتھی قربت تھاوان۔یمن ساتھی گُل ملان۔یہ چھوس نہ بہء ونان یہ چھوء امام صادق علیہ السلام فرماوان ۔" إِنْ کَانَ الرَّجُلُ مِنْهُمْ لَیَکُونُ فِی الْقَبِیلَةِ فَیَکُونُ إِمَامَهُمْ وَ مُؤَذِّنَهُمْ وَ صَاحِبَ أَمَانَاتِهِم"۔اگر زن وون کینس نس توہیہ منزتمی آسہ ہن تمی تھاوء ہن یمومنزء کانسہ امام[پیش نمازی]کانسہ بناوہن مؤذن[بانگی]کم؟ اہلسنت ۔

اہل سنت بناوہن شیعن امام ،تمن پتہ پرہء ہن نماز ،تمن بناوہن مؤذن  ،پنن امانت تھاوہن تمن اتھہ ۔کر؟

یلہ زن ائس حضرت علی علیہ السلام سندین اصحابن ہند ہیہ بنو،تمی تہء آئس تی کران ۔تمی آئس تیوتاہ اہل سنت تن ساتھی تیوتاہ معاشرت[تھاوتھ]محبت سان زندگی کران ،نفرتی ائس نہ ، تمی ائس تعظیمی کران یمن تکفیر آسیکھ نہ کران کینہ ۔تتھ کئن کیازء چھوی نہ روزان ۔

یعنی سانہ کردارک یوس زن فقدان چھوء ،ائس گژھو پننہ کردارء ساتھی یہ ثابت دن کرتھ کہ ائس چھئي اہل بیت اطہارن ہند پیرو کار ۔آنحضرت صلی اللہ علیہ وآلہ وسلمن یہ کہنژھا ہ دین مبین اسلام امت تس درمیان ترووی اسہء ہیوچھی اہل بیت تن ہندء ذریعہ۔یعنی سانہ ذریعہ گژھہ آسن امیوک اتمام ،امیوک معراج گژھہ آسن ،یہ چھوء حجت بنان سانہ خاطرء ۔کیازکہ سون دعوی چھوء بوڈ۔ اہل سنت چھنہ یوتاہ بوڈ دعوی کران کینہ۔لذا ائس چھی زیر سوال ۔اگر ائس غلطی کرو یہ چھئي ساروی کھوتہ بئڑ غلطی ۔

یہوے یوس زن ائس امام حسین علیہ السلام سند ناو چھئی ہیوان ۔ائس چھئي ودان امہ موجوب کہ یہ نا آو نہ حسین تشنہ لب شہید کرنہ یہ آو رسول رحمت شہید کرنہء ۔کیازء کہ حسین سند جرم اوس یہ کہ ژء کیازءدکھ قرآن زندء روزنہ ۔ژء کیازء دکھ " لَا إِلَهَ إِلاَّ الله، مُحَمَّداً رَسوُلُ الله"صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم زندء روزنہ ۔

یمہ ساعتہ امام زین العابدین علیہ السلامس سوال آو کرنہ کربلا ہس منز زیون کئم؟

دوپنس یمہ ساعتہ نمازء ہند وقت واتہ ،پانے میلی جواب۔یمہ ساعتہ مؤذن بانگ دیہ ، جواب رئٹزء کربلاہس منز کئم زیون۔

کربلا یعنی " اللهُ أكْبَرُ"زندء روزن ،" أَشْهَدُ أَن لَا إِلَهَ إِلاَّ الله "زندء روزن،"أَشْهَدُ أَنَّ مُحَمَّداً رَسوُلُ الله"زندء روزن ۔کربلاہ ہن دیوت یہ[زندء]کرت۔

گو ائس چھئی امہ " أَشْهَدُ أَن لَا إِلَهَ إِلاَّ الله "ہک مبلغ،مروج۔سانہ ذریعہ گژھہ پھوٹ نیرن دینی مسائلن منز۔مگر آہ واویلا۔امی امام حسین علیہ السلامن ائس یہ [مقام حاصل کرن]سانین دلن منز امہ قرآن نچ قداست ، امہ قرآن نک محبت سانین دلن منز،امہ اسلام مک وزن سانس وجودس منز منتقل کرنہ خاطرء تمی کیاہ نہ کیاہ کور قبول۔

