»
یکشنبه 30 مهر 1396
امام حسین علیہ السلام قرآنک آینہ-04

عبدالحسین سنز شیمء محرم 1435 مطابق 9نومبر 2013 امام بارہ ڈب  سرينگرء پرمژ مجلس

 

اَعُوذُ بِاللّهِ منَ الشّيطانِ الرَّجيم

بِسْمِ اللَّهِ الرَّحْمَنِ الرَّحِيمِ؛نحمده و نستعینه و نؤمن به و نتوکّل علیه و نستغفره و نصلّی و نسلّم علی حبیبه و نجیبه و خیرته فی خلقه حافظ سرہ و مبلغ رسالته سیّدنا و نبیّنا و طبیب نفوسنا و حبیب قلوبنا  ابی‌القاسم المصطفی محمّد(صلی اللہ علیه و آله  وسلم)[ اللَّهُمَّ صَلِّ عَلَى مُحَمَّدٍ وآلِ مُحَمَّدٍ وعَجِّلْ فَرَجَهُم] و علی آله الأطیبین الأطهرین المنتجبین المعصومین سیّما بقیّةاللَّه فی الارضین۔

اما بعد؛قال اللہ سبحانہ و تعالی فی محکمہ کتابہ :

 بِسْمِ اللَّهِ الرَّحْمَنِ الرَّحِيمِ  وَإِنَّهُ لَحَقُّ الْيقِينِ(الحاقة/51) صدق اللہ العلی العظیم۔

میانہ گفتگوک موضوع چھوء یوس زن میہ  کینژھو ایامو پیٹھہء شروع چھوء کورمت  کہ "حسین قرآنک آینہ"۔

قرآن امام حسین علیہ السلام سند پتہ دوان ،امام حسین علیہ السلام قرآنک۔

خدا فرماوان  یہ قرآن چھوء <حَقُّ الْيقِينِ>یہ <حَقُّ الْيقِينِ>سوزو میہ توہیہ درمیان یعنی قرآن۔

امام حسین علیہ السلام سنزء زیارتہ منز چھئي ائس امامس زیارت کران [ونان]کہ تمہ صداقتہ ساتھی تمہ خلوص ء سان کورت ژء عبادت کہ ژء بنیوکھ مصداق "حَتَّى أَتَاكَ الْيَقِينُ

خدا فرماوان:<وَإِنَّهُ لَحَقُّ الْيقِينِ>(الحاقة/51)امام حسین علیہ السلام یوان وننہ "حَتَّى أَتَاكَ الْيَقِينُ"۔

امام حسین علیہ السلام سندء عملی سیرتء ساتھی یموک اسہ دعوت میلان چھوء،سوء چھوء انسانس خدائی بناونک،کہ انسان اگر زن خدائی بنان چھوء یہ کم کمال چھوء ہیکان حاصل کرتھ۔امہ سنز جای تہء منزلت کتھہ کئن چھئی حاصل سپدان۔

واقعہ کربلا یوس زن چھوء ، سوء چھوء امام نور تہ امام نار سنز علم بلند گژھان کہ امام نور چھوء پنن ترجمانی کران  ،تہ امام نار چھوء پنن ترجمانی کران ،یتھی زن ائس عام اصطلاحس منز  ونان چھئی"حق"تہ "باطل"۔

جماعژ ہیکن صرف زء آستھ ، یا آسہ حقس پیٹھ نتہ آسہ  باطلس پیٹھ ۔مگر اسہ چھوء شک امام حسین علیہ السلام سند حق آسنس پیٹھ۔(یہ دی زیو میہ اجازت وننہ نس کیازء؟)۔اگر ائس امام حسین علیہ السلام حق آسہ ہون زانان ،ائس آسہ ہو پننہ سارے لڑایہ تراوان امام حسین علیہ السلام سندس ناوس پیٹھ ۔ مگر ائس چھئي پننہ سارے لڑایہ شروع کران امام حسین علیہ السلام سندس ناوس پیٹھ۔امام بارہ چھئي ائس کران الگ الگ ،جلسہ جلوسہ چھئی ائس کران الگ الگ ،کہ امام حسین علیہ السلام چھوء تلیہ امام حسین یلہ میانہ امام بارک آسہ ، میانہ دائرک آسہ ۔اگر حق آسہ ہا ائس آسہ ہو امام حسینس پتہ پتہ دوران ۔اکہ نکتہ پیٹہ اکھ کریو یا حسین یاحسین یا حسین یا حسین ...کتھ[حسین یتچ]آسہ ہا گنا،ائس چھنہ تہ گنہ راوان کینہ۔کیازہ کہ اسہ چھوء ونہء شکی۔قرآن ونان < وَاعْتَصِمُوا بِحَبْلِ اللَّهِ جَمِيعًا وَلَا تَفَرَّقُوا > (آل عمران/103)خدایہ سنزء رزء کئر تو تھپ۔ یہ رو چھئي یہوے امام نور۔

امام ء نورس روزیو تابع ،مگر ائس [امہ حالہء]نہ چھئی قرآنء نشہ کتھ ماننہ خاطرء تیار، رسول رحمت سنز کپاری مانو، علی مرتضی سنز کپاری مانو ،اسہء یہء دل ونہء ، اسہءیہ محلہ لک مزاج ونہء،اسہء گژھہ تہء آسن،نہ کہ یہ خداین یا خدای سند رسولن اسہ تعین تکلیف چھوء کورمت۔

رسول رحمت صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم فرماوان:" أيُّهَا النّاسُ! عَلَيكُم بِالجَماعَةِ و إيّاكُم و الفُرقَةَ"لوکو! توہی روزیو یکہ ووٹے،تفرقہ نشہ کریو اجتناب۔

مگر یمہ ساعتہ ائس پننہ نس سماجس کن نظر تراوو ،ائس چھا اکہ جماعت ہنزء شکلہ منز ،یتین زن سانی  اجتماعی شکل آسہ ،سوء اجتماعی شکل گژھیا یوس ونہ کینس ائس پیش کران چھئي  تی آسن۔

سورہ حمدس منز ائس خدایس ساتھی کتھہ کران دپاس چھئس ؛ ائس ساری چیانی عبادت کران، ائس ساری ژے مدد منگان ، اسہ سارنی ہاو اصلچ ہدایت۔[تلہء کیازہ]ائس کیازہ اتھی مجلسء منز اتھ جمائژ منز کئژتان نفری آسان؟۔ اتھ ائس! ائس! آسنس منز،یہ جماعت کر تئر اسہ فکرء؟۔

