»
یکشنبه 30 مهر 1396

2

 
امام حسین علیہ السلام قرآنک آینہ-02

عبدالحسین سنز ژوریمء محرم 1435 مطابق 7نومبر 2013 امام بارہ نارسپور بڈگامہ پرمژ مجلس

 

اَعُوذُ بِاللّهِ منَ الشّيطانِ الرَّجيم

بِسْمِ اللَّهِ الرَّحْمَنِ الرَّحِيمِ؛نحمده و نستعینه و نؤمن به و نتوکّل علیه و نستغفره و نصلّی و نسلّم علی حبیبه و نجیبه و خیرته فی خلقه حافظ سرہ و مبلغ رسالته سیّدنا و نبیّنا و طبیب نفوسنا و حبیب قلوبنا  ابی‌القاسم المصطفی محمّد(صلی اللہ علیه و آله  وسلم)[ اللَّهُمَّ صَلِّ عَلَى مُحَمَّدٍ وآلِ مُحَمَّدٍ وعَجِّلْ فَرَجَهُم] و علی آله الأطیبین الأطهرین المنتجبین المعصومین سیّما بقیّةاللَّه فی الارضین۔اما بعد؛قال اللہ سبحانہ و تعالی فی محکمہ کتابہ :

 بِسْمِ اللَّهِ الرَّحْمَنِ الرَّحِيمِ يا أَيهَا النَّاسُ قَدْ جَاءَتْكُمْ مَوْعِظَةٌ مِنْ رَبِّكُمْ وَشِفَاءٌ لِمَا فِي الصُّدُورِ وَهُدًى وَرَحْمَةٌ لِلْمُؤْمِنِينَ(يونس/57) صدق اللہ العلی العظیم۔

اللَّهُمَّ صَلِّ عَلَى مُحَمَّدٍ وآلِ مُحَمَّدٍ وعَجِّلْ فَرَجَهُم

یوس زن موضوع میہ انتخاب چھوء کورمت "حسین قرآنک آینہ"سورہ یونس آیہ ستونزہس منز پروردگار عالم سند یہ ارشاد کہ:<يا أَيهَا النَّاسُ>لوکو!< قَدْ جَاءَتْكُمْ مَوْعِظَةٌ مِنْ رَبِّكُمْ >لوکو! یہ قرآن آو توہیہ کن موعظہ،یہ ہوے[ارشاد]تہ امام حسین علیہ السلام تہ روز عاشورا ونان کہ میانی کامی چھئی موعظہ کرن،قرآن دپان، خدا دپان کہ قرآن چھوء موعظہ،حسین دپان بہء چھوس موعظہ ،"أَيهَا النَّاسُ "امام حسین علیہ السلام فرماوان ":"أَيُّهَا النَّاسُ اِسْمَعُوا قَوْلِي وَ لَا تَعْجَلُوا حَتَّى أَعِظَكُمْ بِمَا يَحِقُّ لَكُمْ عَلَيَّ "۔لوکو! میانی کتھ بوزیو،میہ مارنس منز مہ کریو جلدی کینہ،" حَتَّى أَعِظَكُمْ بِمَا يَحِقُّ لَكُمْ عَلَيَّ "امیہ برونہ کہ بہ  کرو توہیہ موعظہ یوس زن میانی ذمہ داری چھئی ۔

یہ کورم اشارہ کہ میہ کتھ تناظرس منز چھئی کتھ کرن،کہ امام حسین علیہ السلام ہیکون تلہ پرزء ناوتھ ، یلہ امام حسین علیہ السلام اسہ قرآنس منز لبنہ ییہ۔یوس قرآن اہل بیتن ہنز نشاندہی کران تمی اہل بیت چھئی قرآنک تفسیر بیان کران،تمی چھئي معصومین فرماوان کہ اگر زن سانی کتھ قرآن کس صریح حکمس خلاف آسہ "فَاضرِبُوه عَلی الجِدَار"سوء گو لبہء ٹھکن، سوء چھنہ سانی کتھ کینہ ۔وین یمی زن اہل بیتن ہندء پیروی ہند دعوادار چھئي ،تہنز پہچان تہ گژھہ آسن قرآن۔کیا تہ چھا؟ یہ چھوء سوال۔