امام حسین علیہ السلام اسہ[منز]شناخت تچ ائچھ پادء گژھنہ خاطرء ،ظاہر تہء باطن اسہ نشہ الگ گژھنہ خاطرء امام حسین علیہ السلام کتھہ کئن چھوء آشکار کران یہ حقیقت سانہ خاطرء ۔کیازء کہ یوس زن سوء مرحلہ آو ،سوء زمانہ آو آل رسولن پیٹھ کہ امام حسین علیہ السلام متعلق آو فتوی دنہ کہ "ژء چھوکھ کافر"۔یزیدس آو وننہ امیرالمؤمنین ۔امام حسین نس وونوکھ یہ چھوء واجب قتل ۔یزید بن معاویہ ہس وونوکھ یہ چھوء واجب الاطاعہ۔یہ چھئي عزاداری ،کہ کیازء گو کلمہ گوون منز یوتا اُون کمہ ساتھی پیوو کہ یمہ ساتھی زن قرآن یوتاہ مظلوم گو کہ معیار بدلیے۔یزیدس ہیوہ نفر بنووی جانشین رسول اللہ ۔حسین بن علی بنیووی باغی رسول اللہ ۔اللہ اکبر۔یہ کمہ اسلامچ[تعلیم]یہ کیاہ پیش  اونکھ  اتھ اسلامس ۔اگر زن یقینا یہ کفارو مشرکو آسہ ہا کورمت ،یہ ء آئس نہ کانہہ دگ،یہء اوس اعزاز سوروی ۔ مگر کیازء کہ " لَا إِلَهَ إِلاَّ الله "...ظہیرن وون جنگ روکاوو اذان گئی ۔دوپ ہس توہیہ کوس نماز یی یہء۔حسین نس دوپک ژء کتہء یی یی نماز۔یزید سندء لشکرء ہنز نماز ائس جائز،تہنز نماز ائس مسلمانی نماز۔مگر امام حسین علیہ السلام سنز نماز ائس باطل ،سوء اوس دینء منزء خارج ۔

رسول رحمت (بوزو اہل سنت علمان ہندء زبان)کتھہ کئن اوس یژھان امت تس پرزء ناون کہ حسین چھوء کہوٹ ۔حسینی یوت تھاوءقرآن نک معیار زندء۔قرآن گژھنہ تحریف صرف حسین سندء وجودء ساتھی ۔امام حسین علیہ السلامس نسبت اوس نہ کورء ہند رشتہ کہین ۔حسین نن دیوت ثابت کرتھ کہ رسول رحمت تس کیازء اوس میون یوتاہ محبت ۔کیازء کہ میہ  انبیان ہنز زحمت دژ نہ میہ ضایعہ گژھنہ کہین۔کیازء کہ یتھی کن زن میرواعظ صئبن تہء اشارء کور، یہ کہنژھا تمام انبیان مصیبت پیش آیی تمی کنسی زنس رسول رحمت تس ۔یمی تمام امتیازات تمام انبیان آئی دنہ تمی آئی کنسی زنس رسول رحمت تس دنہ ۔مگر عملی طور امچ حفاظت کئم کئر؟

امام حسین علیہ السلامن ۔

لذا چھوء امام زمان ونہء تہء اتھ پیٹھ دوکھہ لد۔یہ چھوء ائچھو کن خون ہاران ۔امام حسین نس ونان :

" وَ لَاَبکَينَّ عَلَيکَ بَدَلَ الدُمُوعِ دَمَاً "

اگر میہ ژء ودان ودان (امام زمان فرماوان)میہ اوش خوشک گژھہ ء،بہء خون جگر ہارء۔اللہ اکبر۔

