کاشر
شماره : 47058
: //
امام حسین علیہ السلام قرآنک آینہ-06

عبدالحسین سنز ستیمء محرم 1435 مطابق 10نومبر 2013 امام بارہ ژوندء پور بڈگامہء پرمژ مجلس

6

 
امام حسین علیہ السلام قرآنک آینہ-06

عبدالحسین سنز ستیمء محرم 1435 مطابق 10نومبر 2013 امام بارہ ژوندء پور بڈگامہء پرمژ مجلس

 

اَعُوذُ بِاللّهِ منَ الشّيطانِ الرَّجيم

بِسْمِ اللَّهِ الرَّحْمَنِ الرَّحِيمِ؛نحمده و نستعینه و نؤمن به و نتوکّل علیه و نستغفره و نصلّی و نسلّم علی حبیبه و نجیبه و خیرته فی خلقه حافظ سرہ و مبلغ رسالته سیّدنا و نبیّنا و طبیب نفوسنا و حبیب قلوبنا  ابی‌القاسم المصطفی محمّد(صلی اللہ علیه و آله  وسلم)[ اللَّهُمَّ صَلِّ عَلَى مُحَمَّدٍ وآلِ مُحَمَّدٍ وعَجِّلْ فَرَجَهُم] و علی آله الأطیبین الأطهرین المنتجبین المعصومین سیّما بقیّةاللَّه فی الارضین۔ و صلی علی ائمہ المسلمین حماۃ المستضعفین و ھداۃ المومنین علی امیرالمومنین علیہ آلاف تحیۃ والثناء۔

اما بعد؛قال اللہ سبحانہ و تعالی فی محکمہ کتابہ :

 بِسْمِ اللَّهِ الرَّحْمَنِ الرَّحِيمِ وَنُنَزِّلُ مِنَ الْقُرْآنِ مَا هُوَ شِفَاءٌ وَرَحْمَةٌ لِلْمُؤْمِنِينَ (الإسراء/82) صدق اللہ العلی العظیم۔

 اللَّهُمَّ صَلِّ عَلَى مُحَمَّدٍ وآلِ مُحَمَّدٍ وعَجِّلْ فَرَجَهُم

میانہ گفتگوک موضوع چھوء:امام حسین علیہ السلام قرآنک آئینہ۔

یعنی قرآن امام حسین علیہ السلام سند پتہ دوان ، امام حسین علیہ السلام قرآنک پتہ دوان۔

سورہ اسراء آیت 82 یوس میہ تلاوت کئر ۔خدا فرماوان <وَنُنَزِّلُ مِنَ الْقُرْآنِ مَا هُوَ شِفَاءٌ>قرآن چھوء شفاء دنہ وول ۔<وَنُنَزِّلُ مِنَ الْقُرْآنِ مَا هُوَ شِفَاءٌ>یلہ زن ائس حتی نہ صرف امام حسینس بلکہ امام حسین علیہ السلام سندء قبرء ہنزء مژء متعلق چھوء "فِی طِینِ قَبْرِ الْحُسَیْنِ (علیه السلام) شِفَاءٌ "خاک کربلا چھوء شفاء ۔ قرآن یوس زن خداین ہدایت سوز انسان سندء رُشد خاطرء،امہ ء سند معیان بڑاونہ خاطرء ،لوکن موعظہ کرنہ خاطرء ...۔یلہ زن اسہ امام حسین علیہ السلام موعظہ زک رہنما  اصول بیان کرن وول ،رُشد تہ کمال حاصل کرنہ خاطرء اسہ وتھ ہاون وول ۔یوس زن سانہ خاطرءیہ  لازمی چھوء بناوان ،یوس زن امام حسین علیہ السلام سنز ذکر کران چھوء ،امسنزء ذکرء ہند ، امسندء فکرء ہند گژھہ آسن گواہ تہ شاہد قرآن ۔یوس عزاداری کرء ،امسنز ءعزاداری گژھہ تائيد کرن ، قرآنس گژھہ تائيد کرئن عزاداری۔

امام حسین علیہ السلام سندء وجود مقدس ساتھی چھئي اسہ یہوے قرآنچ پاری زان گژھان کہ یوس زن سانہ خاطرء یہ سوال گژھہ آسن کہ اگر زن از؛از گو 1435ھ ق، یعنی امام حسین علیہ السلامس 1374 وری شہید گئمتس!کئژ؟ 1374 وری ، یہ ما چھئی راتچ کتھ ،1374 وری گئي امام حسین علیہ السلامس شہید گئمتس ائس کیازء ونہ کینس ودو؟اسہ کیازء چھئی عزاداری کرن؟

اگر نہ یہ پتہ اسہ ء آسہ  ،ائس چھئی پنن وقت ضایع کران ۔کیاہ امام حسین علیہ السلامس پیٹھ چھا ائس امہ باپت ودان کہ سوء کیازء گو شہید؟بلکہ اسہ گژھہ یوس زن یہ قرآن صبح قیامتس تان چھوء اکھ معجزء ،یہ معجزء چھوء یہوے امام حسین  علیہ السلام ۔ یتھی کئن ہر زمانس منز قرآن چھوء پنن نو تفسیر ونان ، نو کتھ وژھہ ناوان ، تعجب چھئی کران کہ از کیاہ چھوء قرآن یہ ونان ۔ امام حسین علیہ السلام سندء زندگی منز یوتا ہ گہرائی سان مطالعہ چھئي کران ،ہر زمانس منز چھئی نو کتھ میلان ۔کیازء کہ یمی چھئي مُکَمِل اکھ اکس سند۔

امام حسین علیہ السلامس متعلق آنحضرت صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم سند حدیث چھوء ہر زمانس منز پننہ نین الفاظن منز یہ وضاحت بیان کران کہ کیازء وون امام حسین علیہ السلامس متعلق  آنحضرت صلی اللہ علیہ وآلہ وسلمن کہ:" بہء چھوس امہ سندء ساتھی یہ چھوء میانہ ساتھی"۔

