کاشر
شماره : 46979
: //
مجلس حسینی از زبان و قلم:ابو فاطمہ موسوی عبدالحسینی:
امام حسین علیہ السلام قرآنک آینہ -01

عبدالحسین سنز دویم محرم 1435 مطابق 5نومبر 2013 پالر بڈگامہ پرمژ مجلس

1

 
امام حسین علیہ السلام قرآنک آینہ-01

عبدالحسین سنز دویم محرم 1435 مطابق 5نومبر 2013 پالر بڈگامہ پرمژ مجلس

اَعُوذُ بِاللّهِ منَ الشّيطانِ الرَّجيم

بِسْمِ اللَّهِ الرَّحْمَنِ الرَّحِيمِ؛نحمده و نستعینه و نؤمن به و نتوکّل علیه و نستغفره و نصلّی و نسلّم علی حبیبه و نجیبه و خیرته فی خلقه حافظ سرہ و مبلغ رسالته سیّدنا و نبیّنا و طبیب نفوسنا و حبیب قلوبنا  ابی‌القاسم المصطفی محمّد(صلی اللہ علیه و آله  وسلم)[ اللَّهُمَّ صَلِّ عَلَى مُحَمَّدٍ وآلِ مُحَمَّدٍ وعَجِّلْ فَرَجَهُم] و علی آله الأطیبین الأطهرین المنتجبین المعصومین سیّما بقیّةاللَّه فی الارضین۔

اما بعد؛قال اللہ سبحانہ و تعالی فی محکمہ کتابہ بِسْمِ اللَّهِ الرَّحْمَنِ الرَّحِيمِ يا أَيهَا النَّاسُ قَدْ جَاءَتْكُمْ مَوْعِظَةٌ مِنْ رَبِّكُمْ وَشِفَاءٌ لِمَا فِي الصُّدُورِ وَهُدًى وَرَحْمَةٌ لِلْمُؤْمِنِينَ(يونس/57) صدق اللہ العلی العظیم۔

اللَّهُمَّ صَلِّ عَلَى مُحَمَّدٍ وآلِ مُحَمَّدٍ وعَجِّلْ فَرَجَهُم

دیم محرم ؛امام حسین علیہ السلام سند کربلاہس منزداخل سپدنک دہہ، میانہ گفتگوک عنوان چھہ "حسینؑ قرآنک آینہ"کہ یمس حسین علیہ السلام سنز ائس از ذکر چھہ کران سنہ 61 ہجری یس منز شہید سپدن وول شہیداز 1435ہجری یس منز تہ تتھ کن یاد کہ زن چھوء ازکوی واقعہ۔

کیازہ ؟

کیازکہ ؛یتھ کن قرآن  ہر زمانس منز پنن نو تفصیر چھو بیان کران، پنن تازہ گی چھو ثابت  کران،پنن جاویدانگی چھو ثابت کران۔امام حسین علیہ السلام تہ چھہ تتھے کن پنن جاویدانگی ثابت کران۔

یس سورہ یونس آیت ۵۷  مہ تلاوت کر،پروردگار عالم فرماوان؛<يا أَيهَا النَّاسُ قَدْ جَاءَتْكُمْ مَوْعِظَةٌ مِنْ رَبِّكُمْ> لوکو! موعظہ ہیتھ آو یہ تہیہ کن یہ قرآن۔قرآن چھوء موعظہ ،نصیحت< وَشِفَاءٌ لِمَا فِي الصُّدُورِ >دلن ہندن دادن ہند شفا،<وَهُدًى> بیہ ہدایت،<وَرَحْمَةٌ لِلْمُؤْمِنِينَ > رحمت مؤمنین ہندہ خاطرء۔امام حسین علیہ السلام تہ امے موعظہ زچ ترجمانی کران۔روز عاشورہ فرماوان:"أَيُّهَا النَّاسُ اِسْمَعُوا قَوْلِي وَ لَا تَعْجَلُوا حَتَّى أَعِظَكُمْ بِمَا يَحِقُّ لَكُمْ عَلَيَّ " لوکو! میانی کتھ بوزیو، بانبر مہ کرویو میہ قتل کرنس منز" حَتَّى أَعِظَكُمْ " یت تان بہ توہیہ موعظہ کرء، خدا دپان مہ سوز موعظہ قرآن توہیہ خاطرء، حسین ؑ دپان بہ کرہ موعظہ توہیہ، "بِمَا هُوَ حَقُّ لَكُمْ عَلَيَّ "یوس میانی ذمہ داری چھئی ۔ خدا دپان قرآنچ ذمہ داری چھئی موعظہ کرن ۔امام حسین ؑ روز عاشورہ دپان میانی ذمہ داری چھہ  موعظہ کرن۔یعنی یمہ ساعتہ انسان سند منشور تہ عمل چھہ کنیٖ بنان سوء چھوء الہی انسان آسان۔قرآنن یوس منشور انسانس برونہہ کنہ تھوی امک عملی نمونہ چھہ ائمہ ھدی علیہم السلام۔

امام حسین علیہ السلام سنز یژاہ ذکر کرنہ کہ باوجود، ائس امہ موعوظہ سیت کوت چھی واتان؟

