»
دوشنبه 2 بهمن 1396

اربعین حسینی یوک چلہ تہء سانی کمائی

عبدالحسین سنز 20صفر 1435 مطابق24 ڈسمبر 2013 یچھ گام  بڈگامہ پرمژ مجلس

 

اَعُوذُ بِاللّهِ منَ الشّيطانِ الرَّجيم

بِسْمِ اللَّهِ الرَّحْمَنِ الرَّحِيمِ؛نحمده و نستعینه و نؤمن به و نتوکّل علیه و نستغفره و نصلّی و نسلّم علی حبیبه و نجیبه و خیرته فی خلقه حافظ سرہ و مبلغ رسالته سیّدنا و نبیّنا و طبیب نفوسنا و حبیب قلوبنا  ابی‌القاسم المصطفی محمّد(صلی اللہ علیه و آله  وسلم)[اللَّهُمَّ صَلِّ عَلَى مُحَمَّدٍ وآلِ مُحَمَّدٍ وعَجِّلْ فَرَجَهُم] و علی آله الأطیبین الأطهرین المنتجبین المعصومین سیّما بقیّةاللَّه فی الارضین۔

اما بعد؛قال اللہ سبحانہ و تعالی فی کتابہ بِسْمِ اللَّهِ الرَّحْمَنِ الرَّحِيمِ؛ رَبَّنَا وَابْعَثْ فِیهِمْ رَسُولًا مِنْهُمْ یتْلُو عَلَیهِمْ آیاتِكَ وَیعَلِّمُهُمُ الْكِتَابَ وَالْحِكْمَةَ وَیزَكِّیهِمْ إِنَّكَ أَنْتَ الْعَزِیزُ الْحَكِیمُ«سورہ بقرہ آیت129» صدق اللہ العلی العظیم۔

موضوع: حسینی چلس منز کیاہ کور اسہ حاصل؟

شب اربعین امام حسین علیہ السلام سندس اتھ اربعین نس منز ( یعنی  اسہ کمووی اکھ چلہ ) اتھ حسینی چلس منز کیاہ کور اسہ حاصل؟ یہ چھوء سوال تہء موضوع سخن۔

یوس سورہ بقرہ آيت 129 تلاوت میہ کئر،یہ چھوء حضرت ابراہیم سنزء زبانی پروردگار عالم  نقل کران کہ حضرت ابراہیم من کو رخدایس عرض :"بار الہا پیغمبراہ کر تن مبعوث تاکہ لوکن بناوء ہا  عالم مہذب "۔ خداین دیوت تمسندس اتھ دعاس اجابت تک درجہ ۔

 سورہ جمعہ ہس منز چھئي ائس  آیت دویمہ منز پران:

هُوَ الَّذِی بَعَثَ فِی الْأُمِّیینَ رَسُولًا مِنْهُمْ یتْلُو عَلَیهِمْ آیاتِهِ وَیزَكِّیهِمْ وَیعَلِّمُهُمُ الْكِتَابَ وَالْحِكْمَةَ وَإِنْ كَانُوا مِنْ قَبْلُ لَفِی ضَلَالٍ مُبِینٍ

«سورہ جمعہ آيت2»  

پروردگار عالمن اجابت دیوت ،یمہ ساتھی زن امہ آيہ ساتھی چھوء تران فکرء  کہ امہ وقتک لوکھ آئس دون کمزورین ہئند شکار :

·         اکھ کمزوری ائس علمی

·         بیاکھ کمزوری ائس عملی

یعنی اکھ کمزوری ائس نادانی ۔بیاکھ کمزوری ائس گمراہی ۔پروردگار عالمن کور حضرت(صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم)مبعوث یمی خامی اتھ معاشرس منز کڈنہ باپت۔یہنز نادانی تبدیل کرن علمس منز،یہند جہل تہء گمراہی تبدیل کرن عملء منز۔یتھی کئن زن مولا امیرالمؤمنین امیوک معنی ، بعثت تک ،آنحضور صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم سندء مبعوث سپدنک نہج البلاغہ کس خطبس منز (گوڈنکسی منز)فرماوان:

فَهَدَاهُمْ بهِ مِنَ الضَّلاَلَةِ، وَأَنْقَذَهُمْ بمَکانِهِ مِنَ الْجَهَالَةِ.

یعنی پروردگار عالمن رسول رحمت سندء برکتہ، رسول رحمت سندء ذریعہ  لوکھ بنائي تمی عالم تہء عادل۔

یوس  صفت چھوء؛ شیعہ سندیو صفاتو منز چھوء اکھ صفت کہ زیارت اربعین کرن۔(یوس  توہی  ان شاءاللہ توہی ساری  پگاہ پریو)اتھ منز چھئي پران:

فَاَعْذَرَ فىِ الدُّعآءِ وَمَنَحَ النُّصْحَ وَبَذَلَ مُهْجَتَهُ فیکَ لِیَسْتَنْقِذَ عِبادَکَ مِنَ الْجَهالَةِ وَحَیْرَةِ الضَّلالَةِ

ژء دیتوت پنن پان رتہء چھپہء تاکہ لوکھ بناوہکھ عالم ، لوکھ بناوہکھ عادل۔

یعنی تکمیل بعثت تک۔

امام حسین علیہ السلام چھنہ امہ نور رسالت نشہ الگ کہین ،یہوے انبیان ہند یوس سلسلہ اوس ۔ یہ حضرت ابراہم من یوژھ ۔ یہ خداین قبول کور۔یمہ باپت آنحضرت مبعوث سپد۔تی چھئي ونان ائس امس  اتھ زیارتس منز :

ژء دیتوت پنن پان رتہ چھیپہء ،ژء دژت ییژاہ قربانی ! کمہء باپت؟

بَذَلَ مُهْجَتَهُ فیکَ لِیَسْتَنْقِذَ عِبادَکَ

بارالہا! چیانی بندء کڈنہ خاطرء  گمراہی منزء۔

زیارت اربعین نس متعلق ؛

یہ چھئی مؤمن سندیو علامتو منزء آمژ گنزراونہ۔

امام حسن عسکری علیہ السلام من چھوء فرموومت مؤمن سنزء علامت چھئي پانژ:

·         دوہس راتس (واجب تہء سنت)51رکعت نماز پرنہ ۔

اکھ صفت چھوء یہ کہ مؤمن گژھہ ، شیعہ گژھہ 51رکعت  آسن نماز پران ۔تمی کم گئي؟

سداہ 17گئي  واجب رکعت۔

سداہن 17ہند دوگیون کیاہ گو؟34

ژویترہ 34 گئي  سنت نمازء۔

17+34=51

یمی چھئي علامت اکس شیعہ سنز۔یعنی یہ گژھہ اکونزاہ51 رکعت پرن ژوءہن24 گھنٹن منزنماز۔

دویم صفت کیاہ چھوس؟(کیازءکہ امام حسن عسکری علیہ السلام من فرموو پانژ چھئس).

·         دویم چھوس زیارت اربعین پرن۔

توہی وچھیوو یہ پگہچ زیارت چھئي کمہ معیارچ۔گوڈء چھوء اکونزہن رکعت ہند معیار،دویمس پایس پیٹھ چھوء امام حسن عسکری فرماوان کہ ژتجہمہ  یہء زیارت پرن۔

·         امہ پتہ چھوء تریم صفت ،شیعہ یمہ ساتھی  پرزء ناونہء یی  دچھنس اتھس واج لاگن۔

·         ژوریم صفت یوس امس منز  چھوء سوء گو یہ گژھہ مژء پیٹھ سجدء کرن ۔

·         پانژم صفت یوس زن امس شیعس منز گژھہ آسن سوء گو یہ کہ  یہ گژھہ "بِسْمِ اللَّهِ الرَّحْمَنِ الرَّحِیمِ "بڑء پرن۔

گو ؛اربعین چھوء، یہ شیعہ نون دیندار بنتھ دنیاہس برونہہ کنہ یہ پیش سپدن۔

امہ زیارتچ اہمیت مد نظر تھاوت ،کیازء کہ امام حسن عسکری  چھئي کہوٹ تھاومژ یہ زیارت اربعین،لذا چھئی  یہ پرنس تہء یہ سننہ نس[اہمیت دن] کہ یہ چھوء کیاہ اتہء زیارت اربعین نس منز  صفت کیا چھوء یہ ۔انسان گژھہ امام حسن عسکری علیہ السلام سندء اتھ روایتس کن نظر تھاوت  امچ اہمیت سمجھن۔لذا چھئي ائس مجبور پگاہ نہ صرف عربی پاٹھی  زیارت پرنی یاژی بلکہ اتھ سنن، یہندین  الفاظن  اتھ پیغامس ،اتھ زیارت تس منز چھئي کوس کتھ۔

 

زیارت اربعین:

اربعین نک دوہ امام حسین علیہ السلام سنز زیارت پرنک طریقہ چھوء حضرت امام جعفر صادق علیہ السلام من نش منقول کہ امام حسین علیہ السلام مس کن کر خطاب تہء ون:

خدای سندس ولی یس، تہ حبیب بس سلام۔

خدای سندس خلیل لس، تہ نجیب بس سلام۔

خدای سندس دوستس تہ دوست خدای سندس فرزندس سلام۔

حسین مظلومس، شہیدس سلام۔

اسیر الکربات تہ قتیل العبرات ،حضرتس سلام۔

خدایا شھادت چھوس دوان کہ امام  اوس چیون ولی تہ چیانس ولی سند اولاد، چیون منتخب تہ چیانس منتخب سند اولاد ، تہ  سوءسپن کامیاب۔

چیانہ کرامتہ ساتھی، شہادت ساتھی کورتھس اکرام تہ سعادت بخشتس خاص، تہ پاکیزگی سان اونتھن بدنیا۔

سید سرورن منز سید ،تہ رھبرن منز رھبر  تہ حقک دفاع کرن والین منز کورتھن انتخاب۔

تہ پیغمبرن ہند وارث بنووتھن  تہ پننین اوصیان منز لوکن پیٹھ  پنن حجت بنووتھن۔

لوکن دعوت دنس منز تھاون نہ کانسہ خاطرء عذر تہ بہانہ باقی، تہ پنن خون کرن چیانہ وتہ نثار۔