امام حسین علیہ السلام یمہ ساعتہ  میدان کربلاہ ہس منز وین تنہ تنہا رود ۔عزادارو!یمی چھئی ...یمہ ساعتہ امام حسین علیہ السلام تنہ تنہا ائستھ ....امام حسین علیہ السلام روکان چھوء ....انسان نس چھئي زیو کلان کہ کتھہ کئن کرء یمن نا مسلمانن ہئنز نامسلمانی بیان یمی زن پانس مسلمان چھئی ونان مگر رسول رحمت تس ساتھی کتھہ کئن چھئي پیش یوان ۔

مقتل لیکھان :

"وَ قَدْ ضَعُفَ عَنِ الْقِتَالِ"

امام حسین علیہ السلام یمہ ساعتہ تھوک جہاد کران کران ، مویاہ ہیژیون قرار ۔

" فبَینَما هُو واقِفٌ"

مویاہ ٹہریوو۔

" إذْ أتاهُ حَجَرٌ "

ائتھ دوران ، تمن اشقیان آو نہ تسلی تیرو تہء کانو ساتھی ۔وین یمہ ساعتہ امام روکیوو ،اکی شقی ین لائی کئن امام حسین علیہ السلامس۔

" فَوَقَعَ عَلى جَبهَتِهِ، فَسالَتِ الدِّماءُ مِن جَبهَتِهِ"

سوء آیہ امام حسین علیہ السلام سندس جبین نازنینس [خون گو جاری ]۔

"فَأَخَذَ الثَّوْبَ لِیَمْسَحَ الدَّمَ"

پنن پلو روٹکھ،تاکہ امہ پلوء ساتھی کرء ہا خون صاف ۔اللہ اکبر ۔

"فَأَخَذَ الثَّوبَ لِيَمسَحَ عَن جَبهَتِهِ، فَأَتاهُ سَهمٌ مُحَدَّدٌ مَسمومٌ، لَهُ ثَلاثُ شُعَبٍ"

ائتھ اثناء ہس منز آو زہرء بورت تیراہ " لَهُ ثَلاثُ شُعَبٍ "یتھی زن تروشاخ آئس،تروشاکل تیر آو۔

" فَوَقَعَ في قَلبِهِ... "

آو واویلا ! سوء تیر بیوٹھ امام حسین علیہ السلام سندس سینہ مبارک کس ۔فقال،امام حسین علیہ السلامن وون:

"بِسْمِ اللَّهِ وَ بِاللَّهِ وَ عَلَى مِلَّةِ رَسُولِ اللَّهِ۔الله اکبر "

عزادارو!چھوو نا یہوے جملہ بوزمت مولا امیرالمؤمنین سندء زبانی یمہ ساعتہ محراب بس منز فرق شکاف گو امامن کیاہ فرموو:

"بِسْمِ اللَّهِ وَ بِاللَّهِ وَ عَلَى مِلَّةِ رَسُولِ اللَّهِ "

خدای سندء ساتھی ، خدایہ سندء باپت بہء چھوس رسول رحمت سندس دین نس پیٹھ قائم۔

یتھی کئن علی مرتضی علیہ السلامن پنن پان چھپہء دیوت اسلام کہ بقا باپت ۔[تتھی کئن]امام حسین علیہ السلام دپان شکر کران :

"بِسْمِ اللَّهِ وَ بِاللَّهِ وَ عَلَى مِلَّةِ رَسُولِ اللَّهِ "

بہء چھوس رسول رحمت سندس دینس پیٹھ قائم ۔

اللہ اکبر ۔آہ واویلا!