مولا امیرالمؤمنین نس آو سوال کرنہ :"وَ قَدْ سُئِلَ عَنْ تَفسيرِ السُّنَّةِ وَ الْبِدْعَةِ وَ الْجَماعَةِ وَ الْفُرْقَهِ":[امامس آو سوال کرنہ]اگر ائس ونان چھئي کنی روزیو الگ الگ مہ روزیو،اتھ جماعژ تہ تفرقہ ہس منز ون تہء ہز فرق  اسہ تہء کیاہ گو ؟۔فقال: مولا فرماوان:".. وَ الْجَماعَةُ ـ وَ اللّه ِ ـ مُجامَعَةُ اَهْلِ الْحَقِّ وَ اِنْقَلّوا " جماعت گو  اہل حق جماعژ ہند سمن اگرچہ کم آسن۔جماعت گو اہل حقن ہند جمع گژھن اگرچہ کم آسن۔" وَ الْفُرقَةُ مُجامَعَةُ اَهْلِ الْباطِلِ وَ اِنْ كَثُروا؛"۔تفرقہ گو باطلء سند جمع گژھن، اگرچہ تمی زیاد آسن۔

وین وئن تو کہ ائس چھا امام حسین علیہ السلام حق  زانان کنہ باطل؟

امام حسینن جماعت ، امام حسینن کریکھ حق زانان کنہ باطل؟

اگر حق آسون زانان سون بوڈ اجتماع گوژھ آسن اکھ۔یمی امام بارہ لڑایہ گژھہء نہ آسنہ کینہ۔جلسہ جلوس لڑایہ گژھنہ آسنہ کینہ ، ہرکانہ لڑائي  ائس تن مگر امام حسینس پیٹھ گئژھ نہ اسہ لڑائي آسن کہین ۔یتین نہ اسہ زء رائي چھئی یے کہ تمس ہیکو ونتھ کہ سوء چھا حق۔مگر یمہ ساعتہ حقیقت تس سمجھن چھوء یمہ ٹیچھہ کتھہء چھئي وننہ۔

اگر بہء دینہ منزء آسو کڑن توہی کئڑ زیو میہ مگرہ بہء ونہ تی یہ میہ امام حسین علیہ السلامن پننہ خونہ ساتھی حرارت دژ کہ ژء کئڑ تنے لوکھ دینہ منزء یہ توی یاد تھاو  خدا گژھی نہ دینہ منزء کڑن۔(8الی 10 منٹس پیٹھ)لوکن ہندس میعارس پیٹھ کور یزیدن،حکومت تہء آسس ، قدرت تہء آسس، لوکھ تہ آسس ،بہء یتھہ کئن توگہ ء سس نابود کرن مگر ژء کیاہ ہیوچھت امہ نشہ ؟

از امام حسین علیہ السلام شہید گئمتس 1374 وری ، یہ ء چھنہ راتچ کتھ کینہ ۔یمی چیزن یہ از [تام جاوداں بناوی]۔اگر زن  ائس از 1374 ہم وری  شہادتک  امام حسین علیہ السلام سند مناوان زن چھئی ازچک کتھ ، راتچ کتھ۔

یہ تازگي کوس چھوء اتھ دوان ؟

 خدائی رنگ۔"حَتَّى أَتَاكَ الْيَقِينُ"۔صرف خدائی سندء باپت۔

کیاہ یمی امام بارہ لڑائي ،نوحہ لڑائي ، مرثی لڑائی،جماعئژ لڑائی ،یمی چھا خدای سندء باپت آسان؟

یمی[لڑایہ] چھا "قُربَةً اِلی الله" خاطرء آسان؟

اگر "قُربَةً اِلی الله" خاطرء آسن ،اگر زن یہ حرکت نابود تہء یی کرنہ  مگر ائتھی چھئي ضمانت ۔

اگر کانسہ شک آسہ امام حسینس کن وچھئن۔

امام حسین علیہ السلامن یوس سبق دیوت  سوء گو یی کہ اگر ژء  نش بظاہر آسہ  سوری انہ گوٹ مگر یلہ ژء پتہ چھی کہ بہء کمس ساتھی چھوس سودا کران تمس پیٹھ گژھہ یقین آسن۔

تمی امام حسین علیہ السلام ونان:"مَا ذَا وَجَدَ مَنْ فَقَدَكَ وَ مَا الَّذِي فَقَدَ مَنْ وَجَدَك"یہ امام حسین علیہ السلام سند یہ ونن کہ " مَا ذَا وَجَدَ مَنْ فَقَدَكَ"تمی کیاہ لوب یمس ژء رووکھ، یمس ژء رووکھ تمی کیاہ لوب۔

اسہ چھا یہ کتھ ترمژ فکرء کنہ نہ ؟

ائس چھا امہ باپت حسین حسین کران کہ یہ چھوء میہ خدا خدا کرء ناوان ؟یہ حسین چھوء میہ مُوَحِد بناوان۔یہ چھوء میہ قرآنی بناوان ، یہ چھوء میہ اسلامی بناوان ؟

عزاداری منز یمیوک عنصر حاوی گژھہ آسن سوء گژھہ تمہ پیغامک  [یہ حسین چھوء میہ مُوَحِد بناوان۔یہ چھوء میہ قرآنی بناوان ، یہ چھوء میہ اسلامی بناوان]عنصر آسن ۔

یوس زن ائس غیر ضروری کتھن  پیٹھ اہمیت دوان چھئي ، اصل چھئی راو راوان ۔ائس چھئي رشتس دوان اہمیت ، مگر یہ روح امام حسین علیہ السلام اسہ منز منتقل یژھان چھوء کرن اسہ نشہ چھنہ تتھ کانہ مول ، ائس چھئس نہ خریدار کینہ !

یلہ زن ائس کربلاہس منز یوس شہید چھوء گژھان سوء ونان :" أَوَفَيتُ يا بْنَ رسولِ الله؟"امس [حسینی یس]چھئی ٹکرء گمت ، تیرو تہء کانو ساتھی چھوء یہ پارہ پارہ گومت۔ امام حسینس چھوء" أَوَفَيتُ يا بْنَ رسولِ الله؟"میہ کورا وفا ؟

مرثیہ لجہء ، دعا کور، دعا کرنہ وزء اسہ چھوء صرف اوشی یوت تروو مت ،اسہ چھوء بوتھہ بوتھہ یاتی دتمت،اسہ چھئي دگی یاتی دتمت۔ آیا امہ دعا وزء   ہیکوء ائس   ونتھ امام حسینس " أَوَفَيتُ يا بْنَ رسولِ الله؟" امام زمانا اسہ کور یہ ژء وفا۔ تمو وون پننہ نس امام زمانس ۔ اسہ چھوء پننہ نس امام زمانس ونن [" أَوَفَيتُ يا بْنَ رسولِ الله؟"]

مرثیہ موکلاوی پرتھ میہ کورا حق ادا  امام زمانا چون کنہ نہ؟

ہیکان چھا ائس ونتھ ۔

دوہس کڑ علم ، علم بڑاوئیی،امہ ساعتہ چھا ہیکان ائس پننہ نس امام زمانس ونتھ ، ژء ووچھ تہ  میہ کیاہ کور دوہس ؟ میہ کورا چیانس مشنس آبیاری ؟۔میہ کورا ژء ساتھی وعدس وفا؟

[اگر نہ] تلہء کیازء چھئي ائس کران عزاداری؟

کربلاہن کیاہ ہیچھہ ناوی ائس ، اسہ کیاہ ہیوچھ؟

امام حسین علیہ السلام سنز فرمانبرداری چھوء ہر اکھ  کران پننہ نس امام سنز اطاعتء موجوب۔

