»
چهارشنبه 22 آذر 1396

جشن عیدمیلادالنبی صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم

عبدالحسین سنز16ربیع الاول 1435 مطابق 17جنوری 2014 مسجد حضرت زہراء سلام اللہ علیہا بمنہ  بڈگامہ پرمژ مجلس مولودی

اَعُوذُ بِاللّهِ منَ الشّيطانِ الرَّجيم

بِسْمِ اللَّهِ الرَّحْمَنِ الرَّحِيمِ؛نحمده و نستعینه و نؤمن به و نتوکّل علیه و نستغفره و نصلّی و نسلّم علی حبیبه و نجیبه و خیرته فی خلقه حافظ سرہ و مبلغ رسالته سیّدنا و نبیّنا و طبیب نفوسنا و حبیب قلوبنا  ابی‌القاسم المصطفی محمّد(صلی اللہ علیه و آله  وسلم)[اللَّهُمَّ صَلِّ عَلَى مُحَمَّدٍ وآلِ مُحَمَّدٍ وعَجِّلْ فَرَجَهُم] و علی آله الأطیبین الأطهرین المنتجبین المعصومین سیّما بقیّةاللَّه فی الارضین۔

اَللّهُمَّ اِنّی اَسئلُکَ وَاَتَوَجَّهُ الَیکَ بِنَبِیِّکَ نَبِیّ الرَّحمَةِ مُحَمَّدٍ صَلَّی اللّهُ عَلَیهِ وَالِهِ یا اَبَاالقاسِم یا رَسوُلَ اللّهِ یا اِمامَ الرَّحمَةِ یا سَیِدَناوَ مَولانا اِنا تَوَجَّهنا وَستَشفَعنا وَ تَوَسَّلنا بِکَ اِلیَ اللّهِ وَ قَدَّمناکَ بَینَ یَدَی حاجاتِنا یا وَجیهاً عِندَاللّهِ اِشفَع لَنا عِندَاللّه۔

یا وَجیهاً عِندَاللّهِ اِشفَع لَنا عِندَاللّه

یا وَجیهاً عِندَاللّهِ اِشفَع لَنا عِندَاللّه

میلاد خاتم النبیین ،نبی رحمت بارگاہ خاتم الوصیین امام المنتظر عجل اللہ تعالی فرجہ الشریف ،تہندس نائب بس حضرت امام خامنہ ای ،جملہ مراجع عظام تقلید ، علمای اعلام ،حجج الاسلام ،مرّوج دین مبین ، مفتیان عظام ،جملہ مؤمنین و مسلمین بالخصوص تہندس خدمت تس منز، یہ میلاد چھوس مبارکباد عرض کران ، یمہ میلاد کہ برکتہء، ہر وجود دس پنن مول پروردگار عالمن عطا کور ، یمہ کہ برکتہ  یوس زن از رسول رحمت صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم سند تہء میلاد  چھوء امام جعفر صادق علیہ السلام سند میلاد تہء چھوء،امیوک اکھ تحفہ دنہ خاطرء جوانن، چھئی میہ  کینہ نکتہ  یتین جمع کرمت ۔از کل چھئي ژھوٹی ژھوٹی جواب ژھانڈان۔فیس بوکس پیٹھ کران زء تہءزء گئي ژور کرتھ کران کتھ۔اگر جوان دلچسپی آسن تھاوان ،یمی ایڈرس کرن نوٹ۔بس یمنی دون کتھن منز آسن جواب دوان کہ؛

اگر ائس ونان چھئي اسہ گژھہ قرآن جواب دیون!

مگر قرآن چھوء پانے ونان ؛ قرآن چھنہ کافی کہین ۔

پروردگار عالمن وون؛سورہ انبیاء آیت 50 منز:

وَهَذَا ذِكْرٌ مُبَارَكٌ

قرآن وونن یہ چھئي ذکر۔مگر رسول رحمت تس وونن ؛سورہ غاشیہ آیت 21ہس منز:

إِنَّمَا أَنْتَ مُذَكِّرٌ

قرآن چھوء ذکر، مگر یہ ذکر یا رسول اللہ (صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم)ژء کر۔

اگرزن ائس دپو سانہ خاطرء چھوء قرآن کافی ۔قرآن دپان پانے ،قرآنی  چھنہ پانے یوت کافی کہین ۔یہ قرآن وژھ ناون وول تہء گژھہ آسن۔ یہ کتھ وژھہ ناون وول تہء گژھہ بیاکھ آسن۔مگر تہند معیار گژھہ پانہ وانی رلن۔تمی گژھن اکھ اکسند تصدیق کرن ۔قرآن چھوء رسول رحمت سنزء کتھہ تصدیق کران ۔رسول رحمت چھوء قرآن چی کتھہ تصدیق کران ۔یمہ ساعتہ یژھی کتھ آسہ ،یہ چھوء الہی ،یہ چھوء اسلام ، یہوے چھوء سوء پیغام یوس زن پروردگار عالمن پنہ نس آخری نبی سندء ذریعہ اسہ تان واتہ نووی۔

اگر اسہ یہ اصول  آسہ ، ہر کنہ کتھہ گژھہ آسن اسہ یہ معیار لبنہ یون ۔یمہ ساعتہ اسہ کانہہ کتھ ونو ،اسہ یمی تہء عمدہ مسائل تہ مشکلات چھئي پادءگژھان ،تمیوک سبب چھوءیہ آسان ، اسہ چھوء آسان جواب پانے دیوتمت۔

بہء چھوس وتہ پکان میہ چھوء کانہہ سمکھان،سوال چھوء میہ کران ،بہء چھوس اتہ تھی ذہنس منز گنزراوان زء تہء زء کئژ گئی ۔بہء چھوس امس ونان ژور۔

اگر وین پتہ ونہ ۔نہ ۔ میہ ونے ژء زء بوہرء تہء زء بوہرء مثلا ڈون چہ تہء زء بوہرہ کنین  ہئنز،یہند وزن کیاہ چھوء واتان؟

میہ وونس نہ ، میہ تور نہ فکرء کہین ،ژء کیاہ اوسی غرض۔

بہء گوژھس تیوتھ پختہ آسن، بہء پرژھہ ہا امس ، ژء زء تہء زء پرژھہ نک مقصد کیاہ چھوء ،کوس زء تہء زء۔

مثلا اسہ چھئي تتھی تہء ترتیب وچھہ مژ ؛ مولا امیرالمؤمنین علی ابن ابیطالب علیہ السلام سندس اکس زانووس پیٹھ چھئی جناب زینب سلام اللہ علیہا بہت ،بیس زانووس پیٹھ چھوء جناب ابوالفضل العباس علیہ السلام بہت ۔کتھ چھئي کران ،امہ پتہ چھئي منزی کتھ گژھان بیاکھ،یعنی یمہ ساتھی فکرء چھوء تران روایت منز کہ کتھ چھئي ژھنہ مژ ۔امہ پتہ چھوء جناب زینب سلام اللہ علیہا ہس کن اشارء ہاوان ،اتھہ ساتھی انگجو ساتھی ، یمی کئژ انگجہ چھئي ؟یمہ ساعتہ اکھ اونگج چھئس ہاوان ۔ دپان: اکھ۔پتہء چھئس زء اونگجہ ہاوان ؛دپان چھئس یمی کئژ چھئي ؟دوپنس یمی زوء اکہ کیوک اقرار آسہ کورمت سوء ہکنہ تمہ علاوء ...