تاکہ چیانین بندن کڑء جہالت تہ گمراہی منزء۔

مگر یمن دنیان دوکھہ دیوت تمی ساری سپن  تس خلاف کنی ۔

تہ آخرتچ سعادت تہ کمال کنوکھ حقیر پوسن، تہ ھوای ہوس کس دلدلس منز گئ گرفتار۔

تہ ژء تہ چیون پیغمبر انوکھ بغضب ۔

تہ چیانین شقی تہ منافق بندن ہنز کرکھ اطاعت ،یمی گنہن ھند سنگین بار آسی للناوان یمی جہنمک حقدار بنیای ۔

پس تمی جناب رود صبر سان تہ چیانہ اطاعت کہ غرضء تمن خلاف جھاد کران،یوتام چیانہ وتہ پنن خون ہورکھ تہ تہنز حرمت  پھٹراوکھہ۔

خدایا تمن کر لعنت، لعنت وبیلا، تہ عذاب کرکھ عذابا الیما۔

اےرسول خدای سند فرزندء توھی پیٹھ سلام ، اوصیان ھندء سیدء توھی پیٹھ سلام ۔
شھادت چھوس دوان توہی چھوی خدای سنز امانت دار ، تہ خدای سندس امانتدار سند اولاد۔

سعادتچ زندگی کروی، تہ کمال سان کورو دنیاہس وداع۔

مظلومیت تہ بے مثال پاٹھی سپنیو مارء شھید۔

تہ شھادت چھوس دوان حقیقتا خدای دیی تمیوک جزا یمیوک وعدء چھونو کورمت ۔
تہ ھلاک کرن تس یمی توھیہ یاری کرنس پرہیز کور ۔تہ عذاب کرن تمن یمو توھی قتل کریو ۔

تہ شھادت چھوس دوان توھیہ کورو خدای سندس عہدس ساتھی وفا ۔
تہ جھاد کورو تمسندء وتہ یوتام اجل ووت، خدا کرن لعنت تس یمو توھی قتل کریو۔
تہ خدا کرن لعنت تس یمی توھیہ پیٹھ ظلم کور ، خدا کرن لعنت تمن یمو تہندء قتلک واقعہ بوز تہ خوش سپن ۔

خدایا شاھد روز ، یوس تمسند دوست چھو سوء چھومیون دوست ، یوس تمسند دشمن چھو سوء چھو میون دشمن۔

میون مول موج توھیہ فدا ، اے فرزند رسول خدا ۔

شھادت چھوس دوان توھی آسیوی بزرگوارن ہندین صلبن، تہ پاکیزء رحئمن منز نور۔

جھالتک دورن کریو نہ توھی آلودء تہ نہ کرتمیک غلیظ لباسن توھی متاثر۔

تہ شھادت چھوس دوان کہ توھی چھو  دینک پایہ تہ مسلمانن ھند محکم ستون تہ مومنن ھند پناہ گاہ۔

تہ شھادت چھوس دوان کہ توھی چھو امام حق ، با تقوی ، محبوب تہ ھدایت یافتہ رھنما۔ ۔
تہ شھادت چھوس دوان کہ تہند فرزند ائمہ معصوم چھئ تقوی ک روح تہ حق وحقیقت تہ ھدایتک علمبردار ۔ 

تہ حق و فضیلتچ مضبوط رز ، تہ دنیا کین لوکن پیٹھ حجت ۔

تہ شھادت چھوس دوان کہ میہ چھو توھیہ پیٹھ ایمان تہ تہندین اسلافن پیٹھ یقین ۔

دین کین قوانین ساتھی تہ پننہ عاقبت ایمان ساتھی تہ دل چھوم تہندء دلک غلام۔

تہ کامہ چھیم تہزن کامین تابع تہ تہندء یاری خاطرء چھوس ہردم تیار ، تاکہ خدا دیہ تہندء ظہورک اجازت ۔

پس صرف چھوس توھی ساتھی، بس توھی ساتھی نہ کہ تہندین دشمنن ساتھی ۔

خدای سنز صلوات توھیہ پٹھ تہ تہندین ارواحن پیٹھ ، تہ تہندین جسمن پیٹھ ، تہ تہندین حاضرن پیٹھ ، تہ تہندین غایبن پیٹھ ، تہندین ظاھرن پیٹھ تہندین باطنن پیٹھ ۔

آمین یا رب العالمین۔

 

٭۔یہ چھئی زیارت اربعین اتھ چھوء میہ ترجمہ کورمت کوشریہ۔

واگر یہ ائس اتھ سنو ،سارسی چھوء جواب ۔تتھ ہر اکس کتھہ ء یوس زن آو دنیاہس پرچار کرنہ کہ حسین چھوء باغی ۔حسین چھوء دینء منزء خارج۔یزید چھوء دین، حسین چھوء بے دین!۔ یزید چھوء حق، حسین چھوء باطل !۔اربعین نس منز چھئی ائس یمن ژتجہن دوہن ہند چلہ کمایتھ یمنی تمن سارنی کتھن ہند یوس زن الہی منشور چھوء ۔

از گئي امام حسین علیہ السلام مس شہید گئمتس  1374وری ہجری کلنڈر مطابق عیسوی کلنڈر مطابق 1333وری ۔1333وری تہ40 دوہ۔(از چھوء کنووہم گو ژتجہہ دوہ)۔اگر زن ہجری قمری 1374وری40 دوہ ۔

اتھ دوران یہ ہدایتچ کتھ ،کتھ حدس تام تئر میہ فکرء یمن ژتجہن دوہن؟

کیازء کہ ژتجہوک یوس زن عدد چھوء ،تتھ چھئي پنن کینہ راز۔اگر زن انسان ...امام حسن عسکری علیہ السلام فرماوان مؤمن سنز صفت چھئی51 رکعت پرنہ۔بعضی علماء ، روایتن منز تہء چھوء 40دوہن اگر  17ہےرکعت  واجب چہ  اول وقت تس پرء40 دوہیہ پتہ بنہء صاحب کرامت ۔صرف 40 دوہن اکھ عمل خالصانہ،"خالصاً لوجہ اللہ" کرنہ ساتھی ۔

اگر یہ حسین حسین آسہ 40دوہن اسہ کورمت "خالصاً لوجہ اللہ"امہ اصول مطابق یوس انبیان آرزو کور ،خدایس مونگوکھ ،تمی دیوت تمیوک جواب تہء ، رسول رحمت سوزن۔ رسول رحمت سندوی اوس صرف یہوے منشور کہ لوکھ بناون عالم تہ عاقل۔(عاقل گو سوی عادل) عالم تہء عادل۔یا عالم تہ عامل ونوس ۔

ائس اتھ مثال منز یتین زن اسہ یتھی ژتجہمس پیٹھ ائس چـھئی الگ یوان کڑنہء۔

گو ؛یتن گژھو ائس مؤمنانہ کردارس لایق آسن ،اتین اتھ ژتجہمہ کس پگاہ کس دوہس خاطرء ۔

راتی گو میہ اتفاق ،میہ اوس نہ یہ ذہنس منز کینہ کہ عراقس چھئی ییژاہ کم آبادی۔کوس تام بیوٹھ سوال کرنہ میہ پیو ضرورت  امچ کرنٹ پاپولیشن وچھن کہ آبادی کیاہ چھئي از  ، ترء پوینٹ کیا تھان یعنی تقریبا ساڈ ترء کرور چھئي آبادی عراقس ۔ساڈ ترء کرور چھئي آبادی تقریبا زء کرور آسن پگاہ یعنی از ، از اوس اربعین تتہ۔ از ، از کتہ؟ کربلا ۔

ترواہ لچھ تہء کئژتان ساسی چھئی پورء دنیاہک زایر ۔کیازء بہء چھوس پانہ تہء صحافی  ، راتی بنوو میہ اتھ پیٹھ اکھ سٹوری ۔ترواہ لچھ تہء کئژتان ساسی چھئي پورء  دنیاہ پیٹھہ آمت،زء کرور چھئي صرف  یمی عراقی ۔ یہ کیاہ علامت چھئي ؟

یہ ائس پہچان اکھ ۔یہ ژتجہم گژھہ سانہ امہ دینداری ہند ،ممتاز دینداری ہند ،مؤمن دینداری ہند مظہر آسن ۔

اگر اسہ وونیوک تام علم الگ الگ چھئي جلوس الگ الگ چھوء ،نماز الگ الگ چھئی ،مگر اربعین نچ نماز گژھہ اسہ کنی آسن۔یتین شیعہ آسہ ۔یتین عزاداری ہند جلوس آسہ ، اکوی جلوس گژھہ آسن ،ساری گژھن تتی آسن۔

اکھ آلو ۔ اکھ کریکھ۔

اگر اسہء39 دوہن کانہہ خامی روزی ،اسہ کور امام حسین ،اگر کربلاہس منز تمس ٹکرء کمی آئس گمت ،اسہ کرس مزید ،ہر محلس منز تھوو بئغراوتھ۔اکھ ٹکرء اکس امام بارس منز بیاکھ  ٹکرء بیس امام بارس منز،بیس مجلسء منز۔ائس سموس نہ اکسی جایہ کہین ۔امسی چھوء جایہ جایہ واتن ، تہء کور اسہ وونیوکھ تام ۔

اگر زن انصافا وچھوو،اسہ گوژھ امام حسین علیہ السلام موٹھ کرناوون وول آسن۔بلکہ ائس چھئي تضادس منز شکار گژھان  امام حسین سندسی ناوس پیٹھ۔ جماعت ہند سی ، نماز ہندسی ناوس پیٹھ، خدای سندسی ناوس پیٹھ۔وجہ چھوء ائس چھنہ یژھان سوء کتھ سمجھن یمہ ساتھی زن ائس وونہ کس ...(سوء چھئي کہوٹ تمہ ساعتہ)۔