ذاکر چھوء ونان کہ یمہ ساعتہ اونٹہ پیٹھہ جناب زینب  سلام اللہ علیہان پان دیوت دارتھ،"نمت کرن سلام اتھ سرء روس بدنس"۔یہ [ذاکر]چھوء میہ غئر شعوری طور میہ ونان کہ یہ  امس[حضرت زینب سلام اللہ علیہا] امام زمان ، بوئ [اسنہ باپت نہ کنیہ]بائیس کیازء کرء نمت سلام؟۔

فاطمہ زہراء سلام اللہ علیہا دراء[خلیفہ سنز بیعت کرناون والین مقابلہ]بوتھہ دروازس ۔ کیازء درایہء؟(خاندار سندء باپت چھنہ بوتھہ نیرن کہین)۔بلکہ سوء درای امام زمان سندس دفاع ہس۔تمی چھئی ولایت گوڈنیوک شہید حضرت فاطمہ زہرا سلام اللہ علیہا  ہس ونان۔

حضرت عباس علیہ السلام گو فدا امامت تس ، نہ کہ بائیس۔بوئی آسن آوس حسن اتفاق۔

یہ چھوء سوء دگہ ہند منظر ، شاید نزدیک کران ۔اگر زن رشتہ تچ بوی تہ اتھ ساتھی چھئي روزان ، مگر تمیوک معنی گو نہ یوس زن اصلی کتھ چھئی،اصلی پیغام چھوء تتھ چھئي ائچھ وٹن۔

پیغام چھوء کیاہ؟

ائس چھا امامس شہید گژھنہ نس پیٹھ ودان؟

ائس چھنا تلہ قرآنس[ مخالفت کران] ۔یپاری تولون ائس قرآن چہ ترکرء منز ، اتہ چھوء یہ پورء اتران،مگر عملہ منز چھنہ یہ لبنہ یوان کینہ ۔

اسہ چھوء یہ وچھون کہ امس امام حسین  علیہ السلامس ودنہ  ساتھی بہء کوتاہ چھوس اتھ قرآنس نزدیک گژھان ۔بہء کوتا چھوس اتھ اسلامس نزدیک گژھان۔

اگر عزیز سے مران چھوء ،ائس کیازء چھوء تمسندس مرنس منز [دوکھس بہوان]گو یہ چھنہ رشتہ داری ہند دوکھ تہ کہین ۔یوس دوکھ اسہ مرحمی چھنہ گژھان سوء چھوء امامت تُک ۔سوء چھوء امہ ولایت تُک۔اگر یہ  دوکھ یہ دگ فکرء ترء امام کرء ظہور۔

خدا چھوء امس پتھ کُنی تھاوتھ کیازء کہ یمس نہ کربلا ساتھی تہء امامت فکرء تئر،  [سوء کیاہ قدر زانن آخری امام سنز]۔

امام زین العابدین علیہ السلام سئنز مظلومیت کیا گئی،یوس زن قتل گاہ ہس منز امام بنیووی؟

[وونہ ہس]وتھ ہزتُل ہز شمشیر!

دوپن:" مَا بِمَكَّةَ وَ الْمَدِینَةِ عِشْرُونَ رَجُلًا یُحِبُّنَا"مکہ پیٹھہ مدینہ تام چھنہ 20 نفر سمان۔[توہی چھوی ونان وتھ ہزتُل ہز شمشیر!]

یوس زن 313 نفر چھئی امام زمان سندء ظہورء خاطرء ضرورت سوء چھنہ ژء تہء بہء 313کینہ ۔یمی چھئي 313 امام خامنہ ای ضرورت ۔نہ کہ ژء تہء بہء۔اسہ چھوء کرورن منز تیار گژھن۔

ہوتہء[کربلاہس منز]گئی 72 اسلامک ساو بچاونہ خاطرء ۔امامس چھوء ظہور کرن اسلام نافذ کرنہ باپت۔

راتک[سنہ 61ہجری] دوہ یوس زن یہ  اوس،  یتھ پیٹھ ائس ودان چھئي ،ائس چھا یہ ویژھہ ناوان رات کوس دوہ اوس؟

رات اوس عزاداری ہند اصلی دوہ ۔یوس خلفای راشدینن ہند قاضی القضات چھوء رودمت ،چیف جسٹس چھوء رودمت،سوء چھوء(یعنی قاضی شریح)فتوی دوان ،امام حسین علیہ السلام چھوء کافر واجب قتل۔ودان چھئی اتھ پیٹھ،کہ اسلام بنیووی کیاہ۔اسلامس بنووکھ کیاہ۔قرآن بنیووی کیاہ ۔ قرآنس بنووکھ کیاہ۔کہ یوس زن اسہ رسول رحمت سنز ترجمانی کرء ، رسول رحمت کافر قرار دنوک چھوء اہتمام گژھان۔

قاضی شریح ہن دیوت نہ حسین کافر قرار کینہ ، بلکہ رسول رحمت دِتُن کافر قرار۔اتھی پیٹھ یوتاہ تہء ودد کم چھوء۔

اگر کینہ اہانت چھوو کران ، [ونان چھوی ]"توہی چھوء ہو خراب کرمت کلہ دگ دگ"۔تمن چھنہ تران فکرء کہ تمی کاتیاہ توہین چھئي کران ۔ ممکن چھوء کانہ کتھ چھنہ اسہ تگان ونن امیوک معنی کیاہ چھوء ، مگر یہ کربلاہس منز پیش اونکھ ،اتہ چھا امہ بغئر کلہ دگنہ ، سینہ دگنہ ، اوش ہارنہ بغئر روزان کینہ۔وین زن چھنہ میہ تگان ونن بہء کیازء چھوس بوتھہ بوتھہ دوان،بہء کیازء چھوس کلہ دگان۔ حتی رسول رحمت دوپک کافر چھوء !اتھ پیٹھ چھا میہ ژھپہ کرتھ روزن۔رسول رحمت ونان؛" حسین چھوء میانہ ساتھی بہ چھوس حسین سندء ساتھی" ۔قاضی شریح چھوء ونان :"یہ[حسین] چھوء واجب قتل"۔ اتھ پیٹھ چھونا ودن؟۔

امس کئژ تیر آيہ آتھ پیٹھ چھنہ ودن۔مگر اسلامک ترجمہ کیاہ آو کرنہ [امہ باپت چھوء احتجاج کرن ، عزاداری کرن]۔

امام حسین علیہ السلام آو بہء ہاوو دلیل کیا چھئی ۔اسلامس کوس لبادء لوگکھ پیٹھہء کنہ۔اسہ سوز خداین  رسول رحمت < رَحْمَةً لِلْعَالَمِينَ>(الأنبياء/107)بنایتھ۔ہر کانسہ چھئي وین وانج ڈنجہ کہ رسول رحمت سندء برکتہ میلہ میہ نجات ،یوس وین تمسندء جانشینی ہند دعوی چھوء کران ولہء تو ترای تو نظر۔

