»
چهارشنبه 22 آذر 1396

3

 
امام حسین علیہ السلام قرآنک آینہ-03

عبدالحسین سنز ژوریمء محرم 1435 مطابق 7نومبر 2013 امام بارہ  گلشن باغ سرينگرء پرمژ مجلس

 

اَعُوذُ بِاللّهِ منَ الشّيطانِ الرَّجيم

بِسْمِ اللَّهِ الرَّحْمَنِ الرَّحِيمِ؛نحمده و نستعینه و نؤمن به و نتوکّل علیه و نستغفره و نصلّی و نسلّم علی حبیبه و نجیبه و خیرته فی خلقه حافظ سرہ و مبلغ رسالته سیّدنا و نبیّنا و طبیب نفوسنا و حبیب قلوبنا  ابی‌القاسم المصطفی محمّد(صلی اللہ علیه و آله  وسلم)[ اللَّهُمَّ صَلِّ عَلَى مُحَمَّدٍ وآلِ مُحَمَّدٍ وعَجِّلْ فَرَجَهُم] و علی آله الأطیبین الأطهرین المنتجبین المعصومین سیّما بقیّةاللَّه فی الارضین۔ و صلی علی ائمہ المسلمین حماۃ المستضعفین و ھداۃ المومنین علی امیرالمومنین علیہ آلاف تحیۃ والثناء۔

اما بعد؛قال اللہ سبحانہ و تعالی فی محکمہ کتابہ :

 بِسْمِ اللَّهِ الرَّحْمَنِ الرَّحِيمِ يا أَيهَا النَّاسُ قَدْ جَاءَتْكُمْ مَوْعِظَةٌ مِنْ رَبِّكُمْ وَشِفَاءٌ لِمَا فِي الصُّدُورِ وَهُدًى وَرَحْمَةٌ لِلْمُؤْمِنِينَ(يونس/57) صدق اللہ العلی العظیم۔

موضوع سخن ؛قرآنک آئينہ امام حسین۔یہ قرآن چھوء ونان تی چھوء امام حسین علیہ السلام وژھہ ناوان،یہ امام حسین علیہ السلام چھوء ویژھہ ناوان تی چھوء قرآن ونان۔ سورہ یونس آیت 57 ہس منز ارشاد ربانی ، لوکو! <يا أَيهَا النَّاسُ قَدْ جَاءَتْكُمْ مَوْعِظَةٌ مِنْ رَبِّكُمْ >یہ قرآن آو توہیہ کن موعظہ ہیت،<وَشِفَاءٌ لِمَا فِي الصُّدُورِ وَهُدًى وَرَحْمَةٌ لِلْمُؤْمِنِينَ>تہ بیہ شفاء تہندین دلن ہند،یہ توہیہ دلس منز چھوء،توہندء خاطرء ہدایت،رحمت مؤمنین نن خاطرء۔