 کوس رحمت چھہ اسہ حاصل گژھان؟

کوس دل  دود  چھوء اسہ  ژلان، کوس ہدایت چھہ اسہ میلان؟

یہ [موعظہ، رحمت تہ ہدایت]چھئی انسانس تلیہ [حاصل سپدن] ممکن یلہ زن یہء غورو فکر کرء۔[غور و فکرچ]ترکئر تراوہ!کہ اگر زن امام حسین علیہ السلام سنہ 61 ہجری یس منز شہید گوتہ  از چھوء 1435تہء از کیاہ دلیل چھئ۔۱۳۷۴  ووہر گو شہادت۔ اگر زن گنزراونہ بہمو تہ رات     لگہ اکھ زء تریہ ژور..کئرتھی، صبح تہ پھلہ ونہ آسنہ گنتی موکہ لیمژی۔

 یلہ یی تیاہ ووری چھئي گمئت،میہ کیاہ چھوء ونہ کنس ونان؟

امام حسین علیہ السلام سندس یتھی درسگاہس منز یمک ائس امیدوار چھئی ،سُوء چھوء  یہوی قرآن وژھہ ناوان۔  یُس قرآن نہ اسہ[  فکرء چھوء تران] ، قرآنچہ کتھہء یمی نہ اسہ فکرء چھئي تران تمیوک سادہ ترجمہ اسہ برونہ کنہ تھاوان کہ انسان سند پنہ نس خالقس ساتھی ارتباط قائم کرن۔پنن ہر کانہ کامی انجام دن صرف خدایس ساتھی مرتبط گژھنہ خاطرء۔یتھی کئن ائس <قُربَةً اِلَی الله > نمازء منز ونان چھئی ،بلکہ یلہ حسینی بنان چھوء ، امس چھوء<قُربَةً اِلَی الله >  شہ خالنس والنس منز بنان۔ امس چھئی ہر سونچی آسان[<قُربَةً اِلَی الله > باپت] بہء کرء ہا سوی کتھ  یوس خدایس پسند گژھہ ہا ، بہء کرہ ہا سوی کامی یوس خدایس پسند گژھہ ہا،یہ گو حسینؑ۔

یمہ ساعتہ[انسان چھوء] حسینی چھہ بنان سوء چھوء قرآنی بنان،یس قرآنی بنیوی سوی چھوء محمدی  (ﷺ )بنان۔یُس محمدی( ﷺ)بنیوی سوی چھوء الہی بنان ۔

پروردگار عالمن چھہ اسہ عقل دژمژ یوس زن  ائس استعمالس منز ا نو،تاکہ رشد گژھہ ا سہ حاصل،  عقل چھئ  ونان گنڈس۔گنڈ گو عقل۔یتھ کن زن یمس  اونٹس چھہ زنگہ گنڈان تتھ چھئ عقال ونان۔ عقل یعنی یہ چھوء گنڈ دیوان یعنی یہ چھو جہت دوان،میہ کیاہ چھوء کرن۔ گنڈ دیوت یہ چھہ اتھ محدودیتسی منز پتہ پنن ضرورت پورہ کران۔اتھ عقلہ متعلق یوس زن اسہ  امہ طریقہ اگر ائس استعمال تہء چھئی کران  ضایعہ تہ چھہ کران۔ مولا  امیرالمؤمنین علی ابن ابیطالب علیہ السلام فرماوان:علیؑ فرماوان:" يَنْبَغِي لِلْعَاقِلِ أَنْ يَحْتَرِسَ مِنْ سُكْرِ الْمَالِ وَ سُكْرِ الْقُدْرَةِ وَ سُكْرِ الْعِلْمِ وَ سُكْرِ الْمَدْحِ وَ سُكْرِ الشَّبَابِ فَإِنَّ لِكُلِّ ذَلِكَ رِيَاحاً خَبِيثَةً تَسْلُبُ الْعَقْلَ وَ تَسْتَخِفُّ الْوَقَار"مولا امیرالمؤمنین فرماوان کہ؛ عاقل چھوء پنہ نیو کینہ ژو صفتو سیت  پننہ عقلہ بلای انان پانے، کمہ سیت ؟

"سُكْرِ الْمَالِ"مستی بہء چھوس مالدار،"سُكْرِ الْقُدْرَةِ"مستی کہ بہ چھوس طاقت ور، میہ  چھوء کانہ اقتدار ،میہ اتھہ چھہ ء کانہ کرسی ،"وَ سُكْرِ الْعِلْمِ"علمک گھمنڈ بہ چُھس عالم،بہ چُھس زانن وول، میہ چھئ  پتہ ،"وَ سُكْرِ الْمَدْحِ"تعریفن ہنز مستی،اگر بہ غلط آسہ ہا بیاکھ تہ ونہ ہا میہ غلط ، ساری چھئی میانی تعریف آسان کران بہ چھوس بالکل پرفکٹ۔"وَ سُكْرِ الشَّبَابِ"جوانی ہنز مستی،یین بہ تارس فکرہ ،میہ پوشہ،"فَإِنَّ لِكُلِّ ذَلِكَ رِيَاحاً خَبِيثَةً "یمو ساروی  مستیو منزء چھہ  خبیث  ہواجاری گژھان ، خبیث ویو جنریٹ گژھان،یس زن" تَسْلُبُ الْعَقْلَ "یوس عقلہ چھہ تباہ کران۔ "وَ تَسْتَخِفُّ الْوَقَار "یس وقاری چھوء ضایعہ کران۔