امہ ساتھی چھوء  تران فکرء کہ امہ برونہہ چھوء اوسمت مولا یمن دونونے بچن خدای سندس وحدانیت تس پیٹھ سبق ونان ۔ لذا ہیوک نہ جناب زینب بن ...اگر ژء ونی اسہ اوسکھ ونان ؛ اکھ ، اکھ، اکھ ژء کیازء اونتھ وین زء ۔گو سوال کرنہ والی سندگژھہ آسن سوی معیار کہ امس گژھہ فکرء ترن کہ امسندء سوال کرن غرض کیاہ چھوء۔

لذا چھئي ضرورت یمہ ساعتہ تہء اسہ غلطی گژھان چھئي ،سوء چھوء وجہ آسان کہ اسہ چھوء جواب آسان دیوتمت پانے ۔

ہانکل گئي بند۔کیازء گي بند؟

یہ چھوء پانے جواب دیوتمت۔

اگریہ آسہ ہن وونمت کہ میہ چھوء یہ امامن وونمت ۔مسئلہ چھوء حل۔

اگر زن(سوال سپدء) بہء کیازء چھوس اتھہ یلہ تراوان ،اہلسنت کیازء چھوء اتھہ بند تھاوان ؟

اگر دپوس ؛ کیازکہ یتھی کئن ، کیازکہ ہوتھ کئن.... پتہ چھنہ تمس ٹھس برابر یوان کہین،وتہ پیٹھ چھوہ پیوان میہ کیاہ اوس ونن۔(بلکہ دپس )میہ وون میانی امامن۔

بہ چھوس امہ  موجوب  اتھہ یلہ تھاوان کیازکہ میون امام چھوء ونان نمازء وزء چھئي اتھہ تھاون یلہ،بہ تھاونہ اتھہ بند کہین ۔

ژء کیازء مژء پیٹھ سجدء کران ؟

کیازء کہ سجدس چھئی یمی فائدء ،مژء چھئي یمی فائدء ...

نہ ۔ فائدہ باپت کتہ چھئي کران....۔

جواب چھوء؛ کیازء کہ میون امام چھوء ونان۔

اگر یوتھ جواب آسہ ،تتھی چھنہ زہین انسان مشکلن منز گرفتار گژھان۔

یمی زن پانس.... مثلا کتاب زء پرتھ،یا کتھہ ژور یاد تھاوتھ چھئی بیس یژھان سوال کرن ،وجہ چھوء آسان یہوے کہ اسہ چھوء جواب آسان پننہ نس اتھس منز ۔رسول رحمت تن دیوت اسہ یہوے سبق ،حتی اگر زن رسول رحمت تہء آسہ یوس یہ جواب ونہ اتھ گژھہ سورس (منبع)آسن یہ کیازء چھوء ونان ۔ دپان:

وَمَا ینْطِقُ عَنِ الْهَوَى۔ إِنْ هُوَ إِلَّا وَحْی یوحَى([1])

بہ ء چھوس نہ کتھی کران بجزء وحی الہی ۔

یلہ میہ پروردگار عالم چھوء ونان ،ادء چھوس بہء کران،ادء چھوس بہء ونان۔

ائمہ معصومین نو دوپ؛ اگر زن توہیہ نش کانہہ کتھ واتہء ،یہء تولیون قرآنس منز ،اگر زن قرآن کین واضح حکم مس خلاف آسہ " فَاضرِبُوه عَلی الجِدَار"([2])یہ گو لبہء ٹھوکن۔اتھ گئي نہ اسہ ساتھی نسبت دن کہین۔

گو اہل بیتن ہندء کتھہء تہء چھوء تلہء جواز یلہ سوء قرآنء مطابق آسہ ۔

 چیانی تہء میانی کتھ کیاہ چھئي۔صرف یتوی یوت کہ میون امام کیاہ چھوء ونان۔صرف یہوے یوت جواب ۔ کیازء؟

ائس اگر کانہہ عمل چھئی،تقلید کمہ باپت چھئی ائس کران؟

سون بہم حجت چھوء ونہ کینس پردے غیب بس منز ۔مگر یوس زن پردء نبر یوس سون امام چھوء ائس چھئن نا سوء وچھان امام خامنہ ای ۔سوء چھوء اسہ ونان اسہ کیاہ چھوء کرن ۔ ائس کیازء چھئي تمسندس وننس پیٹھ عمل کران ؟

کیازء کہ قیامت تک دوہ ،ائس کیاہ آئس ونی نمازء منز پران ،اسہ چھئی ٹھئکھ قیامت تس تام۔ژء چھوکھ قیامتک مالک"مَالِكِ یوْمِ الدِّینِ"سانہ ہر کنہ کتھہ چھئي ٹھئکھ آسان توتھی تان کہ تتین چھوء جزاء و سزا میلان۔

اگر زن ائم امام من غلط وتھ آسہ ہائومژ ،خدایا! ژء رئٹ زئن پانے تتین۔اگر اصل وتھ آئسن ہاومژ بہء بچیوس ۔ دونونے صورتن منز چھوس بہء بچئتھ اگر زن بہء امام مس تابع آسہ ۔ یہ اصول کیازء چھوس بہء ونان ؟

کیازء کہ پروردگار عالمن چھوء یہ اصول وضع کورمت پانہ قرآن نس منز، سورہ آل عمران آیہ 138منزچھوء پروردگار قرآنچ سند دوان :

هَذَا بَیانٌ

قرآن چھوء بیان۔

گو اسہ چھنہ کنہ چیزچ ضرورتی ،اسہ کتھ چھوء استاد ضرورت ،قرآن نے چھوء!اتی ہیچھو۔مگر یہوے قرآن اسہء امیوک جواب دوان ،سورہ نحل آیت44 منز:

لِتُبَینَ لِلنَّاسِ

اے رسول (صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم) ژء کر بیان۔

قرآن چھوء بیان،مگر بیان کر ژء۔

گو ؛یاتان نہ اسہ دونہء ونی پہلوون محور دو طرفہ آسہ ،یمہ ساعتہ اگر زن ائس وچھو یہ میلاد  کہ برکتہ یہ کتھہ بنیو اتحادک منبع ،کیازء کہ یتین جذبہ اوس کہ خدایس نش کیا جزاء گژھہ میلن ۔

ہفتہ وحدت:

ائس آئس الگ الگ کران میلاد، اہلسنت دپان نہ سا بہمہ زاو آنحضرت ،ائس چھئي دپان نہ سا سدہمہ زاو ،امام خمینی ین دوپ اہن سا اتھ پیٹھ کیازء لڑائي ،خداین دوپ یہ چھوء تمام عالمین ہندء خاطرء رحمت اگر ائس بہمہ پیٹھے میلاد مناوو  سداہمس تان ہفتہ کس ہفتہ سی کم گژھیہ کینہ ۔

یعنی یمہ ساعتہ الہی جذبہ آسہ اختلاف تہء چھوء صلح ہک سبب بنان۔

اگر زن اسہ الہی جذبہ آسہ کامی کرنچ ۔اگر زن  یمس ساتھی لڑائي آسہ ،مالس ساتھی چھئي لڑائی  ، بائس  ساتھی چھئي لڑائي ،ہمسایہ یس ساتھی چھئي لڑائي مگر بانگ گئي "حَی عَلی خَیرِ العَمل" ژاومسجدء منز ۔خدای سندء باپت چھنہ میہ لڑائی یی،بائي یس ساتھ چھہ میہ لڑائي ، مالس ساتھی چھئی میہ لڑائي ،میراث سچ لڑائي، کانہہ تہ لڑائي ،تتھ چھنہ انکار کہین ۔مگر یتین یوس چیز میہ رلاوان چھوء سوء خدا، سوء چھوء"قربه الی الله"۔ائس چھنہ اکھ اکس وچھانی  ،اسہ چھئی دوستن دون لڑائی مرثیہ چھئی ، مرثیہ کہ برکتہ .....کیاہ سا امام حسین سندء لولہ آئي ائس ،امام حسین چھوء اسہ رلاوان ۔پنن ذاتیات چھئي ائس دور کران ،مسجد چھئي اسہ رلاوان ، امام بارء چھوء رلاوان ،نماز جمعہ چھوء رلاوان ......۔گو اگر اسہ  "قربه الی الله"ہک مزاج آسہ پادء گومت ائس آسو قرآنی ، اسہ آسہ کانہہ چیز رلاوان ۔یوس یہ الہی جذبہ چھوء آسان اتھ منز چھوء بجائے خود رحمت پھوٹان۔

میلادمناونس اعتراض:

بعضی چھئي سوال کران کہ یہ میلاد (کیازء چھئي مناوان) اگرچہ مثلا اسہ منز چھنہ الحمدللہ اتھ منز کانہہ تہء زانہہ  تہ کانسہ اونگج توجمژ ،کیازء کہ اسہ چھوء دین بس صرف یا میلاد کہ برکتہ میولمت یا شہادت کہ  برکتہ ،شہادت کہ بہانہ چھئي ائس اہلبیت تن یاد کران محمد و آل محمد یاد کران ،ولادت کہ بہانہ محمد و آل محمد یاد کران ،امی ساتھی چھوء دین نچ کتھ اسہ تان واتان ۔