اتھ منز یوس زن توت تان واتنہ خاطرء اسہء چھئي ضرورت کنی اجتماع ، سانہ خاطرء گژھہ آسن امام حسین علیہ السلام اسہ منز موٹھ پادء کرنک سبب،یلہء زن ائس عملی طور پر وچھان چھئی کہ تہء چھنہ کینہ ،امام حسین چھوء اسہ پننہ نس پننہ نس پاٹک پنن پنن امام حسین ، پننہ نس پننہ نس امام بارک پنن پنن امام حسین ، پننہ نس پننہ نس دایرک پنن پنن امام حسین ، یہ کوس امام حسین چھوء؟

امام جعفر صادق علیہ السلام فرماوان؛"اسْتَكْثِرُوا مِنَ الْإِخْوَانِ فَإِنَّ لِكُلِّ مُؤْمِنٍ دَعْوَةً مُسْتَجَابَةً وَ قَالَ اسْتَكْثِرُوا مِنَ الْإِخْوَانِ فَإِنَّ لِكُلِّ مُؤْمِنٍ شَفَاعَةً" وَ قَالَ ؛ أکثِرُوا مِن مُؤاخَاةِ المُؤمِنِین فَاِنَ لَهُم عِندَاللهِ یداً یکافئهم بِهَا یَومَ القِیامَه"

امام جعفر صادق علیہ السلام فرماوان؛مؤمن باین پزء پننہ نس اجتماعس منز ہوریر کرن،یوتاہ زیادء ہوریر کرن [تیوتاہ پزکھ]،کیازء پزیکھ زیادء کھوتہ زیادء ہوریر کرن؟

[کیازء کہ]ہر کانسہ مؤمن ء سندء خاطرء چھوء اکھ دعا قبول گژھنک ضمانت۔

مزید فرمووکھ؛ پننین جماعتن منز بڑایوو اکثریت ، جماعت ، زیادء کھوتہ زیادء سمیو۔ کیازء؟

[کیازء کہ]ہر اکس مؤمنس چھو اکھ شفاعت کرنچ ضمانت ۔

مزید فرمووکھ؛پننین جماعتن منز ،مؤمنین باین منز جماعتس منز کریو ہوریر۔[کیازء؟]

کیازء کہ تہند یوتھ اجتماع گژھہ [بوڈ]،تہندس اجتماعس منز چھوء خدای توہیہ اکھ حق دوان ،سوء چھوء یہ کہ تمیوک جزای دیوو توہیہ روز قیامتک دوہ ۔

امہ ساتھی کیاہ چھئي ائس ہیچھان؟

سون اجتماع گوژھ آسن اکوی،سانی دینی کتھ گژھ آسن اکائي،مگر چھوء کیاہ ؟

کیازء چھنہ ؟

گو یہ اسہ اہل بیت ونان چھئی ،ائس چھنہ تتھ پیٹھ عمل کران کہین ،یہ اسہ قرآن چھوء ونان آئس چھنہ تتھ پیٹھ عمل کران کہین ،یمچ اسہ رسول رحمتن اسہ تلقین کئرمژ چھئي ائس چھنہ تتھ پیٹھ عمل کران کہین ، بلکہ ائس چھئي تی کران یہ پانس چھوء خوش کران ۔

یلہ زن یہ حقیقت چھئي ائس کمہ امیدء چھئی کہ ائس ودو ، اسہ میلہ شفاعت ، اسہ میلہ بہشت ۔ کمہ معیارء ؟

امام حسین علیہ السلامن دیوت اسہ امیہ قرآنک محبت تروون سانین دلن منز ،اسہ تھوو سوء محبت طاقچس پیٹھ ،اسہ کوڈ نو محبت ، امہ منزء ژھونڈ ، کئش کئش کوڈ نہ اتہء چھوء بدل دلیل ، گو رشتہ ۔

امام حسین علیہ السلام وچھان کہ اسلام ووت تتھ مرحلس پیٹھ کہ وین یوس زن سانہ خاطرء مثالی کردار گوژھ آسن ،امس کن وچھت بڑاو ہو ائس پنن کردار،زمان آو تیوتھ کہ یزید بن معاویہ لوکو کور قبول کہ یہ چھوء جانشین رسول اللہ صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم ۔ لوکھ آیہ یہ مان ناونہ  یہ کتھ کہ توہی دپیو کہ یزید بن معاویہ چھوء امیرالمومنین ۔ امام حسین علیہ السلامن دوپ:" وَ عَلَى الاِسْلامِ، السَّلامُ اِذْ قَدْ بُلِیَتِ الاُمَّهُ بِراع مِثْلَ یَزِیدَ"یتھس اسلامس گو فاتحہ پرن،یمہ اسلامک سربراہ  وین یزید بن معاویہ آسہ ۔اگر نہ میانی کتھ بہوو ، بہء ہاوو یہ چھا رحمتک پیکر کنہ یہ چھوء زحمتک پیکر۔

وین تراوو ائس پانس کن نظر ۔ امام حسینن کتھہ کئن دیوت ہاوتھ امسنز ،یزید سنز عبا کتھہ کئن ژٹن، یزید سند دستار کتھہ کئن ژٹن،یزید کتھہ کئن کھکرء وولن۔ ائس کیاہ کران ؟

ائس چھئی اگر زن ہیندس نش گژھان چھئي سودا ہینہءسوء چھوء معقول قیمتس منز اسہ سوء چیز دوان مگر یمہ ساعتہ ائس حسینی یس نش گژھان چھئي سوء چھوء اکھ خراب دوان بیہ ہومہء سندء کھوتہ دروگ دوان۔