اگر ائس حسینیؑ اعتبارء پنن محاسبہ کرو۔قرآن چہ امہ آیہ تہ حضرت علی علیہ السلام سندء  امہ حدیثء سیت۔

امام حسین علیہ السلام یُس وعظ  پران رود،اسہ ءبوزاہ؟

قرآن یُس وعظ پران اسہ  رُود، اسہ بوزاہ؟

 یوس حسین ؑ،حسینؑ ائس کران رُود، اسہء توگاہ یہ حسینؑ،حسینؑ رچھراون؟اسہ توگاہ امہء ساتھی کمال حاصل کرن کِنہ اسہ تگ پنن پان ضایعہ کرن؟۔

مہ چھہ پے بہ چھس پونسہ وول بہ ءکرہ مجلس اکھ، ساری گناہ گژھن ضایعہ [ساری گناہ ینم چھلنہ]۔مالس پیٹھ غرور!۔عمل چھنہ میہ ضرورت کہین ۔مگر مالہء ساتھی ہیکہ بہء[ثواب حاصل کرت]بہء چھوء سا امہ طریقہ  یہ مال استعمال کران ۔"سُكْرِ الْقُدْرَةِ"اسہ چھا کانہ  پروای  اسہء چھوء مولا ساتھی، امام حسین علیہ السلام ساتھی یا کانہ تہ ناو دیموس۔یا ظاہری سیٹ آسہ، ظاہری منصب آسہ ۔یہ چیز گوژھ سبب بنن میانہ ارتقائک، میہ تھود کھسنُک ، مگر میہ کیازہ چھوء  ٹھہراو؟ کیازہ کہ میہ چھنہ امیوک صحیح استعمال کرمت کینہ۔"وَ سُكْرِ الْعِلْمِ"اگرزن علمس تقسیم کرو مختلف تعبیرو سیت ہکو اتھ سمجتھ۔اگر زن ا نسٹائنس  اکہ سایڑء تھاون بیہ  سایڑء تھاون اکس جاہل مسلمانس،  دپنس یہ دنیا  ہے آو،آو کتہ،  انسان  آو، آو کتہ۔گژھن ہے  چھس، گژھن کوت چھس ،انسٹائن بہیہ تھیسز دنہ ..پتہ چھس یتھہ کئن ،پتہ چھس تتھ کئن، پتہ یی یہ یتھ کن..تہ حاصل  آسنہ کہین۔مسلمان جاہل وتھہ  دپہ:"إِنَّا لِلَّهِ وَ إِنَّا إِلَیْهِ راجِعُونَ"ائس آی تہ خدای سندء طرفہ،  گژھن تہ چھوء واپس تمسی کن۔یمہ ساعتہ یمہ زہ کتھہ تولنہ ین، انسٹاین چھوء سائنٹفک تھیسز دوان،اتہ چھنہ پئترس کھسان کہین،مگر یمس جاہلس کہین پتہ چھنہ[تمسنز کتھ چھئی وزن تھاوان] گو امس اسٹائنس مقابلہ چھوء، یا کانسہ تہ  [غیر مسلمان]دانشمندس مقابلہ چھوء یہ جاہل  چھوء بئڑ کتھ [بوڑ علم] مانان/زانان،یمہ ساعتہ اتھ[وسیع علمی تناظرس منز] مو ازنہ کرو۔کیا یہ گژھیا  غرور سون گژھن کہ غیر مسلمان خبر کوتاہ تہ عالم آسہ اکس جاہل مسلمانس سیت ہکنہ موازنہ کرتھ کہین۔اگر یہ غرور گژھہ  یہ چھہ ضایع ۔یتھےکئن اسہ چھہ اہل بیتن ہنز معرفت بیس چھہ نہ ،یہوے بنہ   غرورک سبب،یہ چھہ سانی عقل ضایع کران۔

امہ  عقلہ سیت گژھی ائس کھسن تھود،ائس کیازہ چھنہ تھود کھسان؟

[کیازہ کہ]ائس چھئی مست گیمت۔ہے اسہ چھنا امام حسین علیہ السلام، اسہ کرہ امام حسین علیہ السلام شفاعت، مکلیوی قصے۔حضرت علی علیہ السلام دپان امی کئر پنن عقل ضایع، امس یوس عقل پکناوء ہا، امی بہناوی یہ اتہ تھی ۔یہ گوژھ[ اتھ ساتھی پکناون]کیازقرآن تہ چھوء ونان؛<مَنْ جَاءَ بِالْحَسَنَةِ>[نیکی چھئی رئچھ کرن]امس گوژھ یہ ترن فکرء کہ حسینؑ گوژھ میہ ہر ژھہس ساتھی روزن ،میہ چھوء قرآنن تہ وونمت  ثواب چھئی تلہ یلہ ساتھی آسنے  تمی یتہ ۔یلہ  میہ وتے   تمی  آسن زالمت  تپاری کوس شفاعت میلہ میہ ۔