ونہ کینس دمہ بہء تحفہ پانہ رسولخدای سند توہیہ ان شاءاللہ ،یمہ شبء کہ برکتہ  پانے وئچھ زیو توہی کہ توہیہ کیاہ گو (میلاد مناونہ ساتھی )حاصل ۔رسول رحمت صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم فرماوان:

ما مِن مائدةَ وُضِعَتْ فَقَعَدَ عَلَیها مَن اسمه محمّدٌ أو أحمدُ إلاّ قُدِّس ذلکَ المنزِلُ فی کُلِّ یَومٍ مَرَّتَین۔([3])

گوڈء پریو صلوات ادء ونہ بہء امیوک ترجمہ۔

اللَّهُمَّ صَلِّ عَلَى مُحَمَّدٍ وآلِ مُحَمَّدٍ وعَجِّلْ فَرَجَهُم

دپان؛ کانہہ دستخوان ناہ ،یوس تہء بچھہ ،تتھ پیٹھ  بہیہ سوء نفر اہ یمس منز کانسہ آسہ ناو یا احمد نتہ آسیس ناو محمّد،سوء جای سوء گھرء روزنہ خالی یوت تان نہ خدای سندء طرفہ دویہ لٹہ سوء تقدیس گژھہ ۔

یعنی تمیوک سوء برکت گژھن فراوان خدای سندء طرفہ نازل ۔کمہ ساتھی؟

زء تمی نفر یا کانسہ آسہ احمد ناو ،نتہ آسہ کانسہ محمّد ناو۔یتین زن پانہ رسول رحمت صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم سند ناو یی ہینہ ،اتین ہیکوء اندازء کرتھ سوء کئژاہ رحمت تچ،سوءکئژاہ فضیلت تچ جای بنہ ۔یہ کیازء چھوء پانہ پروردگار عالم پانہ تہء اتھ منز حصہ دار رودمت ۔پانہ چھون پنن پان تھوومت آوور صرف محمّد محمّد کرنس ۔

یمہ ساعتہ رسول رحمت معراج جس کھئت ،ہر چیزک چھوء سوال کران ،بہشت ووچھوکھ، جہنم ووچھوکھ ،ائتھ منز ووچھوکھ عجیب الخلقہ ملائک کاہ ،امس چھئي بیشمار اتھہ ،امس چھئي بیشمار اونگجہ ،جبرئيل امین علیہ السلامس کورن سوال ؛ یہ کوس بلائی چھئي ۔ عرض کورن یا رسول اللہ صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم یہ چھوء محاسب اکونٹنٹ،امس چھوء حساب تھاون۔

امس ساتھی کرو تلہ کتھہ۔

گئی امس نش، حضرتن کورس سوال۔ژء کیاہ چھوکھ کران؟

دوپنس یہ تہء وونیوکھ تان،ینہ خداین  یہ زمین خلق کئر،بہء چھوس امیوک زمین ہند کھڈپینچ ۔یوس رودء قطراہ، یوس شینہ پیونتاہ ،یہ کینژھاہ زمینء پیٹھ ووتھ ،ہر قطرک چھوم حساب۔

دوپنس ؛ یوتاہ حساب چھوکھ ژء تھاوان ژء ماچھئی زانہہ مثلا گانگل گژھان ،یی تس حساب بس منز؟

  دوپنس؛ آ۔میہ چھوء مشکل گژھان اکے ساعتہ اتھ حساب کرن ،یمہ ساعتہ اتھ زمین پیٹھ چیانی امتی ژء تہء چیانین اہلبیت تن پیٹھ صلوات چھئي سوزان ([4])۔

اللَّهُمَّ صَلِّ عَلَى مُحَمَّدٍ وآلِ مُحَمَّدٍ وعَجِّلْ فَرَجَهُم

نبوت تہ امامت:

پروردگار عالم پانہ امی باپت پنن پان تہء محمّد محمّد کرنس ساتھی آوور تھوومت ۔پانے چھوء ونان:

بِسْمِ اللَّهِ الرَّحْمَنِ الرَّحِیمِ۔ إِنَّ اللَّهَ وَمَلَائِكَتَهُ یصَلُّونَ عَلَى النَّبِی یا أَیهَا الَّذِینَ آمَنُوا صَلُّوا عَلَیهِ وَسَلِّمُوا تَسْلِیمًا«[5]»

إِنَّ اللَّهَ۔پانہ پروردگار۔ وَمَلَائِكَتَهُ۔بیہ تمسند ملائکہ۔ یصَلُّونَ عَلَى النَّبِی۔یصلون،فعل مضارع ؛یمی چھئي زء چیز یمی زن اسہ وزء وزء گژھن تھاون یاد،رسالتء موجوب تہء امامتء موجوب۔سورہ قدر گژھہ  تھاون امامت موجوب یاد ، امے فعل مضارع باپت ،رسالت گژھہ تھاون یہوے امہ یصلون موجوب کہ پروردگار عالم چھوء ائتھی ساتھی ۔اگر زن زانہہ آسہ دپن بہء کرءہا خدائی کامی ،نماز پرن چھوء یہ چھوء اسہ پیٹھ فرض ، اسہ چھئي فرصت میلان ،فضیلت میلان کہ ائس چھئي خدایس ساتھی کتھ کران مگر اگر زن دپو سوء کاماہ کرو یوس زن پانہ خدا آسہ کران ۔سوء گو یہوے۔دپان : إِنَّ اللَّهَ۔پانہ خدا ، وَمَلَائِكَتَهُ۔بیہ تمسند ملائکہ۔ یصَلُّونَ عَلَى النَّبِی۔صلوات سوزتھی چھئي تمی نبی یس پیٹھ ،مؤمنو! ہے یوتھ ناہ توہ تہء روزیو امہ نشہ محروم یا أَیهَا الَّذِینَ آمَنُوا صَلُّوا عَلَیهِ وَسَلِّمُوا تَسْلِیمًا۔

اللَّهُمَّ صَلِّ عَلَى مُحَمَّدٍ وآلِ مُحَمَّدٍ وعَجِّلْ فَرَجَهُم

با پیر پیر رٹن:

امامت کیاہ چھئی اسہ ہیچھہ ناوان؟

تَنَزَّلُ الْمَلَائِكَةُ وَالرُّوحُ «سورہ قدرآیت:4»

شب قدرء منز"  تَنَزَّلُ" فعل مضارع۔اگر یہ ملائک تہ روح آسہ ہن تمے دوہ یمہ ساعتہ آنحضرت صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم اوس یہ ائس پتہ ،دپو تمہ ساعتہ آئس نازل سپدان مگر وین کینس کوت چھئي یمی ملائک گژھان ؟ کانہہ ہیکیاہ دنیاہس منز روی زمین نس  پیٹھ یہ دعوی کرتھ کہ یمی ملائک چھئی میہ نش یوان ۔یہ روح چھوء میہ نش یوان ۔بلکہ یہ چھوء رسول رحمت تس پتہ آئس یوان علی مرتضی ہس نش ، علی مرتضی ہس پتہ حسن مجتبی ہس نش، حسن مجتبی ہس پتہ  امام حسین نس نش، امام حسین نس پتہ ، امام زین العابدین نس نش....... ،ونہ کینس چھئی امام زمان نس نش یوان ۔

یعنی یہ چھوء امامتک ایڈرس دوان اسہ یہوے قرآن ،یمو آیہ یو ساتھی کہ یہ چھوء زندء دین ۔لذا یتھی دین نس منز یتین اسہ پروردگار عالم چھوءیوتھ نبی سوزتھ یمہ ساتھی زن خدای سند سوء سوری وعدء گوژھ سانس حق کس منز محقق گژھن ،یہ کیازء چھنہ تتھ معیارس واتت ؟

کیازءکہ اسہ بدلائي پانے معیار ۔اسہ دوپ ہے قرآن نس منز ہے چھوء لیکھت۔ہے رسالہ عملیہ چھوناہ گھرس منز۔اگر زن رسالہ گھرس منز چھوء ،یہ چھونہ جواب کہین ،یہ رسالہ ونن وول تہء گژھہ آسن امہ کوی استاد۔ادء ترء فکرء فقہ کچ کتھ کوس چھئی ۔