وین کیاء چھئي ائس امام حسینن ہیچھہ ناومت ؟

امے برکتہ چھا ائس بہشتک تہء کھڈء پئنچ۔ یمس شیعس خاطرء گور سند پٹہ چھوکھ تمس لوگمت نہ چھی ژء دچھن کن وچھن نہ چھی ژء کھوور کن وچھن ، منز باگ تھاو سڑکہ کن نظر ، دچھن کن چھی خانہ کعبہ کھوور کن چھی مسجدء کوفہ چیون امام زاو تہء مسجدء منز  تہ شہادت تہ لبن مسجدء منز۔یعنی  شیعہ یعنی مسجد مسجد مسجد مسجدمسجد مسجد مسجد...۔کئژاہ چھئي سانہ مسجدء آباد ؟کئتیاہ چھئی ائس نماز جماعژ ہند عاشق ؟

شب عاشورا یمہ ساعتہ تازء دم فوج چھوء وارد سپدان میدان ،امہ پتہ چھوء حضرت عباسس سوزان امام حسین علیہ السلام یہ وچھی یہ کیاہ دلیل چھئی۔یمہ ساعتہ پیغام ہیتھ چھئي یوان ، امام حسین علیہ السلام چھوء دپان جناب عباس علیہ السلامس ؛ تلہ سا ژء گژھ واپس ژء وچھ اگر ممکن گژھی یمہ شبچ ہیکھ مہلت ۔(مہلت کمہ باپت چھئي میہ ضرورت؟)

نمازء باپت۔تلاوت قرآن باپت ۔دعا باپت۔

مگر ائس چھئي کران امام حسین نس ناوس پیٹھ عزاداری ، نمازء نہ اعتنا کرانی ۔راتس دمو ائس بوتھہ بوتھہ کمہ باپت ؟

نماز صبح گژھہ قضا!

دوہس کووٹھی پھوٹہ راوو مگر[نماز] پشین دگر گژھہ قضا۔

یمی کووٹھی کمہ باپت پھوٹہ راووی؟

تلہ امام حسینن کمہ باپت کور کہ میہ  منز گوژھ جرئت  گژھن  خدای سندء کریکہ انکار کرن"حَيَّ عَلَى خَيْرِ الْعَمَلِ"یعنی ہر بہترین عملہء کھوتہ یو س زن عملاہ چھئي سوء چھئي نماز۔مگر بہء چھوس نہ تمیوک خریدار کینہ ۔کئمی چیزن کئر ائس[یتھی] ،یمی سانی اصول کیازء بدلاین؟۔

اسہ امام جعفر صادق علیہ السلام دپان ؛ توہی روزیو [یکہ وٹہ]مؤمن جمع گژھن امچ قدر زانیو ،یمہ ساعتہ سوء اجتماع تیوتھ آسہ کہ پتہ آسہ کہ ہر کانسہ آسہء یہوے امید کہ میہ چھوء فلانی مشکل مگر اگر بہء مرثیہ پرنہ گژھہ میہ نیرء سوء حاجت ضرور۔اگر بہء نمازء منز گژھہ ء میہ نیرء سوء حاجت ضرور۔اگر بہء اتھ دایرس منز ساتھی پکہ میہ نیرء سوء حاجت ضرور۔ مگر کیازء چھنہ نیران؟

امام جعفر صادق علیہ السلام فرماوان؛ فی نفرس چھوء اکھ اکھ حاجت، سوء گژھیو روا۔کیازء چھنہ روا گژھان؟

[کیازءکہ]ائس ما چھئی تمہ باپت آسان آمت،ائس ما چھئی "قُربَةً إلی الله"باپت آسان [کینہ]،ائس چھئی آسان پننہ نس ذاکرس پننہ نس عالمس ،پننہ نس امام بارے ، پننہ مسجدء ،پنن ، پنن ، پنن... خدا ، خدا...چھنہ کنے جایہ ۔ "قُربَةً إلی الله" خاطرء چھنہ اسہ  آسان  کہین، اسہ چھوء" قُربَةً إلی پاٹ" ، "قُربَةً إلی محلہ"، "قُربَةً إلی گام "کینہ تہء، پنن اکھ ذاتی غرض کہ میہ گوژھ تتھ وزن کھسن ،میانس دینس وزن کھسہ نہ کھسہ میہ چھنہ ضرورت کہین ، میانن ثوابن ہندس پوترس وزن کھسہ نہ کھسہ میہ چھنہ تمیوک غم کہین ، میانس اتھ پاٹس یا اتھ ناوس یا اتھ ادارس گژھہ وزن کھسن۔یہ چھا حاصل مصدر امہ عزاداری ہند یہ اسہ ہیوچھ؟یوس زن دپان،یہ چھئی سوء حرارت  دلن منز پادء کران یوس نہ زہین ژھتہ گژھہ ۔ائس چھا یی ہیچھان ؟

یلہ زن اسہ گوژھ ایمان بڑن کہ بہء چھوس تیلہء عزادار اگر نہ میہ نماز ترک چھئی گژھان کینہ۔اگر بہء ژورء ژورء چھوس،گناہ کرنس چھوم موقعہ ،کانسے لگہ نہ پے مگر بہء چھوس مانان کہ نہ کانہہ نفر چھوء میہ وچھان سوء گو خدا ۔