گو میہ چھوء یہ مستی سیت یہ علم ضایعہ کورمت۔پنن شیعہ آسن ضایعہ کورمت۔پنن حسینیؑ آسن ضایعہ کورمت۔یلہ زن ،اگر بہ حسینی آسہ ہا ،یہ کینژھا کربلاہس منز میہ سبق ہیچھہ نووک،میانہ زندگی منز گوژھ آسن کم سے کم تمیوک اثر۔

اگر خداین دوپ کہ میہ تھووی رسول رحمت صلی اللہ علیہ وآلہ وسلمس منز توہیہ خاطرء نمونہء عمل۔تمی وون نہ رسول رحمتﷺ چھہ تہندہ خاطرء رول ماڈل۔< بِسْمِ اللَّهِ الرَّحْمَنِ الرَّحِيمِ لَقَدْ كَانَ لَكُمْ فِي رَسُولِ اللَّهِ أُسْوَةٌ حَسَنَةٌ>(الأحزاب/21)میہ تھووی  رسول رحمتس منز<لَقَدْ كَانَ لَكُمْ فِي رَسُولِ اللَّهِ أُسْوَةٌ حَسَنَةٌ > اگر زن سوء ونہ ہا<لَقَدْ كَانَ لَكُمْ رَسُولِ اللَّهِ أُسْوَةٌ حَسَنَةٌ >ائس کتھ تاونس لگہ ہوی۔اگر خدا ونہ ہا ؛ رسول رحمت چھوء تہندء خاطرء  رول ماڈل ،تلہء آئس تمسی کاپی کرن یہ تمی چھوءکورمت، تی اوس اسہ تہ کرن،یہ چھنہ ممکن انسانس خاطرء میسر کینہ۔اسلئے تمی وون<لَقَدْ كَانَ لَكُمْ فِي>امس منز  یوس ادا توہیہ تگیوی تتھ عمل  کرن ، کریو۔آنحضرتس ﷺ واتیوی نہ کہین ۔یتھے کن گوژھ اسہ آسن اہلبیتنؑ منز کانہ کردار یوس زن تمو اسہ برونہہ کنہ تھوی، اہلبیتن ؑمتعلق تہ ونو اتہ<فِي > کس حدس تان ،بلکہ یتہ گو تھود،ائس دپو، نہ،یمو زن ا ہل بیتنؑ ہندس نقش قدمس پیٹھ عمل کر۔ یمو اہل بیتن ہندس آلوس لبیک  وون، یعنی قران کس آلوس لبیک وون۔تہند کردار  کیا  اُوس؟

کیا امہ طریقہ چھا ائس یُس زن یہ ائس  حسین حسین  کران چھئی، امام حسینس چھہ ودان ، مرثیہ چھئ پران، مجلس چھئ کران ،جلوس چھئي کڑان ، نوحہ چھئی پران امہ ساتھی کیا ہ حاصل گو میہ ۔

اگر حاصل گو میہ، یہ چھوء حسینیؑ۔اگر حاصل گو نہ، یہ چھنہ حسینیؑ کہین ۔کیازہ  کہ یمس خاطرء حسین ؑ ہیوہ  ژونگ آسہ ،آفتاب آسہ تمس گژھنہ وتھ راون کینہ۔

اگر ووتھ راومژھ چھئس تلہ چھوس علی مرتضی علیہ السلام سندء [قولہ] تمی چھئی  یہ عقل کرمژ  ضایعہ مستی ساتھی، امس چھوء غمنڈ گومت بہء چھوس نا حسینی، بہء چھوس نا دئگ دوان،بہ چھوس یوتاہ ودان امام حسیننس ؑ ۔ یہ غمنڈ، یہ غرور،یا مستی ، غمنڈ  غرور تہ نے ونوس ، مطلب مطمئن، مست، میہ کیا ہ پروای چھوء۔

نماز چھوکھا پران ؟

حتی! امام حسینس ووندمہ زوہ پنن،سوء کرءنا یاری تتہء!

ژءکیوزء دوکھہ دوان؟

...دی تتھ تہء دلیل کانہ۔

 یمہ سنزہ زبانی پیٹھ حسینؑ حسینؑ آسہ ، حسین ؑ حسین ؑ  گو خدا خدا کرن ۔کیازہ کہ ائس چھئي چھہ ونان کہ ائس زانون نہ خدا کینہ ۔زانونہ ؟ کم سے کم میہ چھنہ پتہ کینہ ۔رسول رحمت صلی اللہ علیہ وآلہ وسلمن دژھ تمسنز مکمل نشانی، چھوء کوس خدا؟ اسہء کر آنحضور صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم سندس وننہ نس پیٹھ پژھ۔ دپن سہ چھوء<لَمْ يلِدْ وَلَمْ يولَدْ>(الإخلاص/3)<وَلَمْ يكُنْ لَهُ كُفُوًا أَحَدٌ>(الإخلاص/4)<لَيسَ كَمِثْلِهِ شَيءٌ>(شوري/11) یہ کم وون؟ [یہ وون] آنحضرت صلی اللہ علیہ وآلہ وسلمنن ۔جنت جہنم کمس چھئی پتہ؟ سُہ[جناب] آو تورء[معراج پیٹھہ]وچھت دپن جنت تہ چھوء تہ جہنم تہ چھوء۔حساب چھوء، کتاب چھوء ،یہ کینژھاہ  عمل کریو جزاء چھوء۔کیازکہ سوء [جناب}آو  وچھت اسلئے چھوء ہر  چیزس پیٹھ ایما ن،  یژھ تہ پژھ تھاون  ۔اسہ چھا امہ محرمہ ساتھی،امہ عزاداری ساتھی یہ ایمان قوی گومت کنہ ضعیف ؟۔