امام حسین علیہ السلام پانس معرفی کران [اکہ طرفہ]قرآن ونان <قَدْ جَاءَتْكُمْ مَوْعِظَةٌ>قران آو توہیہ کن موعظہ بنتھ۔ [بیہ طرفہ]امام حسین علیہ السلام دپان بہء چھوس موعظہ ۔روز عاشورا ونان:"أَيُّهَا النَّاسُ اِسْمَعُوا قَوْلِي وَ لَا تَعْجَلُوا حَتَّى أَعِظَكُمْ بِمَا هُوَ حَقُّ لَكُمْ عَلَيَّ "لوکو! میانی کتھ بوزیو،بہء قتل کرنس منز مہ کریو بانبر،امہ برونہ کہ بہء کرو توہیہ موعظہ"أَعِظَكُمْ بِمَا هُوَ حَقُّ لَكُمْ عَلَيَّ"یوس زن  توہیہ پیٹھ میون حق چھوء۔خدا ونان قرآن چھوء موعظہ،حسین ونان بہء چھوس موعظہ ۔ امام حسین علیہ السلام سندس پیروس خاطرء چھوء یہ کہوٹ کہ کیا  یہ چھا امام حسین علیہ السلامس یمو اچھو وچھان یمہ ساتھی امام حسین علیہ السلام  ہیکون تولت قرآن تہءامام حسین علیہ السلام۔ امام حسین علیہ السلام دیہء قرآنک حوالہ یا قرآنچ وضاحت، قرآن دیہ  حسین سند حوالہ یا حسین سنز وضاحت ۔گو امہ خاطرء یوس پننہ نس پانس منسوب کرء امام حسین علیہ السلامس کن امس منز گژھن آسن قرآنی صفت ،یتھی کئن زن آئس یمہ ساعتہ امام حسین علیہ السلام مقایسہ بہمو کرنہ قرآنس ساتھی اسہ چھوء میلان کہ یہ قرآن اکہ طرفہ چھوء بیہ طرفہ حسین چھوء یمی چھئي اکھ اکس کران  تکمیل ۔ سورہ جن گوڈنچ(2)آیت<يهْدِي إِلَى الرُّشْدِ>(الجن/2) قرآن دپان یہ چھوء توہیہ رشد خاطرء ہدایت کران ، قرآن چھوء توہیہ تھزر دوان ، توہیہ  کمال دوان ۔ امام حسین علیہ السلام اسہ دعوت دوان؛"أَدْعُوكُمْ إِلى سَبيلِ الرَّشادِ"بہء چھوء سو توہیہ رشدک دعوت دوان۔ یعنی حسین سند دعوت تہ قرآنک دعوت چھنہ جدا کہین۔الفاظ چھئی ممکن الگ آسن مگر مفہوم چھوء کنی، لذا یوس زن وین یہ حسین حسین کران  چھوء، امسنز حرکت تہء گژھہ نا قرآنی آسن،امسنز حرکت تہ گژھہ حسینی آسن، تلہ گو یہ چھوء امام حسینس ساتھی منسوب تہ امسنز کتھ چھئی اکھ اکس تکمیل کران ۔

سوررہ حجر آیت 87 تس منز چھوءقرآن ونان< وَالْقُرْآنَ الْعَظِيمَ>(الحجر/87) امام حسین علیہ السلامس متعلق چھئی ائس ونان "عَظیمَ السَّوابِقِ"امہ سند سابقہ چھوء عظیم، کہ رسول رحمتن کیاہ ہووی اسہ تہ کربلاہس منز کیاہ اوس حسین۔ لذا تھ تناظرس منزسانی ذمہ داری چھئي یہ کہ ائس تہ گژھو [بنن یتھی]سانہ خاطرء ترکئر گژھہ بنن حسین۔یلہء حسین بنیو ترکئر ،یعنی قرآن بنیائي سانی ترکئر۔ سانہ مجلسء منز گژھہ قرآنچہ آیہ ہند مفہوم بیان گژھن،سانس جلوسس منز گژھہ امام حسین علیہ السلام سندء پیغامک ترجمانی گژھن۔

اگر زن ائس پننہ نس پانس محاسبہ کرو ، پانے ونو کہ یوس زن سیانی مرثیہ چھئی ، سانی مجلس چھئی ، سون واعظ چھوء، سون نوحہ چھوء؛یہ چھا اسہ  رُشدَس کن ہدایت کران۔یہ چھا کمال اسہ عطا کران کنہ زوال ۔اگر کمال چھوء عطا کران تہء یہ چھوء قرآنی ، یہ چھوء حسینی۔اگر زوال چھوء انان یہ چھوء نہ قرآنی نہ چھوء یہ حسینی۔

امام صادق علیہ السلام فرماوان؛"مَا اجْتَمَعَ ثَلَاثَةٌ مِنَ الْمُؤْمِنِینَ فَصَاعِداً إِلَّا حَضَرَ مِنَ الْمَلَائِكَةِ مِثْلُهُمْ فَإِنْ دَعَوْا بِخَیْرٍ أَمَّنُوا وَ إِنِ اسْتَعَاذُوا مِنْ شَرٍّ دَعَوُا اللَّهَ لِیَصْرِفَهُ عَنْهُمْ وَ إِنْ سَأَلُوا حَاجَةً تَشَفَّعُوا إِلَى اللَّهِ وَ سَأَلُوهُ قَضَاءَهَا"امام جعفر صادق علیہ السلام سئنز یہ تلقین ، یہ اسہ ونن کہ ؛یمہ ساعتہ مؤمن سمن ،ترین تان واتہء یمن سمن والین ہند تعداد،یعنی حد اقل آسن 3 نفر،یہند سمن چھوء باعث گژھان کہ ملائک چھئی اتھ منز شریک گژھان ،اگر یمی 3 نفر،کم سے3 کم نفر،یوتاہ نفر زیادء آسن تیوتاہ آسن ملائک تہ زیاد۔اگر یمی 3نفر دعا کرن یمی [ملائک]چھک آمین ونان ساتھی۔اگر زن یمی خدایس کنہ شرء نشہ پناہ منگن خدا چھوء یمن نشہ سوء شر دور کران ۔اگر یہ جماعت حد اقل 3 نفر آسہ خدایس حاجت منگہ ، خدا چھوء سوء حاجت روا کران ۔