اسہ چھوء رسول رحمت صلی اللہ علیہ وآلہ وسلمس پیٹھ ایمان اونمت کیازہ تمی سون دنیا سوارن ، سون آخرت سوارن،یہ ہیوت رسول رحمتن مٹہ ،اسہء ہاون نجاتچ وتھ، اسہ پرزء ناون خدا ، سونی ارتقا، ہیچھناون ائس کتھہ کئن ہیکو تھود تہ بلند پرواز کرتھ۔ہمیشہ زندہ روزنوک سِر کورن بیان اسہ ، جنت جہنم تمچ شناخت دژن ،رسول رحمت صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم سندء ذریعہ پرزء نوی اسہ خدای تہء یہ کینژاہ خداین خلق چھئی کرمت تمچ نشاندہی کئر رسول رحمت صلی اللہ علیہ وآلہ وسلمن،امہ ساتھی چھوء تران فکرء کہ رسول رحمت صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم سند مقام چھوء انتہائی بلند تہ تتھ منز چھوء اسہ مرحلہ وار وژھہ ناون والی ،خدایی نی پانس پتہ وصی تھائی مت رسول رحمت سند،یمی زن زمانہ مطابق رسول رحمت سنز کتھ وژھہ ناون۔

رسول رحمت صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم سنز کتھ وژھہ ناون والی تہ گژھہ تتھوی آسن یوس زن آنحضورس ویژھناوء ، بیان کرءاسہء،کیازہ خدا سند رسول صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم چھوء یوتاہ  عظیم کہ امی پرزء ناو نائي ائس خدا،پانہ ووت خدایہ سندس مقامس پیٹھ تیوتاہ تیوتاہ عظیم درجہ گوس حاصل <فَتَدَلَّى>(النجم/8) <فَكَانَ قَابَ قَوْسَينِ أَوْ أَدْنَى>(النجم/9) یوتاہ قرب کرن بارگاہ الہی منز < فَتَدَلَّى>[نزدیک سے نزدیک تر سپد]اکھ کمان روز خدایس تہ رسول رحمتس <أَوْ أَدْنَى>امہ کمان کھوتہ تہء کم۔یتھئی ائس ونان چھئی "بعد از خدابزرگ تویی قصه مختصر"اہل بیت اطہار چھئي اسہ امسی رسول رحمت سندس دینس ساتھی نزدیک کران یعنی "موحد" بناوان۔لذا یوس پنہ نس پانس منسوب چھوء کران اہل بیتن امس تہء گژھہ آسن پلو لاگت قرآن کی۔یتہ گژھہ یون پرزء ناونہء قرآنی صفتو ساتھی۔

سورہ اسراء آیت 82 تس منز پروردگار عالم فرماوان:< وَنُنَزِّلُ مِنَ الْقُرْآنِ مَا هُوَ شِفَاءٌ وَرَحْمَةٌ لِلْمُؤْمِنِينَ>(الإسراء/82)یہ قرآن کور میہ شفا  مؤمنین خاطرء،بیہ رحمت ۔ اہل بیت تہ چھئ شفا ء تہ رحمت سانہ خاطرء بالخصوص  امام حسین علیہ السلام، کہ یمنسدء حتی کربلاہچہ مژء ساتھ چھئی ائس پنین دادین ہند شفا  تتھ منز ژھانڈان۔

سورہ ص آيت 29 ہس منز پروردگار عالم فرماوان:<كِتَابٌ أَنْزَلْنَاهُ إِلَيكَ مُبَارَكٌ لِيدَّبَّرُوا آياتِهِ>(ص/29) یہ قرآن چھوء مبارک کتاب یوس زن نازل کئرم،امیہ کین آیاتن سنیو۔غور و فکر کریو۔