میہ یتھی کئن عرض کور گوڈنیتھ سورہ بقرہ چ آیت 129  کئر میہ تلاوت کہ حضرت ابراہیمن کور آرزو کہ خداصوبا پیغمبر کرتن مبعوث ،یوس زن لوکن عالم بناوء ہا ، مہذب بناوء ہا ۔خداین دوپس ، عئش کرتھ۔رسول رحمت سوزن ،سورہ جمعہ ہس منز تمچ تصدیق کران ،میہ سوز سوء امی باپت ، عالم بناونہ تہء مہذب بناونہء خاطرء۔علی مرتضی علیہ السلام تہء تی فرماوان کہ رسول رحمت سند بعثتی اوس عالم تہ عادل بناون۔زیارت اربعین نس منز چھئي  ائس خدای صوبس ساتھی کتھ کرتھ یی ونان کہ امی( امام حسین علیہ السلام) دیوت ،پنن خون ہارتھ،چیانی بندء کرن ہوشیارء، گمراہی منزء کڈن، عالم تہء عادل بناین۔کتین بنیای ائس عالم تہء عادل؟

عالم:

عالم یعنی کوس علم گو اسہ حاصل ۔دون کلمہ گون منز چھوء اسہ تگان پرزء ناون اصل کوس چھوء۔دون نماز گزارن منز چھوء تگان پرزء ناون صحیح نماز گزار کوس چھوء۔دون حسین حسین کرن والین منز چھوء اسہ تگان پرزءناون صحیح حسینی کوس چھوء ۔گو عالم۔

عقل:

عقل گو یہ کہ وین کینس امام زمان سندء ظہورء خاطرء کوس چھوء تیاری کران ۔

نتیجہ:

نتیجہ کیاہ چھوء قیادت۔

اگر زن دنیاہس منز کانہہ وین کینس پریشانی منز گرفتار چھوء ،مشکلات تن منز گرفتان چھوء ،انسان ،حیوان یا جن چھئی سرگردان صرف قیادت موجوب۔امامت باپت، امام عادل پیو نہ کہین۔اگر امام عادل حکمفرما آسہ ہا ،ہر کانسہ آسہ ہا یہ کمال انسانیتک ووچھمت۔یوس زن رسول رحمت تن یہ رحمتک دروازء انسانیت خاطرء مژراونک سبب بنیووی تمیوک مصداق بنہ ہا انسان، مگر چھنہ بنان ۔ کیاز؟

کیازءکہ یمہ ساعتہ یمی چہرء بدلاوکھ، حق آو باطل ثابت کرنہ ، باطل آو حق ثابت کرنہ ۔وین کینس تہء ، دپو ائس چھی تمہ نشہ  ونہ  دوریمت ،کانہہ چیز چھوء وژھہ نومت۔ائس وژھہ ناو ہوو مگر تلہ یلہ اسہ یہ حسین آسہ ہا تورمت فکرء۔

ائس چھئی امہ موجوب یہ کیہژاہ تہء کیہژاہ چھوء یہ چھوء اسہ پننہ نین اسلافن ہئنز مہربانی،تمن تھاوکھ ٹکرء کئر کئر  حسین سند ناو مہ ہیووی ، تمو کور ٹکرء گژھن برداشت مگر یہ ایمان بدلووکھ نہ کہین ۔کاتیاہ مصیبت آی اہلبیت تن ہنز تحریک یعنی اسلامچ حقیقت زندء تھاونہ خاطرء کاتیاہ مصیبت آی ۔پتہ یمہ ساعتہ اکھ ٹھہراو آو ،ہر چیزس چھئي پنن عوامل آسان ۔ یمہ ساعتہ ووہن ورین اوس معاویہ علیہ ہاویہ ہن تیوتھ ماحول بنوومت  کہ اتہ باسے نہ کانہہ فرقی کہ حسین چھوء واجب قتل۔آ واجب قتل چھوء!

یہ چھا نوی کتھ کینہ ؟

یمہ ساعتہ شامس منز اوس معاویہ علیہ ہاویہ ہن ،تیوتھ فضا قائم کورمت کہ تمی اوس ثابت دیوتمت کرتھ کہ حضرت علی علیہ السلام چھنہ نمازی پران ۔یمہ ساعتہ صفین نک جنگ گو ،اکھ شامی ووتھ یہ چھوء انتہائي بد کلامی کران ۔کیازء کہ مولا سندس رکابس منز ائس ساری صحابی برجستہ شخصیت ، اکھا ووتھس ؛دوپنس نادانء ژء چھیہ پتہ ژء ونان کیاہ چھوکھ ؟

دوپنس ؛ اہنسا کیازء گژھم نہ پتہ آسن بہ چھوس تمس کن ونان یوس  نہ زانہ پانہ نماز پرن نہ چھوء بیس دوان نماز پرنہ !

بیہ اوس کمال جرئت سان ونان۔ کمس ونان ؟

حضرت علی علیہ السلام مس۔

معاویہ چھوء دیندار ۔ علی چھوء بے دین!

ونہ تہء چھئی تمی لوکھ یمی یمے استدلال چھئي کران۔

گو یہ فکرء ترن چھوء ضروری کہ معاویہ سند استدلال چھا صحیح کنہ علی سند استدلال چھوء۔

یمے لوکھ چھئی ، یمن کیاہ باسہء ،یمی گندن رسول رحمت سندس سرس یتھی کئن۔کوچن بازرن پھرکھ۔

ہرکنہ چیزس بنوو امام حسین علیہ السلام من بہانہ ،حتی ذوالجناح۔

 ذوالجناح کیاء چھوء ؟

ذوالجناح:

یہ تہء چھوء بہانہ ۔اگر کانسہ کینہ ترنہ فکرء مير ذوالجناح ہے پے چھئی لوکن یہ چھوء رسول اللہ صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم سنز سواری ، اتھ اوس رسول اللہ صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم کھسان ۔اگر میہ پرزء ناون نہ سوارء پرزء ناون کہ مینش کیاوء چھئي یہ۔

لباس:

عمامہ

سارنی اوس پتہ کہ رسول رحمت سندس عمامس چھوء پنن انداز۔یمو آنحضور ووچھمت آوس تمی زانہن یہ چھوء رسول رحمت سند عمامہ ۔امام حسین علیہ السلام من لوگ سوی عمامہ ۔

عبا

عبا؛ عبا لاجن انحضور سنز، گویا لوکھ آئس تتھ پرزءناوان ۔

امام حسین نن دیوت نہ کہین موقعہ یمی ساتھی زن دشمن ہیکہ ونتھ میہ ائس نہ پتہ۔حتی علی اصغر تہء چھوء ....

یوس زن ائس زیارت اربعین نس منز ایمانن اعتراف چھئي کران کہ ائس کمس امام سند پیرو چھئي ۔

اگر اسہ یمن ژتجہن دوہن اسہ اکھ کریش کورس کور امہ ایمانک ۔ مسلمان چھوء ہرکانہہ  ۔مگر مؤمن بنن چھوء کمال۔

قَالَتِ الْأَعْرَابُ آمَنَّا قُلْ لَمْ تُؤْمِنُوا وَلَكِنْ قُولُوا أَسْلَمْنَا

 «سورہ حجرات آیت14»

اعراب آی دپان چھئی اسہ اون ایمان ۔دوپ ہک ۔ ایمان نہ سا،یہ چھا لوٹ،ایمان انن۔ دپیو اسلام اون۔یعنی یمی اسلام اون تمس خاطرء چھنہ یہ ثابت کہ تمس چھوء ایمان تہ۔مگر یمس ایمان چھوء تمس متعلق چھنہ شکی کہ اسلام چھوس نہ۔

گو؛ ژتجہمس پیٹھ گژھو ائس ایمان نک مظاہرء کرن ۔اسہ گوژھ یہ پننہ قیادتک،نورانی قیادت آشکارن تگن  ثابت کرن ۔

اگر توہی دورء دورے تہء چھوی ،کربلاہک واقعہ وچھیوی ،یمی زن انٹرنیٹ استعمال کران چھئي ، بالکل لایو آسیو ۔عتبات ڈاٹ آئی آر۔یوس زن دنیا ہچ ساروے کھوتہ بئڑ بارء نماز جماعت قائم گژھہ پگاہ سوء تہء وچھوی توہی ۔اتین ہیوکوو اندازء کرتھ۔

گژھن گوژھ یہ روز عاشورا ۔ژتجہمس پیٹھ کیازء؟

کیازء کہ ژتجہم بنووی وین آشکار۔اگر زن ائس تاریخس کن مطالعہ کران چھئی، یمہ ساعتہ   حکومت تس خلاف یوس تہء کانہہ مومنٹ شروع گئي تمیوک آگر آو  یہوے کربلا کنسی ڈر کرنہ ، خاص کر یہوے اربعین ۔ فانیل یہ کلو دراو یی کہ   ژتجہمہ اوس تموو تتین سمے مت تہ تمی ائس  اتھ نتیجس پیٹھ واتمت کہ وین کیاہ چھوء کرن ۔ائس کتھہ کئن کروون یہ ظالم رسوا ،ائس کتھہ کئن کرو امس نش پنن پان  الگ   تہ یہ اربعین تہ اوس  ماٹھ کہ یہوس وچھو از کاتیاہ شیعہ چھئي بچای مت ،مؤمن کئژ چھئي بچای مت۔  اسلئے یتین تہء آئس چھئي ،ائس گژھو اربعین ، اربعین  پاٹھی ادا ہیکن کرتھ۔

اتھ منز گژھہ  آسن یہ تسلسل یتھی کئن زن میہ یمن دون آین ہند ، سورہ بقرہ آیت 129، سورہ جمعہ آيہ 2تہ زیارت اربعین نک یہ جملہ  ، امام حسین علیہ السلام مس خطاب کرن :"و بَذَلَ مُهْجَتَهُ فیکَ لِیَسْتَنْقِذَ عِبادَکَ مِنَ الجَهالَهِ وَ حِیرَهِ الضَّلالَه "یہ تسلسل امیوک کہ ترین ونی(قرآن، نہج البلاغہ تہ زیارت اربعین) ہنز کتھ چھئی یی کہ  گمراہی منزء نیرن عالم بنن۔عالم بنتھ عامل بنن۔