قرآن اگر اسہ کانہ مثال چھوء ونان ، حضرت یوسف سند واقعہ چھوء قرآنس منز کمہ باپت؟

[امہ باپت کہ]جوانن خاطرء ، تمس جوانس خاطرء یہ ضمانت کہ اگر ژء (یہ نہ کہ مثلاًبہء چھوس ونہ کینس 40 ووہور 50 ووہور سوء چھوء میانہ خاطرء ؟ نہ میانہ خاطرء چھنہ حضرت یوسف سنز واقعہ  مثال کہین )[بلکہ]یوس لڑکہ [لڑکی]شباب کس اوجس پیٹھ آسہ ، تازء تازء بالغ آسہ پدیوو مت ۔امس چھوء میلان گناہ کرنس موقعہ ، کانسے لگہ نہ پے،یا کور چھئی یہ چھئي پنہ نس شبابس منز امس چھوء گناہ کرنس موقعہ میلان کانسے لگہ نہ پتہ مگر امہ باوجود کہ امس چھوء تران فکرء کہ بہء اگر گناہ کرء کانسے لگنہ پتہ مگر خدایس لگہ پتہ ۔ یہ سورہ یوسف چھوء سوئی اطمنان دوان کوری!  لڑکہ!اگر ژء یہ گناہ میانہ احترامہ ژء ترک کورت ، ژء ووچھوت حضرت یوسف کوت واتنوو میہ ، بیہ اوسم نبی   بنوو مت ، ژء چھوک نہ میہ نبی تہء بنوو مت ژء ووچھ زء ، میہ پیٹھ کرء زء یقین بہء کوس درجہ دمے ژء ۔ یہ چھوء تمہ باپت۔

امام حسین علیہ السلام چھوء بیہ اندازء اسہ یہوے کتھ [سمجھاوان]1374 وری گئي ،یہ معجزء چھوء یی یہ چھوء سانین دلن ونہ تہ تتھوی تازہ  زن چھوء ازیوک واقعہ، راتک واقعہ۔کیازء کہ تمی چھوء خدایہ سندء باپت کورمت ۔

گو عزاداری ، مرثیہ ، مجلسہ ، نوحہ یہ چھوء اسہ خدائی بناوان ،یقین کرء ناوان ۔ اگر کنہ جایہ بظاہر اتھ باسہ نہ خریداری میانی کتھ چھنہ بوزان کہین ، مگر یہ چھوء اطمنان پادء گژھان کہ نہ یمس بہء ووچھن گوژھس ،سوء چھوء میہ وچھان ۔یوس میہ امیوک اجر گژھہ دیون سوء چھوم دوان ، امام حسین چھوم تمیوک شاہد۔یلہء نہ امام حسینن حرکت ضایعہ گئي ، یلہ نہ امام حسین ہندین یارن ہئنز حرکت ضایعہ گئي ، عمل ضایعہ گئي میانی کتہ گژھہ؟

گو اسہ گوژھ گژھن یمن چیزن منز اضافہ ۔ اسہ گوژھ آسن یی کہ خدایا بہء چھوس گسان اتھ مجلسہء منز میہ دی زء تیوتھ بندء بننہ نک توفیق کہ یمہ ساعتہ بہء مجلسہ منزء شریک گژھہ لوکھ منگن حاجت بہ تہء کرء تتھ ساتھی آمین تمن سارنی گوژھ حاجت میلن ، کیازء کہ میہ چھوء خداین وونموت کہ میہ چھئي اکھ  ژء  حاجت تھوومت۔میہ چھوء اکھ مشکل اجازت [حل کرنک]کہ چیانہ آمین کرنہ ساتھی چیانہ منگنہ ساتھی گژھہ سوء [حاجت روا]آیا ائس چھا تتھ؟

ائس آسو تیلہء تیتھ یلہ یہ سانی حرکت آسہ  "قُربَةً إلی الله"یہ اجتماع یمہ ساعتہ (بار بار کرء بہء یہ ہر جایہ وننہ نچ کوش کہ )سانہ سارے لڑایہ گژھہ ختم گژھنہ دینہء کس ناوس پیٹھ ۔ ائس کرو ہر مئدانس پیٹھ، ہر موضوعس پیٹھ ، ہر مسلس پیٹھ کرو ائس لڑایہ [اختلاف]مگر نہ اکس موضوعس پیٹھ ، سوء گو دین۔

نمازء جماعتس پیٹھ گژھنہ اصلا ً دویم کتھی آسن ، کنی کریکھ"حَيَّ عَلَى خَيْرِ الْعَمَلِ"،"حَيَّ عَلَى خَيْرِ الْعَمَلِ"سیدے ساری نمازء،اکے نماز جماعت۔

مجلس ، مرثیہ چھئي اکئے مرثی،ناو امام حسینن ۔ علم چھئی اکئے علم ساری سیدیوو۔اگر اسہ پئے آسہ کہ سون معاملہ چھوء خدا صوبس ساتھی ،اسہء منزء گسہء ہوریر ،سوء اتحاد بڑء ،سوء اتفاق بڑء،سون دعا گژھہ مستجاب ،سانی مشکل گژھن حل۔

اگر نہ ائس یہ کرو ، یہ زن گسان چھوء [تی روزء گسان]سانی مشکل چھنہ حل گژھان کہین۔سانی حاجت چھنہ روا گژھان کہین۔

یہ چھنہ خدا سون حاجت نہ روا کران کہین[ بلکہ]اسی چھنہ دوان پنن مشکل حل  گژھنہ،اسی چھنہ دوان پنن حاجت قبول گژھنہ ۔   کیازء کہ ہرچیزء خاطرء خدا صوبن  اصول تھوومت ۔اگر ائس اکہ طرفہء کتھ کرو کہ یہ اوسا تیلہءٹھیکہ اہل بیت تنی یمی بنائي خدائی صوبن  پانے رئت،ائس تہ ہے آسہ ہو بنائمت ائس تہ آسہ ہو[تتھ]مگر یہوے امام حسین  چھوء کربلاہس منز ونان اسہ یہ نا چھنہ مفتی یہ منصب کہین اتھ "قُربَةً إلی الله"ہس پیٹھ چھوء اسہ عملی طور پیٹھ کئژاہ قربانی دژمژ۔ یعنی عملا چھئی تمی سوء اچھو وچھان یوس خدا صوب ائچھو ساتھی یی نہ وچھہء نہ ،مگر تمی چھئی دوان اسہ ثابت کرتھ کہ ائس چھئی کلہء کیو ائچھو وچھان خدا ۔یہ گو ایمان۔