اگر ائس یہ قبول چھئی کران کہ امام حسین علیہ السلام چھوءاسہ وتھ ہاوک،سوء آفتاب یوس زن اسہ تاریک ترین ذرس پیٹھ چھوء پنن نور افشانی کران ،تمس ساتھی چھئی منسوب سانہء مجلس،اسلئے یہ مجلس گژھہ آسن[تژھی]،اسہ گژھہ انہ گٹہ ژلن۔اگر انہ گٹہ تتھی روزی ،اسہء چھنہ حسین سنز ذکر کئرمژ کینہ ۔اگر نہ ائس کنہ نتیجس پیٹھ واتی ،اسہ چھنہ حسین سنز ذکر کئرمژ کینہ ۔کیازء قرآن دپان: <لِيدَّبَّرُوا آياتِهِ >امہ باپت کور میہ نازل کہ توہی کریو سونچ ، غور و فکر کریو۔ امام حسین علیہ السلام تہء چھوء اسہ یہوی دعوت دوان ۔ وین یمہ ساعتہ ائس سمو،امام محمد باقر علیہ السلام فرماوان:"اجْتَمِعُوا وَ تَذَاکَرُوا تَحُفَّ بِکُمُ الْمَلَائِکَةُ رَحِمَ اللَّهُ مَنْ أَحْیَا أَمْرَنَا"۔سمیو!یمہ ساعتہ مؤمنین سمان چھئی ،پتہ تتھ منز کتھ چھئی کران "تَذَاکَرُوا"تذکرہ چھئی کران،"تَحُفَّ بِکُمُ الْمَلَائِکَةُ"تمن منز چھئی ملائک شامل گژھان۔یعنی مؤمنن ہئنز سمنچ جای گژھہ آسن ملائکن ہندء نازل گژھنچ جای۔پنین مرثیہ خوانن وچھو، پنس نوحہ خوانس وچھو،پننہ نس دائرس وچھو، پننہ نس جلوسس وچھو،اتھ منز چھا یہ صفت،یوس زن امیوک مصداق بنہ ،امام باقر علیہ السلام یمچی نشاندہی کران۔"رَحِمَ اللَّهُ مَنْ أَحْیَا أَمْرَنَا"خدا کرین رحمت تمس پیٹھ یوس زن سانی سیرت زندہ تھاوء۔گو، سانی یہ مجلس گژھہ آسن اہل بیتن  ہئنز سیرت زندہ گژھہ نچ۔ اسہ منز گژھہ کانہ نتہ کانہ صفت ، نیک صفت ، قرآنی صفت ،اسلامی صفت اضافہ گژھن۔اگر تمیوک فقدان چھوء روزان <لِيدَّبَّرُوا آياتِهِ >اسہ چھوء غور و فکر کرن یمن نشانین ہئنز۔آیا ائس چھا امیوک یہ حق چھا ادا کران کنہ نہ؟

یمہ ساعتہ پروردگار عالمن ہر چیزک معیار قرار دیوت، کیازہ؟۔<خَلَقَ لَكُمْ>،<سَخَّرَ لَكُمُ>،<مَتَاعًا لَكُمْ>یہء چیانہ خاطرء، یہ چیانہ خاطرء،یہ چیانہ خاطرء ۔ ژء ؟ پننہ خاطرء !<لِيعْبُدُوا>میانی کرکھ عبادت۔

امام حسین علیہ السلام سندس ودءنس منزکیاہ چھئی  تلہءائس یژھان کرن؟امام حسین علیہ السلام سنز عزاداری برپا کرتھ،کیاہ چھئی ائس یژھان سمجھن یا کیا ہ چھئی ائس یژھان سمجھاون؟

یوس صاحب عزا چھوء امام زمان عجل اللہ تعالی فرجہ الشریف، تمس متعلق کئژاہ چھئي سانی معلومات بڑان  تہء میہ چھا تران فکرء کہ بہء اوسس اولس تہء بہء کھوتس وین دویمہ۔بہ چھوس دویمہ بہء کھوتس از تریمہ۔بہ چھوس تریمہ بہء کھوتس از ژورمہ۔یہ تہء چھنہ احساس کرن کہین بہ ء ژاس مجلسء منز  تہ  امی دوہ  گژھہ  میہ سرٹفکیٹ میلن ، جنتچ تہ ء پی ایچ ڈی آسہ میہ کورمت اتھ منز۔نہ!مرحلہ وار گژھو ائس [یہ طے کرن]۔ اکائي کتھ تہء اگر اسہء آسہء[فکرء تئرمژ]پننہ زندگی منز ہیکو امام حسین علیہ السلام سندء برکتہ امام زمانس ساتھی وعدءکرتھ کہ اگر زن بہء مودُسے مگر میہ گژھی خدا صئب قبرء منزء تلن بہء گژھء ژء ساتھی آسن۔کیازہ گژھہ آسن؟یہ کیازء گوژھس بہء امام زمانس ساتھی آسن یہ گوژھ میہ فکرء ترن۔ امام زمانس چھئ کیاہ ضرورت کیاہ چھوء کرن یہ گوژھ میہ فکرء ترن۔