اسہ اگر کنہ ساعتہ پنن موقدم آسہ ننگہ کرن کینہ ہیہ کوس نہ پوشت۔پنن آغہ صابی آسہ ننگہ کرن کینہ پوشوس نہ ۔پنن چیف منسٹر آسہ ننگہ کرن ، کنیہ پوشوس نہ ۔وزیر اعظم آسہ ننگہ کرن کپاری پوشوس۔یاتیاہ پاورس زیادء آسن تیژا چھئی محدودیت کم گژھان۔امام حسین علیہ السلام کوس متھڈ چھئي استعمال کران ۔سوء چھوء دپان کہ توہیہ گژھیو فکرء ترن کہ اسلام کیاہ گو ۔

یو س اسلام ضامن بنیووی اصلا حیوانن تان ،انسانن ہئنز چھنہ کتھی ،وین وچھیوی توہی یوس زن امسند جانشینی ہند چھوء کرن ، وچھووی تمسند دین کیاہ چھوء۔قرآنس کیاہ معنی چھوء کڑان سوء۔

امام حسین علیہ السلام  آو قرآن چو دلیلو ساتھی ثابت کرنہ کہ یہ چھوء دینہ منزء خارج۔اتھ پیٹھ چھوء وودن۔عزاداری چھئي یہ۔

معیار بدلاوکھ۔حسین بن علی آو کافر قرار دنہ ۔ یزید بن معاویہ آو قرار دنہ امیرالمومنین۔

اتھ پیٹھ چھا ژھوپہ کرن!

یہ چھا سوء واقعہ کہ اکہ دوہ چھوء گمت۔کانہہ کرء [اعتراض]کہ وین کیازء چھوء [ونہ تہ واویلا کرن]پانے چھو ونان یوتاہ کال گو 1334 وری ۔تلیو سا تھپ وین ۔اسا ہمی تہء کئر غلطی ہمس تہ لعنت  یمس تہ نعمت۔یہ خوش کریو وینتو ، موکلاویی ،یہ دندر کتھ پیٹھ ، جلوس کیازہ ، جلسہ کیازہ ، ماتم کیازہ ،سینہ دگن کیازہ ، ودن کیازہ ؟۔

کیازء کہ تمی چھنہ سمجھانی ۔اور ائس چھنہ تمن سمجھاوانی۔

بہ چھوس جایہ جایہ وننہ نچ کوشش کران کہ سانہ عزاداری ہند پہلو چھئي زء آسان ۔

یوس امام بارس منز عزاداری کران چھئی ، تہ یوس زن ائس سڑکن پیٹھ جلوس کڑتھ  چھئی کران یمی چھئي زء پہلو،امام بارے منز ، گھرس ، ٹینٹس تل مجلس کرتھ چھئي آئس عزاداری سمجھان ،سڑکہ پیٹھ دائرہ گنڈتھ چھئي آئس عزاداری سمجھاوان۔

وین یلہ نہ اسہ پانسی پئی آسہ کہ ائس کیازء ودان۔[ائس ونو]اہن سا آ ، پزی  سوے شہید گو، امہ ساتھی ہے فتح میاجی اسلامس ۔

[کربلاہس منز]کتھ اسلامس میاجی فتح؟

یوس اسلام چھوء دپان یزید چھوء حق حسین چھوء باطل امی اسلامن  لباہ فتح!

اسلام ہے مظلوم گو[کتہ لبن فتح]

یہ چھا خوشی، اتہ کوس بچووی،اسلامک علمدار بچوو وا ؟

اسلامک سالار بچوووا؟

حسین بن علی یس کیاہ کورکھ؟

عباس بن علی یس کیاہ کورکھ؟

علی اکبرس کیاہ کورکھ؟

کوس بچوو امہ منزء ، دپو فتح لب۔

[کربلاہس منز]فتح لب یزیدی اسلامن ۔

اسہ چھوء ہر زمانس منز پنن پان الگ کرن یزیدی اسلامس نشہ۔

اسہ نشہ چھوء اسلام صرف حسینی اسلام۔

یمس حسینی اسلام قبول آسہ سوء چھوء اہل حق۔

مگر وین چھئي ائس تمی اعمال کران ،اسہ کور یہ حق تہ ضایع پننہ نیو طریقو ساتھی ۔یہ حق یی ہا پرزء ناو نہ ،سانیو نماز جماعتو ساتھی ۔

یہ حق یی ہا پرزء ناونہ سانہ عزاداری ساتھی۔

ہر جایہ کنی سیلابا،محلک  محلے ، گامک گامے ، شہرک شہری،امام زمانس ساتھی ہم صدا گژھت حسین حسین کران ۔

یمس نہ یہ کتھ فکرے چھئی تران چیانہ ودنہ ساتھی ترء فکرء یوتاہ سیلاب وچھت۔[یمہ ساتھی]ظالم تہء چھوء نون گژھان مظلوم تہ چھوء نون گژھان۔

کمس آئس پتہ کربلاہس منز چھئي یی تیاہ شیعہ؟

صدام ملعون یمہ ساعتہ واصل جہنم گو ، مؤمنین گئي روانہ  امام حسین سندس روضس کن،گوڈء درای نفر 4،[وین چھوء]نجف پیٹھہ کربلا تان چھوء تتھ کئن زن چھوء ہر جایہ  گھرے بنتھ۔ لچھن ہند کاروان ، کرور ڈوڈ کرور  چھوء[کربلاہس منز]ژتجہ مس پیٹھ آسان ، وین چھنہ یہ ونہ نوی ، دوہ کھو دوہ [چھوء تعداد بڑان]۔گوڈنہ ورء گئی 80 لچھ جمع  دویمہ وری 95 لچھ ، تریمہ وریہء1 کرور 10 لچھ،ہر وری ووچھ [تعداد بڑان]۔

سانہ امہ اجتماع ساتھی گو[تبلیغ] تور[بین فکرء] واریاہ کنیہ مظلومیت  گئي پانے آشکار کہ  یکہ وٹے پانہ وانی جمع گژھہ نس پیٹھ۔

یہ حسین سند پیغام دنہ ساتھی ،یوس زن کربلاہس منز اسہ اوسکھ ایڈرس تھوومت  اربعین ۔ اربعین چھئی [شیعہ ین ہندء]اجتماع ہچ علامت ۔یوس زن زیارت اربعین [پرنس]ییژاہ تاکید چھئی ۔ مثلا یوس زن اسہ مؤمنن ہنزء علامتو منز چھئی ،یمو منز چھئی اکھ واج لاگئن دچھنس اتھس.......وین ائس نہ کہین ہیکان ونتھ ،پتہ بنیوو ایڈرس یتوی یوت کہ وین گوژھ میہ فکرء ترن کہ ژء چھوء کھا یزیدی کنہ حسینی، میانس اتھس کن ووچھہ زء ،میہ آسی دچھنس اتھس واجی لاگت۔