قرآن ہیکہ سوئی بیان کرتھ یوس زن پانہ یہ سمجھن وول آسہ ۔

اسہ چھوء ویسے کاشریو  اکھ چیز حل کورمت ،مگر یہ سونچ چھوء بدلاون۔اسہ چھئی پانے.... اسہ یمی چوب پین  نا۔ خدا کرئن اسہ ان شاءاللہ اصلچ ہدایت ۔اسہ دپن توہیہ چھوی پننہ بوتھہ پیوان ،توہیہ ونو عمرء ، کہاوتاہ تھاووی؛پیرء تتہء کئرزیم یاری یتہ پانہ در بہ در تہ حال حئران آسکھ۔وین کتھ چھوکھ ژء یہ تہء وتھ  ژھانڈان "اهْدِنَا الصِّرَاطَ الْمُسْتَقِیمَ"ونیوت ژءنمازء منز مگر زیوء پیٹھ اوسوی " پیرء تتہء کئرزیم یاری یتہ پانہ در بہ در ... "کیازء پوکوکھ ژء تمس پیرس پتہ پتہ یوس ژء پئے چھئی کہ سوء آسہ پانہ تہء تتہ در بہ در تہ حال حئران ۔پئک زء ہا تمس پیرس پتہ یوس زن تتہ وتہ ہاوک آسہ ہا ۔تتھی سی پیرس کر تھپ یوس زن تتہ پانہ با پیر آسہ ۔

لذا ائس چھئی کنہ ساعتہ زیوء ساتھی کتھ راو راوان۔

دینی تقاریب مناونک فوائد:

اسہء چھوء میلاد یہوے ہیچھہ ناوان کہ ائس گژھو نہ نا امید گژھئن کینہ۔یمس زن قرآن آسہ ، یمس زن رسول رحمت آسہ ،یمس زن اہلبیت اطہار آسن تمس کوس چیز چھوء نا امید کران ،تمس کوس چیز چھوء ونہ ناوان بہء چھوس غریب،آیا غریب چھا کہ میہ چھوء خدا ناراض ،بہ چھوس امیر ،امچھ دلیل چھا کہ خدا چھوء میے یوت پژیومت ؟۔نہ۔

اگر بہء یہ اسلام سمجھن وول آسہ ہا ،اگر بہء غریب آسہ میہ گوژھ اتھ منز تہء ترن فکرء کہ خدای سنز رحمت کتین چھئي میہ اتھ منز ۔

اگر بہء امیر چھوس ،میہ گوژھ اتین تہء ترن فکرء کہ خدای سند امتحان کتین چھوم ،کتین بنیوس بہء خدای سند اتھہ ، میانہ ساتھی کاتہن ہند مشکلات گئی حل ۔

مگر کیازء کہ اسہ چھوء وین یہ کہاوت ہش بناومژ ،ائس چھنہ ... ،اگر زن ائس اہل بیت اطہار کن وچھو کیازء چھوء یمنی بہن نفرن ہئنز امامت تہء ہدایت ۔ یہ چھا گھرچ لڑائي؟،یہ چھا امہ موجوب کہ میون گھرء گژھہ حاکم روزن

۔ نہ ۔ بلکہ تموو دیوت ہاوتھ کہ تمن آئس امہ اسلام مچ اہمیت فکرء ترمژ،قرآن نچ اہمیت ترءمژ فکرء ۔امام حسین بنیو کیازء امام حسین؟

کیازءکہ تمی کور پنن جان ،مال،اولاد،دوست یار،یہ کہنژھا اوسس سوء کورن فدا۔کتھ؟

اسلام مس۔دوپن سوری کینہ لگن میون رتہ چھپہ  اسلام مس ، مگر اسلام گژھہ نہ داغدار روزن کینہ ۔

گو اتین گئژھ سانہ مسجدء   زیادء پر رونق بنن،سون امام بارء گوژھ زیادء پر رونق بنن،سانی دینی اجتماعات گئژ زیادء پر رونق بنن۔

اسلامی مسلمان تہء سیکولر مسلمان:

اسہ چھوء باسان مسلمان صرف ماہ رمضان نس منز چھوء آسان الحمدللہ ہر جایہ قرآن نک بہار لبنہ یوان۔ کیا ائس چھا سیکولر مسلمان؟

 یمہ ساعتہ پننہ گوء گو تمہ ساعتہ گو ونن مذہب ، یمہ ساعتہ پننہ گوء گو نہ تمہ ساعتہ ونو؛ ہا یہ کتہ لگہ ، مذہب ہیکنہ امیوک جواب دیتھ کہین ۔

کیازکہ ماہ رمضان چھوء امہ دوہ چھوء خدای خدای کرن ،بیس جایہ چھنہ ....،یلہ زن سانی سیرت وچھت گوژھ بیاکھ تہء اتھ رحمت تس کن منقلب گژھن ،یتین زن... 

کہوٹ:

یہ معیار تھاون چھوء ضروری یوس تہ کانہہ کتھہ ونہ تمسنز کہوٹ وچھئن چھئي، تمسنز کہوٹ کیاہ آسہ ۔عبدالحسین نن کئر کتھ ، عبدالحسین چھنہ توت تام منبرس پیٹھ تبلیغ کرن لایق کہین ،یوت تام نہ امسنز کتھ مرجع تقلید سندس فتواس مطابق آسہ ۔اگر سوء پانہ خودی کانہہ کتھ ونہ یلہ معصومن ہئنز کتھ دپو ؛ یہ چھوء حدیث۔ہے حدیث ہسا چھوء مگر قرآن نس چھوء مخالف۔ہے حدیث چھوء۔معصومی دپان:" فَاضرِبُوه عَلی الجِدَار "۔امس عبدالحسین نس کیاہ چھوء کرن؟ یہ گو ہونین تراون ،امسند چھوء تلہ معیار اگر زن یہ کتھ گژھہ کرن یہ صرف امام سئنز۔

اکھ  دینی رنگ:

اسہ گژھہ کتھ رلن؛ شیعہ سنز کتھ چھئی سوئی کتھ یوس زن ہر جایہ رلہ،یوس زن ائس اتحادچ کوشش چھئ کران ، کوشش چھئي امہ باپت کہ ائس گئژھہ یمی پرژء ایکسپوز (ننگہ )کرن۔مثلا،اوترء ووچھوی توہیہ بڈگامی اڈس منز حامی صوب (اہلسنت عالم) تہ بہ تہء اوسس ،تمی کوس کتھ کئر ، میہ تہء کوس کتھ کئر۔پگاہ چھوء اسہ ٹنگہ مرگ گس منز، اہلسنت تو چھوء میہ دعوت کورمت کہ اتین ونہ ۔کیازء کہ بہء یلہ یمن درمیان چھوس گژھان بہء چھوس دپان؛ میہ وین تو کاتہن تھانن منز چھوء یمن سارنی ورین منز اگر اوہور کڑو ،یہ وین تو یہ کتین چھوء اندر تولیو ساتھی خون کوڑمت امی شیعن!اکھ ایف آئي آر [FIR]تہء چھوء نا کنہ تہء تھانس منز۔یہ بوزتھ چھئي دپان:ہے پوز چھوء ۔

بہء چھوس اکہ لٹہ یتھئی کئن اکس محفل منز  اہل سنت انٹلیک، اہلسنت علماء چھئی ساتھی ،یمن منز چھوء ریٹائر چیف جسٹس تہء ،امی دوپ؛ توہیہ ہے چھوء بڑء قانونی نکتہ۔

میہ دوپس اسہ چھئي یتھی قانونی نکتہ،مگر بوزن وول چھنہ کہین۔

تمی کتھہ چھہک ونہ مژء ....یا یہوے میرشمس الدین عراقی تہء مخدوم صوب ۔بہء چھوس دپان 69 وری چھئي یمن ڈفرنس ،وین اہلسنت علماء ونان ، نہ 32 وری چھئی۔گویا اتفاق چھئی کران کہ یمی چھنہ اکس زمانس منز آئسمتی ۔تلہ قتل و غارت کیازء آو کرنہ ۔

یتھے کئن وچھو توہی ہر مسئلہ لس منز آسیو پتہ کنہ کانہہ نتہ کانہہ ژویوی ،یتھی زن دین نس ساتھی کہین دورک واسطہ آسہ ۔