اگر زن ائس پننہ مجلسہ وچھویہ"مَا اجْتَمَعَ ثَلَاثَةٌ "ترینی نفرن ہئنز، حد اقل اگر زن سون اجتماع آسہ 3 نفرن ہند، "مِنَ الْمُؤْمِنِینَ "شرط چھوء"مَا اجْتَمَعَ ثَلَاثَةٌ مِنَ الْمُؤْمِنِینَ "حد اقل اگر ائس 3 نفر سمو"فَصَاعِداً إِلَّا حَضَرَ مِنَ الْمَلَائِكَةِ"ملائک تہء چھئی اتھ منز شامل گژھان۔سانس یتھ مجلس منز چھا تژھ کتھ کہ ائس  کرو اطمنان کہ یتھ منز آسہ ملائکو تہ شرکت کئرمژ۔دائرہ گنڈو سوءدائرہ آسیا تیوتھ کہ اتھ دپو اتھ منز چھئی ملائکہ ساتھی پکان ۔وین اگر ملائکہ آیی نہ اتھہ ، میہ منگاہ کینہ حاجت میہ گو روا ۔ میہ مونگ حاجت ، حاجت تہء گو نہ روا۔

سوء وجہ کیاہ چھوء؟

یہء چھوء سون ضعف۔اسہ یمی امہ اجتماعک شرائط آئس رعایت کرن ، ائس چھنہ تہ رعایت کرانی۔

میہ ونیو اکہ لٹہ جنت آسن ذاکر عباس صوبس ،میہ دوپمس یمی کام مرثیہ چھوی پران !؟ دینچہ کتھہ چھوی نہ ہیچھہ ناوان یمن ۔ یمن چھا توہیہ امامت تجہ مژ توہیہ ہیچھہ ناون ، نبوت ہیچھہ ناون۔

دوپن:ہتھہ کڑان قلمے دو زبان اکوی خط،تیوتھے شاہ تہء حضرت جانا جانی۔

میہ دوپس: یہ گوژھ نا آسن سارنے ورد زبان۔

دوپن:اتھ چھونہ خریدارے کانہ۔

میہ دوپس: اسہ گژھہ نا ذاکرن ہنز[پیش دستی]ذاکرنی چھوء  واتنومت دین،امس گوژھ نا آسن احکام پے۔

امی وون:[مضمون]اجتہادچ زء ترء چھیرء۔

 میہ دوپس: یہ کیازء نہ اسہ سارنی زیہ پیٹھ۔

دوپن: اتھ چھنہ  خریداری۔

یوس زن ودنک روح چھوء[فلسفہ عزاداری]تمہ ساعتہ چھئی اسہ نندر کھسان۔(زامنہ کران)۔دوگ وتھہ تہء کرء حسین حسین۔

کمہ باپت کورت ژء حسین حسین؟

اوت تام چھنہ /یہ چھنہ پئیی آسان۔

دوگ، وتھ سا دوگ دء۔ یہ دوگ کمہ باپت چھوء؟ وزنہ خاطرء چھا ؟

اگر وزنہ خاطرء چھوء ، تلہ گو تتہ تہء[قیامتس منز] پیارن وزنی دن تتہ۔

مگر اگر زن قرآنچ ترجمانی ، یمس حسین سنز کتھ ائس ونان چھئ تمس حسین سنزکتھ چھئی ائس یژھان سمجھن ،تمہ کہ برکتہ سمجھاوون پتہ بیاکھ۔