وچھیووی کوتا ہ مظلوم بنیوو اسلام۔

ژء چھوکھا حسینی کنہ یزیدی؟

ژء واتی زء [20صفر]کربلا ،ائس وچھو یوہس  کئژ بچائے حسینی۔

یہ زن عراقس منز ونہ تہء رسم چھوء تتہ چھنہ [عاشورا ہس پیٹھ]ساری یوان کنیہ ۔کیازء کہ  یہوے قتل و بطل  اوس ،یوس رسول رحمت سنز کتھ یژھہ ہا کرن تمس آئس قتلاوان۔دین اوس سوئي رسال معابس کن نسبت دوان کہ یتھ منز ونن چھوء کہ حسین چھوءکافر تہ یزید چھوء امیرالمؤمنین۔حسینی ین کور نہ زہین یہ قبول ۔نکہ رو وکھ ، ٹوکہ رووکھ ،مگر امی کور نہ تتھ ساتھی تعاون کینہ ۔

وین کہ کین مسائلن منز ،یوس زن اسہ پیٹھ اکھ [ذمہ داری چھوء عائد کران] یتھ زمانس منز یوس زن ونہ کیہ نس کہ ہیکوس ونتھ علمی دور چھوء ،میڈیا ہوک دور چھوء،یتھی منز زن ان اے فرکشن آف سیکنڈ ائس  پنن کتھ (حقچ کتھ یا باطلچ کتھ)دنیاہ کس پورء فضاہس منز قائم تھاوت۔یوس یتین یمہ طریقہ تمیوک استعمال کرء ،ہیکہ کرتھ ۔

گو یتھ دورس منز چھنہ اسہ ژھری واجی ،تہ ژتجہ ہمس/ اربعین نس  منز زیارتی یوت[پرن]  کینہ ، بلکہ  سانی ذمہ داری چھئي امہ کھوتہ کینہ سنگین  گژھان کہ یمن سارنی مسائلن کن چھوء اسہ  وین نظر تھاون۔یتھی کئن زن ہانکلہ ہوند موضوع کیازء آو حرام قرار دنہ ؟

امام خامنہ ای ین فرمووو برونہ آئس کران ،کوٹھس منز ائس کران، ٹھیک آئساکران،غلط آئسا کران ،مگر امچ انٹر پٹیشن  ائس نہ دنیاہس منز گژھان کنہ تہ شکلہ منز ،ائس آئس کران  ٹھیک آئسا کران کنہ غلط،مگر وین یہ بنیوو میڈیا سٹنٹ،وین چھئی ہر جایہ فوکس  کران کہ ژء کتین کڑک پلو ،ژء کتین روزک نتھہ ننوے،پتہ یمہ ساعتہ ژء خون آلودء آسکھ چیان شکل ہاوء کہ ژء چھوکھ ہمیشہ آسان یی۔گو یمہ ساعتہ چون جذبہ تہ آو غلط طریقس منز استعمال کرنہ ژء چھی تلہء یکدم ہوشیارء گژھت [امیوک توڑ کرت]میہ کیاہ چھوء تلہ کرن ۔

ون کینس زن الحمدللہ امہ کہ برکتہ ینہ پیٹھہ یہ فتوی آو کہ ہانکل واین چھئی  حرام ، وین چھوء ہر جایہ شیعہ خون ڈونیٹ کران   [عطیہ دوان]،اور ینہ پیٹھ ایرانس منز یہ فتوی نافذ گو آٹومٹکلی گو [بلڈ بینک کس]اپر روس منز آو ایران۔ایران چھوء بلڈ ڈونیش نس منز ورلڈ رینکنگ منز گوڈنکس نمبرس پیٹھ{اللَّهُمَّ صَلِّ عَلَى مُحَمَّدٍ وآلِ مُحَمَّدٍ وعَجِّلْ فَرَجَهُم}وین  یلہ وارء وارء  ساری  ائس جماعت کہ شکلہ منز ،یہوے یہ کرو[خون عطیہ دمو]ائس لاگو خون  دیون ،ہر جایہ دپو ،یوس تہ کانہ غیر مسلمان تے آسہ [تمسندء خاطرء تہ آسہ،کریکھ گژھہ] ہے مفتی چھوء خون میلان ۔ کتہ سا بنان؟ امام حسین سندس ناوس پیٹھ۔{اللَّهُمَّ صَلِّ عَلَى مُحَمَّدٍ وآلِ مُحَمَّدٍ وعَجِّلْ فَرَجَهُم }یمو یہ میڈیا سٹنٹ کور کہ یہ ہوے ہانکل واین کررکھ اکسپلائٹ ،یمو چھو دہشتگرد ،یمن چھوء خونس ساتھی گندن تگان،تمی ساری ہین زوء ژمنٹ  ہے اسہ کوس تاون پیو ،اسہ کیازء کرناوی یہ بند ،یمی کیاہ ائس کران اتھ کون ائس شغلس ،یمو ہے سورے سون منصوبے کئر خراب ۔کیازہ کہ ینہ ائس کرورء بود روپیہ  خرچ کرتھ یمن خلاف  یہنز شبیہ مسخ کرنچ کوشش  آئس کران اسہ میلہ نہ وین فائدے کانہہ، یہ چھوء وینکینس غئر مسلمان تہ دپان  بہ بچووس حسینن ،مسلمان سنز چھنہ کتھی ۔یمس وین کہین [خون دنہ وول ]آسہ،[امس تہ گژھہ]بئڑ امید [پادء]کہ حسین سندس ناوس پیٹھ آسہ  ہر ہاسپٹلس منز  مفت خون میسر۔ ہر کانہہ ونہ یوس خون سنہ 61[ہجری ]یس منز ہار نووکھ کربلاہس منز سوء چھوء ونہ تہء انسانن سگہ ناوان۔{اللَّهُمَّ صَلِّ عَلَى مُحَمَّدٍ وآلِ مُحَمَّدٍ وعَجِّلْ فَرَجَهُم} ۔لذا چھوء سانین جماعتن منز اکھ آفاقی حرکت آسنچ ضرورت ۔ائس [شیعہ ]چھئي  رول ماڈل،امام زمانس چھوء یون تمس چھوء پورء کائیناتس منز عدل و انصافچ حکومت قائم کرن ۔اسلئے چھوء سانہ ہر کانہہ حرکتہ اگراصل تہ نے آسہ سوء چھہء [مزید یوان] غلط طریقس منز پیش کرنہ   ،تمیوک چھوء اسہ نظر تھاون۔ مرثیہ پرنہ ، ائس گژھو تتھی خوبصورت طریقس منز مرثیہ پرن ،مرثیہ منز عزاداری کرن ،اگر زن خاص طور پر سوء یتھہ کئن رکارڈ آسہ  گژھان ،کیمراس منز آسہ  یوان، تریم ائچھ آسہ تتھ پیٹھ کنہ تھاومژ، یہ گژھہ پرزنٹیبل روزن۔یہ گژھہ غئر مسلمانس[تان پیغام]  گژھن یہ کیاہ دلیل چھئی ۔