میہ چھوء حج جس منز ونان اکھ ساتھی ، دوپن: اگر حج جس پیٹھ آسہ ہنہ شاید ونہ ہے نہ کینہ ، جھٹکہ  اوسس کھیوان ،مگر شیعن ہند اوسس نہ کھیوان کینہ ۔

ییژاہ نفرت کمہ چیزء؟

کیاز کہ ائس چھئی دینی استحصال لک شکار گمت۔کیازکہ ،ائس یمہ ساعتہ  نقلی دوا کھیاو ناوکھ ،ائس چھنہ وین بوہرء وادء تہء دوا کھیی کھیی تہء گژھان ٹھیک کہین۔

اگر ائس اکھ سوء ائچھ پادء کرو ،اسہ تگہ پرزءناون ائس چھا فڈو دوان کھیوان کنہ اصل دوا کھیوان ۔تمہ باپت چھوء سوء ذہن.... ۔

انقلاب اسلامی

یتھی زمانس منز چھئي آئس زیادء جوابدہ کیازکہ اسہ چھوء، ہوء کتھ آئس اسہ صدر اسلام مچ  پرانہ زمانہ بوزمژ،مگر وین کینس چھوء ائس تتھ زمانس منز یتھی منز اسلامی انقلاب کامیاب تہء گو ،تمے کتھہ یمی رسول رحمت تن وین،تتھ پیٹھ عمل کرتھ دیوت ہاوت  ایرانی قوم من کہ ؛قرآن چھا ضامن کنہ امریکہ تہء اسرائیل لس ی یس باس کرن چھوء مسلمان سندء ترقی ہند سبب۔

دینی موٹھ تہ اتھہ واس تھاون

یتھی زمانس منز یمہ ساعتہ اصل راز مسلمانن ہند فکرء تور،اتھ منز چھئي ساروی کھوتہ بئڑ ضرورت اسہ گژھہ موٹھ آسن ۔موٹھ کتھ سنس منز ، سیاسی اختلاف ہیکن آستھ، اجتماعی اختلاف ہیکن آستھ،ہر اختلاف آسن ، مگر دینی اختلاف گژھو نہ  ائس کرن  کینہ ۔

مسجدءمنز ؛ یتین شیعہ زیادء چھئی ،سنی ین تہء پزء تتھ منز شرکت کرن ۔یتین سنی زیادء چھئي شیعن تہء  پزء تتھ منز شرکت کرن۔

دین گژھہ سانی پہچان بنن کہ ائس چھئي رلان صرف دین نس نشہ ، یتین ائس الگ الگ چھئي گژھان سوء چھوء دنیا ۔

سوء چھوء پتہ سوء سعادتمند یمس زن ہر چیزس منز ، دنیاہس منز تہء چھوء تہء آخرت تس منز تہء چھوء تمس دینی حاکم ۔سوء چھوء تجارت کران ، تمس چھوء حلال و حرام مک خیال۔ سوء چھوء تیوتاہ کامیاب یمس زن یژھی دینداری سان تگہ زندگی کرن ۔

شیعہ سنی اتحاد و یکجہتی

لذا یمہ ساعتہ اسہ یمی بئڑ مسئلہ ترن فکرء کہ شیعہ یس تہء سنی یس چھنہ پانہ وانی اختلاف تھاون ،پتہ کمہ دلیلء ہیکہ شیعہ شیعس ساتھی اختلاف تھاوت۔ دپہ؛ یلہ سنی یس ساتھی میہ اصولی قیادت تس پیٹھ اختلاف چھوء ،یلہ میہ تتین چھوء کمپرومائز کرن،یمن پننہ نین دون عالمن ،اکھ تہء چھوء ونان علی مرتضی ہن وون یتھہ کئن،بیاکھ تہء چھوء ونان رسولخداین وون یتھہ کئن ،فاطمہ زہراء سلام اللہ علیہاہن وون یتھہ کئن .....،اتہ نے میہ فرقی چھنہ میہ کتھ پیٹھ چھئي یمن ساتھی لڑائي کرن ۔

اگر زن یہ بے عقلاوان آسہ میہ عالم بہء بے عقلس نہ کہین ۔امہ باپت چھوء اسہ ہیرء ٹھیک کرن ۔

یوتاہ تیوتاہ اہمیت دیووصرف شیعہ سنی اتحادس ۔

سنی گژھن پانے مجبور ،یتہ تمن پانہ وانی اندرء اختلاف چھوء، دپن؛ یلہ اسہ شیعہ ان ساتھی  اختلاف چھنہ کرن ائس کیازء کرو نہ تلہ پانہ وانی اتحاد ۔

شیعہ گژھن یورء تیار کہ ؛اگر زن اسہ سنی ین ساتھی اتحاد چھوء کرن ،ائس کیازء کرون نہ ،سانی عالم کیازء کرن نہ پانہ وانی اتحاد۔

یہ گژھہ تلیے ،یوتام نہ ائس عملی طور پر ...۔کیازءکہ الحمدللہ  ونہ کینس چھوء سون قائد تہء امام خامنہ ای ، لیڈر چھوء، یوس تہ دنیا ہس منز یتن تہء کانہہ مسلماناہ چھوء،یمس دینی جذبہ چھوء تمس چھوء پے میون قائد کوس چھوء ۔وین چھنہ امس ونن عبدالحسین چھوء میون قائد کہین کیازء کہ یہ گئی قیادتس تہ رہبری لیکھ ژارن،بلکہ یوس زن میہ  ہاون تہء باون لایق قائد  تہ لیڈر چھوء۔بہ کانسہ  تہ ہیکہ چلینج کرتھ کہ اگر زن ژء چھئي ژھانڈن میون  لیڈر  کمہ صلاحیت تک آسہ ،رٹھ سا پرکھاون ساامام خامنہ ای ، کردارء کن ، گفتارء کن ، رفتارء کن ، عقلء کن،تدبیرء کن،حکمت ءکن،کتھ پاترس چھئی کھالن ، کھالن۔وئچھتن سوء نیریاہ مثالی یہ کیہنژھار رسول رحمت تن ہیچھہ ناوی ،تتین چھا رول ماڈل یہوے کنہ نہ ۔

گو اسہ گژھہ تلہء ...۔اگراسہ یہ عقل وشعور یی یہء یہ عید میلاد ترءاسہ فکرء۔

یدْخُلُونَ فِی دِینِ اللَّهِ أَفْوَاجًا

قرآن چھوء نالہ ژھٹان ،مگر ائس چھئس نہ ونہ دوان محقق گژھنہ کہین ۔خدا دپان: فوج فوچ گژھن اسلامس منز داخل۔

مگر اسہ کئر اتھ مسخ شکل؛شیعہ چھئي پانہ وانی اندری اندری لڑان، سنی چھئي پانہ وانی، بریلوی ، دیوبندی ین خلاف ،دیوبندی ،بریلوی ین خلاف،مسلکن منز مسلک کوڈمت،شیعہ پانہ وانی ، ہوء اکھ صابی ، یہ بیاکھ صابی ،بیاکھ صابی ....،دست بہ گریبان۔ہے۔ ہے۔توہی" أُمَّةً وَسَطًا"([6]) خداین دء تیوی توہی پرمانک کرنڈء قرار۔ کہ فکرء ترء کہ زیادء چھا کنہ کم،یہ گئژھی کہوٹ ہر امتس آسن،توہیہ کوکن چھوی گژھن۔اگر زن با کردار قوم چھوی وچھن،اگر ترقی پسند قوم چھوی وچھن،مسلمان چھوء وچھن۔ائس چھئی تمہ نشہ ....۔

علم و سائنس چھوء مسلمانن ہند میراث

دنیاہس ہیچھہ ناوی مسلمان نو سبق پرن۔یورپ پرء نوی مسلمانو،پتہ یلہ یمن اصل کتھ تئر فکرء ،پتہ بنایکھ مسلمان پنن غلام ۔ اسہ اوس یہ باسان  یہ کہ ؛ہے وئچھ سا،عبدالحسین چھوء از چھون سلیٹ روٹمت پننہ نس اتھس منز ،علم چھوء مسلمانن ہند میراث،اتھ کئرکھ ژور۔یہ برٹررنڈرسل لیکھان ،دپان؛ یورپ چھوء اصلی اسلامک سٹیٹ کیازکہ مسلمانو چھئي ائس الف ب ہیچھہ نائمت۔