کیا ائس چھا تتھ مرحلس منز ائس چھئن خدا پرزء ناوان تتھ حدس تان ،تمہ اعتبارء کرو تمسنز بندگی ۔کوتاہی چھئي اسہء منز۔یہ کوتاہی گئژھ اسہ بالخصوص امام حسین علیہ السلام سنزء مجلسہء ساتھی دور گژھن ۔مگر کیازء چھنہ گژھان؟ ۔

 یہ چھوء پانس سونچن کہ پنن یوس تہ کانہہ اسہ ذمہ دار چھوء ،پنن عالم چھوء ، پنن ذاکر چھوء ، پنن محلک زیوٹھ چھوء ، پنن گھرک زیوٹھ چھوء،پننہ علاقک زیوٹھ چھوء یہ چھوء زیر سوال انن ۔ امس چھوء پرژھن ۔

اسلام چھوء سوء دین یوس زن خود خدایس انکار کرنک اجازت چھوء دوان ۔بہء اگر وتھہ [ونہء]خدا چھنہ کہین۔توہیہ چھوس نہ بہء کنہ کنہ کرن کہین کہ ژء کیاہ چھوک ونان کہ خدا چھنہ کہین ۔[بلکہ توہیہ چھوء میہ ونن]دء سا ثابت کرتھ خدا چھنہ کہین۔ائس تہ مانووی۔

پتہ گژھیا  میہ تگن ثابت تہ کرن کہ خدا چھنہ کہین ،میانہ ژھوروی وننہ یوت  ما چلہ  کہین۔اگر میہ یوتاہ جرئت کور بہ چھوس  دپان کہ نہ سا خدا چھنہ کہین یہ چھوء سوری ترئتھ۔دپیوم دسا ثابت کرتھ۔وین یلہ بہء ثابت ہیکنہ کرتھ کہین ، ژء چھوک ونان خدا چھوء ،بہء دپے دءسا ثابت کرتھ ۔ژء چھئی ثابت دیون کرت۔

یلہ اسہ خدای سندس آسنس نہ آسنس تان اجازت چھوء سوال کرنس توہی کیازء پرءژھیووی میہ ، عبدالحسین ژء کتھ کئن وننتھ یہ کتھ۔ژء کیازء کران یہ ۔ میہ چھوء جواب دیون۔

مالس پننہ نس ، ماجہء پننہ نہ،بائیس پننہ نس ، قوم کس زیٹھس،محلہ کس ژیٹھس،موقدمس۔ یتھے کئن یمی زن [باقی ذمہ دار چھئي]ایس پی ، ایس پی چھوء ،ڈی سی چھوء،منسٹر چھوء...اگرنہ اسہ منز یہ جرئت گژھہ کہ ائس پرئژھو ،تلیہ چھئي آئس خبر کمہ وادی ہئند لوکھ ، دعوی چھئي کران اسلامک،بالخصوص اہل بیتن ہئند مانن والی ۔

دپان ائس [معصومین](ائمہ معصومین ہند قول چھوء متفق علیہ)"نَحْنُ اَبْناءُ الدَّلیلِ"ائس چھئی دلیلہء ہند نوکر۔کم ونان ائمہ معصومین (علیہم السلام )ژء دء دلیل بہتر پہمت بہ مانہ چیانی کتھ ۔چھیہ دلیل ان۔"نَحْنُ اَبْناءُ الدَّلیلِ"یعنی ژء چھئی وجہ ونن ،علت ونن، سبب ونن۔

اگر کانہہ جوان کرء [اعتراض]کہ ہے دربہ در چھووی کئرمت مرثیہ پئر پئر !یہ ووت نہ مارن کہین کہ ژء کتھہ کئن کورت جرئت  ژء چھوکھ ونان مرثین خلاف ۔وونس جواب دس کیازء۔

[بیاکھ ونہ]ہے دوہس چھوو نوحہ پران کیازء؟۔یہ ووت نہ مارن کینہ ، امس چھوء جواب دیون کیازء۔

اگر کران چھئي کیازء چھئي کران ۔

اگر ائس نماز چھئی پران کیازء چھئي پران ۔

ہر کنہ کتھہ گژھہ اسہ نش دلیل آسن ۔

اصول دین نس منز چھئی تمے انسان گژھہ ہر کانہہ [تتھ منز]مجتہد پانے آسن ۔فروع دین نس منز چھئس تقلید کرن۔کم سے کم اکھ زء دلیلہ گژھن تمس پانس تہء پے آسن کہ خدا ہے چھوء چھوء کیازء ، نبی ہے چھوء چھوء کیازء ، قرآن ہے چھوء چھوء کیازء۔قیامت ہے چھئی چھئی کیازء۔مگر فروعیاتن منز کیازء تمی چھئي ریز مسائل تتھ منز چھوس اکس ماہر ء سنز ضرورت یوس زن اسلام شناس آسہ تمسنز تقلید کرن۔

غرض یوس زن امام حسین علیہ السلام اسہ کہوٹ چھئی [تھاوت] قرآن چھوء اکہ طرفہ ونان:<وَنُنَزِّلُ مِنَ الْقُرْآنِ مَا هُوَ شِفَاءٌ>(الإسراء/82)یہ چھوء شفاءقرآن۔ اسہ نشہ چھنہ امام حسین شفاء یوت بلکہ تمسنزء قبرء ہئنز مژ تان چھئي شفاء ، تربت کربلا چھوء ایمانن  ائس تتھ [باعث]شفاء مانان تتھ"فِی طِینِ قَبْرِ الْحُسَیْنِ (علیه السلام) شِفَاءٌ "یلہ امام حسین علیہ السلام سندء قبرء ہئنز مژ تان چھئی شفاء تمسنز ذکر آسیا بے شفاء؟ تمسنز عزاداری آسیا بے شفاء؟