نوحہ ، دائرہ ،یہ گژھہ یتھی کئن زن ملکس منز چھوء یوم آزادی آسان  پتہ چھئی تمی پنن ہنر ہاوان ،پنن جھانسی کڑان ، پنہ نہ ٹیکنالوجی ہند ، پننہ ترقی ہند ،چھوء یہ اکسٹریم ماڈل،لیٹسٹ ماڈل  چھوء یہ کران ڈمانسٹریٹ کہ وچھ سا بہء کوت چھوس ووتمت۔ائس گژھو محرمس منز یتھ کئن کرن ،یوس زن ائس کوٹھین منز [مجلس چھئ کران]اتین چھنہ مثلا حد ادب مقرر کینہ،اتین یتھی کئن تہء ائس ودو اتھ چھنہ کانہ محدودیت کینہ۔توہی چھوء پننہ نس امامس[امام خامنہ ای یس] کن نظر کران سوء کتھہ کئن چھوء عزاداری کران ۔یہ چھئی مظلومیتی بیہ طریقہ ۔سوء چھنہ رومال تہ ہیکان تھاوت بوتھس،[کیازہ کہ]یی بناون پروپگنڈء یمی یتھہ کئن بہوان ، ایکٹنگ کران ۔یا ایڈوانس سوسایٹی آسہ دپن ؛ونہ چھئي یمی گئے گذرے لوکھ یمی چھئي دئج کران استعمال، کہ ہائي جینیکلی چھنہ یہ ٹھیک کینہ،یمی چھئی انسولایزڈ لوکھ،یلہ امام [خامنہ ای چھوء یہ رعایت کران]یہ چھوء سبق  دوان اسہ کیاہ چھوء کرن۔

اسہ چھئی ذمہ داری بئڑ ، کیازکہ ائس چھئی دعوا بوڈ کران۔

سانہ امہ عزاداری ہند صاحب چھوء امام زمان [عج]اسہ چھئي امام زمان سنز ترجمانی کرن  کہ سانین صفن منز چھوء امام زمان حاضر۔ائس چھئی تمس تسلیت ونان۔اسلئے اسہ گژھہ سوی انداز تہ آسن ،سوئی لباس تہ آسن۔

 اگر اسہ پئے آسہ،اسہ  چھوء کانسہ جان  شخصیت تس نش گژھن ،ائس پنن پان سنبھالتھی گژھو ،شیرتھی گژھو ائس،صاف پلو لگائی تھی گژھو ائس ، تہ مرثیہ منز کیازہ یمو نہ تتھ کئن ائس۔مجلس منز کیازہ یمو نہ ائس تتھہ کئن،بالخصوص وضو کرتھ کیازہ آسو نہ آئس نوحہ پرء نس منز، مرثیہ پرء نس منز۔

یمہ ساعتہ ائس ونو کہ اتین چھوء امام زمان حاضر(بعضی جاین چھوس ونان بہء یہ چھہ ونہ نچ ضرورت  جایہ جایہ مثلا یہ کہ [مقتل پرن وول]چھوء زبان حال ونان مگر یہ جملہ چھنہ صحیح کہ جناب زینب بس رٹو تھرنہ حقیقت چھئي ونن۔جناب زینب بس چھنہ تھر رٹن کہین بلکہ امام زمانس ۔ جناب زینب تہ امام حسین علیہما السلام تمی چھئي یکہ ووٹےاسہ تماشہ وچھان تمس کمس چھئی تھر رٹن۔تھر یمس رٹن چھئی سوء چھوء) یوس  زندء چھوءسوء چھوء سون امام زمان [یوس فرماوان]" وَ لاَبْکِیَنَّ لَک َ بَدَلَ الدُّمُوعِ دَماً "یوس زن دوہس تہ راتس عزاداری ساتھی مصروف چھوء۔یہ گوژھ اسہ فکرء ترن کہ بہء ودا تتھہ کئن کہ میانہ ائچھ منزء گژھہ امام زمان سند اوش جاری ۔اوش آسہ امام زمان سند ائچھ آسہ میانی ۔ اسہء چھوء تتھہ کئن اوش ہارن۔اسہ چھئی تتھہ کئن عزاداری کرن۔

بیہ چھوء امام زمان علیہ السلام سندء مظلومیتک یہ پردء ہٹاون کہ امام حسین علیہ السلام چھوء بس قرآن۔یتین نہ قرآن تور فکرء تتین روٹ پنن کہوٹ امام حسین۔ یتین نہ امام حسین علیہ السلام فکرء تور تتین[ روٹ] قرآن، امہ نیبر چھنہ اتھ نہ معنی کانہہ ، نہ مفہوم کانہہ۔

قرآن چھوء اسہ دعوت دوان <يهْدِي إِلَى الرُّشْدِ >(سورہ الجن/2)>ائس گژھی رشد کرن ، تھود کھسن۔امام حسین ونان "أَدْعُوكُمْ إِلى سَبيلِ الرَّشادِ"۔امام حسین تہ چھوء اسہ دعوت دوان رشدک ۔

قرآن چھوء ؛< وَالْقُرْآنَ الْعَظِيمَ>قرآن چھوء عظیم(الحجر/87)۔امام حسینس چھئی ونان "عَظِيمُ السَّوَابِق"امہء سند سابقہ چھوء عظیم۔امام حسین علیہ السلام چھوء "حَتَّى أَتَاكَ الْيَقِينُ "یقین کس آخری درجس پیٹھ ووتمت۔قران ونان<وَإِنَّهُ لَحَقُّ الْيقِينِ>(الحاقة/51) قرآن چھوء حق الیقین۔امیوک ترجمان چھوء یہ عزادار بنان۔لذا چھئي سانی ذمہ داری تمے اعتبارء زیادء سنگین گژھان ۔

یمہ ساعتہ ائس کربلاہ ہس منز نظر تراوو کہ امام حسین کیاہ اوس ونان تہء اسہ کیازء چھئی عزاداری کرن ،یمی کین پہلون چھوء بار بار اسہ سمجھن تہ سمجھاون ۔کہ کیازء چھئی ودان ۔ مرنس چھنہ ودان۔

مگر رسول رحمتس کوس انتقام ہیوتک کربلاہ ہس منز ائس چھئی اتھ پیٹھ ودان۔یمہ سندء امیدء ائس [امیدوار چھئی]کہ پگاہ آخرت تہ آسہ سون سرخ رو ، تمہ سئ کوس انتقام ہیو تک  میدان کربلاہ ہس منز۔

قال بعض روات؛ مختلف راویوو چھوء ،مختلف اندازن منز امام حسین علیہ السلام سنز بیکسی  نقل کئرمژ۔ بہء کرء سوء اکھ منظر بیان تہنز زحمت کرء تمام ۔یہ زن مختلف رواتو چھوء [لیوکھمت]ہرکانسہ چھوء پننہ پننہ اندازء الگ الگ الفاظن منز لیوکھمت ، یمیوک زن لبہء لباب تقریبا چھوء یہوے؛" فوالله ما رایت مکثوراً قط قد قُتل ولده واهل بیته واصحابه اربط جاشاً ولا امضی جنانا منه "امام حسین علیہ السلام یتھ کئن  جہاد چھوء کران ،ساری راوی چھئي اتین پریشان یہ کئژھ شخصیت چھئی ، یہ چھوء کوس ، یمس اولاد چھئی گمت مارء ،بیہ تمہ حالہء،یمس اہل بیت چھئک پارء پارء کرمت،یمی سند اصحاب چھئک یتھہ کئن شہادتس پیٹھ فائز سپدیمت،تہء امسند یہ شہامت ، یہ نورانی چہرء، یہ بشاشت ، یژھ ہمت ،یہ کوس نورانی شخصا چھوء حسین ۔ اللہ اکبر۔