اگر ائس یہ دعوا چھہ کران کہ یمن محفلن منز چھہ اہلبیت اطہار شرکت کران۔اسہ چھا باسان  سانی  محفل چھہ تژھ آسان کہ اہلبیتؑ کرن تتھ منز شرکت؟یا یتھ محفلہ منز اہلبیتنؑ ہنز شرکت آسہ یقینی سپدیمژ میہ میو ل تتہ حاصل کینہ،بہ گوس تتہ ہتھ کہنہ،بہ بنیوس تمسند زائر۔

اگر ائس   پننہ نس پانس یتھی کئن سوال کرو نہ ائس ہیکو نہ سوءرُشد سوء ہدایت حاصل کرتھ <سَبِيلَ الرَّشَادِ>(غافر/29و38)>یوس زن قرآن چھوء ونان، ائس ہیکو نہ سوء لبتھ کہنہ۔

امام حسین علیہ السلامن یہ ساری تحریک کمہ باپتھ  چلاون؟

[امہ باپت]کہ قرآنک صاف شفاف پیغام واتہ انسانس تان۔انسانس گژھنہ مغالطہ گژھن یہ کینژھا قرآنن وونمت چھوء یہ چھہ اکھ کتابی داستان،عملی ہیکنہ  انسان  کانہہ کمالاہ حاصل کرتھ کینہ ۔امام حسین علیہ السلام سندس سیرتس منز چھہ ائس  یی لبان۔

مگر تلہ کیازہ چھنہ اسہ جلسو جلوسو ساتھی کہین حاصل گژھان؟۔ائس کیازہ چھن امام حسین علیہ السلام<نعوذبالله، نعوذبالله ، نعوذبالله ، نعوذبالله >پننہ پوزارک غلام تھووی مت ؟ یتین بہء آسے حسین  ؑ ژء گژھک توتھوی یون،بہ یمے نہ یتن ژء آسکھ!

ژور،ژور، آٹھ، آٹھ امام بارء چھئی اکسی محلس منز۔حسین ؑ آسکھ میانس امام بارس منز گژھک یون،بہ ہیکے نہ چیانس امام بارس منز یتھ کہنہ۔

دائرہ !سارنی  چھوء کرن حسینؑ، حسینؑ ،یکہ وٹہ پرو نہ ، اَڈِس گھنٹس  پرء اکھ نوحہ ،تمہ پتہ اَڈِس گھنٹس  پرء  بیاکھ نوحہ، ساری کرو حسینؑ، حسینؑ ،نہ! یہ گژھہ میانہ محلک آسن ،یہ گژھہ میانہ پاٹک آسن،یہ گژھہ میانہ دائرک آسن۔گو اسہ چھوء پنن پان دور رومت مستی ساتھی۔اسہ چھہ نا پی اسہ چھوء نا امام حسین ،ائس چھئی حسینؑ حسینؑ نی کران۔

 مگر یوس اسہ سمبراون گوژھ سوء چھوء اسہ الگ،الگ کران۔کیازہ کہ اسہ چھنہ امام حسین علیہ السلام ساتھی رشتہ داری تھاومژ کنیہ ،پنن رشتہ چھنہ اسہ بناونچ کوشش کرمژھ کینہ۔

امام حسین علیہ السلام یہ کیاہ کتھ ونان کہ انبیاؑ چھہ  مئل تتھ ہیوان۔ملایک چھہ ہر شبہ آسمانہ پیٹھہ نازل سپدان ، گوڑء خانہ کعبس گژھان طواب کران ،تتہ نیران روضہ رسول صلی اللہ علیہ وآلہ وسلمس پیٹھ تتہ حاضری دوان، تتہ طواف کران،نیران نجف تتہ طواف کران،امہ پتہ چھہ واتان امام حسین علیہ السلام سندس رُوضس پیٹھ،تتن چھہ صبحس تان حاضری دیوان ،صبحس چھہ نیران۔یم ۷۰ ساس ملائک چھہ  نیرتھ بیہ ملایکن ہندس صفس منز بیہ رُوزان لائنہ،قیامت سپدءمگر یمن ۷۰ ساسن یی نہ دویمہ لٹہ واری  امام حسین  علیہ السلام سندس روضس پیٹھ زیارتک کینہ۔یژھاہ ٹریفک جیمنگ کیازء چھہ کرمژ یمو ملایکو؟ چھئی کیاہ دلیل؟

امام حسین علیہ السلام چھوء کیا؟یوس یہ حرارت دِوان چھوء یہ سانین دلن، چھوء کیاہ امام حسین علیہ السلام ؟