یمی یمن تھدین کلاسن چھئی کھتمت یمو زن [امہ مکتب کین]کالجن منزنمت چھوء ایڈمشن تہ بعضی چھئی امہ تہ برونہ پکمت تمی چھئي یونیورسٹی منز تہ ژامت ،تمن چھوء ولی فقیہ تورمت فکرء،تمی گئی ایرانی تہء لبنانی۔ائس چھئي ونہء پرایمری سکولس منز،اسہء چھوء ونہ تہء شکی کہ ولی فقیہ کیاہ گو! بلکہ تمی کتھہ یمی زن دشمنس گئژھ ائس یورء کرن سوء چھئی ائس پانہ وانی کران۔ ولی فقیہ گو ایرانی[ایرانین] اسہ کیاہ ۔یپاری چھوس بہء امام زمان ونان ہو پاری تھوی میہ طاقچس پیٹھ یہ چھوء ایرانک، امس گژھہ پارلمنٹ تتی آسن، تتہ بنیا غئر ایرانی ...یعنی قومی تعصب ۔گو میہ چھنہ یہ تورمت فکرء امامت چھئی کیاہ۔وجہ چھوء یی کہ میہ چھوء ہیکان کانسہ ہند تہ کتھ میہ پیٹھ اثر کرتھ۔یا یوس کتھ بہء بار بار وننہ نچ کوشش چھوس کران کہ امامت منزء تور یی فکرء کہ امام :ائس چھئی تسبیح تہ ونان یوس یتھ سارنی پھلن چھوء دوان واٹھ تمس چھئی امام ونان۔امامت گو واٹھ دیون، اکھ تسبیح بناون۔ کانسہ ہند وجود چھنہ انکار کینہ ،ہر پھئلس چھوء پنن پنن معنی،پنن حیثیت۔کینہ چھئی میہ ونان ہئے اگر ژء شیعہ سنی یچی کتھ چھوکھ کران گوڑء گژھہ پانہ وانی فرقہ بازی ختم گژھن۔بہ چھوس ونان نہ نہ فرقہ گژھنہ نہ ختم گژھن ۔یمی پاٹ بازی گژھن روزئن۔مگر یوس نہ روزئن گژھہ سوء گو کدورت!سوء گو حسد!نفرت پانہ وانی دلن ہنز،سوء گژھنہ روزنی،پاٹ روز ن، ہر کانسہ پننہ نس پننہ نس عالمس ساتھی،پرتھ کانسہ پنن پنن عالم پسند،یہ چھنہ [غلط کینہ]۔ یتھئی کئن یمہ تسبیح  ہند ہر دانہ چھنہ بیہ دانک منکر کینہ ، امس چھوء پنن وجود، یہ[ولی فقیہ] گژھہ اسہ رلاون۔گو ائس چھئی پیرو مکتب ولایت ۔

