»

مطالب ویژه

نیوز نور 25 اکتوبر 2013: برصغیر کے متعدد چھوٹے بڑے شہروں میں عید سعید غدیر انتہائی مذہبی جوش و خروش اور تزک و احتشام کے ساتھ منائی گئی۔ ان روح پرور اجتماعات میں شیعہ سنی عوام نے شرکت کر کے حضرت امیرالمومنین علی ان ابیطالب (ع) کے تئیں خراج تحسین پیش کرتے ہوئے امت مسلمہ کے اتحاد کیلئے دعائیں مانگی۔
نیوز نور01 نومبر 2013:ہندوستان زیر انتظام کشمیر کے وسطی ضلع بڈگام میں 24 ذی الحجہ کو شروع ہوئے 14 رووہ نورانی صحافت کارگاہ کے تیسرے دن علماء و دانشوروں نے مسلکی اختلافات پر چڑھائی گئی دھول کی صفائی کے غرض سے عملی اقدام کرتے ہوئے آج 26 ذی الحجہ روز شہادت خلیفہ دوم حضرت عمر رضی اللہ عنہ منانے کا اہتمام کیا۔
کشمیر میں جاری 14 روزہ نورانی صحافت ورکشاپ میں شرکاء کا بیان:
کشمیر میں 14روزہ نورانی صحافت کے چھٹے روز علماء و مفکرین کا اظہار خیال:
کشمیر میں منعقدہ میدان مباہلہ سے میدان کربلا کے تناظر میں 14 روزہ نورانی صحافت ورکشاپ کا اعلامیہ
اے کاش ایرانی مومن عوام کی طرح دیگر مسلمان بھی اسلام کی حاکمیت میں زندگی گذر بسر کرنے کا ارادہ کرتے ہوئے ولی فقیہ کے جھنڈے تلے جمع  ہو کر دنیا و آخرت کی سعادت کرنے کی پہل کرتے تاکہ دنیا بھر پر رسول رحمت صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم کی رحمت نمایاں ہو جاتی
  مجھے پتہ تھا کہ آنحضرت کے روضہ کی زیارت کرنے سے میں آنحضرت کا زائر کہلاوں گا لیکن کیاپتہ تھا کہ مجھے زائر کا لقب نہیں بلکہ وھابی دین کی برکت سے مشرک کا لقب ملے گا ۔میرا قلم روضہ آنحضرت کے داخلی حصے کی حالت کو منعکس کرنے سے قاصر ہے کہ  جہاں حرم مقدس میں کیا مدینہ منورہ کے گلی کوچوں میں صفائی کا قابل تحسین منظر دیکھنے کو ملتا ہے
ماہ مبارک رمضان کے آخری جمعہ  کو 1979 میں امام خمینی رضوان اللہ تعالی نے  یوم قدس کا نام دیکر مسئلہ فلسطین کو اجاگر کرنے کے لئے مخصوص کردیا جس سے فلسطینی عوام کی بھی ڈھارس بندھی اور مسئلہ فلسطین  کے بارے میں مسلمانوں کی آوازین بلند ہونے لگيں لیکن یہاں کشمیر میں  اسکا نام بدل دیا گیا ، اور یوم قدس کو یوم کشمیر کے نام پر  منانے پر زور دیا جانے لگا  ۔

اللہ نے مجھے 2009 میں  اپنے گھر پر حاضر ہونے کا شرف عطا کیا ۔ 12 نومبر 2009 یعنی جمعرات کی صبح ،کشمیر حج ہاوس سے میرا سفر محمود شروع ہوا اوراسطرح جمعرات کی رات کو جدہ پہنچ گئے ۔جدہ پہنچ کر احرام باندھنے کی نوبت آ پہنچی  اسلئے میقات کے انتخاب کا مرحلہ آتا ہے ۔ میقات اس جگہ کو کہتے ہیں جہاں پر احرام باندھا ہوتا ہے اور وہ پانچ جگہیں ہیں ۔ 1 مسجد شجرہ ، 2۔ وادی عقیق ، 3۔ جحفہ ، 4۔ یلملم ، 5۔ قرن المنازل ہیں ۔ان پانچ مقامات میں سے جحفہ میرا میقات تھا ۔ کیونکہ جحفہ شام ، مصراوریہاں سے گذرنے والوں کیلئے میقات ہے جو مسجد حرام سے شمال مغرب میں 187 کلومیٹر دوری پر واقع ہے ۔ یہاں سے جنوب مشرق میں 17 کلومیٹر کے فاصلہ پر شہر رابغ ہے ۔، جبکہ بحر احمر یہاں سے مشرق میں صرف 15کلومیٹر رہ جاتا ہے مکہ اور مدینہ کے درمیان سڑک ہے جس کو طریق ہجرہ (ہجرت روڈ) کہا جاتا ہے۔یہاں پر ایک نئ مسجد تعمیر کی گئ ہے جس کی پیمایش 30×30=900 مربع میٹر ہے ۔

جنت البقیع تاریخ اسلام کے جملہ مہم آثار میں سے ایک ہے ،  جسے وہابیوں نے 8شوال 1343 مطابق مئ 1925 کو شہید کرکے دوسرے کربلا کی داستان کو قلمبند کرکے اپنے یزیدی افکار اور عقیدے کا برملا اظہار کیا ہے ۔

1 2 3 4 5 6 7 8 
این سایت متعلق است به 
قدرت گرفته از سایت ساز سحر