وین یہ عزاداری کیازء چھئي کران ؟بیہ ونہ سوء کتھ یوس زن بہء ہر جایہ کوشش چھوس کران وننہ نچ کہ سانہ عزاداری چھئي آسان دویہ قسمچہ اکھ یوس زن ائس امام بارس منز کران چھئي ، گھرس منز کران چھئي ، ٹینٹس تل کران چھئی سوء چھئي عزادار آسانی سمجھنہ خاطرء، یوس زن ائس علم چھئ کڑان ، سڑکہ پیٹھ چھئي نیران ،جلسہ ، جلوس چھئي کڑان یہ چھوء آسان سمجھاونہ خاطرء ۔لذا یمہ ساعتہ ائس گھرس منز عزاداری کروامیوک معیار آسہ اکھ اتین چھوء سو فیصد اسہ ، پورء توجہ اتھ کن کرن کہ میہ گوژھ ترن فکرء کہ اگر میہ عزاداری چھئي کرن تہء کیازء چھئم کرن ۔ چھئي کیاہ یہ دلیل۔تمے باپت چھئي یہ ضرورت کہ یمہ ساعتہ میہ پانس تور فکرء بہء ہیکہ ادء ونتھ سڑکہ پیٹھ یمس نہ پتہ چھئي یہ عزاداری کمہ باپت چھوس بہء کرا ن ۔

عزاداری چھئی امہ باپت کران کہ قرآن آو قرآنکس ناوس پیٹھ پوژء پریون کرنہ ۔رسول رحمت آو رسول رحمت سندس ناوس پیٹھ پوژء پریون کرنہ ۔ودان چھئي اتھ پیٹھ۔

امام حسین علیہ السلام چھوء ذبح یوان امہ موجب یوان کرنہ کہ یہ چھئي اسلام ۔ ودان چھئي اتھ پیٹھ۔اللہ اکبر کرتھ چھئي کمسند سر یوان قلم کرنہ یمس رسول رحمت ونان بہء چھوس امسندیے ساتھی ۔یمی چھئی ونان رسول اللہ ہن وونن نعوذباللہ اور ونن اسلام چھوء یہ ۔

ابوسفیانن دین کورکھ حاکم ،بدلووکھ اسلام کس ناوس پیٹھ ۔ اسلئے اس چھئي اتھ پیٹھ ودان کہ یہ ابو سفیانن کریو الگ اسلام کس دینس نشہ۔کیازءکہ مسلمان چھوء ۔توہی ووچھوو آنحضرت صلی اللہ علیہ وآلہ وسلمس پتہ اتھ مختصر وقتہ پتہ روزء مباہلہ لوک دوہ چھوء رسول رحمت کھونہ کیت کڑان امس امام حسینس ،کمن مقابلہ ؟غئر مسلمانن مقابلہ۔ عیسائی ین مقابلہ ۔ تتہ ائس لڑائی کہ توہی تہ چھووی اہل کتاب ، ائس تہء چھئي اہل کتاب مگر توہیہ بدلاووی مگر اسہ بدلاوو نہ کینہ ،مسلمانو بدلاوونہ کینہ ۔وین چھوء یہ ونن کہ دون اہل کتابن منز پئز زیور کوس چھوء ۔ رسول رحمت دراو ، گھرک گھرے ہیتھ،دینک دینی ہیتھ۔اسلامک اسلامی ہیتھ۔پانہ، حسنین، فاطمہ الزہراء سلام اللہ علیہا تہ علی مرتضی یمے پانژ درائے مئدان ۔ کتھ مقابلہ؟

 اہل کتابن مقابلہ کہ تمو چھوء تحریف کئرمژ خدای سنز کتاب ،اسہ چھنہ کئرمژ کہین۔

مگر پتہ ووت 40 وہئر تیوتھ مرحلہ کہ وین پیو یوس زن روزء مباہلس منز رسول رحمتس کوچھہ منز اوس یعنی حسین بن علی تمس پیو مسلماننی مقابلہ یون کہ وین صحیح مسلمان کوس چھوء ۔

یہ صحیح مسلمان کوس چھوء ، یہ ثابت کرنہ خاطرء کیاہ آو امام حسینس پیش امہ باپت چھئی عزاداری کران۔اللہ اکبر۔

مسلمان چھئي قیافیہ حیات تنگ کرتھ آل رسولن پیٹھ ۔

یمہ ساعتہ میدان کربلاہس منز اکہ اکہ امام حسین علیہ السلام سند یار و انصار آئی شہید کرنہ ،امہ پتہ چھوء امام حسین علیہ السلام تنہ تنہا جہاد کران ۔امام حسین علیہ السلام سندس جہاد س دوران چھوء مویاہ قرار ہوان امام حسین علیہ السلام یلہ زن ووچھان چھوء یمی اشقیاء چھئي ہیوان وین خیمہ گاہن پیٹھ حملہ کرن ۔اللہ اکبر۔

یمہ ساعتہ امام حسین علیہ السلام یہ منظر وچھان فریاد دوان : وَیْحَکُمْ یا شیعَهَ آلِ اَبی سُفْیانَ!" ۔ آل ابو سفیانیو شیعو!واویلا آسن توہیہ پیٹھ "اِنْ لَمْ یَکُنْ لَکُمْ دینٌ"،" وَ کُنْتُمْ لا تَخافُونَ الْمَعادَ فَکُونُوا اَحْراراً فی دُنْیاکُمْ هذِهِ اگر نہ توہیہ دین چھووی مگر توتہء غئرت ہایووی۔

امام حسین علیہ السلام چھوء پننہ ہر اکہ کلمہ ساتھی یہندء کردارچ پردہ گشائی کران کہ کم چھئي کتھ لبادس منز آمت ۔