پگاہ گژھہ آسن اتھ زیارتس منز یژھی ہش کتھا ۔اتھ جلوسس منز یژھی ہش کتھا۔یتھ منز زن زء چیز تمی دونوے فکرء ترن کہ ائس چھئی عالم تہء عامل تہء۔

اسہ چھوء امام نورس تہء امام نارس منز تگان تشخیص دیون ،فرق کرن۔ امام حسین نن تہء پئر نماز تہ عمر سعدن تہء پر نماز ۔دونوے ائس نماز گزار ۔کیازکہ عقلمندی چھئي یتھی کئن زن امیر المؤمنین فرماوان: عاقل گو نہ سوء یمس زن غلط تہ صحیح تگہء پرزءناون ۔عاقل گو یمس زن دون غلطن منز تگہ پرزءناون زیادء غلط کوس چھوء۔دون صحیح ہن منز تگہ پرزءناون زیادء صحیح کوس چھوء([1])۔

عبدالحسین نس چھوء عالمن ہند لباس لاگت امہ ساتھی چھنہ دوکھہ کھیون کہین۔دوکھہ چھنہ کھیون۔یہ گژھہ تگن پرزء ناون ۔کیازءکہ دوکھہ ہیکہ یہوے لباس دتھ۔امام حسین چھوء یی ونان۔

نماز ۔مسجد ، عزاداری ،مرثیہ ، تسبیح ،ذکر خدا ، وودن ، بوتھہ بوتھہ دن ۔یہ گژھنہ دوکھہ دیون کہین،حسینی یس کم سے کم کہین۔

اہلبیت تن ہنز یئژاہ عظیم سرمایہ گذری ، پتہ! حاصل کیاکور؟

امس گژھہ ترن فکرء کہ یہ عبدالحسین چھا میہ پھنساونہ باپت کران کنہ یہ چھوء میہ خداصوبس  ساتھی یژھان وصل کرن۔یہ گو تلہ یلہ امس یہ کتھ تر فکرء  گو یہ چھوء حسینی بنیومت ۔

حر ابن یزید ریاحی چھوء یہ چھوء امیرالمؤمنین مانان کمس؟

یزیدس۔

امام حسین نس مانان دین ء منزء خارج۔یہ چھوء واجب قتل۔

مگر یمہ ساعتہ چھوء تشخیص دوان کہ نہ امام کوس چھوء ؟

دونوے چھئی امام ۔

مگر جنت تس کوس نی میہ امام! جہنم مس کوس نی میہ امام!

کوس چھوء پننہ باپت کران ؟۔

کوس چھوء میانہ باپت کران؟۔

یزید چھوء کران پننہ باپت۔

حسین چھوء چیانہ میانہ باپت کران۔

یزید چھوء کران کہ تمسند دکان گژھہ چلن، تمسنز حکومت گژھہ  قائم و دائم روزن۔ دبدبہ گژھہ قائم روزن۔

حسین چھوء کران ژء تہء بہء گژھو نہ جہنم مس گژھن کہین ۔کیازکہ تمس چھنہ گرین کہین ۔ سوء ونہ معصوم بچے یمہ ساعتہ رسول رحمت صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم نن فرمووس ژء چھوکھ جنتءکین جوانن ہند سردار([2])۔

[ اللَّهُمَّ صَلِّ عَلَى مُحَمَّدٍ وآلِ مُحَمَّدٍ وعَجِّلْ فَرَجَهُم]

امام حسین علیہ السلام چھنہ امہ باپت کران کہ امس میلہ کانہہ مقام ۔سوء اوس میل تھی۔ مگر یمہ باپت یہ عزاداری چھئي کران کہ امام حسین علیہ السلام من سانہ باپت کیاہ کور۔

عِبادَکَ

ائس چھئي ونان زیارت اربعین نس منز تہء خدایس کہ چیانی بندء گمراہی منز کڈنہ خاطرء کیاہ نہ کیاہ کور امام حسین علیہ السلام من ۔

مگر یمہ ساعتہ ائس پننہ نس بیبس سام ہیمو ۔نہ ....

اگر بہء بٹہ گھرس منز آسہ ہا پادء گومت عبدالحسین نا ژء آسہ ہک بٹہ۔سیکھہ گھرس منز آسہ ہک زامت ژء آسہ ہک سیکھ۔ژء کیاہ چھی تورمت فکرء امس حسین نش۔ کئمی چیزن چھکھ ژء اوکن راغب کورمت ۔ژء کیاہ چھی باسان اتھ اسلام مس منز۔ژء کیاہ چھی باسان اتھ قرآن نس منز۔اتھ مسجدء منز۔رسمء نبر۔

یوس زن کربلا چھوء یہ چھوء ہشیارء کران ۔بیہ  تتھہ کئن ہشیارء کران ۔اصلا ہشیار کرنہ پاٹھی۔

اتین نہ چھوء شیعہ ،اتین  نہ چھوء سنی ، نہ مسلمان تہ غئر مسلمان۔امام حسین نن دیوت تیوتھ مکتب ۔

عیسائي:

عیسائي چھوء تیوتھ مؤمن بنان ۔وھب کلبی، عیسائي اوس۔تمسنز موج کژھ مؤمن بنیای۔تمسندنچیو یمہ ساعتہ میدان چھوء گژھان ،ماجہ دپان ژء گئی کھہ خوش ،میہ کور وعدس وفا ، امام حسین نس چھوس بہء یاری کران ۔

دوپنس نہ !کتہ گژھے بہء خوش ۔یوت تام نہ بہء وچھت ژء رتہ چھپہ لگان حسین نس، بہء کتہ گژھے راضی۔یہ ائس  عیسائي ۔

یہ کئمی چیزن بناوی یژھ عالم تہء عامل کہ یژھی ائچھ گئی امس پادء؟

تمہ پتہ یمہ ساعتہ امسندس نیچوی سند سر آو قلم کرنہ ،پتہ لگووکھ امس ماجہ اتھ خیمس منز ۔

امی کور پننہ نس بچہ سند سر صاف ،امے سرء ساتھی کورن امام حسین سندس دشمنس پیٹھ حملہ !

یہ کئمی چیزن بناوی یژھ مؤمن ؟

بنووی مؤمن امی چیزن کہ امس تور فکرء حسین چھنہ پننہ باپت کران یہ چھوء میانہ باپت کران ۔

غیر شیعہ مسلمان/سنی:

ظہیر قین ،سوء اوس سنی ،تمی نہ چھوء حضرت علی پنن امام مونمت  گوڈنیوک نہ چھون امام حسن مجتبی پنن دویم امام مونمت۔نہ وونس امام حسین نی کہ ژء چھوکھ سنی میہ کیاہ ژء ساتھی ۔

مگر ظہیر قین نس یلہ فکرء طور امام نور کوس چھوء امام نار کوس چھوء تہء ظہیرقین کوس بنیوی؟۔

یہ  چلہ کمایتھ کیاہ بنیای ائس؟

ظہیر قین بنےیاہ ائس؟

وھت کلبی بنے یاہ ائس؟

کتھ حدس تام بنے ائس دیندار!یتن اسہ پنن امام تگہء پرزء ناون ۔

مرحبا آسن تمن جوانن یمن پنن امام تگہء پرزءناون۔

یہ چھئي اکھ کہوٹ۔

ائس ودو کہ جناب مسلم مس کوس دوکھہ دیوت یمو کوفہ کیو۔مگر یوس اسہ وین کینس جناب مسلم اسہ درمیان چھوء تمس متعلق چھئي ائس ائچھ وٹان۔

امام خامنہ ای چھوناہ مسلم امام زمان سند؟

یہ چھوء نا سانہ کریکہ جواب دنہ آمت۔[اسہ چھئی نہ کانہہ وتھ ہاوکھ اسہ ہاو وتھ]

اسہ کمہ ساتھی چھوء دو ژیوت گژھان کہ ائس چھن نہ یہ امام زمان سند نایب تسلیم کران؟

ہے یہ چھوء ایرانک!

بہ چھوس بڈگام میوک بہء چھوس توقع کران کہ دنیاہکس ہر کونس منز گژھہ میانی کتھ بوزن مگر امام خامنہ ای چھوء  امام زمان سند نایب تمس چھئي دپان سوء چھوء ایرانک تس کیاہ اسہ ساتھی!

بیہ ونن وول کوس چھوء ؟ تس چھنہ فکرے تران بہء ونان کیاہ چھوء۔

میانس منبرس گژھہ ہر کانہہ بوزن ۔میانہ خاطرء گژھنہ کانہہ باڈر روزن کہین ۔میانی کتھ گئژھہ ہر جایہ واتن ۔مگر یوس امام زمان سند نایب چھوء تمسنز کتھ گژھہ صرف ایران سی تان محدود روزن!

سوء چھوء ایران نک اسہ کیاہ تتھ ساتھی!

اسلامی حکومت گئي تلہ یلہء یمہ ساعتہ امام زمان ظہور کرء ۔یہ ء چھوء تتہ اسہء کیاہ چھوء۔

امس چھنہ تران فکرء یہ ونان کیا ہ چھوء ۔تہ کیازء چھوء ونان۔تہء حسین حسین کرتھ کیاہ چھوء تتہ فکرء تران؟

یہ کوس چھوء حسینی بناوان ؟

یہ کوس چھوء یزیدی بناوان؟

ہا نماز پریو، ودیو،بوتھہ بوتھہ دی یو جنت تنس گژھیو۔

نہ!

تمس گژھہ جرئت پادء گژھن  عبدالحسین یمہ ساعتہ   غلطی کرن دپیوس یہ چھوکھ غلط کران۔

نہ کہ صرف عبدالحسین نی یوت رٹیون ،یمی حاکم دعوی چھئي کران عدالت تک مگر ظلمس چھئی تغیان کران ۔

ڈی سی چھوء ذمہ دار!

ایس پی چھوء ذمہ دار!

یمی چھئي پارٹی بازی کران۔ ژء گژھی زیو یلہ آسن ۔

منسٹر چھوء ، یہ چھوء دعوی کران بوڈ ...