مگر بد قسمتی چھئی کہ اتھ ولایتس پیٹھ چھنہ ائس اتفاق کران کینہ ۔امام حسین علیہ السلام سند آلو گو،اتین گوژھ نہ پاٹ آسن کینہ ،اتین گوژھ نہ عالم ملاک آسن کینہ بلکہ اتین گوژھ امام ملاک آسن، کہ اگر نہ بہء کنہ جایہ پیٹھہ پانہ وانی صلح کرنہ خاطرء بہء تیار چھوس مگر امام حسین علیہ السلام سنزء مرثی خاطرء چھوس بہء صلح کرنہ خاطرء تیار۔یتین امام حسین علیہ السلام سنز ذکر آسہ تتین چھی نہ میہ کنہ قسمک[پاٹ داری کینہ ]۔ ہر چیزس پیٹھ کرء بہء لڑائي ، مگر نہ امام حسینس پیٹھ ، اہل بیتن ہندس ناوس پیٹھ گژھو ائس جمع گژھن نہ کہ الگ گژھن ۔ مگر بد قسمتی چھئی  کہ جمع چھنہ گژھان۔یہ چھوء یی کہ ائس چھئ امام حسین علیہ السلام پننہ مزاجک ژھانڈان ۔یوس حسین میہ ویہء،اگر میہ  صبحای نماز صبحس تھود تلنس اکہ لٹہ کرس بہء احترام ،ہسا  وین کورمے لحاظ،اگر دویمہ دوہ تہ میہ نندرء یہ خلل کرء بہ دپس ہو یارا ژء پانس بہء پانس۔میہ گژھنہ ژیل یون کہین ۔اگر ژیل آو تلہء ژء پانس بہء پانس۔کہوٹ مہ لگاو میہ کنیہ ۔کورکھ میہ خوش چھوکھ میون امام ،کورکھ نہ میہ خوش میون امام چھوکھنہ کینہ ۔

یمس نہ امامتس متعلق پننہ نس پانس کہوٹ تگہ لگاون (یہ چھوس نہ بہء توہیہ ونان بہء چھوس پانس ونان)مگر اکھ تذکر چھوء ضرورت ۔قرآنی چھوء ونان:<وَذَكِّرْ فَإِنَّ الذِّكْرَى تَنْفَعُ الْمُؤْمِنِينَ>(الذاريات/55)بہء چھوس نہ کانہ نوی کتھ ونان کینہ،مگر یہ زن قرآنن چھوء وونمت پانہ وانی آئس زیو تذکر دوان ،امہ یاد دہانی ساتھی امہ رماینڈر ساتھی چھوء پانسی فائدء۔

بہء چھوس کنہ ساعتہ مثلا گھرس منز ونان،حدیث چھوء یتھی کئن پتہ چھوس پانے تتھ برعکس کران ،دپان چھئم ژء ہے اوسکھ پانے ونان اتھ چھوء حدیث یتھی کئن۔گو وننہ ساتھی چھوء عمل تلہ کران یلہ یاد چھوء پاوان بیاکھ ۔

اگر بہء یورء حدیث ونہ ژء چھئی حق بنان پتہ [میہ کہوٹ لاگئن کہ]اسہ وونتھ سارنی مگر ژء نے پانہ اتھ پیٹھ عمل کران کہین ۔گو امہ یاد دہانی ساتھی پیو میہ یادکہ میہ اوس نہ یہ ونہ نوی یوت کہین میہ ائس اتھ پیٹھ عمل تہ کرن<وَذَكِّرْ فَإِنَّ الذِّكْرَى تَنْفَعُ الْمُؤْمِنِينَ>(الذاريات/55)۔

اسہ چھئی پانہ وانی یاد دہانی ضروری دین ،تاکہ ائس ہیکو امام حسین علیہ السلام سندین تمن دوستن یمن یہ امامت فکرء تئر،امامت آئسکھ یی پئی کہ یمی بناون اسہ خدائی، یہ کینہ ژھا خداین  یہ<خَلَقَ لَكُمْ>،<سَخَّرَ لَكُمُ>،<مَتَاعًا لَكُمْ>یہء<لَكُمْ>،<لَكُمْ> چیانہ خاطرء، چیانہ خاطرء، چیانہ خاطرء،ژء بنووکھ میہ پننہ خاطرء۔یہ پننہ خاطرء یہ خدائی گژھی ائس بنن ، یہ بناوء اسہ امام۔