یمہ ساعتہ امام حسین علیہ السلامن یمن امہ قسمچ ذلت کئر ،غئرت آکھ وین عرب غئرت مونکھ امام حسین علیہ السلام یئتس کالس پانہ میدانس چھوء خیمہ گاہن پیٹھ گژھنہ حملہ کہین ۔وین چھوء امام حسین علیہ السلام تنہ تنہا جہاد کران ، اتھ درمیان روکیے : "وَ قَدْ ضَعُفَ عَنِ الْقِتَالِ، فبَینَما هُو واقِفٌ"یمہ ساعتہ امام حسین علیہ السلام جہاد کران کران تھوک وین مویاہ ہیژیون قرار ہیون ،ٹھہریو ،اتھی درمیان اکھ شقی ین " إذْ أتاهُ حَجَرٌ، فَوقَعَ فی جِبهَتِه"ائک شقی ین توجی کنیاہ لگاون جبین مبارکس خون گو جاری " فَأَخَذَ الثَّوْبَ لِیَمْسَحَ الدَّمَ، عَنْ جَبْهَتِهِ"امام حسین علیہ السلامن یوژھ پننہ پلوء ساتھی یہ خون پنہ نیو ائچھو پیٹھہ صاف کرن ۔آہ واویلا ۔" فَأَتاهُ سَهْمُ مَسْمُومُ لَهُ ثَلاثَ شُعَبٍ"ائتھی اثناہس منز بیہ شقی ین لووی زہرء بورت تروشاکل تیر یوس زن قلب مبارک امام حسینس پیوست سپد۔" فَوَقَعَ عَلی قَلْبِهِ، فَقالَ عَلَیهِ الْسلام۔ امامن دیوت فریاد: بِسْمِ اللَّه وَ بِاللَّهِ وَ عَلی مِلَّةِ رَسُولِ اللَّهِ" خدایہ سندء ناوء ساتھی ،خدایہ سندء باپت بہ چھوس رسولخدای سندس دینس تہ آئين نس پیٹھ ۔ اللہ اکبر۔

علی مرتضی علیہ السلام دیانووکھ یمے فریاد، کہ علی مرتضی علیہ السلامس دوپوکھ کافر کوفس منز کورکھ شہید تورء دیوت جواب امام یہوے بِسْمِ اللَّه وَ بِاللَّهِ وَ عَلی مِلَّةِ رَسُولِ اللَّهِ" ۔ امام حسین علیہ السلامس تہ چھئی کافر زانت یتھہ کئن حملہ یوان کرنہ۔آہ واویلا ۔

یمہ ساعتہ قلب مبارکس منز یہ تروشاکل نیزء پیوست گو۔امام حسین علیہ السلامن تول کلہ تھود ۔"ثُمَّ رَفَعَ رَأُسَهُ اِلَی السَّماءِ"آسمانس کن کئرن نظر " وَ قالَ: وونن أَللَّهُمَّ إِنَّک تَعْلَمُ أَنَّهُمْ یَقْتُلُوَن رَجُلاً لَیْسَ عَلی وَجْهِ الاْرْضِ إِبْنُ بِنْتِ نَبِیٍّ غَیْرُهُ " معبودا !پانہ چھوکھ گواہ تمس چھئي یژھان قتل کرن یوس چیانس نبی سنزء کورء ہند نیچو چھوء ، تمس سوا چھنہ کانہہ یتھی روی زمینس پیٹھ[یہ دعوی کرن وول]اللہ اکبر۔مظلومیت ووچھووی اسلامچ ۔اسلامچ مظلومیت ووچھو حسینس چھوء پیوان امیوک جرمانہ دیون کہ سوء چھوء رسولخدای سند جانشین روی زمینس پیٹھ۔امہ پتہ کیاہ چھوء امام حسین علیہ السلام کران " ثُمَّ أَخَذَ السَّهْمَ"وین چھوء یہ تیر ، تروشاکل تیر اتھ تھپھ کران ۔ نبر کتھہ کئن کڑء ۔ کیاہ حال بنہ اگر زن بوتھہ کن نبر کڑء "" ثُمَّ أَخَذَ السَّهْمَ، فَأَخْرَجَهُ مِنُ وَراءِ ظَهْرِهِ، آہ واویلا ، امام حسین چھنہ سینہ کن ، بوتھہ کن یہ تیر ہیکان نبر کڑتھ،کیاہ چھوء کران کمبرء کن چھوء یہ تیر نبر کڑان۔ " جَزَاکُم رَبُکُم"

یمہ ساعتہ یہ تیر سینہ کن ہیوکن نہ کڑتھ پشتہ کن کوڈن یہ تیر۔

راوی لیکھان:"فَانْبَعَثَ الدَّمُ کَأَنَّهُ میزابُ" زن گئی خونک ناگ جاری ۔آہ واویلا۔ آہ واویلا۔

راوی لیکھان : حتى جاء رجل "اتھ حالس منز ،ونتہ کورکھ نہ ،ونتہ آکھ نہ تسلی کہین " جاء رجل من ((كندة)) یقال له مالك بن النسر- لعنه الله علیه"نفرا دراو یمس ناو اوس مالک بن نسر سوء معلون یمہ ساعتہ یلہ برونہہ کن آو ، "فشتم الحسین"امام حسین علیہ السلامس بیوٹھ ناسزا وننہ ۔ آن واویلا۔یہ ملعون امہ حالہ رسول رحمت سُند یہ دُرء دانہ وچھا ن وچھان کیاہ چھوء کران ،امس چھوء ناسزا ونان ،حسینس چھوء ناسزا ونان ،ائتھی پیٹھ ، ناسزا وننہ نس پیٹھ چھنہ کفایت کران کہین،بلکہ یتھہ کئن ابن ملجم من  سر مبارک علی مرتضی تتھ شقاف کور امے آن چھوء  " ضربه على راءسه الشریف بالسیف"شمشیرء ساتھی سرمبارک امام حسین نس پیٹھ وار کران " فقطع البرنس و وصل السیف الى راءسه"آہ واویلا۔یہ تلوار چھئی  یوس زن امامس "بُرنُس"چھوء اتھ پیٹھ چھوء اتھ پیٹھ چھوء عمامہ گنڈت تہء یہ ژٹ ژٹ چھوء امام سندس سرس منز پیوست گژھان۔" و امتلاء البرنس دما "خون چھوء جاری گژھان ،سر چھوء شقاف گژھان ۔