ژء گژھی زیو یلہ آسن۔ژء گژھک نہ محدود آسن نہ صرف عالمسی  برونہہ کنہ بلکہ دعوی کرء پزرک۔

کیازکہ امام حسین علیہ السلام من کوس نار دیوت سانین دلن تہء دماغن ۔ یہ کوس سویت زاجی امی کہ اسہ چھئي یہ حرارت پادء گژھان ۔یہ گژھہ اسہ کہوٹ برونہہ کنہ آسن۔

امام حسین علیہ السلام چھوء اکہ طرفہ فریاد ژھٹان:

اَلا تَرَوْنَ اَنَّ الْحَقَّ لايُعْمَلُ بِهِ، وَ اَنَّ الْباطِلَ لايُتَناهي عَنْهُ([3])

 توہی چھوی نا وچھان حق کس پیٹھ چھنہ عملی  گژھان  ۔

توہی چھوی نا وچھان باطل لس چھنہ منعی یوان کرنہ۔

اتین کتہ چھوء یہ ونان کہ یہ چھوء صرف یزید سی یوت ۔

اگر عبدالحسین ونہ کینس حق کس پیٹھ عمل  چھنہ کران ، حسینی بنن ،کریکھ دء؛عبدالحسین نا کیازء چھوکھ نہ حق کس پیٹھ عمل کران۔

عبدالحسین چھوء غلط کران!

 تھود وتھ حسینی بن عبدالحسین نا؛ کیازء چھوکھ غلط کران۔

یہ ٹیب کئمی چھے ژء دژمژ،تمہ ساعتہ ائس  یزیدن دژمژ روپیو ساتھی ۔از کئم...

قاضی شریح ہیوہ مقدس نفر،یوس زن ژون خلیفن ہند چیف جسٹس رود ،تمس ژھن روپیو یوتھ تاون ،تمی دیوت فتوی باضابطہ کہ ؛امام حسین چھوء واجب قتل([4])۔

یزید چھوء شرعا امام ،[ امام ]حسین چھوء شرعا واجب قتل!

توہی وچھوی اسلام مس کیاہ کورکھ۔

ائس ہے ودان  چھئي ودان کمہ باپت چھئی ودان؟

[امہ باپت کہ ]عبدالحسین گژھنہ قاضی شریح بنن کہین۔

ہے امس پتھ کن تراو نظر یہ کمہ کردارک[مقام مک] نفر چھوء،یہ چھوء ژون خلیفن ہند چیف جسٹس رودمت۔

عبدالحسین پے چھیہ یہ کمس مال سند نچیو چھوء! ہے خیال تھاو سا توتہء مال سند کرسا لحاظ۔

کانسہ ہند نہ خیال![ بجز خدا]

یلہ نہ اسہ امام زمان سندس پترس لحاظ ووچھ۔

جعفر کذاب :

سانس مکتب  منز اصلا رشتہ داری چھنہ  معیار۔

جعفر کذاب بن کریوا بوڈ کانہہ گناہ؟

تمسند حسب و نسب چھو؛ دہم امام چھوس مول ، کہم امام چھوس بوی ، نویم امام چھوس بڑبب،آٹھم ، ستم ...چھئي  بڑء بڑءبب ساری ۔

یوتاہ بوڈ سیّد ،امامزادہ،غلطی کرن امام پرزء نوون نہ ۔یلہ زن پانس آسس پے ۔

یمہ ساعتہ امام حسن عسکری علیہ السلام سندء شہادت تک واقعہ پیش آو ،وین چھوء جنازء پرن۔

اکثرا چھنہ پتہ امام زمان سندء ولادتچ ،صرف خاص خاص نفرن نی یوت چھئی پتہ کیازکہ تمسندء شہادتک اہتمام اوس یوان کرنہ ۔لذا اوس صرف خاص نفرن پے۔مگر جعفرس تہء آئس پتہ کہ امام حسن عسکری یس چھوء فرزند  مگر چھوء لکوٹ۔مگر یہ تہء چھوس ایمان نے تہ  عقیدے کہ امامس ہیکہ امام مے جنازء پرتھ۔بس یژی یاژی کرن غلطی۔

وین یلہ ساروے  اتہ ووچھ نہ زیوٹھ بوڈا کہین،تہ ووچھوکھ   جعفر ےیوت  ،ساری چھئي تسلیت ونان جعفر س ۔

کہژھو وون امس ، یتھی کئن کھڑء پینج چھہ نا ونان یتھہ وقتہ ونان یتھہ کن کر ہز ہت کن کرہز ۔

یلہ دہو نفرو وونس وتھ ہز جنازء پر ہز۔ بس یہ پچیوو زء قدم برونہہ، جنازء پرنہ۔بیہ چھنہ کانہہ خدا رچھن دپو بوڈ گناہ کورن کہین ۔

ام یژھیو تکبیر ونہ نی یوت ۔امام زمانن کرس دامنس زیر ، دوپنس چچہ بابا تلہ سا پتھ پکھ۔سوء دراو شرمندء گو ، ہے میہ کیازء گئی ژور ننگہ۔

ونہ تہء چھئس نہ ائس بیہ کانہہ ناو ونان۔ ائس چھئس ونان جعفر کذاب ۔کہن امامن ہند چھئس نہ لحاظی وچھان۔بیہ نزدیکی۔

چہ بسا یہ چھوء عالم، امس چھوہ دستارء لاگت ، امس پتہ چھئم رات نماز پرمژ، امی چھئم نکاح پرمت ......نہ!

رشتہ چھوء صرف خدائی ۔ اسلام چھوء صرف یتوی یوت ونان۔

کربلاہس منز یمی تہء آی ، تمی امامس یاری کرنہ ۔وین دینداری ہند مقام اوس یوتاہ کہ سوء اوس گھرک گھرے۔

اگر زن اسلام مک  دشمن جناب ابو طالب بس  بد چھئي ونان ، کیازء ونن نہ ! 33گبر چھئي تمسند شہید گمت کربلاہس منز۔33! حضرت ابوطالب سندیو اولادو منزء۔آسہ نا ضد تمسند۔

یعنی یمی زن رسوا کور یہ سوری بنی امیہ یوک سوری نظام  ۔

یمن ژتجہن دوہن منز کوت واتی ائس؟

ائس ما بنی عباسی بنیای مت ۔اصل اصل کتھہ کران اہلبیت تن متعلق ۔ ہا اہلبیت تن وندہوو زوہ مگر اہلبیت تن دمو نہ برونہہ پکنہ کینہ ۔

ژء ونکھ میہ ؛خدا رچھن اگر زن بہء سیگریٹ آسہ چیوان  (بہء چھوس نہ الحمدللہ چیوان کینہ )بہ آسہ چیوان سیگریٹ ۔ژء ونکھ میہ ؛ ہے میہ ہز ووچھ  حضرت آيت اللہ العظمی ناصر  مکارم شیرازی  چھوء وین سیگریٹ  چیون حرام قرار دوان ۔

بہء ونے ؛یہ گژھہ نہ میہ ونن ۔ یہ گژھہ تھاون اتی یہ فتوی ۔

کیازء کہ بہء چھوس پانہ چیوان۔بہء کوس حسینی چھوس تلیہ ؟

یلہء میہ پننہ گوء یی فتوی تلہ چھوء ٹھیک۔

دیندار سماج چھوء تیلہء پادء گژھان یلہ دینی جذبہ آسہ حاکم۔

یمہ ساعتہ ایران نس منز دینی جذبہ اوس حاکم ۔ یمی زن حاکم آئس انقلاب برونہہ تمی آس ظالمی در واقع  مگر دینک جذبہ اوس حاکم ۔یوس زن ونہ تہء چھوی توہی وچھان  ایران نین منز چھوء مذہبی جذبہ زیادء۔

یمہ ساعتہ آیت اللہ مجد شیرازی ین  فتوی دیوت کہ تموک چیون چھوء حرام ۔بادشاہ آو گھرء تہ  کریکھ دژن ؛ ہے کتہ سا چھئی چلم۔

زنانہ دوپس لوتہ کر کتھ۔

دوپنس کیازء میہ گیاہ غلطی،یوتھ کیاہ وون میہ  ؟

دوپنس پے چھئی نا آغن چھوء تموک چیون حرام قرار دیوت مت ۔

بوز ما کانسہ میون،میہ ژھانڈی چلم۔

بادشاہ  آستھ  تہء اوس تمس امام سندس نایب سندس فتواک بظاہر  احترام۔

ہوپاری کیاہ تہ لورء پار کرء ہا ۔مگر یہ اوس ادب۔

یلہ یہ مذہبی جذبہ آسہ تلہ چھوء ہدایتک امکان۔

 یہ گئي تژھی ہش زوژن  یوس حر ابن یزید ریاحی یس ائس ۔

یمہ ساعتہ حرن وتھ رٹ امام حسین نس ۔

دوپنس میہ ہا چھوء یی حکم دنہ آمت ؛یا کر ژء بیعت  یزید سنز نتہ چھوء ژء ساتھی جنگ کرن۔

امام حسین نن دوپس ژء چھوکھہ میہ دھمکی دوان ۔موج بہنے دوکھس۔

حر چھوس ونان ۔ حسین اگر چیانی موج فاطمہ آسہ ہا نہ ،بہء تہء ونہ ہے یی۔

گو ؛کنہ کونس منز اوس حرس دینی جذبہ موجود، یمی چیزن سوء حر بنوو۔

ائس ہیمو پننہ نس پانس سام امام زمان نس   نسبت کوس معرفت چھہ اسہ ۔

کتین چھئی ائس یکدم ائچھ وٹتھ  امامس برونہ کنہ سرنڈر کرنہ خاطرء تیار۔یوتوی یوت کہ نایب امامن وون یعنی امام من وون ۔کیازء کہ امام سندوی توقیع چھوء " الرادّ عليهم كالرّاد علينا"[[5]]

گو ائس گژھو آسن اتھ ممتاز مقام مس پیٹھ ،اسہ گژھہ پنن کمٹمنٹ آسن پننہ نس امام مس ساتھی ۔اور الحمدللہ ائس چھئي ونہ کینس  تتھ دورس منز ،یتین زن سون امام  چھوء تقریبا ظاہر، اسہ چھنہ  وین ونن  امام زمان  سند چھئی ائس سرباز بلکہ اسہ چھوء ونن ائس چھئي امام خامنہ ای سند سرباز ،یہ گو حقیقی معنی ونن امام زمان سند سرباز آسنس۔یہ امتیاز امام زمان سند۔کیازء؟