یتھی کئن زن ائس تعجب چھی کران سائنسی پیشرفت ...،یمہ ساعتہ ہارون رشیدن برطانیہ کس بادشاہ ہس سوزگھئر،یتھی کئن از ائس تعجب کران چھئي (الحمدللہ سوء غفلت ہیژن کم گژھن)کہ کانہہ سٹلائٹ وچھان چھئي ،کانہہ جہاز پیشرفتہ وچھو تعجب کرء ہو،کہ وئچھ سا ترقی کیاء چھئي کئرمژ، یمہ ساعتہء ہارون رشیدن سوزی برطانیہ کس بادشاہ ہس گھئر،انگریزو ووچھ اتھ چھنہ کانہہ تھپ کران، سژن چھئی پانے پکان ،گھنٹہ پتہ گھنٹہ چھئي یہ ٹاس وایان ،اکھ بجےیاہ ، زء بجے یاہ ،انگریزو کئڑ جلوس ؛مردہ باد، مردہ ....،ہے جن ہسہ چھوکھ اتھ تھوومت یہ ہوے چھوء یہ گھئر پکناوان۔نتہ کتھہ کئن ہیکہ ....،یوتان نہ سوء گھئر پھٹرء ناوکھ ...،یی تیاہ ائس تمی پسماندء فکرء ہند انگریز۔از چھئی ائس ونان ہے انگریز!

یہ آئس سانی پسماندگی ،مگر الحمدللہ یمہ ساعتہ اسہ تور فکرء کہ اسہ کتین چھوک نقصان واتنوومت ۔ائس آئسکھ نا پانہ وانی تھائي مت دست بہ گریبان ،ائس آئس نہ امی تلہ نیران کہ میہ چھا گلی گنڈت نماز پرن ،کنہ میہ چھئي گلی یلہ تراویت نماز پرن،میہ چھا فرش شس پیٹھ سجدء کرن کنہ مژء پیٹھ۔ائتھ پیٹھ لڑائي۔

یمس نش یہ دلیل چھئي  کہ :

یوس گولی گنڈت چھوء نماز پران سوء تہء چھوء دپان؛  میہ چھوء ووچھمت رسولخدا ین  چھوء وونمت ،سوء چھوء  اوسمت یتھے کئن پران۔

یوس گولی یلہ تراوت چھو پران ،سوء تہء چھوء دپان ؛رسول خدا چھوء اوسمت گولی یلہ تراوت نماز پران ۔

اگر یژھی ہر کانہہ نسبت چھئي رسالت مآب  بس ساتھی دنہ ژء کیازء چھوکھ لڑان؟

وین یمہ ساعتہ یہ تور فکرء سانہ اختلافء ساتھی چھوء اسہ دشمن ،اسہ پیٹھ سوار گژھت ،تمیوک تجربہ کریو امریکہن۔

امریکن سوزپننہ سائنسی ایڈوانسمنٹ ہند ،ایڈوانس ترین ڈرون یوس تمی بنوومت اوس کہ بہء دمہ یمن ہاوت کہ توہی چھوی پسماندء ،توہیہ چھوی نہ ونہ خبری کنچ ۔یہ چھوء تیوتاہ ایڈوانس ڈرون امس چھئي سکین ننگ ایران نس کہ ایران کتین چھوء،یوس تہ کانہہ امسند  خفیہ یا ظاہر امسند یوس تہ کانہہ انسٹالمنٹ چھئي ،تھ ہیکہ یہ  اصلی پاٹھی سکین ننگ کرتھ ۔

اتھ ڈرون نس چھئی پروگرامنگ یژھ کرمژ کہ  اگر یہ ٹریس گو ،یہ چھوء تیوتھ ایڈوانس ڈرون نہ ہیکہ امس راڈار ڈٹیکٹ کرت،یہ گژھنہ ٹریس کنہ جایہ کہین ،مگر یہ چھوء ملک کس منز ساری سکین ننگ کران ،امہ پتہ تہء اگر زن یہ ٹریس گو ،دشمن نس امژ مشکی یاژی یی یہ گژھہ بلاسٹ!دشمن سندس اتھس منز یی نہ یہ کینہ۔

ایران نن کئر کامی ؛ڈوڈس گھنٹس چھوء مرکز س نقلی پکچر واتان، بیہ چھنہ سوء جہاز اتھ چھوء کانہہ چلاوان،بندوق تھاووس کنہ پٹس پیٹھ ،دپوس ماروت ہسا اگر نہ بون وسکھ۔امی کئژاہ سائنٹفک ایڈوانسمنٹ حاصل کئرمژ ،امی کرء تمہ ویووزء جنریٹ  امی ہیوک امس فیک پکچر دتھ،یوس زن امس پروگرامنگ آئس  کرتھ، بیس کمپ کتین چھوء ،امس دتوکھ تتھوی فیڈ کہ امس تور فکرء کہ بہء ووتس پنہ جایہ یلہ زن یہ اوس ہائی جیک گومت۔ڈوڈء گھنٹہ پتہ چھوء تران فکرء امریکہ ہس کہ یہ ونیوک تام میہ نش پکچر واتان چھئي یمی چھئي نقلی !۔

امہ پتہ یمہ ساعتہ ایران نن دعوی کور کہ یہند ڈرون کور میہ کپچر ،صدرن وون امریکہ ہک ہا یہ چھنہ کتھی،یہ چھوء ترتھ ونان۔کیازء کہ یہ تمن پننہ نس سائنس سس پیٹھ دبدبہ اوس یمن بی عقل مسلمانن کتہ یی ییژاہ عقل یمن تگہ سائنس سک الف ب ونہ فکرء تہ اسہ ووت 200وری 400 وری سائنس سس منزراج کران یمن کئي ڈائی دوہ ونہ الف بے پران اے بی سی ڈی پران یمی کیاہ کرن اتھ۔اسلئے وون تمی آفشل سٹیٹمنٹ ٹس منز کہ نہ یہ چھنہ کتھی ۔

پتہ یلہ ایران نن ڈسپلے تہء کور۔نہ صرف تمی ہوو کہ میہ کور کپچر بلکہ تمی کور ڈکوڈ،یعنی ڈکوڈ کرن گو فوٹوسٹیٹ مشین کرن،یعنی تتھہ کئن کرن سوء ساری سوء سائنٹفک ٹیکنالوجی حاصل آئس تمو کئرمژسوء کئر تمو دنبرین منز حاصل ،منٹن تہء سیکنڈن منز ،وین یتھہ کئن ائس فوٹو سٹیٹ چھئی کران ،تروو مشینء منزاورء کئڑ بیاکھ کاپی،یہ یمو ییژاہ انوسٹمنٹ کرت اوتن آئس واتمت امس مسلمانس توگ ...۔

خدا محوری انسان سندء ترقی ہوند ضامن

کہین تہء میدان چھونہ سوء یتھی زن نہ وین کینس مسلمان چھوء عملی طور پر ترقی ہوند مثالی بنتھ۔چاہے سوء یوس تہ میدان ائس نمو،یہ کمی چیزن کور یمہ ساعتہ یہ اصل کتھ تئر فکرء یہ قیادت تئر فکرء ؛اسہ گژھہ آسن معیار کہ اسہ گژھہ خدا راضی گژھن ۔

میہ چھوء عالم مس کرن احترام اگر خدائی آسہ ، میہ چھوء استادس احترام کرن اگر خدائی آسہ ،میہ چھوہ دکاندارس احترام کرن اگر خدائی آسہ ، کیازء کہ سون معیار چھوء رسول رحمت تن خدائی بنوومت ۔لذا اسہ گژھہ یتھے کئن کہوٹ آسن کہ یتھی کئن پروردگار عالمن پانہ تمس خاطرء کہوٹ تھاوی سانہ خاطرء کیازء چھنہ !کہ رسول رحمت ہیکون ائس تلہ ...یعنی گژھہ دون طرفن گژھن ثابت یی چھا کنہ نہ ۔

امام زمان عج سندس ملاقاتچ لیاقت اگر چھنہ ، سوء کامی کرو یمہ ساتھی سوء جناب ملاقات تس یی یہ۔