یہ زن بہء یہ تعبیر  استعمال چھوس کران کہ یمہ ساعتہ ائس گھرن منز یا امام بارن منز یا مجلس مختصر کران چھئي امیوک غرض چھوء آسان (چار دیواری اندر یوس عزاداری  ائس چھئي کران)امیوک غرض چھوء آسان عزاداری سمجھن۔ علم کڑئن ،سڑکہ پیٹھ نیرن یہ گو عزاداری سمجھاون۔یلہ نہ آسہ پانس آسہ فکرء تورمت بیس کیاہ تارو فکرء ۔ ضرورت چھئی یہ کہ ائس گژھو گوڈء پانہ سمجھن ائس کیازء چھئی کران۔

اسہء اگر کانہہ سوال کرء توہی کیوزء ودان؟

[دپوسہء]ہے امام حسین علیہ السلام کورکھ شہید۔

اگر سوء اورء ونہ: اہن سا تمس او سا ییتھ روزن؟ توہی کیاہ ونیوس؟

آیا ائس چھا امام حسین علیہ السلام سندس یمہ دنیا رحلت کرنس ودان؟(ائس چھنا تلیہ قرآن انکار کران)۔

ائس چھا موتس ودان؟موت اوس نا یون؟

اگر زن امام حسین بیہء زندء روزہ ہا دہن ورء ین بیہ ،ووہن ورین بیہ،پنژاہن ورین بیہ، کاتس کالس روزء ہا سوءزندء؟گو مرنہ خاطرء چھنہ ائس تمس ودان کینہ۔

تلہء کیازء چھئي ودان؟

اگر نہ اسہ یہ پتہ چھئی کہ تلہ کیازء چھئي ودان !ائس کیازء چھئي بتھہ بتھہ دوان تلیہ؟ائس چھا یہ معیار پننہ جایہ زانتھ کہ خدایس تہ گژھو نہ اسہ انکار آسن۔تمی وونموت< كُلُّ نَفْسٍ ذَائِقَةُ الْمَوْتِ> (آل عمران/185)یوس زاو تمس چھوء نیرن۔اصلی دنیا چھوء سانہ مرنہ پتہ شروع گژھان۔آیا ائس چھا یہ ونان کہ خداین کیازء دیوت امس یوت درجہ شہید تہء گو۔

تلہء کتھ پیٹھ چھئی ائس ودان؟

ودان چھئی ائس امام حسین علیہ السلام چھوء اسہ نشہ اسلامچ سوء تصویر برونہہ کنہ تراوان کہ یوس رحمت ہیتھ خداین<رَحْمَةً لِلْعَالَمِينَ>(الأنبياء/107)سوز تتھ[اسلامس تہ رحمتس] ژھنوکھ ڈوٹھ۔اسلام گو یتیم۔

ودان کتھ پیٹھ چھئی امام حسینن وون؛" وَ عَلَى الاِسْلامِ، السَّلامُ اِذْ قَدْ بُلِیَتِ الاُمَّهُ بِراع مِثْلَ یَزِیدَ"اتھ اسلامس آسن سلام[وداع]وین۔

(ائس یمہ ساعتہ خط چھئی لیکھان، زء چھئي سلام لیکھان،شروع پیٹھہء گو تعارفچ سلام ،پتہ یمہ ساعتہ کتھ چھئی موکلاوان پتہ چھئي والسلام علیکم ورحمت اللہ آخری سلام[سلام وداع/سلام جدائی]یعنی یہ گو وین خدا حافظی۔پنن کتھ بند کرن۔)

اتھ اسلامس سلام یمہ اسلامک سربراہ آسہ یزیدس ہیوہ نفر۔یزیدس ہیوہ نفر۔ سوء چھنہ ونان یزید کینہ ۔گو یہ چھوء کردار ونان۔

یہ کردار کیاہ اوس ؟یزید کیاہ اوس؟

ونہ کینس تہء چھہء تمی لوکھ یمی زن ونان چھئی سوے اوس خلیفۃ المسلمین !تمسے لوکو بیعت ائس کئرمژ۔وین یہ خلیفۃ المسلمین کوس چھوء امس چھوء نون کڑان امام حسین علیہ السلام ۔ قرآن یتھہ کئن نورس تہ نارس  الگ الگ کڑان چھوء  امام حسین  چھوء نورس تہء نارس الگ کڑان۔تمی[قرآنن] دوپ امام چھئي زء؛ یا چھوء امام نور نتہ چھوء امام نار۔توہی وچھیون وین اگر یہ خلیفۃ المسلمین چھوء یہ چھا امام نور کنہ امام نار۔