امام حسین علیہ السلام چھوء قرآن۔

یہ امام حسین علیہ السلام کیازہ چھوء سانیو اتھو مظلوم؟کیازہ چھوء سانیو اتھو ضایعہ گژھان؟۔ائس چھا پنہ نس پانس محاسبہ کران،یمو دعوی کورس ائس چھئی چیانی دوست، تمو کئرس بےوفایی۔ ۱۸ ساسن دستخطن ہند خط چھنہ معمولی کتھا کہین۔۱۸ ساس نفر کرن دستخط  پنن امہ پتہ آسنہ یاری کرنس کہین۔

گو یہ عمل چھئہ کانسہ کرمژ ،زیو ساتھی اقرار کرتھ مگر عملہ خاطر چھنہ تیار کینہ۔

امام حسین علیہ السلام یمہ اعتبارء  قرآن کین آین  ساتھی تطبیق دمو ، قرآنچ وضاحت چھیہ  میلان۔ سورہ اسراءآیت۸۲<وَنُنَزِّلُ مِنَ الْقُرْآنِ مَا هُوَ شِفَاءٌ وَرَحْمَةٌ لِلْمُؤْمِنِينَ> یہ کینژھا میہ قرآنہء منزء نازل کور مؤمنن خاطرء یہ چھوء شفاء، یہ چھوءرحمت۔شفاء تہ رحمت بغیر چھنہ کہین مؤمنینن اتھ منز۔ امام حسین علیہ السلام تہ چھنہ شفا تہ رحمت بغیر نہ کہین مؤمنینن منز، مگر بانہ گژھا آسن اسہ منزء کنہ نہ۔

اگر ائس  دُودھ یژھو رٹن پنہ نس پُلہور کھورس منز ،پوزار کھورس منزرٹوہ ائس دودھ،ائس رٹوء گندء ٹائکِس منز رٹوہ ائس۔ بلکہ بانہ کرون گوڈء صاف ادہ رٹو تتھ منز دودھ۔کیازہ امچ ضرورت چھئ مئی،یہ چھوء میہ چون، لذا تمک مقدمہ کرہ بہ تِتُھے پاک یتھ بہء استعمال ہیکن کرتھ۔

امام حسین علیہ السلام سندس بارس منز چھوسہ بہء پنن یہ بانہ پاک کران،یتھ منز میہ یہ حسینؑ حسینؑ گوژھ یَپُن ،یمہ حسین ؑ حسینؑ ساتھی بہ  خدا  خدا  ہیکہ ہا  پرزء ناوتھ کہ حسیننؑ کیاہ ووچھ یہ خدا چھوءکیاہ یمس حسین چھوء دپان ؛ خدایا تمس کیاہ روو یمی ژء لوبکھ۔خدایا تمی کیاہ لوب یمس ژہ روکھ"مَا ذَا وَجَدَ مَنْ فَقَدَكَ وَ مَا الَّذِي فَقَدَ مَنْ وَجَدَك

میدانہ کربلاہس منز یہ کینژھا امام حسین علیہ السلامن پروردگار سندن وعدن ہند تفسیر بیان کور اتھ منز گوژھ اسہ آسن کینہ نتہ کینہ حاصل گومت۔

اگر  زن  کربلاہ کین دون پیر مردن  ہنز کتھ کرو ؛گو"مُسْلِم بن عَوْسَجِة"،بیہ"حَبیب بن مُظاهِر" ۔یمو کیا ہ کور کربلاہس منز،یمی کتھہ کن بنایی  حسینیؑ تہ یمو کیاہ وون اسہ؟۔یمہ ساعتہ "مُسْلِم بن عَوْسَجِة" چھوء امام حسین  علیہ السلامس اجازت ہیوان کہ میہ دیو جہادک اذن۔اجازت چھس میلان"مُسْلِم بن عَوْسَجِة" چھوء نیران؛"فَبَالَغَ فِي ِقتَالِ الأعداءِ، وَصَبَرَ عَلى أهوَالِ البَلاءِ"مسلم بن  عوسجہ  سوء پیر مرد دراو کمالک جہاد کورن"وَصَبَرَ عَلى أهوَالِ البَلاءِ "۔یی تیاہ تہ نیزء ،کان، تیر آس تمی کرن برداشت،تتھ پیٹہ کرن صبر"حَتَّى سَقَطَ إلى الأرضِ وَبهِ رَمَقٌ"یوتان جہاد کران کران زینہء پیٹھء پیو وین پتھربر زمین" فمَشى إليه الحسينُ عليه السلام، ومَعَهُ حبيبُ بنُ مُظاهِرٍ"یمہ ساعتہ مسلم بن اوسجہ  از زین بر زمین پیو، حبیب بن  مظاہر تہ امام حسین علیہ السلام دویے مسلم بن اوسجہ ہس کن۔"فقالَ لهُ الحسينُ عليه السلام: "امام حسینن ون مسلم بن اوسجہ ہس:"رَحِمَكَ اللهُ يا مُسلمُ"خدای سنز رحمت آسن ژھء پیٹھ اے مسلم۔امہ پتہ کرکھ تلاوت، ناطق قرآن چھوء<فَمِنْهُمْ مَنْ قَضَى نَحْبَهُ وَمِنْهُمْ مَنْ ينْتَظِرُ وَمَا بَدَّلُوا تَبْدِيلًا>(الأحزاب/23) >یمو جہادک وعدہ کور پورء، کینہ چھہ انتظارس۔  یعنی اے مسلم ژء کورتھ پنہ نس وعدس وفا،ژء لبتھ شہادتھ ون چھئ وئیر سانی ۔