تشیع گو یہ یتین بمنہ ہس منز کرن ،تی گژھن کرن مشہدس منز تہء،تی گژھہ یون عراق کس منز تہء وچھہ نہ ،تی گژھہ یون امریکہ ہس منز وچھہ نہ،کیازء؟

کیازکہ قائد چھوء اکوی،لائن آف ایکشن چھئي اکوی ، سیلبس چھوء اکوی۔یوس اسہ بمنہ پیٹھہ بڈگامس منز فرق چھئي باسان سوء چھئي سانی ، تتھی چھونہ مسلک کس ساتھی کہین واسطہ ،اسلام مس ساتھی کہین واسطہ ،قرآن نس ساتھی کہین واسطہ کیازء؟

کیازءکہ اتھی چھونہ ٹھسی رلان:

   دوپنس ؛ہے یتھی کیاہ سا ونان ۔

دوپنس ؛یتھی ہز ونان شلوت ۔

دوپنس؛ زنگہ رٹت گلوت۔

امی دوپ ہے یہ چھوء بڑء چالاک ....یہ ووت واتان واتان بمنہ،دوپنس یتھی کیاہ ونان؛دوپنس زنگہ رٹت گلوت۔

دوپنس بایا ٹھس نا آئي نہ کہین۔

اتھ چھنہ ٹھسی یوان برابر۔یا تہ گژھہ رلن اتھ،اسہ گژھہ سوی کتھ آسن ،یہ گژھہ دنیاہ کس بیس تہ کونس باسن اہلبیتن ہند پیروکار چھوء یہوے کتھی ونان۔اہلبیتن ہند پیروکار چھوء یہوے کامی کران ۔

نماز چھا پران؟

ہر جایہ وچھی تون ،نماز چھوء پران۔

حج  چھا کران ؟

ہر جایہ ہند حج چھوء کران۔

عزاداری چھا کران ؟

یتین گژھو شیعہ  سنز پہچان چھئی یی کہ عزاداری چھی کران ۔

پتہ یمی زن پاٹ بازی تہ ....امام حسین  چھوء تلہ امام حسین یلہ میانس امام بارس منز یی۔ چولہ چھئي ہتھ،دہ امام بارء بناوو۔یلہ زن اسہ اکھ امام بارء گوژھ آسن ،اکھ اجتماع گوژھ آسن ۔گو ائس چھئي امہ قرآنی معیارء نبردرامت۔

لذا اگر اسہ میلاد منووی اسہ گژھہ یہ ترن فکرء کہ بہء کیاہ کرء ہا..... میہ ونیو اکس جایہ،ہر جایہ تقریبا یہ وننہ نچ چھوس بہء کوشش کران کہ اکہ مغالطہ یعنی پننہ نس پانس گژھہ تھاون اکھ امتحان:

امام زمان نن چھوء اسہ تھوومت اکھ زبردست نسخہ یعنی اکھ عظیم حکمت چھئي تتھ کہ یوس تہ کانہہ دعوی کرء کہ بہء چھوس امام مس ساتھی سمکھان  ؛دپن گژھہ یہ چھوء اپززیور۔یہ چھوء پانہ امام من فرموومت،پننہ توقیع[7] منز۔کیازء؟

کیازءکہ؛ مثلا بہء کرء ہا تمیوک استحصال ۔ بہ دپہ ہو ؛ہے بمنہ کیو ،بہ ء سمکھیوس امام زمان نس تمی دوپ بمنہ کین ہیہ یتھی کئن ....۔توہی دپہ ہیوی ،وین چھوء آمت،امس چھوء امام من وونمت ۔پھسیووی توہی۔نی یو میہ پنن دکان کھڑا کرت۔اسلئے امام زمان نن تھوی یہ دکانی بند۔دوپن یوس تہء ۔۔۔،گویا اگر زن امام خامنہ ای دپہ؛ میہ چھوء امام زمان سمکھان ،میہ چھوء امام زمانن یتھی کئن وون نم ، یتھی کئن کریو ،امام زمانن چھوء امی ساعتہ وونمت ؛یہ چھوء ترتھ ونان۔اگر سوء سمکھان تہء آسہ ۔تمی چھوء یہ اسرار ،تمو یمو زن  ملاقات  چھئی کران تہند تہء چھوء امہ پتہ ننان۔تمی چھئی بلکل زندگی منز  محرم اسرار روزان۔یتھی کئن امام خمینی رضوان اللہ تعالی علیہ ہس اکہ لٹہ آئي ،بحران چھوء ایرا ن نس منز ،کینہ عالم آیی میہ ہیہ بیعقل  آئی ،مطلب بنیای زیادے دیندار،دوپوکھ اسہ ہسہ چھوء امام خمینی سند ملاقات کرن ۔کیازء سا چھوء ملاقات کرن ؟

یہ چھوء خصوصی کتھ یہ ہیکو تمسی ساتھی کتھی کرتھ۔یمی چھئي سخت اسرار کران ۔ امام خمینی رضوان اللہ تعالی علیہ ہن فرموو؛یمن ونیو کہ سمکھن کیازء چھوی توہیہ ؟توتام نہ تہء ونن تمن دی زیو نہ اجازت کہین۔

یمو دوپکھ ؛ کیازکہ امام خمینی ین چھوء شرطی تھوومت ،توہی ونیوی کہ توہی کیازء یژھان سمکھن تمس ۔

یمی گئي مجبور کہ امہ بغیر ہیکو نہ امس ساتھی ملاقات کرتھ۔ دوپوکھ ؛ اسہ چھوء امس پرژھن کہ ژء چھی یہ امام زمانس ساتھی ملاقات ،کنہ نہ۔

امام خمینی چھوء اورء جواب دوان؛ میہ چھونہ  امام زمان نس ساتھی ملاقات کہین ،اگر توہیہ چھوی ، میہ چھوی 5 سوال یمن ان زیو میہ تمس نش جواب ۔

یلہ زن ہر وزء تور فکرء کہ امام زمان چھوء اوسمت لرء لور امس ،امسندء تمام کامیابی ہند راز چھوء امام زمان ،مگر پانہ زیوء پیٹھ ہیوتن نہ کہین ۔

امام خامنہ ای تہء چھوء وین کینس ہر تدبیرء منز چھوء تران فکرء شانہ بہ شانہ چھوس،تمسندوی چھوء اتھہ پیٹھ۔مگر زوء ساتھی چھنہ زانہہ تہ ...۔کیازء کہ دکانداری ہنز چھنہ اسہ گنجائشی ،ائس بہمو استحصال کرنہ ۔بلکہ اسہ گژھہ کہوٹ آسن دوطرفہ ۔

وین اگر ائس امام مس ساتھی پانہ ہیکو نہ ملاقات کرتھ کہین ،ائس کرء ہوکانہہ کامی یمے  زن ائس، اسہ گئژھہ آسن اکوی اجتماع۔ اگر ائس جمعہ کرہو اکوی ،زیادء کھوتہ زیادءمسلمان کرء ہن  نماز جمعہ ہس منز شرکت ۔آيا امام خامنہ ای امسندء ساتھی تہء ہیکو آئس پننہ جایہ اندازء کرتھ ،اگر تمس تان یہ شیش واتہ مثلا بمنہ پیٹھہ  بڈگام تان ائس دہ گام چھئی سمان ،ائس چھی اکسی جایہ جمعہ پران ،سوء گژھیا خوش کنہ ناراض ؟

اسہ چھوء یتھہ کئن وچھن۔اگر زن آئس دہ گام چھئي عزاداری کران ،ائس چھئي دہ گام پنژہن جاین عزاداری کران ۔اگر ائس یمی دہ گام اکسی جایہ حسین حسین کرو،یہ کرنہ ساتھی امام خامنہ ای گژھیا خوش کنہ ناراض؟