یوس پننہ نس پانس چھوء ونان بہء چھوس جانشین رسول اللہ صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم یہ چھوء یزید بن معاویہ ، توہی وچھیوی یہوے چھا جانشین رسول اللہ صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم سند ۔امام حسین ہدایتک دعوت دوان، امہ کہ جوابس منز کیاہ چھوء امس میلان ، ائس چھئی امہ باپت ودان۔

اسلام واتنووکھ توتن کہ رسول رحمتس بنیای نہ چھپن جای۔ائس چھئی ودان اتھ پیٹھ۔

قرآنس کورکھ پُژء پَریُن قرآن کس ناوس پیٹھ۔

کریکھ دژکھ ؛ «أَشْهَدُ أَنْ لا إِلَهَ إِلاَّ اللهُ» «أَشْهَدُ أَنَّ مُحَمَّداً رَسوُلُ الله»۔مگر ذبح آئس رسول خدا صلی اللہ علیہ وآلہ وسلمس کران ،ائس چھئی اتھ پیٹھ ودان۔

امام حسین علیہ السلام چھوء وین تنہ تنہا امہ باپت میہ کئرتو کانہ یاری ، اسلام اونوک اوتن کہ امام حسینس چھئي کافر ونان،یزیدس چھئی مؤمنی یوت نہ ونان امیرالمؤمنین ونان ۔ائس چھا ہیکان یمی زء کردار الگ کڑتھ؟

میہ چھوء  سنی دوست ونان ؛ یوتاہ چھوکھ ژء یمی کتھہء آسان ونان مگر بہء چھوس چیانس بڈگامس منز کھسان میہ یوس چیز 10 روپین چھوء میلان میہ چھوء سوء  تتہ 15 روپین میلان،یلہ زن میہ گوژھ یہ میلن اتہ معقول قیمتس منز۔توہی ہے یوتاہ چھیو دعواداری کران اہل بیتن ہئنز؟امہ ساعتہ کوت چھوء توہیہ یمی اہل بیت گژھان!۔کہوٹ چھئي ائس راو راوان۔

سانہ حرکتہ ساتھی چھوء بدنام گژھان اہل بیت (علیہم السلام)۔ اسہ وون اہل بیت تو سانی سیرت زندء کرن والی بنیو۔ائس گژھی با کردار مسلمان آسن۔ائس گژھی آسن نمازء پابند  ۔ ائس گژھہ قرآنک عامل آسن ۔مگر عملی طور پرچھئی ائس ....۔اتھی پیٹھ کرو ائس صرف حسین حسین ۔ کہ کوس حسین حسین چھوء؟ائس کمہ باپت دگوو یہ کلہ ؟یہ کلہ دگن گووژھ آسن سون ، رسول خداین یتھہء کئن کلہ دوگ تتھہ کئن گژھہ آسن۔یتھئي کئن ملائکو کلہ دوگ ائس گژھو تتھ کئن کلہ دگئن۔یتھہ کئن انبیاء و مرسلین چھئي بوتھہ بوتھہ دوان یہ منظر وچھت کہ قرآن کس ناوس پیٹھ کتھہ کئن چھوء قرآن  یوان پوژء پارہ کرنہ ۔

اگر اسہ یمی مجلس ء اوکن ژینون دوان چھئی قطعا یہ مجلس چھئي قرآنی ،قطعا یہ مجلس چھئي حسینی۔

یلہء کینہ کرو ائس ،ادہ ہیکہ سون امام حسین علیہ السلامس  یہ ونن معنی تھاون کہ ائس چھیا چانی وفا دار۔