اکہ طرفہ چھوء امام حسین امسنز ہر ادا چھئی نشاندہی دوان کہ یہ چھوء قرآنی آیت ، یوس زن اسہ امی یقین نچ ترجمانی چھوء کران کہ امام حسین علیہ السلام چھوء اسہ کنیوک حوالہ دوان ، یہ چھوء تمس خدای سندس عدلس تہ وعدس کن سون توجہ متوجہ کران کہ تہند سودا گژھہ آسن خدایس ساتھی ۔

یمس یقین آسہ کہ بہء چھوس خدایس ساتھی سودا کران ،تمس آسہ نہ اتھ منز کانہہ غم و رنجی  گژھان کہ میانی اولاد چھئی قتل گژھان کہ ، کیازء چھئي گژھان۔امس چھنہ [عقیدء نٹان کہین]امسندس روحیہ یس  پیٹھ چھنہ اثر پیوان کہین ۔

مگر یمی زن  وین پننہ نس پانس چھئي ونان ائس چھئي مسلمان  تہ امام حسینس چھئی ونان کافر تہ واجب قتل ، یمی چھئي امس پیٹھ ہر طریقس منز ظلم کرنس منز اضافہ کران " إِذْ كَانَتِ الرَّجَّالَةُ لَتَشُدُّ عَلَيْهِ فَيَشُدُّ عَلَيْهَا بِسَيْفِهِ فَيَكْشِفُهُمْ عَنْ يَمِينِهِ"امامس پیٹھ چھوء کافیہ [حیات]تنگ یوان کرنہ ،ہر طریقہ ، یمس تیرء ساتھی تگان چھوء حملہ ء کرن ، یمس کانہء ساتھی چھوء تگان ، یمس شمشیرء ساتھی تگان تتھ منز چھوء اضافہ کران ۔اللہ اکبر۔

امام حسین علیہ السلامس امہ آيہ انتقام ہیہ نک کیاہ جذبہ چھوء پتہ کنہ ؟پننہ تمام وجودء ساتھی کیازء چھئی یژھان نابود کرن؟کمس حسینس؟

امس پیٹھ کرو نا ائس نالہ فغاں۔

امام حسین علیہ السلام چھوء یمی ساری تیر و کان تحمل کرتھ [کیاہ یژھان ونن]

امام حسین علیہ السلامن اوس اکھ نکتہ بنوومت یس زن خیمس( اہل بیتن ہندس خیمس) تہ قتل گاہ ہس درمیان اکھ نکتہ اوس ،حملہ ائس کران پتہ آئس واپس اوتن یوان یوتھ نہ کانہہ خیمہ گاہ حملہ کرء۔اشقیاء چھئی امامس پیٹھ ہر اعتبارء پنہ نین حملات منز تشدید کران ،امام حسین علیہ السلام چھئي امے حالہ ء واپس یوان اتھ نکتس پیٹھ روکان تہ فرماوان:"لَا حَوْلَ وَلَا قُوَّهَ اِلا بِاللهِ اَلعَلِیِّ العَظیمِ"۔امام حسین علیہ السلام کیاہ چھوء اتین تہء ونان ۔اورء یژاہ تہء لشکر آست،مگر[یورء]لشکر کوس چھوء ، طاقت کوس چھوء"لَا حَوْلَ وَلَا قُوَّهَ اِلا بِاللهِ اَلعَلِیِّ العَظیمِ"۔یہ چھوء خدائی اسہ بناوان۔یمی تیر کرن نہ میہ کہین، یژاہ  لشکرکرء نہ میہ کہین ،کیازء کہ میہ چھوء خدا!۔

حسینی عزادار چھوء یی ونان کہ یوس اسہ خدائی اوس بناوان کمہ ظلمہء [کوروون امت نشہ جدا]۔قرآن اگر زن مرثیہ خوانی چھوء کران مشرک کورء خاطرء، رسول اللہ صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم سندء خاطرء کریو نا کہین عزاداری ؟!۔ خدا دپان؛ <إِذَا الشَّمْسُ كُوِّرَتْ>(التکوير/1)< وَإِذَا النُّجُومُ انْكَدَرَتْ>(التکوير/2)۔قیامتک سوری منظر بیان کران ۔آفتاب ژھتہ، تارک پین،پہاڑ پکن،....سوء سورے منظر بیان کرتھ چھوء ونان یوس کور زندے آیہ دفن کرنہ دمس ونہ خدا صائب کُوری ژء کمہ جرمہ کئرہک زندے دفن  ۔<بِأَي ذَنْبٍ قُتِلَتْ>(التکوير/9)۔یلہء مشرک کورء سندء باپت خدا کرء یتھہ کئن مرثیہ ، رسول رحمت سندس نورء عین نس پیٹھ یی اسلام کس ناوس پیٹھ تلوار کھینچنہ اتھ پیٹھ کرءنا کہین مسلمان مرثیہ ؟

امام حسین علیہ السلام یمہ ساعتہ دوبارہ حملہ چھوء کران ،یمی [دشمن خدا]چھئی ناکام گژھان امام حسین علیہ السلام سند حملہ رکاونہ خاطرء ،امہ پتہ چھوء امام حسین علیہ السلام نظر پیوان یمو ملعون نو کور وین اہل بیتن پیٹھ حملہ ۔امام حسینن دیوت صدا۔"فَصَاحَهم"کریکھ دژن۔"وَیْحَکُمْ یا شیعَهَ آلِ اَبی سُفْیانَ!"ابوسفیان سندیو شیعو!توہیہ کوس کردارا چھوو یہ۔"اِنْ لَمْ یَکُنْ لَکُمْ دینٌ"،اگر توہیہ دین چھوو نہ کہین،" وَ کُنْتُمْ لا تَخافُونَ الْمَعادَ"،توہیہ چھوو نہ قیامتک خوفاہ کہین،اتھ منز کیاہ چھوء امام حسین علیہ السلام ونان میہ چھوء قیامتک خوف،توہیہ چھوو نہ قیامتک خوف کینہ۔عزادار کیاہ گژھہ ونن میہ چھوء قیامتک خوف توہیہ چھوو نہ کہین۔بہء چھوس عزاداری کران امہ موجوب کیازء قیامتس منز چھئم پئ کہ امیوک آسہ حساب کتاب کہ میہ گنڈنا اسلامس ساتھی ،ابو سفیان نس اسلامس ساتھی کنہ رسول رحمت سندس اسلامس ساتھی ۔امام حسین علیہ السلام اسہ کہوٹ برونہ کنہ تھاوان،" وَ کُنْتُمْ لا تَخافُونَ الْمَعادَ فَکُونُوا اَحْراراً فی دُنْیاکُمْ هذِهِ"، اگر نہ توہیہ دین چھوو ،قیامتس پیٹھ یقین چھوو ،اصلا غئرت ہایوو توتہء،توہی ہے چھوو پانس عرب ونان ،عربی غئرتی ہاووتو پنن،مردانگی ہاوو تو توتہء ۔"وَارْجِعُوا اِلى اَحْسابِکُمْ اِنْ کُنْتُمْ عَرَبَاً کَما تَزْعُمُونَ"عربی غئرت ہاوتو ،تمہ کوئی کئرتو مظاہرء،کیازء کہ دین چھنہ توہیہ منز لبنہ یوان کینہ  ۔