کیازءکہ امام زمان چھوء پانہ پردے غیب بس منز ،یوس زن تمسند نمایندہ وین کینس امام سنز کام کران چھوء سوء چھوء ولی فقیہ۔اسہ گژھہ یہ کتھ ہر کنہ جایہ اکائی آسن ۔ علاقائي تعصب ساتھی گژھو نہ  ائس یہ بد نما بناون کینہ،بلکہ یوس کتھ کوشر یتین ونہ سوی گژھہ اورء  لبنان نک  جواب ونن ،سوئی گژھہ عراق کک ونن ، سوئی گژھہ ایران نک ونن ،سوئي گژھہ امریکہ ہک ونن ، سوئي گژھہ افریقہ ہک ونن  .....کہ ائس چھئی کونی۔کم سے کم یہ اتحاد گژھہ قائم آسن،امامت تس پیٹھ گژھہ اسہ نظر کن آسن ،رائے کن آسن، اتفاق رائے آسن۔

 اگر زن امام خامنہ ای آسہ ہا نہء سوء مقام تھاوان،امسنز مخالفت کرن کمسنز ذمہ داری آئس؟اگر زن یہ یزید ہیوہ آسہ ہا ؟

تلہ اوس حضرت آیت ناصر مکارم شیرازی یس بنن حسین،ہا یہ چولہ مہ لاگ کینہ ، حسین چھوکھ نہ کہین ۔ حضرت آيت اللہ سیستانی سنز ذمہ داری بنان کہ ونہ نہ....یمہ ساعتہ  اکس لباسس منز یمی زء رنگ ین، تمہ ساعتہ چھوء کربلا قطعا وجودس منز انن۔اور یہ کہنز ذمہ داری چھئي ؟چیانی تہ میانی چھنہ کہین ۔

اتین چھئی ذمہ داری تمس یوس زن امام سند نایب چھوء ۔

اگر دعوی باطل آسہ ہا ،تلہء چھوء تمن مراجع عظام تقلید جامع شرایط یمی تہء چھئي  تہنز ذمہ داری بنان اتھ خلاف قیام کرن ۔ یمہ ساعتہ تمی تمس لرء لور چھئي یہوے چھوء سانہ خاطرء حجت کہ یہ چھوء سون امام زمان ۔

اور اسلئے چھوء اسہ پنن ذمہ داری اتھ نسبت سمجھن کہ سوء اسہ کیاہ چھوء ونان  تہ اسہ کیاہ چھوء تس نش بوزن۔یہ رشتہ گژھہ اسہ  دوطرفہ پگاہ معین گژھن کہ اسہ گژھہ زیادء کھوتہ زیادء اتفاق کک مظاہرہ آسن۔سانی پارٹی گژھہ آسن پگاہ صرف حسینی پارٹی ۔کنہ پاٹک، کنہ عالم مک ،کنہ یموک ، کنہ ہومیوک گژھہ نہ اسہ ناو آسن  کینہ۔اگر آسہ ناو سوء گژھہ امام خامنہ ای سند آسن ۔یمہ ساتھی زن سانہ یکجہتی ہند ،یمہ ساتھی امہ:"و بَذَلَ مُهْجَتَهُ فیکَ لِیَسْتَنْقِذَ عِبادَکَ مِنَ الجَهالَهِ وَ حِیرَهِ الضَّلالَه"امیوک معنی  یہ میلہ  کہ ؛ بار الہا ! پنن خون رتہ چھیپہ دتھ ،پنن پان بذل کرتھ،قربان کرتھ  چیانی بندء کرن ہوشیارء۔

اور گژھو پننہ ہشیار آسنک مظاہرء کرن کہ ائس کمسنزء علمء تل چھئي کھڑا۔یہ زن یمو شب عاشوراس منز تمو وون پگاہ گژھہ آسن تموک سون جواب ۔

ائس یوس تہ کانہہ عمل کرو اسہ چھوء وچھن یہ چھا سون امام سون قائد چھا یی ونان کنہ نہ یہوے گو اربعین۔

شب عاشورا یمہ ساعتہ حملہ چھئي کران ، جناب زینب سلام اللہ علیہا امام حسین نس ونان کہ شور چھوء کیا تھان دلیل چھئي ۔امام حسین آلو کرناوان؛ اے عباس"بِنَفْسِی اَنْتَ"اللہ اکبر۔امام چھوء ونان شیعس پننہ نس ۔ حضرت عباس چھوء شیعہ تمسند ۔امام لوگ یہ بلایہ !

یہ کوتاہ بوڈ مقام چھوء امس شیعہ سندء خاطرء  ۔بوی آسن چھوء حسن اتفاق ۔یہ چھنہ بای سندء باپت آمت کہین ، یہ چھوء جواب دوان پانے جناب ابوالفضل العباس علیہ السلام ۔یمہ ساعتہ گژھان چھوء ، اورء چھوء وچھان عمر سعد پکان لشکر ہیتھ۔دپان چھوس؛کیاہ سا دلیل ؟ دپان چھوس شمرآو تازء دم فوج ہیتھ ،بیہ ابن زیاد سند تازء حکم ہیتھ کہ حسین نس ہے یو بیعت نتہ کریو جنگ ۔

جناب ابوالفضل العباس کیاہ گوژھ کرن ۔ یہ تمی کور ائس چھا تہء کران کنہ نہ ؟

یا یہ اسہ تصویر چھئی جناب ابوالفضل العباس علیہ السلامن تمس کیاہ پزء ہا   تمہ ساعتہ کرن ۔مگر یہ کہنژاہ کران چھوء تتھ چھنہ ائس توجہ کران کینہ ۔

جناب ابوالفضل العباس علیہ السلام چھئس دپان ؛ میہ بوز چانی کتھ ،یہ پیغام واتناوء بہء پننہ نس مولاہس۔

اگر اسہ کنہ ساعتہ تیوتھ کانہہ چلینج کرء ،اسہ پزء نہ جواب تمس دیون کہین ۔

بہ چھوس آسان مختلف  یمن  سوشل نیٹ ورکن پیٹھ جوانن ساتھی کتھ کران، سوال جواب کران ،بہء چھوس تمن تہ یہوے تلقین کران کہ ؛یمہ ساعتہ کانہہ سوال آسنوکران  جواب آئس زیو نہ پانے دوان کہین ۔کیازء کہ تمی چھئي کالج آمت آسان ، یونیورسٹی آمت آسان یہ فتنہ پادءکرنہ باپت ۔ تموو چھئء امہ خاطرء محنت آسان کرمژ، سوال تہ آسان تیار کورمت  تہ جواب تہ کنہ حدس تام پان سی پتہ آسان۔وین چھوء چیانہ زبانی سوء کتھ یژھان کڑن یمہ ساتھی سوء ژے خلاف استعمال کرء ۔امسنز کتھ گژھہ رٹن بہء پرژھہء پننہ نس عالمس۔یہ گئي شیعہ سنز پہچان۔

یتھی کئن جناب ابوالفضل العباس ہیکہ ہا نا تمس جواب دیتھ ۔سوء ہیکہ ہا تمن تمی ساعتہ قتروبتر کرتھ۔نہ ۔دوپن بہء پرژھہ پننہ نس مولاس۔

جناب زینب سلام اللہ علیہا؛

اسہ چھوء اکوی جملہ یوس زن تاریخ خن تقریبا تمام مقتلوچھوء یہ نقل کورمت۔ائس چھئی جناب زینب سلام اللہ علیہا سند صرف ونان تمسند بائي دود۔تمسند امام دود چھنہ ائس ونانی ۔تمسند پیغام سوء چھنہ اسہ وننوی ، توکن چھنہ  توجہ کران کہین۔یلہ زن مقتلو  یوس سوء جملہ چھوء نقل کورمت  کہ یمہ ساعتہ امام حسین علیہ السلام  سند سر تنہ نشہ جدا کورکھ ،جناب زینب آس فریاد دوان :"یااخا!"، بایو !"وا سیّدا!" امامو!،"وا اہل بیتا!" ایے رسولخدای سندء اہل بیتو!۔

یعنی یمہ ساعتہ ائس کانہہ کریکھ کرو اتھ منز گژھہ امامت  و ولایت واضح طور پیغامس منز موجود آسن۔

یتھی کئن زن زیارت اربعین نس منز ہرکنہ پہلوس کن چھوء اشارء کہ کمس چھئي ائس امام مانان۔

ائس کمہ باپت چھئي امسندس قیادتس تحت ، یہ چھنہ رشتہ داری کہین ،یہ چھئي الہی نورچ وتھ "اهْدِنَا الصِّرَاطَ الْمُسْتَقِیمَ"یوس زن پران چھئي یہ چھوء تمہ کوی معنی ۔ اللہ اکبر۔

 یہ چھوء اکھ شخصاہ ونان، دپان؛عالم اوس ،امس اوس پننہ جایہ یہ ذہنس منز آمت کہ یہ کوس کتھا چھئی (کربلاہ کین شہیدن ہنزتمو کئر جانثاری)تمی چھئي خوش قسمت   تمی لوکھ یمی زن امام حسین نس تمہ ساعتہ ساتھی آئس اگر زن بہء تہء تتھ زمانس منز زامت آسہ ہا ،بہء آسہ ہا امام حسین نس ساتھی بہء تہء کرء ہا س یاری ۔پتہء ووچھن خواب ۔امام حسین علیہ السلام روز عاشورا نماز پران ،اورء تیر یوان یہ چھوء ڈلان،یہ چھوء اتھ نماز جماعت تس سپر بننہ خاطرء کھڑا، (یہ چھوء خوابس منز وچھان) دفاع کران۔اورء چھوء تیر یوان یہ چھوء یی کران ڈلان، یہ چھوء امام حسین نس تیر یوان۔بیاکھ تیر یوان یہ چھء یتھہ کئن پھیرا ڈلان،سوء چھوء امام حسین نس یوان۔یہ بے اختیار ہوشارء گژھان ،دوان بوتھہ بوتھہ ۔نہ ۔یہ چھوء ونن سہل۔اتین ثابت قدم روزن یہ چھوء کمال ۔یہ چھئي تمے نورانی کینہ شخصیت آسمت ،ہٹہ مٹہ چھنہ امام حسین نن تمی انتخاب کئرمت کہین۔تمن چھوء ایمان کامل اوسمت خدای سندس وعدس پیٹھ، ذرء برابر تہء اوسکھ نہ شک کہین ۔اسہ چھوء ونہء تہء ترءنہ ترہ۔