اگر ائس امام حسینس ودو تہ کیاہ گو؟

امام حسینس ودن گو امام زمانس ساتھی ودن۔ کیازءکہ صاحب عزاء چھوء  امام زمان۔

ائس چھا یہ مجلس اتھ تناظرس منز قائم کران؟

میدان کربلاہس منز یمہ ساعتہ امام حسین علیہ السلامس پیٹھ چھوءقافیہ حیات تنگ یوان کرنہ اکہ اکہ امام حسین علیہ السلام سند یار چھوء میدان نیران تہ پنن پان فدا کران۔"وَهَب بِن حُباب كلبي"یہ چھوء شہید سپدان ۔"مُسْلِم بن عَوْسَجِة اَسَدی"یہ چھوء شہید سپدان۔"حُرّ ابْن یَزید ریاحی"یہ چھوء شہید سپدان۔یتھے کئن اکھ اکھ امام سند یار چھوء امس امامس یاری کرنس منز ،یعنی اسلامس منز فرق کرنس منز کہ کوس چھوء رسول خدا صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم سند اسلام کوس چھوء شیطان سند اسلام یاری کران۔

وین چھوء نیران "عَمرو بن قُرظَه  بن کعب انصاری"یہ چھوء اجازت منگان امام حسین علیہ السلامس ،" عَمرو بن قُرظَه "ہس متعلق یتھہ کئن مقتلو لیکوکھمت چھوء یہ اوس تیوتاہ قابل جنگجو اوس یمہ ساعتہ تیر اوس یوان یہ اوس اتھہ ساتھی تیر بند رٹان۔یعنی تیژاہ ائس امس نظر تیز، تیر اوس اورء یوان یہء اوس اتھس منز رٹان۔[امام حسین علیہ السلامس دفاع کران کران تیر اتھہ منزء رٹنہ علاوہ]پانس پیٹھ اوس تیر رٹان یتھ نہ امام حسین علیہ السلامس تام کانہ تیر واتہء۔امہ حالہء چھوء یہ پانہ میدان نیران ۔میدان  نیران جہاد کران کران تہ چھوء یہ نصیحت تہ کران  ۔(حسینس چھون نا ہیوچھمت)یہ چھوء نصیحت کران تمن لوکن ؛ توہیہ کیازء چھیو پننہ نس پانس جہنمک مستحق بناوان ۔گو عزادار چھنہ پننی[یاژ فکر آسیس]میہ آو اوش قطرء بہء بنیوس امیدوار بیس گوژھ نہ توفیق میلن یا اوش قطرءوسنوک ، امس گوژھ نہ یہ توفیق میلن یہ حسین فکرء ترنک نہ میے یوت گوژھ ترن فکرء۔

"عَمرو بن قُرظَه "یمہ ساعتہ میدانس منزنیران چھوء ،کمال جہاد چھوءکران ،یتھ حدس پیٹھ کہ یہ چھوء از زین بر زمین پیوان ۔امام حسین علیہ السلام امسندس شاندس پیٹھ واتان ۔"عَمرو بن قُرظَه "ہس  نہ پئیی  میہ کوس حال چھوء بنیوو مت ۔امام حسین علیہ السلام چھو شاندس [عرض چھوس کران]"اَوَفَيْتُ يَابْنَ رَسُولِاللّه؟"میہ کورا وفا؟۔

 "عَمرو بن قُرظَه "امہ حالس منز یہ چھوء پراران کہ  میہ چھا تمن اصولن تجہ مژ آبیاری کرن کہ میون امام ہیکہ میہ راضی آستھ۔یہ گئي مجلس۔

میانس مجلسء منز،میانس مرثیہ منز، میانس نوحہ ہس منز چھا یہ حسینی اصول قائم روزان کینہ ؟ کہ میانہ کردارک محور آسہ کہ امام زمان چھا میہ راضی کنہ نہ!

امام زمان چھوء امسند امام حسین۔عمرو بن قرظہ سند۔یمہ ساعتہ ائس یہ کردار والی  بنو و حسینی،  تیلہء ونہ اسہ سون امام :"قال نعمْ،أنتَ أمامي في الجنَّةِ"بالکل ژء کورت وعدس وفا، ژء آسکھ میہ ساتھی برونہ کنہ[جنتس منز] ۔اللہ اکبر۔

یعنی یوتاہ یہ ایام عزا سانہ خاطرء رحمت تہ برکت تک سبب چھوء ، تتھوی چھوء سانہ خاطرء سنگین امتحانک مرحلہ۔کیازہ کہ اسہ چھئي تژھہ کہوٹ امام حسین برونہ کنہ تھاوان اسہ چھوء وین وچھن کہ ائس چھا اتھ کہوچہ پیٹھ اوتران ، امی دیوت ہاوتھ میون حسینی ہیکہ بنتھ امہ کردارک نفر، کیاہ  ژء منزء چھا سوء کردار کنہ نہ۔