اگر امامس اتھہ اختیارات آسن ،اسہ کیاہ  نہ کیاہ گژھہ حاصل ،سانہ زمین تہ آسمانک ارتباط گژھہ قائم۔اسہء سوء <الصِّرَاطَ الْمُسْتَقِيمَ>(الفاتحة/6) گژھہ یقینا حاصل۔امہ باپت چھوء یہ امام زندہ گوژھ روزن، یئتھی ژہس زندہ روزء اتھ چھئي تیژاہ برکت۔کیازہ کہ  امسندء وجود ءساتھی نہ چھو صرف میے یوت فائدء بلکہ تمام موجوداتن۔امام حسین علیہ السلامس چھئی یتھی لوکھ ہیکان یاری کرتھ۔یمو امام حسین علیہ السلام [پنن امام]انتحاب کورتمی چھئی یمہ ساعتہ یمہ دایرہ منزہ امام حسین علیہ السلام سنز قرآنی کریکھ چھئی تمن کنن گژھان تہند دل چھوء منقلب گژھان۔

امام حسین علیہ السلام پننہ نس ہر خطبس منز، پرتھ آلوس منز چھوء یوس زن تتین دعوت چھوء دوان یقینا سوء چھوء سانہ خاطرء تہ دعوت۔

راوی دپان؛یمہ ساعتہ امام حسینس پیٹھ کافیہ حیات آو تنگ کرنہ ،سوء محاصرہ آرائی گئي،اتھ حالس منز دیوت امام حسینن فریاد:"أَما مِنْ مُغیثٍ یُغیثُنا"رسول خدای سند وصی رنجنووکھ اسلام کس ناوس پیٹھ ،وچھیوی امام حسین علیہ السلام واتنووکھ یمی نالہ ژھٹہ نس پیٹھ،"أَما مِنْ مُغیثٍ یُغیثُنا لِوَجْهِ اللَّهِ"کانہ اکھا چھوناہ یوس خدایہ سندء باپت اسہ یاری کرء ہا"لِوَجْهِ اللَّهِ"اسلامس منز رسول،رسول رحمت ، یتھی قرآنس کیاہ کورکھ،یوس زن خداین دوپ میہ سوز توہیہ رحمت بناوتھ،اتھ منز بنووکھ ناطق قرآن چھوء اتھ منزلس پیٹھ وات نوومت یہ چھوء دپان خدای سندء باپت کریو نا مدد رسول خدا ی سندس کریو نا رائچھ"أَما مِنْ ذابٍّ یَذُبُّ عَنْ حَرَمِ رَسُولِ اللَّهِ "آیا کانہ مسلماناہ چھو نا یوس حرم رسول اللہ اہل بیتن ہندین  حرمن نشہ کرء یمن دشمنن دور۔

ائس چھا ودان امام حسین  کیازہ کوروکھ شہید ؟

ائس چھئی یمن نالن ودان کہ رسول رحمت سندس گھرس پیٹھ کیازہ آئس یژاہ انتقامی کاروائی ۔رسول رحمت سند ناو مٹاونک کیازء اوس یوتاہ سنز کران مسلمان۔اگر زن زیہ"لا إِلَهَ إِلاَّ اللهُ" اوس ونان ،مگر عملا کیاہ اوس کران کہ حسین ہیوہ یمس رسول رحمت ونان بہء چھوس امہ سندء ساتھی یہ چھوء میانہ ساتھی ، رسالت چھئی دپان بہ چھوس امسندء ساتھی ، یہوی رسالت چھئي فریاد دوان : " أَما مِنْ مُغیثٍ یُغیثُنا لِوَجْهِ اللَّهِ"خدایہ سندء پاسہ چھنا ہ کانہ ،خدای سندء خاطرء چھناہ کانہ اسہ کرء ہا یاری ۔اہلبیت رسول اللہ ہن کرہ ہا یاری ۔

حرن یمہ ساعتہ یہ حال ووچھ کہ یہ دوہ ووتاہ کہ امام حسین علیہ السلام دیاونوکھ یمی ژھرٹھ،کہ امام حسین علیہ السلام چھوء ونان  چھا کانہ  یوس میہ یاری کرء۔اللہ اکبر۔

"حُرّ بْن یَزید ریاحی"چھوء "عُمر ابن سَعد"س ونان ؛ژء کرء ہنہ یہ ء مظلوم پزی قتل؟امس مظلومس ساتھی کرء کھا پزی جنگ؟