یتھی کئن تہ ہیکو ائس اندازء لگایتھ ۔کم سے کم یہ چھوء اسہ ضروری کرن ، اسہ چھئي کہوٹ ،پنن نظر تہء چھئي تراون یلہ ، اسہ چھوء پنن قائد زانن ہیرء کنہ کہ اگر نہ سوء تمس تان واتہ مگر پنین کامی کرنوکھ اکھ معیار چھوء قائم کرن کہ ائس کرء ہو تمہ آیہ کامی ،کم سے کم ییژ ہن چھئي پی اسہ ،اسہ گژھہ یتھی دنیاہس منزتہ میلہ اسہ کرڈٹ کمسندء ذریعہ ۔سوئی نہ ؛پیرء تتہ کئرزیمی یاری یتہ پانہ در بہ در تہ ہالہ ہاران اسکھ۔نہ ۔ تمس پیرء سندء ذریعہ یوس زن یتہ تہء سردار چھوء ،ان شاءاللہ تتہ آسہ اتھہ روٹ کرن وول ۔

اسہ منز چھوء امیہ چیزہند ضرورت ،پروردگار عالمن تہء چھوء یہ اصول اسہء بیان کورمت ۔سورہ بقرہ آیت 2 ہس منز چھوء اسہ پروردگار عالم ونان:

ذَلِكَ الْكِتَابُ لَا رَیبَ فِیهِ هُدًى لِلْمُتَّقِینَ

خوب؛ قرآن چھوء متقین نن ہندء خاطرء ہدایت۔ مگر رسولخدایس ونان ژء کر ہدایت۔سورہ شوری آیہ 52:

وَإِنَّكَ لَتَهْدِی

ژء کئر ہدایت ۔گو سانہ کامہ گژھن زء طرفہ آسنہ ۔اگر بہء کانہہ عمل چھوس کران،میہ چھا پننہ نس مرجع تقلید سند یہوے اجازت؟

آ۔ تلہ ء چھوء ٹھیک ۔

اکہ طرفہ یوت گژھہ نہ آسن کہین۔ہے ہمسایہ چھوء اسہ اہلسنت ،یمی کیاہ ونن،راتھ آئس نہ یہ کران کہین از کیاہ کران...۔

نہ چھوء اہلسنت سندء باپت کرن ،نہ چھوء کافرء سندء باپت کرن،نہ چھوء کانسہ دباوء خاطرء کرن ۔بلکہ دینء باپت کرن۔

دینک جواب دنہ وول چھوء سوی دیندار یمس آئس امام سندس غیبت تس منز پنن امام چھئي مانان ۔

سانی کہوٹ گژھہ یہوے آسن ۔اگر زن ائس یہ  کہوٹ بناونس منز یہ سونچ نس منز کامیاب گژھو قطعا امام کرء ظہور۔

امام چھوء سانیو کارو ساتھی پردہ غیب بس منز۔ خدا صوب چھوء دپان؛یمی لوکھ درایہ تتھی نا اہل یمو ہیوکنہ ہمن کہن ہند فائدء تلتھ ،بہء چھوس دپان یمن گئژھ چانی قدر ترن فکرء۔کیازء کہ یمہ ساعتہ امام زمان نس چھوء ظہور کرن ،تمس چھونہ شیعہ سنی لڑائي موکہ لاوین کہین ،یقینا تمسی چھوء کرن اتحادچ مکمل شکل گژھہ امام سندس ظہورس منز حاصل مگر  تمس چھوء تمام عالمینن خاطرء سوء امن تہ انصاف فراہم  کرن کہ حتی کنہ تلہء کس کیمس تان میلہ انصاف امام سندء ظہورء پتہ۔لذا ائس کئت تیاہ چھئی خوش قسمت ،ائس چھئي تمس رحمۃللعالمین سندس آخری وصی سند تمی سپاہ بننہ خاطرء تیار ، خداین منتخب کئرمت ،اسہ چھون توفیق دیوتمت کہ سانین زیوء پیٹھ چھوء تمسند ناو،یتین زن  رسول رحمت پانہ ونان چھوء تتھ دسترخوانس چھئي تیژاہ برکت یتھی پیٹھ "احمد" تہء "محمّد" ناو وکھ نفر آسہ بہت ،یتھی دلس منز، یتھی مجموعہ اس منز ،یتھی معاشرس منز پانہ رسولخدای سنز تعلیم تہء ناو آسہ زندء،یقینا سوء قوم چھوء ممتاز۔

دعا:

خدای سندء بارگاہ منز کرو دعا ؛بار الہا!رسول رحمت سندس میلادس پیٹھ تمام نا امیدن ہئنز امید کرتھ پورء۔

بار الہا!سوی رسول رحمت چھئی شفیع جملہ مؤمنین و مسلمانن بالخصوص یتھی مجموعہ اس منز حاضرمؤمنین و مؤمنات، لوکٹین،بڑین ، جوانن ، بزرگن  ہند دینی و دنیوی حاجات تھاو روا۔

الہی معبودا!سانین زین پیٹھ ،یوس زن رسول رحمت سند دین تہ کلمہ جاری چھوء یہ کر سانس دلس تہ سانس وجودس منز حاکم۔

بار الہا!رسول رحمت سند آخری وصی امام زماں تھاون اسہ نش خوشنود ۔

بارالہا !سانین صفن منز کر اتحاد و اتفاق عطا۔

بار الہا!جملہ مریض ئن کر شفای عاجل عطا۔

بار الہا!دشمنان اسلام و مسلمین کروکھ نیست تہء نابود۔

بار الہا! یمو میہ عاصی یس التماس دعا چھوء کورمت تہند دینی و دنیوی حاجات تھاو روا ۔

حاضرین نن ہند بالخصوص حاجات تھاو روا۔

بار الہا ! امام زمان عجل اللہ تعالی فرجہ الشریف سندء ظہورء ساتھی کر سانہ چشمء پر نور۔

اسہ کر تس جناب سندین یار و انصارن منز محشور ۔

بار الہا ! شفیع چھئي سردار انبیاء محمد مصطفی صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم سون سردار ولی فقیہ حضرت امام خامنہ ای تھاون تمام مراجع تقلید ، علمای اعلام ، حجج الاسلام ، مرّوج دین مبین ہیتھ مؤید تہء منصور۔

بار الہا !جملہ تہند اعوان تہء انصار حاضرین ہیتھ رچھوکھ از ہر بلا۔

بار الہا! سون صاحب چھوء امام زمان ،یہ کہنژا ہ یتھی شب بس منز امام زمان عج سندین عاشقن عطا کرکھ تہء کئر یتھی مجموعہ اس تہء عطا۔

بارالہا! پننہ رحمتہ ساتھی ، پننہ مغفرت ساتھی ،امت اسلامی یس کرتہء اتحاد تہ اتفاق عطا۔

بار الہا! امام زمان عج چھوء ،صاحب کون مکان،یوس تمسندء سلامتی باپت دعا چھوء کران ،یوس تہندس دعاس اثر چھوت تھوومت سوء کر سانس یتھی دعاس تہء عطا۔

یکہ وٹے پرو:

اللَّهُمَّ کُنْ لِوَلِیِّکَ الحُجَهِ بنِ الحَسَن صَلَواتُکَ علَیهِ و عَلی آبائِهِ

فِی هَذِهِ السَّاعَهِ وَ فِی کُلِّ سَاعَهٍ وَلِیّاً وَ حَافِظاً وَ قَائِداً وَ نَاصِراً وَ

دَلِیلًا وَ عَیْناًحَتَّى تُسْکِنَهُ أَرْضَکَ طَوْعاً وَ تُمَتعَهُ فِیهَا طَوِیلا۔

 «برحمتک يا ارحم الراحمين»

اللَّهُمَّ صَلِّ عَلَى مُحَمَّدٍ وآلِ مُحَمَّدٍ وعَجِّلْ فَرَجَهُم

 

 

 

 



[1] سوره نجم آیت 3و4

[2] مَا خَالَفَ كِتَابَ اللَّهِ.... فَاضرِبُوه عَلی الجِدَار. تفسیر صافی، ج1، ص 21.

[3] صحیفة الرضا(ع)، ص88، ح20؛ عیون أخبار الرضا(ع)، ج2، ص29، ح31

[4] آثار و برکات صلوات – ص ۳۰

[5] الأحزاب آیه:56

[6] البقرة آیه:143

[7] «ألا فمن ادعی المشاهده قبل خروج السفیانی و الصیحه فهو كاذب مفتر.»[كمال الدین، ج 2، ص 294، باب 45، حدیث 45.]


آپ کی رائے
نام:  
ایمیل:
عبارت:  500

قدرت گرفته از سایت ساز سحر