امام حسین علیہ السلام سندس مجلسءمنز چھنہ سنی تہ شیعہ  روزان معنی کینہ ۔امام حسین علیہ السلام چھوء سنی یس تہ آلو کران ،شیعہ یس تہ آلو کران ، کیاز کہ امس نش چھونہء  ملاک شیعہ تہ سنی کینہ۔"حُرّ بْن یَزید ریاحی" اوس سنی (سنی چھوء ازک اصطلاح تتھ زمانس منز اوس نہ)،"زُهَیر بن قَین بَجَلی "اوس سنی یعنی تمی اوس نہ امام علی پنن امام مونمت،امام حسن مجتبی پنن امام مونمت مگر امام حسین سندس رکابس منز اوس۔ گو امام حسین علیہ السلام چھوء یوس یمہ مئدانک چھو مگر اگر با کردار آسہ یہ چھوء حسینی ،شیعہ تہ سنی سنز لیبل چھنہ حسین سندس دربارس منز کنیہ ۔کیازہ؟

مژء راوی تو قرآن یہ چھا اسہ کانہ شیعہ سنی سند ایدڑس دوان ؟

قرآن کیاہ ونان <إِنَّ أَكْرَمَكُمْ عِنْدَ اللَّهِ أَتْقَاكُمْ >(الحجرات/13)توہیہ منزء چھوء تھود سوئی نفر یوس زن تقوی تہء پرہیزگاری لحاظہ تھود آسہ ۔

یہوے سبق اسہ ہیچھہ ناونس امام حسین علیہ السلامس بنیای نہ تریشہ خاطرء۔ یمہ ساعتہ کہ ہلال نافع ونان کہ یمہ ساعتہ بہ ء ووتس امام حسین علیہ السلام چھوء از زین بر زمین پیومت حالت احتضارس منز چھوء ، امام حسین علیہ السلام چھوء نحیف آوازء منز تریشہ ہند درخواست کران!

ائس چھئی ودان اتھ پیٹھ کہ رسول رحمت ،یوس زن<رَحْمَةً لِلْعَالَمِينَ>(الأنبياء/107) چھوء،تمسند حسین بنووکھ تریشہ ہند محتاج اور نہ صرف تریشہ ہند محتاجی بلکہ جوابس منز چھوس میلان کہ ؛ ژء کیژھ تریش میلی، ژء چھوکھ جہنمکہ "حَمِیمِ"مک مستحق۔ اللہ اکبر۔

آہ وایلاہ! یہوے امام حسین یمہ ساعتہ قتل گاہ کس سنہ رس منز پیو، مقتل چھئی لیکھا ن حسین سئنز حالت چھئي  نہ چھوء یہ زمینءپیٹھ نہ ہواہس پیٹھ،تیوتاہ چھوء تیرو وولمت امام حسین علیہ السلام معلق چھوء، مگر امے حالہ کیاہ چھئ کران اشقیا 12 ضربو ساتھی سر جدا کران۔ أَلَا لَعْنَةُ اللَّهِ عَلَى الظَّالِمِينَ(هود/18)وَسَيعْلَمُ الَّذِينَ ظَلَمُوا أَي مُنْقَلَبٍ ينْقَلِبُونَ(الشعراء/227)


امام حسین علیہ السلام قرانک آینہ-03 PDFفایل ڈاونلود کرنہ خاطرء

·        امام حسین علیہ السلام قرآنک آینہ -01

·        امام حسین علیہ السلام قرآنک آینہ-02

·        امام حسین علیہ السلام قرآنک آینہ-03

·        امام حسین علیہ السلام قرآنک آینہ-04

·        امام حسین علیہ السلام قرآنک آینہ-05

·        امام حسین علیہ السلام قرآنک آینہ-06

·        امام حسین علیہ السلام قرآنک آینہ-07

·        امام حسین علیہ السلام قرآنک آینہ-08

·        امام حسین علیہ السلام قرآنک آینہ-09

·        امام حسین علیہ السلام قرآنک آینہ-10

 


آپ کی رائے
نام:  
ایمیل:
عبارت:  500

قدرت گرفته از سایت ساز سحر