عمرسعد چھوء دپان؛جنگچ ساروی کھوتہ سہل یوس تدبیر  چھئی میہ  سونچمژ سوء گو یہ کہ یمن سارنی ہند سر کرء تنہ نشہ جدا۔یہند ساری بند بند استخوان ، نرء زنگہ تھاوکھ قطراوتھ۔اللہ اکبر۔

"حُرّ بْن یَزید ریاحی"چھوء ہوشارء گژھان کہ بہء چھوس یورء ونان اسلام !،ہورء چھوء رسول رحمت سند نواسہ ونان اسلام ! وین کمہ اسلامک چھوس بہء ترجمان؟

گُرء پیٹھہ چھوء بون وسان یہ چھوء خئمہ کس اکس اندس کن گژھان یہ چھوء قدم دوان اورء یورء چھوء پکان۔یہ عزاداری واتناوویو ہر جایہ۔ "حر"اوسوی سنی(از کین اصطلاحن منز)حرس تان یلہ کتھ واژی حسین سنز ،حر پھیور۔

حرس چھئی سوال کران ،دوست چھوس دپان ژء کیازہ چھوکھ امہ حالہء،میہ اگر کانہ کوفس منز کانہ ونہ ہا کوس چھوء ساروی کھوتہ جرتمند پہلواناہ چیانہ بغیر یی ہا نہ میانہ زیوء پیٹھ کانسہ ہند ناو ، یہ کیاہ حالت چھئي ژء؟

 دوپنس بہ ہا چھوس پنن پان جنتس تہ جہنمس درمیان لبان ۔رسول رحمت سند نواسہ چھوء یتھہ کئن استغاثہ کران میہ کرء نا کانہ یاری ۔

نیران چھوء،یوان چھوء امام حسین علیہ السلام سندس خدمتس منز۔عرض کران شرمندگی سان ؛ فدا سپدو میون توبہ چھا قبول؟ میہ رنجہ ناوی اہل بیت رسول۔

توہی وچھیو سبق کیاہ چھوء۔امام حسین علیہ السلام چھونہ امس گراو کران ، ژے  یے یہ مصیبت میہ پیش اونتھ،ژے یے میہ وتھ بند کرتھ ، ژے یے میہ آب بند کورتھ،وین کمہ چیانٹہ چھوکھ میہ معافی منگان۔

معافی منج[تمی]

[امام حسین علیہ السلامن]دوپنس خدا کرء نے توبہ قبول۔امام گو یہوے۔ یہ صرف انسانس الہی وتھ ہاوان۔لذا امیہ حسین حسین کرنہ ساتھی چھئی دوگنہ ذمہ داری بنان۔ اکھ چھوء اسہ پانہ  حسینی حقیقی بنن بیہ چھوء یوس نہ حسینی چھوء سوء تہ چھوء حسینی بناون۔

مگر یہوی امام حسین علیہ السلام یمہ ساعتہ بے یار و یاور، بے کس،یمس سعادت مئجی تمی کئرس یاری ۔اللہ اکبر۔  امام حسین علیہ السلام یمہ ساعتہ  از زین بر زمین پیو،مقتل لیکھان ہٹہ کین آس نہ ذبح کرنہ بلہ نحر کرتھ آس سر جدا کرنہ ۔ <أَنْ لَعْنَةُ اللَّهِ عَلَى الظَّالِمِينَ>(الأعراف/44)

امام حسین علیہ السلام قرآنک آئينہ -01 PDFفایل ڈاونلوڈ کرنہ باپت


·        امام حسین علیہ السلام قرآنک آینہ -01

·        امام حسین علیہ السلام قرآنک آینہ-02

·        امام حسین علیہ السلام قرآنک آینہ-03

·        امام حسین علیہ السلام قرآنک آینہ-04

·        امام حسین علیہ السلام قرآنک آینہ-05

·        امام حسین علیہ السلام قرآنک آینہ-06

·        امام حسین علیہ السلام قرآنک آینہ-07

·        امام حسین علیہ السلام قرآنک آینہ-08

·        امام حسین علیہ السلام قرآنک آینہ-09

·        امام حسین علیہ السلام قرآنک آینہ-10

 


آپ کی رائے
نام:  
ایمیل:
عبارت:  500
قدرت گرفته از سایت ساز سحر