ائس گژھو امہ نشہ کینہ ہیچھن کہ ائس کتھہ کئن ہیکو ونہ کینس کربلائی بنتھ ۔یہ سوری چھوء کہوٹ کہ ائس گئژھ امام سندء قافلہ لک نورانی قافلہ لک پیادے آسن غلامی آسن۔

اللہ اکبر۔امام زمان نس کیاہ تسلی دمو کہ ونہ کینس تہء چھوء دنیا تتھوی۔اگر زن ائس باقی ین کن نظر تراوو ،سوء گئي بئڑ کتھ ،پننہ نس بیبس اگر ائس محاسبہ کرو ،پتہ قضاوت کرو کہ ائس چھا امام حسین علیہ السلام سندن تمن یارن منز آسنس لایق کنہ نہ ۔میون وتھن بہن، میانی دوستی ، میانی رشتہ داری یہ چھا قربةً الی اللہ باپت کنہ یہ چھوء کنہ بدل مفادء باپت؟

اہل بیت تن ہندن پیرون کن وچھت گوژھ باقی ین اسلام مس متعلق شک وشبہ دور گژھن ،حقیقت آشکار گژھن۔

گژھہ ہن/گئس ین سانہ مسجدء منز ،مسجد چھئی خالی ۔

سانہ مجلسء منز ؛

مجلس منزء چھوء اسہ باسان صرف  تمہ ساعتہ مجلس کھژ، یمہ ساعتہ مثلاً دوگ وتھہء،اسہء چھوء باسان سوء دوگ وتھن گئی مجلس کھژ۔کتھ تراہ فکرء ازکہ امہ سبق کہ منزء امام حسین نن کوس کتھ ترم فکرء یتھ پیٹھ میہ عمل کرنک تمس ساتھی وعدء کور۔تہء چھنہ معیار کہین۔

یوس ودء یا ودء ناوء یا ودون ولی سنز حالت پادء کرء تمس خاطرء چھوء جنت واجب([6])۔یہ چھوء اسہ اوڈوی روٹمت کہ جنت چھوء ۔مگر یلہ زن آئس بہمو پننہ نس اوشس تہء اندازء لگاونہء تمہ ساعتہ تہء ہیکو ائس ونتھ کہ کوس اوش چھوء صحیح آسان تہ ء کوس اوش چھوء غلط اوش آسان۔گنڈء بہمو ائس ژٹنہ تمہ ساتھی تہء یی اوش ۔مگر تتھ کوس یی اوش وننہ ۔سون کوس اوش کتھہ کئن ہیکہ خدای سندء رضاءک سبب آستھ۔

بہء آسہ ودان مگر آسہ اپز ونان۔امام حسین نس چھوس ودان مگر اپز چھوس ونان!

کینہ چھئی اصرار کران کہ  فلانی نس کیاہ ونو ..ہے تولا تبرا کوت گو؟

تولی تبری گو نہ کہ ژء کررکھ  اکھ زء ترء ناو ہیتھ کانسہ ونکھ ژء بد ۔

تولی تبری گو ظالم (دشمن خدایس ساتھی دشمنی)۔سوء ژء آستہ۔عبدالحسین نا ژء چھوکھ ظالم :

لَعْنَةُ اللَّهِ عَلَى الظَّالِمِینَ([7])

یوس چھوء ظالم تس چھئی خدای سنز لعنت ۔

اپز زیارس خدای سنز لعنت ([8])

اگر عبدالحسین اپز زیور چھوء ،ژء تہء چھے لعنت ۔

یہ چھونہ اسہ  صرف پنن پنن پان بری کرن نہ! فلانی سی یوت ۔

اسہء چھوء تسلی یوان یمہ ساعتہ  بیس الزام ہیکو لگایتھ۔پننہ نس ببس کن ہیکو نہ ائس نظر دتھ کینہ ،میہ ما غلطی ۔ بیاکھی چھوء بالکل غلط آسان ۔مگر پنن چھنہ پے یی آسان کہ بہء کتین چھوس۔اگر ائس پنہ نس پانس محاسبہ بہمو کرنہ کہ ائس کتھہ کئن چھئی حالاتن ہئنز تشخیص دوان ۔

مثلاً،اگر(سفید صفس پیٹھ کینہ نکتہ تراوان سامعین نن سوال کران ونان)

توہی چھوء یمہ منزء وچھان کینہ ؟

[لوکن ہند جواب: نکتہ/داغ ۔۔۔]

یہ چھوء گمت آسہ ،ائس چھئي یتھوی داغ وچھان ۔یوتاہ صفحہ چھوء سفید،اتھ منز چھوء یہ داغ اکھ ۔

ائس گئژھ ونن کہ پورء صفحہ چھوہ سفید ،اتین چھوء داغ پیونت اکھ ۔مگر یہ سفیدی چھئی ساری مشراوان ائتھ داغ گس پیٹھ چھئي نظر تراوان ۔حسینی گو سوء چھوء دنوے چیز ونان ،ہوتہء یہء تہء۔(یوس زن حسینی چھنہ آسان سوء چھوء پنہ نہ  غرض زچ کتھ کران )حسینی چھئی پنن عئیب تہء بیہ سند عئیب تہء وچھہء۔

اسہء گژھہ ٹکھ آسن " مَالِكِ یوْمِ الدِّینِ"یوس زن ائس پرتھی چھئی آسان  ٹکھ توت تام آسن۔اگر بہء ودان چھوس قیامت تک دوہ کیاہ چھوء اتھ ودنس معنی۔اگر بہء یہ ددتھ پتہ بیس  دوکھہ چھوس دوان ،امیوک کیاہ معنی چھوء۔

امام حسین علیہ السلام شیعہ سند اکھ معیار قرار دوان،فرماوان:

إنَّ شیعَتَنا مَنْ سَلِمَتْ قُلُوبُهُمْ مِنْ کُلِّ غِشٍّ وَ غِلّ وَ دَغَل([9])

یمی زن سانی شیعہ چھئي تہند دل چھئي ،کنہ دوکھہ ،کنہ ٹھگ لہءنشہ پاک۔

دغل گو سویی ٹھگ گلی۔

غرض شیعہ گو سوء کہ یمسندء ذریعہ نقصان واتنہ کہین ، دوکھہ لگہ نہ کہین۔چھا ائس تہء؟

یوس نہ امام حسین نس مانانی چھوء ،یوس چیز دہن روپین چھوء امی چھئي تتھ پنن زء روپیہ فائدء تھاومت،یہ چھوء بہن روپین کنان۔ یوس سانین نظرن تل یزیدی چھوء ،یہ چھوء یہ بہن روپین کنان ۔مگر یوس پننہ نس پانس حسینی چھوء ونان یہ چھوء دہن روپین ہند چیز ترہن روپین کنان ،بیہ چھوء تھیکان دئگ تلن وول چھوء،زوہ وندء ہا امس امام حسین نس ۔ہومس تہء یمس کیاء چھئي فرق تلہء؟

ہوم کمہ چیزء تتوی یوتاہ  جایز نفع چھوء سوء تھوون  ۔مگر یمی....!

کنہ جایہ چھوء ...

اکھ چھوء ضرورت تک چیز آسان ؛ژوٹ چھئي ، دود چھوء ، سبزی چھئي....،یمی ـ ـ چھئي ضرورت تک چیز ،اتھ منز گژھنہ انسان زیادء یہ کرن زیادء نفع ژھانڈن۔

بیاکھ چھوءگاڑی چھئي ، لیپ ٹاپ چھوء کانہہ شوق کک چیز چھوء ،دہن روپین ہند چیز کن تہء ترہن روپین تہء ،شوق چھوس پورء کرن کئرتن ۔

مگر یتن زن امس ضرورت تک چیز چھوء ہیون تتھی ساتھی آسہ استحصال کران۔تمہ ساعتہ چھنہ امس حسینی آسن یاد آسان ،امس چھوء مشت گژھان ہے بے چھوس مرثیہ منز اژان ۔

مرثیہ منز اژن گو امام زمان سند تعزیدار  بنن۔

کوتاہ چھئي اس پننہ جایہ پنہ نین کامین سام ہیوان ...

ہر چیزس چھوء پنن معنی؛

اگر وضو چھئی کران ،وضوء چھوء اسہ کنہ طہارت تس کن نوان ادء چھئی ائس مسجدء گژھان ۔مرثی منز اژن تہء چھوء اکھ وضوء اسہ کہ اسہ گوژھ امام زمان فکرء ترن۔کتھ پیٹھ چھوء سوء عزادار۔ سوء کتھ پیٹھ چھوء ونان " و لأَبكِيَنَّ عَلَيكَ بَدَلَ الدُّمُوعِ دَما"([10])

اللہ اکبر۔یا امام زمان

عزادارو!مرثیہ یوس گوڈنچ چھہء آمژ پرنہ بس تمہ کوی اکھ جملہ کرء عرض تہنز زحمت تمام۔

حسینی مجلس منز گژھہ صرف رسولخدا سندء دین نچ کتھ ین کیازءکہ رسولخدای سندی دینی آو مسخ کرنہ ۔خدای ین سوز سوء رحمۃًللعالمین بنایتھ،مگر تتھ دین نس کیاہ کورکھ کہ یتن زن رسول رحمت سی پانس امان دتوکھ نہ ۔اللہ اکبر۔

جناب زینب سلام اللہ علیہا چھئي اسہ امیوک شاہد تہ گواہ یہ کہنژاہ تمی ووچھ کربلاہ ہس منز کہ کیاہ کورکھ اسلام مس اسلام کس ناوس پیٹھ۔ساری چھوی بہتر زانان جناب زینب سلام اللہ علیہا ہس آوس امام حسین علیہ السلام مس ساتھی خاص انس۔اصلا آسہ ہا نا!