 

"وَ دنا مِنهُ حَبيبٌ" یمی ائس دیرینہ یار پانہ وانی،یہ آو نزدیک  "وقالَ: عَزَّ عليَّ مصرَعُك يا مسلمُ، أَبْشِرْ بالجنَّةِ."دوپنس یہ چانی حالت چھم نہ برداشت گژھان۔سٹھا سخت چھوءمیانہ خاطرء یہ حالت چانی وچھن،بہ ءچھوسے ژء جنتچ بشارت دوان، ژھ گژھک بہشتس۔مزید وون حبیبن"فقالَ له حبيبٌ: لولا أنّني أعلمُ أنِّي في الأثَرِ لاحقٌ بكَ، لأَحببْتُ أنْ تُوصيَني بكلِّ ما أَهَمَّكَ. " مسلماہ اگر میہ آسہ ہا نہ پتہ میہ تہء چھوء ونی مارءہ گژھن حسین ؑ سندس رکابس منز،بہ ونہ ہے ژھ ما چھے وصیت تھاہ تاکہ سوء وصیت ہیکہ ہا بہ پورہ کرتھ۔

مسلم چھوء حالت احتضارس  منز۔حبیب بنِ مظاہر چھس ونان ژء چھیہ وصیت کانہ ؟ ۔تیر و کانن ساتھی چھوء ولتھ مسلم  مگر توہی وچھوی مسلم کیاہ چھوء پیغام دوان ژء تہ میہ"فقالَ له مسلمٌ: أُوصيكَ بهذا" میانی وصیت چھئي یژی یاژ کہ حسینس ؑ کرزہ یاری ۔

یہ حسینسؑ یاری کرن کیاہ چھئی؟یہ امام زمانؑ کمی چیزن چھوء یوتاہ مجبور کورمت امس چھنہ یاور کانہ ۔ حالت احتضارس  منز،شہادت کس حالتس منز تہء چھوء آخری وصیت  شہید کربلا سنز یہ آسان کہ"أُوصيكَ بهذا"۔حالت تہء چھنہ کتھ کرن سنمب  جناب مسلم بن عوسجس"وأشارَ بیده پننہ اتھہ ساتھی کرن شارء"إلى الحسين ِعليه السلام ،فقاتل دونَهُ حتی تموتَ" پنن زوہ وندء زء یمس مظلومس ۔امام زمانس متعلق چھا اسہ [یہ معرفت]؟

کربلا کمیوک ایڈرس دوان اسہ ،یہ مسلم بن عوسجہ ہن کیاہ وون۔اگر ژء انسان چھوکھ، اگر ژء مسلمان چھوکھ ، پنن امام زمان پرزہ ناون۔پنہ نس امام زمانؑ سنز اطاعت کر۔

کربلا یعنی امامت یعنی ولایت۔سانس عزاداری ہندس جلوسس منز،مرثی خو انی منز، مجلس منز،کئژاہ چھئ  امام زمان سنز  معرفت اسہ آسان۔ مسلم بن عوسجہ ہس کیاہ تور فء کہ یہ چھوء دپان  بہ لگہ ہا رتہ چھپہ امام حسینسؑ ۔

مسلم بنِ عوسجہ ہس چھوء اتن امام حسین تہ شاندس پیٹھ حبیب بنِ مظاہر تہ۔مگر یمہ ساعتہ امام حسین علیہ السلام تنہ تنہا رود، امام حسین علیہ السلام فرماوان:<إِنَّ وَلِيي اللَّهُ الَّذِي نَزَّلَ الْكِتَابَ وَهُوَ يتَوَلَّى الصَّالِحِينَ>(الأعراف/196) امام حسین  چھوء تنہ تنہا روزت دپان؛میہ چھنہ پروای کہین<إِنَّ وَلِيي اللَّهُ الَّذِي نَزَّلَ الْكِتَابَ>  میہ کیاہ پروای چھوءمیہ چھوء خدا یمی قرآن نازل کور۔یہوی قرآن کوتاہ مظلوم سانس معاشرس منز۔امام حسینسؑ فخر کہ  میہ  چھوء صاحب قرآن ولی ، میہ کیاہ چھوء پروای  ۔یعنی یمس حسینی آسہ بنن سوء گژھہ قرآ نی بنن۔امس گژھہ قرآنس پیٹھ ایمان اضافہ گژھن،کہ میانس گھرس منز  یوس زن یہ قرآن چھوء یہ چھوء کیاہ۔کیازء<وَهُوَ يتَوَلَّى الصَّالِحِينَ> یہ صاحب قرآن چھوء صالحین نن ہند مددگار۔