زانان چھوی اکثر چھوء دنیاہس منز موت گژھان یمہ ساعتہ دلی چھوء بہوان ۔اکثرا چھوء ہارٹ اٹیک گژھان تمی چھئی تمہ ساتھی مران ۔مگر اما م حسین علیہ السلام چھوء سانس ایمانس منز ہوریر انان ۔

امام حسین علیہ السلامس چھوء سینس پیٹھ نیزء ، مسموم تیر ،یوس زن تروشاکل اوس۔امامس چھنہ ... گژھان ۔اللہ اکبر۔

عزادارو بہتر چھو زانان۔بہء چھوس تہند زخم تازء کران ۔امام حسین علیہ السلام چھنہ سینہ کن یہ تیر ہیکان نیبر کڈتھ کہین ،امام حسین چھوء واپس اندر ژانان ،کیازء چھوء اندر ژانان ؟ کیازء کہ سینہ کن چھنہ ممکن کہین یہ چھوء پشتء کن امام حسین علیہ السلام یہء تیر کڑان،امام یمہ ساعتہ یہ تیر چھوء کڑان ،پشت کئن،خونک ناگ چھئي جاری گژھان ۔(زیادء ہیکنہ مقتل پرتھ، کیازءکہ ایام عزاء چھئي ،یتھئي کن زن علماوو ونی امام حسین نس متعلق رسول رحمت سندن احادیثن کن اشارء کور ،بس سوی پرء مرثیہ کس حالت تس منزتہنز زحمت تمام)گوڈنچ مرثیہ یوس زن جناب زینب سلام اللہ علیہا ن یمہ ساعتہ خونس منز سراند دیتھ یہوی حسین ووچھن،روضے رسولس کن کرن روخ [ونن]:

" اَلسَّلاَمُ عَلَیْكِ یَا  رَسُول اللَّهِ ،صَلّی عَلَیکَ مَلیکُ السَّماءِ "

اے رسولخدا!آسمانک ملائک چھئي ژء پیٹھ سلام سوزان ۔دء کربلاہ کس قتل گاہ ہس کن نظر ،وئچھ:

" هَذَا حُسَينُکَ مرمّلٌ بِالدِّماءِ"کہ کیاہ چھی چیون حسین ۔"حُسَينُکَ یَا رَسُول الله"۔وزء وزء ووتوی ونان " حُسَيْنٌ مِنِّي وَأَنَا مِنْ حُسَيْنٍ "،"الحَسَنُ و الحُسَیْنُ سَیِّدَا شَبَابِ أَهْلِ الْجَنَّةِ"ہر زبانی ہر ادای ساتھی امتس وژھہ ء نایوتھ یہ کوس حسین چھوء ،وین کین نس وئچھک نا امی امت تن کیاہ کور وینہ کین نس چھوء یہ حسین " هَذَا حُسَينُکَ مرمّلٌ بِالدِّماءِ"یہوے چیون حسین چھوء خونس منز سراند دنہ آمت۔"مقطّعُ الأعضاءِ"امسند بدن چھوء آمت پارء پارء کرنہ ۔" مسلوبَ العمامةِ والرداءِ "یمسندس سرس چیون عمامہ اوس ، دوشن عبا ائس سوء چھئي آمژ پارء پارء کرنہ ۔........

أَلَا لَعْنَةُ اللَّهِ عَلَى الظَّالِمِينَ(هود/18)وَسَيعْلَمُ الَّذِينَ ظَلَمُوا أَي مُنْقَلَبٍ ينْقَلِبُونَ(الشعراء/227)

  امام حسین علیہ السلام قرآنک آئینہ-10 PDF فایل ڈاونلوڈ کرنہء خاطرء

·        امام حسین علیہ السلام قرآنک آینہ -01

·        امام حسین علیہ السلام قرآنک آینہ-02

·        امام حسین علیہ السلام قرآنک آینہ-03

·        امام حسین علیہ السلام قرآنک آینہ-04

·        امام حسین علیہ السلام قرآنک آینہ-05

·        امام حسین علیہ السلام قرآنک آینہ-06

·        امام حسین علیہ السلام قرآنک آینہ-07

·        امام حسین علیہ السلام قرآنک آینہ-08

·        امام حسین علیہ السلام قرآنک آینہ-09

·        امام حسین علیہ السلام قرآنک آینہ-10

 


آپ کی رائے
نام:  
ایمیل:
عبارت:  500

قدرت گرفته از سایت ساز سحر