رسول رحمت تن وون :

حُسَيْنٌ مِنِّی وَ أَنَا مِنْ حُسَيْنٍ([11])

یہ چھوء ونہ کینس تہء اسہ تران فکرء ،صرف حسین سندء ساتھی ،اگر زن ونہ ہا صرف"حُسَيْنٌ مِنِّی"یہ چھوء ٹھیک بوڈء بب ہے چھوس ،وجودک سبب ہے چھوس،مگر یہ ونن" أَنَا مِنْ حُسَيْنٍ " قرآن دپان:" یہ چھنہ کانسہ ہند مولی ،یہ چھوء خاتم النبیین([12]) "یہ کتھہء کئن چھوء امہ سندء ساتھی ..امیوک معنی چھوء تران وزء فکرء .گو،سبب امام حسین چھوء اکھ ممتاز مقام تھاوان ۔خطبہ ژٹنک سبب چھوء فکرء تران۔یمن نہ کتھ آئس کنہ ساعتہ  تران فکرء  ....

(مولا امیرالمؤمنین نس کور کہژو اصحابو سوال ؛ائس چھئي تعجب کران دونوے چھئي توہیہ فرزند حسن مجتبی تہ تہندوی فرزند حسین  تہء چھوء تہندوی فرزند ،توہی کیازء چھوی حسین نس تھود وتھان مگر حسن مجتبی ہس چھوی نہ وتھان ؟

مولا امیرالمؤمنین فرماوان؛کیازءکہ امسندء پشتء یی یہء "قائم آل محمد"(عجل اللہ تعالی فرجہ الشریف )یعنی امام زمان سندء احترام چھوء مولا احترام زیادء کران۔

یعنی ہرکانسہ اوس امام حسین نس ساتھی خاص انس۔

وین یمس یہ ساری الفء پیٹھ یے یس تان پتہ چھہءیعنی جناب زینب بس ،یمس تتھہ کئن تربیت چھئي کرمژ علی مرتضی علیہ السلام من ؛اکھ دوہا چھوء جناب ابوالفضل العباس  چھوء علی مرتضی سندس اکس کوٹھس پیٹھ بہت ،جناب زینب سلام اللہ علیہا  چھئي بیس کوٹھس پیٹھ بہت(بچہ چھئي)امام چھئی یمن ساتھی  کتھ کران ،امہ منزء چھوء منزی کتھ ژھنان ،بیاکھ چھوء کیاہ تھان پرژھان ۔امہ پتہ چھوہ   وین سوال کران(یتھی کئن روایتن منز چھوء آمت) زینب بس کن خطاب کرتھ  مولا امیرالمؤمنین فرماوان کہ ؛ ون سا یمی کئژ گئي (ہاوان اکھ انگج)دوپ نس یمی کئژ گئی؟

دوپ نس:اکھ۔

(باقی انگجن کن اشارء کرتھ پرژھنس )یمی کئژ گئي؟

دوپ نس:یمی اکیوک اعتراف آسہ کورمت سوء کتھہ کئن کرء....

گوذہن وچھان پننہ نین بچن ہئنز۔یہ کمہ خاطرء چھئي تربیت سپدان۔

یعنی امہ برونہہ چھوء اوسمت مولا امیرالمؤمنین  توحیدک سبق ہیچھہ ناوان ۔توحیدس پیٹھ کتھ کران ۔ یعنی یہ چھوء توحیدک پیکر ، توحیدک خانوادء۔

یتھی کئن زن حبیب بن مظاہرس رسولخد (صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم)سیٹھا پیار کران۔کیازکہءیلہ بچے ائس ،تمس تہء اوس امام حسین نس ساتھی عجیب لگاو ۔سوء اوس امام حسین علیہ السلام یپاری پکان اوس ،سوء اوس تمسندء کھورچ مژ تلان تہء تتھ میٹھی دوان۔)

جناب زینب سلام اللہ علیہا ہس تہء اوس عجیب محبت امام حسین علیہ السلام مس ساتھی۔اکہ دوہ چھنہ نظرء گژھان امام حسین ،یہ چھئي دوان گژھان فاطمہ زہرا سلام اللہ علیہا ہس نشء،عرض کران یہ حسین کتہء چھوء؟

فاطمہ  زہراء سلام اللہ علیہا چھئي فرماوان کہ: رسول اللہ صلی اللہ علیہ والہ وسلمس نش دژتھہء ژء نظر تتہ ما چھوء۔

 عرض کرن نہ۔تور گیس نہ کینہ ۔

دوپنکھ تتہ دء نظر تتہ ما چھئی۔

جناب زینب درایہ دوان ۔نظر تراون ، تتہ ووچھن امام حسین رسولخدای سندس سینس پیٹھ بہت ،امس اتہ تھی نندر کھژمژ۔

یہ تہء چھوء جناب زینب بن ووچھمت ۔

مگر روز عاشورا کیاہ ووچھ جناب زینب بن !یمہ ساعتہ تلہ زینبیہ یس پیٹھ کھژ،تتھ تھزرس یتھ زن ونہ کینس تلہ زینبیہ چھئی ونان ، اتھہ پیٹھ تراون نظر  حسین نس چھوء آمت نہ صرف ذبح کرتھ سر تنء نشہ جدا کرنہ آمت ، بلکہ نحر کرتھ چھوء سر تنہ نشہ جدا کرتھ ، نیزس پیٹھ حمل کرنہ ۔ روضے رسولس کن کرن رخ فریاد ژھوٹن:

السلام عليك يا رسول الله

سلام آئسن توہیہ پیٹھ اے رسولخدا!

صَلّی عَلَیکَ مَلیکُ السَّماءِ

آسمانک ملائک چھئي توہیہ پیٹھ سلام سوزان۔

قتل گاہ ہس منز چھوء وچھان:

هذا حُسَینکَ مُرَمَّلٌ بِالدِّماءِ

چون حسین چھوء یتین قتل گاہ ہس منز ،خونس منز آمت تمس سران دنہ ۔

مُنْقَطَعُ الاعْضاءِ

امسند بدن چھوء آمت پارء پارہ کرنہ ۔

مَسْلُوبُ الْعِمَامَةِ وَ الرِّدَاءِ

یمسندس سرس چون عمامہ ، دوشن عبا آئس سوء چھئي آمژ تار تار کرنہ ۔

أَلَا لَعْنَةُ اللَّهِ عَلَى الظَّالِمِينَ(هود/18)وَسَيعْلَمُ الَّذِينَ ظَلَمُوا أَي مُنْقَلَبٍ ينْقَلِبُونَ)الشعراء/227)

اربعین حسینی یُک چلہ تہء سانی کمائی PDF فایل ڈاونلوڈ کرنہء خاطرء

 

[1] لَيْسَ الْعاقِلُ مَنْ يَعْرِفُ الْخَيْرَ مِنَ الشَّرِّ وَ لكِنَّ الْعاقِلَ مَنْ يَعْرِفُ خَيْرَ الشَّرَّيْنِ

[2] «انّ الحسن و الحسین سیّدا شباب اهل الجنّه، و انّ فاطمه سیّده نساء اهل الجنّه»مسند احمد، ج6، ص542، حديث حذيفة بن يمان، حديث 22818.

[3] تحف العقول ص 245

[4] إنّ حسین بن علیّ بن ابی طالب لقد شقّ عصا المسلمین و خالف امیر المؤمنین و خرج عن الدّین ثبت و حقّق عندی قضیت و حکمت بدفعه و قتله حفظا لشریعه سیّد المرسلین.

[5] امام صادق(عليه‏السلام) در روايت مقبوله عمر بن حنظله، منزفرماوان: «... مَنْ كَانَ مِنْكُم مِمَّنْ قَدْ رَوَى‏ حَديثَنَا وَ نَظَرَ فِى حَلَالنَا وَ حَرَامنَا وَ عَرَفَ اَحكَامَنَا فَليَرضُوْا بِهِ حَكَماً فَاِنِّى قَدْ جَعَلْتُهُ عَلَيْكُمْ حَاكِماً فَاِذَا حَكَمَ بِحُكمِنَا فَلَمْ يُقبَلْ مِنهُ فَاِنَّمَا استخَفّ بِحُكْمِنَا وَ عَلَينَا رَدٌّ وَ الرَّادُّ عَلَينَا كَالرَّادُّ عَلَى اللّهِ وَ هُوَ عَلَى حَدِّ الشِّركِ بِاللَّهِ»؛( ر.ك: محمد بن يعقوب كلينى، اصول كافى، دارالتعارف، 1401ق، ج 1، ص 67 ؛ محمد بن حسن عاملى، وسائل الشيعه، تهران: انتشارات اسلامى، ج 18، ص 98.)

[6] و من بکی و أبکی عشرة فله الجنة،‌ و من بکی و أبکی واحداً فله الجنّة، و من تباکی فله الجنّة».(لهوف، ص 10؛ بحارالأنوار، ج 44، ص 288.)

[7] سوره الاعراف آیت 44و سورہ ہود آیت 18

[8] لَعْنَتَ اللَّهِ عَلَى الْكَاذِبِینَ«آل عمران آیت:61»

[9] تفسیرالإمام العسکری(ع)، ص 309، ح154

[10] بحارالانوان، ج 101، ص 238

[11] سنن ترمذی، ج ۵، ص ۳۲۴، ح ۳۸۶۴ ؛ الإرشاد فی معرفة حجج الله على العباد، شیخ مفید، ج ۲، ص ۱۲۷ ؛ بحار الانوار، علامه مجلسی، ج ۴۳، ص ۲۶۲، ح ۱.

[12] َما كَانَ مُحَمَّدٌ أَبَا أَحَدٍ مِنْ رِجَالِكُمْ وَلَكِنْ رَسُولَ اللَّهِ وَخَاتَمَ النَّبِیینَ«سوره احزاب آيت :40»

 

۔۔۔




آپ کی رائے
نام:  
ایمیل:
عبارت:  500

قدرت گرفته از سایت ساز سحر