»
سه شنبه 2 آبان 1396

رسول خدا  حضرت محمد بن عبداللہ صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم نےحجاز اور یمن کے درمیاں نجران نامی علاقےمیں مقیم عیسائیوں کو24 ذیحجہ 9 ہجری قمری کواللہ کی وحدانیت قبول کرنے کی دعوت دی جسے مباہلہ کہتے ہیں۔اور اس دن توحیدی عقیدے کا مشرکانہ عقیدے کا آمنا سامنا ہونا تھا ایکدوسرے کے عقیدے کے بارے میں خدا سے غضب کی دعا کرنی تھی اور توحیدی قافلے کو دیکھ کرہی مشرکوں نےدبے الفاظوں میں اپنی شکست کا اعلان کیا ، اسطرح عقائد کا علمی اور عملی مناظرہ ہوا جس پر علم وعمل کا لا علمی وبی عملی پر غلبہ ہوا جسے اہل بصیرت عید مناتے ہیں ۔کیونکہ اس کامیابی پر اللہ نے ایک آیت نازل فرمائی ہے۔

پہلی اسلامی یونیورسٹی کے بانی کساتویں معصوم اور پانچویں امام ھدی حضرت امام محمد باقرعلیہ السلام کی ولادت آپ سب کو مبارک ہو.

ولادت جگر گوشہ رسول خدا صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم ، حضرت فاطمۃ الزھراء سلام اللہ علیہا 20 جمید الثانی مبارک ہو۔

السلام علیک یا رسول اللہ و رحمۃ اللہ وبرکاتہ

رھبر معظم انقلاب اسلامی ولی امرمسلمین حضرت آیت اللہ العظمی حاج سید علی حسینی خامنہ ای دامت برکاتہ نے 1994 میں عزادارای خاص کر حضرت  اباعبداللہ الحسین علیہ السلام کی عزاداری کے حوالے سے مطلوب ضوابط  از جملہ قمہ زنی ۔ خرافات سے پرہیز ، غیر معتبر اور  غیرقابل استنباط وقایع کا بیان سے پرہیز اور اس سلسلے میں علماء اور مبلغین کی زمہ داری کی نشاندہی کرتے ہوئے علماء و مبلغین حضرات سے ان اصول و ضوابط کو ترویج کرنے کی تاکید  فرمائی تھی جسے سمجھنے  اور نافذ کرنے  میں صرف  ولایتمدار علماء اور عوام سرخ رو ہوئے اور باقی عوام اور خواص نے اس موضوع پر سوالیہ نشان کھڑا کئے اور عزاداروں کے بیچ انتشار پیدا کرنے کے ساتھ ساتھ اپنے آپ کو اس موضوع سے برتر   ظاہر کیا  ہے اور ایسا دنیا بھر میں ہوا ہےصرف کشمیر سے مخصوص نہیں ہے لیکن دنیا بھر میں ولایتمدار لوگوں  میں صرف لبنان کے حذب اللہ  والوں نے رھبر معظم کے فرمان کو اسی سال نافذ العمل کرکے یہاں پر بھی عظیم درجہ اپنے لئے مخصوص کردیا اور باقی ہم سب {مذبذبين بين ذلک لا الى هؤلاء و لا الى هؤلاء و من يضلل الله فلن تجد له سبيلا}(انساء 143)کی حالت میں نظر آتے ہیں  ۔ رھبر معظم انقلاب اس موضوع کے سلسلے میں مخالفت کرنے والے خواص اور عوام کی کج فہمی کو باریک بینی سے مشاہدہ کررہے ہیں اور ہر سال محرم الحرام کے آنے سے پہلے عزاداری کے حوالے بیان شدہ  اصول و ضوابط کو سختی کے ساتھ رعایت کرنے  کی تاکید کرتے ہیں ۔ اس سال بھی محرم کے استقبال میں  علماء اورمبلغین  کےعظیم مجموعے میں ایک بار پھر  تاکید فرما‏ئی ہے ۔مجمع جہانی اہل البیت کی ویب سایٹ ابنا www.abna.ir نے اس حوالے  سے «نظر برخی از علما  دربارہ مسائل وھن عزاداری و قمہ زنی «(عزاداری کی اہانت اور قمہ زنی کے مسائل کے بارس میں علما کی رائے) خبر شایع کی ہے میں نے مومنین کی اطلاع کے لئے اس کا من و عن ترجمہ کیا ہے تاکہ قارئین خود انصاف دیں کس کا استدلال عزاداری کے حوالے سے صحیح ہے ۔

ایک رات میں تریاسی سال کی عبادت کرنے کا نایاب موقعہ ؛ شب قدر

بعثت کے دسویں سال میں، حضرت ختیجہ کبری سلام اللہ علیہا نے وفات پائي ۔

دس رمضان المبارک کو امام حسین علیہ السلام نے کوفیوں کا پہلا دعوت نامہ موصول کیا

آٹھویں امام حضرت امام رضا علیہ السلام اپنے والد گرامی حضرت امام موسی کاظم علیہ السلام کی بغداد کے زندان میں  شھادت کے بعد سن 183 ھ ق میں امامت پر فائض ہوۓ ۔

1 2 3 4 
قدرت گرفته از سایت ساز سحر