امہ پتہ روکیے یمی اشقیاء،اہل بیتن پیٹھ حملہ کرنس ۔کیازء کہ دوپنک اگر بہء چھوس توہیہ ساتھی جنگ کران ،توہی کریوو میہ ساتھی جنگ ۔یی تس کالس بہء زندء چھوس تی تس کالس گژھنہ توہی گژھن اہل بیتن ہندس خیمس نزدیک کہین۔

جنگ کران کران تھوک وین امام حسین ۔"وَ قَدْ ضَعُفَ عَنِ الْقِتَالِ"، فبَینَما هُو واقِفٌ إذْ أتاهُ حَجَرٌ "امام حسین علیہ السلامن یژھیوو وین تھک کڑن،ائک ملعونن تج لگاوئن کئن،"فَوقَعَ فی جِبهَتِه "سوء آئی ڈیکس،خون گو جاری ،آہ واویلا۔امام حسین علیہ السلامن یژھیو پننہ پلوء ساتھی ائچھو پیٹھہ خون صاف کرن۔اللہ اکبر۔"فَأَخَذَ الثَّوْبَ لِیَمْسَحَ الدَّمَ"پنن پلو روٹن یہء خون کرء ہا صاف یوس ون ائچھن حائل سپدیو" عَنْ جَبْهَتِهِ فَأَتاهُ سَهْمُ"اتھ اثناء ہس منز تمس شقی یس گو نہ تسلی،کئن لگاونس پیٹھ ،بیاکھ شقی ووتھ تیراہ لووین" فَأَتاهُ سَهْمُ مَسْمُومُ لَهُ ثَلاثَ شُعَبٍ فَوَقَعَ عَلی قَلْبِهِ"تیراہ لووین یوس زن مسموم اوس زہر آلود اوس،زہر آلودی یوت نہ کینہ بلکہ تُرو شاکل اوس یہ لوین قلب مبارک امام حسین علیہ السلامس۔" فَأَتاهُ سَهْمُ مَسْمُومُ لَهُ ثَلاثَ شُعَبٍ فَوَقَعَ عَلی قَلْبِهِ"،"فَقالَ عَلَیهِ الْسلام: بِسْمِ اللَّه وَ بِاللَّهِ وَ عَلی مِلَّةِ رَسُولِ اللَّهِ"

خدایہ سندء ناوء ساتھی ، خدایہ سندء باپت بہء چھوس رسول رحمت سندس دینس پیٹھ قائم۔اللہ اکبر۔

وچھان چھوء امام حسین علیہ السلام کیاہ چھوء ونان یہ چھونا سوئی جملہ یوس زن یمہ ساعتہ علی مرتضی علیہ السلامس شمشیرء ساتھی ضرب لوویوک اتھ محرابس منز تمی تہء وون " بِسْمِ اللَّه وَ بِاللَّهِ وَ عَلی مِلَّةِ رَسُولِ اللَّهِ "یہ ہوے انتقام چھوء یوان ہنہ کہ رسول رحمت سند آئين کیازء روزء زندء۔یہ دین کیازء روزء زندء۔امیوک انتقام چھئی ہیوان ۔آیا امہ خاطرء کررو نا عزاداری ۔اللہ اکبر۔

عزادارو !شاید بہء ہیکنہ مقتل لک یہ جملہ سوری پرتھ، آہ  واللہ۔

" ثُمَّ رَفَعَ رَأُسَهُ اِلَی السَّماءِ" امام حسین علیہ السلامن تول پنن سرء نازنین آسمانس کن وَ قالَ:أَللَّهُمَّ إِنَّک تَعْلَمُ أَنَّهُمْ یَقْتُلُوَن رَجُلاً لَیْسَ عَلی وَجْهِ الاْرْضِ إِبْنُ بِنْتِ نَبِیٍّ غَیْرُهُ " بار الہا!ژی چھوکھ گواہ یمی چھئي وینہ کینس تمسی قتل کران یوس زن چیانس حبیب سندء کورء ہند کانہہ اکھا چھنہ روی زمینس پیٹھ میہ وغیر۔آہ واللہ۔" ثُمَّ أَخَذَ السَّهْمَ"یہ تیر روٹن ،آہ۔آہ واویلا ۔یہ تیر اگر امام حسین علیہ السلام تُروشاکل تیر یوس زن سینس منز پیوست گو ،وین واپس کڑء قلب نازنین تہ چھوء ممکن  اتھ منز نیرء ۔آہ واویلا۔امام حسین علیہ السلام کیاہ چھوء کران ،" ثُمَّ أَخَذَ السَّهْمَ، فَأَخْرَجَهُ مِنُ وَراءِ ظَهْرِهِ، فَانْبَعَثَ الدَّمُ کَأَنَّهُ میزابُ، فَضَعُفَ عَنِ الْقِتالِ وَ وَقَفَ،"۔اللہ اکبر۔یا امام زمان ، یا امام زمان یہ تیر چھوء رٹان پشتہ کئن چھوء نبر کڑان ۔مقتل لیکھان تتھ کئن گو خون امام حسینن  جاری زن ائس ناگ وزان۔ أَلَا لَعْنَةُ اللَّهِ عَلَى الظَّالِمِينَ(هود/18)وَسَيعْلَمُ الَّذِينَ ظَلَمُوا أَي مُنْقَلَبٍ ينْقَلِبُونَ(الشعراء/227)


امام حسین قرآنک آئینہ -4 PDF فایل ڈاونلوڈ کرنہ خاطرء

·        امام حسین علیہ السلام قرآنک آینہ -01

·        امام حسین علیہ السلام قرآنک آینہ-02

·        امام حسین علیہ السلام قرآنک آینہ-03

·        امام حسین علیہ السلام قرآنک آینہ-04

·        امام حسین علیہ السلام قرآنک آینہ-05

·        امام حسین علیہ السلام قرآنک آینہ-06

·        امام حسین علیہ السلام قرآنک آینہ-07

·        امام حسین علیہ السلام قرآنک آینہ-08

·        امام حسین علیہ السلام قرآنک آینہ-09

·        امام حسین علیہ السلام قرآنک آینہ-10

 


آپ کی رائے
نام:  
ایمیل:
عبارت:  500
قدرت گرفته از سایت ساز سحر