امام حسین علیہ السلام سندء مظلومیتک یوس تہ کا نہہ پہلو وچھو(بہء چھوس نہ توہیہ ونان بہء چھوس پانس ونان) کہ امام حسین علیہ السلام کوتاہ مظلوم چھوء سانس معاشرس منز۔

راوی ونان یمہ ساعتہ امام حسین علیہ السلام آو شہید کرنہ  ؛"فقَالَ " راوی ونان :" فَخَرَجْتُ بَیْنَ الصَّفَّیْنِ"لشکر ہندین دون صفن منز دراس بہء نبر،یمہ ساعتہ فضا تیر وتار گو،اتہ تور فکرء کیاہ چھوء گومت،بہ چھوس لشکرء ساتھی،راوی چھوء ہلال بن نافع ونان،بہء تہ دراس،وین دراس یمن دون صفن منز۔<فَوَقَفْتُ عَلَیْهِ>امام حسینس روبرو آس،< وَ إِنَّهُ ع لَیَجُودُ بِنَفْسِهِ >یوس زن  وین امام حسین علیہ السلام حالت احتضارس منز اوس،<فَوَ اللَّهِ مَا رَأَیْتُ قَطُّ قَتِیلًا مُضَمَّخاً بِدَمِهِ أَحْسَنَ مِنْهُ >خدایس پتھ چھمنہ وچھمت یوتھ کانہہ رویاہ، یوس زن خونہ ساتھی آسہ ملتھ،مگر تیوتاہ نورانی آسہ تمہ باوجود۔<وَ لَا أَنْوَرَ وَجْهاً>یوتانہ نورای بوتھ آسہ ،تمہ حالہء یلہ زن سوء خونہ ساتھی ملتھ چھوء،<وَ لَقَدْ شَغَلَنِی نُورُ وَجْهِهِ>امی نورانی بوتھی کورس بہء آوور،<وَ جَمَالُ هَیْئَتِهِ>تمی سندء جمالن کورس بہء متحیر<عَنِ الْفِکْرَةِ فِی قَتْلِهِ>کہ بہء وچھہ ہا کہ امام حسینس ذبح کتھہ کئن کورہس۔ یہء چھوء راوی امس چھوء لیکھن کہ کیاہ چھوء گژھان۔دپان سوء حالی رودم نہ،میہ چھنہ یوتھ بوتھا ووچھمت، یوتھی نورانی بوتھا،یتھ زن خون آسہ ملتھ رویس،مگر تیوتاہ آسہ نورانی تہ پرزلان۔ وودیوی ، کریکہء دیوی، اتھ حالس منز کیاہ ووچھم حسین کران۔<فَاسْتَسْقَى فِی تِلْکَ الْحَالِ مَاءً>امام حسین چھوء اتھ حالس منز آبک درخواست کران۔< فَسَمِعْتُ رَجُلًا>وچھم نفراہ ونان؛< یَقُولُ لہ>جواب وونن حسینس< وَ اللَّهِ لَا تَذُوقُ الْمَاءَ حَتَّى تَرِدَ الْحَامِیَةَ فَتَشْرَبَ مِنْ حَمِیمِهَا>اللہ اکبر، اسلام کوت اوس ووتمت،امام حسینن امہ حالہ منجوی آبہ قطرء ۔ جواب میولس ، آبہ قطرء میلی نہ،جہنم کہ آبہ ساتھی گژھک سیراب!حسین بن علی یس، رسولخدای سندس نور عین نس چھوء یوان ونہ نہ  ژء چھوکھ جہنمی ، ژء چھی نہ جنتک حق،کوس چھوء اسلامچ ترجمانی کران ۔ اتھ پیٹھ ودیو، اتھہ پیٹھ کریو نوحہ ،اتھہ پیٹھ دیو بتھہ بتھہ ،رسول رحمت سندس حسینس چھئی ونان ژء چھوک کافر ،ژء چھوک دشمن، ای واللہ۔اگر زن یژھی حکومت اسلامی آسہ ہا ،تلہ کوس آسہ ہا رسول رحمت سند ترجمان ۔ اللہ اکبر۔یتھی پیٹھ آسن نا ملائکہ سینہ چاک کرتھ کہ کمس رسول رحمت نازنینس سندس نور عینس  حسینس چھئي ونان ژء چھوک جہنمی ژء میلی نہ آبہ قطرء،بلکہ ژء میلی جہنمک آب!  <أَنْ لَعْنَةُ اللَّهِ عَلَى الظَّالِمِينَ>(الأعراف/44)

 امام حسین علیہ السلام قرآنک آئینہ-1 PDF فائل ڈاونلوڈء خاطرء


·         امام حسین علیہ السلام قرآنک آینہ -01

·         امام حسین علیہ السلام قرآنک آینہ-02

·         امام حسین علیہ السلام قرآنک آینہ-03

·         امام حسین علیہ السلام قرآنک آینہ-04

·         امام حسین علیہ السلام قرآنک آینہ-05

·         امام حسین علیہ السلام قرآنک آینہ-06

·         امام حسین علیہ السلام قرآنک آینہ-07

·         امام حسین علیہ السلام قرآنک آینہ-08

·         امام حسین علیہ السلام قرآنک آینہ-09

·         امام حسین علیہ السلام قرآنک آینہ-10

 

©2011 . all rights reserved**