راوی لیکھان ؛"قال الراوى : فاستدعى الحسین (علیه السلام) بخرقة ، فشد بها راءسه"امام حسین کیاہ کور ،دجاہ رٹن یہء گنڈن ڈیکس ،ڈیکس گنڈن، سرمبارکس[ گنڈن]امہ پتہ لوگن "بُرنُس" بیاک کلاہ لائجن اتھ پیٹھ گونڈن وین عمامہ  ۔اللہ اکبر۔اللہ اکبر۔

اشقیاء چھنہ ونہ اتھ پیٹھ کفایت کران ،امام حسین علیہ السلام سندس حالس کن خیمہ گاہ منزء چھوء اکھ بچہ نیران "فخرج عبد الله بن الحسن بن على "حسن مجتبی سند نور عین عبداللہ یہ معصوم بچہ چھنہ برداشت کران امام حسین علیہ السلام سنز حالت ، دوان دوان چھوء نیران ۔"هو غلام لم یراهق - من عند النساء"یمس زن بی بہءیلہء آئس نہ تراوان ،امس بچس آئس نہ دوان قتل گاہ کن گژھنہ "فشد حتى وقف الى جنب الحسین (علیه السلام)"دوان دوان گو یوتان یژھن بہء واتہء حسینس نش "فلحقته زینب"زینب سپدیای حائل ،یژھیون روکاون یہ ۔ عبداللہ یژھیون روکاون ،مگر امی بچن مون نہ ۔اللہ اکبر۔یہ معصوم ، یہ عبداللہ چھوء فریاد ژھٹان :" و الله لا اءفارق عمى !"خدا چھوم گواہ بہء تراون نہ یہ مظلوم امام پنن [تنہا]آہ واویلا۔اتھ اثناءہس منز چھوء بیاکھ شقیاہ یمس زن "ابجر بن کعب"یا بعضے مقتلو چھوء لیوکھمت "حرملة بن الكاهل"چھوء امام حسین علیہ السلامس پیٹھ شمشیرء ساتھی حملہ کران ، سوء شقی چھوء شمشیرء ساتھی حملہ کران یورء چھوء یہ معصوم عبداللہ امہ حملہ لک یژھان دفاع کرن ۔ یمہ ساعتہ جناب عبداللہ چھوء امیوک دفاع کران ۔اللہ اکبر۔"فقال له الغلام"امی کیاہ وون امس خبیثس :" ویلك یابن الخبیثة اءتقتل عمى ؟!"۔آہ واویلا۔وای آئس نے خبیث زادہ کیاہ ژء مارء ہنہ میون امام ۔سوء شقی چھوء امیوک اعتنا کرنہ بغئر امام حسینس پیٹھ حملہ کران "فضربه بالسیف فاتقاه الغلام بیده"یہ شقی چھوء شمشیرء ساتھی حملہ کران ،عبداللہ چھوء سپر بنان،یہ شمشیرء ہنز دار چھئي حمل سپدان عبداللہ سندء نرء پیٹھ نر چھئي اویزان گژھا ن مسلس ۔حضرت عبداللہ سنز نر اویزان گژھان مسلس۔آہ واویلا۔ اما م حسین علیہ السلام امس امام حسن مجتبی سندس عزیزس پننہ نس سینس ساتھی رٹان، پننہ نس سینس ساتھی رٹان ۔امام حسین علیہ السلام فرماوان ؛" یَا ابنَ اَخِی اِصبِر عَلَى مَا نَزَلَ بِكَ وَ احْتَسِبْ فِي ذَلِكَ الْخَيْرَ فَإِنَّ اللَّهَ يُلْحِقُكَ بِآبَائِكَ الصَّالِحِينَ" میانہ عزیزء ،لختء جگرء صبر کر ،صبر کر کیازکہ ژء گوکھ ملحق وین پننہ نین صالحینن[ساتھی]آہ واویلا ۔ائتھی پیٹھ کورکھ نہ اکتفا ، حرملن لووی بیاکھ زہرء بورت کاناہ سوء گو پیوست جناب عبداللہ سندس حلقس منزتہ امام حسین سندس کوچھہ منز دتن جان۔أَلَا لَعْنَةُ اللَّهِ عَلَى الظَّالِمِينَ(هود/18)وَسَيعْلَمُ الَّذِينَ ظَلَمُوا أَي مُنْقَلَبٍ ينْقَلِبُونَ(الشعراء/227)

 امام حسین قرآنک ائينہ-06 PDF فایل ڈاونلوڈ کرنہء خاطرء

·        امام حسین علیہ السلام قرآنک آینہ -01

·        امام حسین علیہ السلام قرآنک آینہ-02

·        امام حسین علیہ السلام قرآنک آینہ-03

·        امام حسین علیہ السلام قرآنک آینہ-04

·        امام حسین علیہ السلام قرآنک آینہ-05

·        امام حسین علیہ السلام قرآنک آینہ-06

·        امام حسین علیہ السلام قرآنک آینہ-07

·        امام حسین علیہ السلام قرآنک آینہ-08

·        امام حسین علیہ السلام قرآنک آینہ-09

·        امام حسین علیہ السلام قرآنک آینہ-10

 

©2011 . all rights reserved**