کاشر
شماره : 47217
: //
مجلس حسینی از زبان و قلم:ابو فاطمہ موسوی عبدالحسینی:
امام حسین علیہ السلام قرآنک آینہ-09

عبدالحسین سنز بہمہ محرم 1435 مطابق 15نومبر 2013 امام بارہ دیور پٹن پرمژ مجلس

امام حسین علیہ السلام قرآنک آینہ-09

عبدالحسین سنز بہمہ محرم 1435 مطابق 15نومبر 2013 امام بارہ دیور پٹن پرمژ مجلس

 

اَعُوذُ بِاللّهِ منَ الشّيطانِ الرَّجيم

بِسْمِ اللَّهِ الرَّحْمَنِ الرَّحِيمِ؛نحمده و نستعینه و نؤمن به و نتوکّل علیه و نستغفره و نصلّی و نسلّم علی حبیبه و نجیبه و خیرته فی خلقه حافظ سرہ و مبلغ رسالته سیّدنا و نبیّنا و طبیب نفوسنا و حبیب قلوبنا  ابی‌القاسم المصطفی محمّد(صلی اللہ علیه و آله  وسلم)[اللَّهُمَّ صَلِّ عَلَى مُحَمَّدٍ وآلِ مُحَمَّدٍ وعَجِّلْ فَرَجَهُم] و علی آله الأطیبین الأطهرین المنتجبین المعصومین سیّما بقیّةاللَّه فی الارضین۔ و صلی علی ائمہ المسلمین حماۃ المستضعفین و ھداۃ المومنین علی امیرالمومنین علیہ آلاف تحیۃ والثناء۔

اما بعد:

اَعُوذُ بِاللّهِ منَ الشّيطانِ الرَّجيم.بِسْمِ اللَّهِ الرَّحْمَنِ الرَّحِيمِ

قال اللہ سبحان اللہ تعالی:

قَالَ يا قَوْمِ أَرَأَيتُمْ إِنْ كُنْتُ عَلَى بَينَةٍ مِنْ رَبِّي وَرَزَقَنِي مِنْهُ رِزْقًا حَسَنًا وَمَا أُرِيدُ أَنْ أُخَالِفَكُمْ إِلَى مَا أَنْهَاكُمْ عَنْهُ إِنْ أُرِيدُ إِلَّا الْإِصْلَاحَ مَا اسْتَطَعْتُ وَمَا تَوْفِيقِي إِلَّا بِاللَّهِ عَلَيهِ تَوَكَّلْتُ وَإِلَيهِ أُنِيبُ(هود/88) صدق اللہ العلی العظیم۔

سورہ ھودس منز  یوس زن نبی ونان چھوء پننہ  لب لباب تحریک ء ہند[مقصد]کہ بہء چھوس توہیہ نش آمت خدای سنزء واضح دلیلء ہیتھ تاکہ توہی  لبیو سوء وتھ یمیوک پروردگار عالم توہیہ نشہ تقاضہ چھوء کران ،اگر زن توہی تتھ بوتھ پھیریو میہ پیہ نہ تمہ ساتھی فرق کہین،کیازء کہ میون وعدء چھوء ،یا میون ونن چھوء ، یا یہ میون  تبلیغ چھوء امیوک شاہد تہ ناظر چھوء پروردگارءعالم ،میہ چھوء پروردگارء عالمس نش  امیوک جزا نیون کیازء کہ میہ چھوء تمسی کن واپس پھیرن۔بہء چھوس تمسی پیٹھ تکیہ کرتھ یہ تبلیغ کران  ۔کیازکہ تمسی کن چھم واپس گژھن< وَمَا تَوْفِيقِي إِلَّا بِاللَّهِ عَلَيهِ تَوَكَّلْتُ وَإِلَيهِ أُنِيبُ >

سورہ ھودچ آیہ 88 چھو امام حسین علیہ السلام پننہ نس وصیتس منز پننہ قیامک  خلاصہ بیان کران ۔پننہ نس بایس وصیت نامہ  یوس زن پننہ اتھہ امام حسین علیہ السلام قلمبند چھوء کران  پتہ چھوء پانے تتھ مہر و موم کران  امہ پتہ روانہ کران پننہ نس بایس  محمد حنفیہ یس ۔

وصیت امام حسین علیہ السلام سنز

بِسْمِ اللَّهِ الرَّحْمَنِ الرَّحِيمِ

هَذَا مَا اُوْصِی‏ بِهِ الْحُسَیْنُ بْنُ عَلِیٍّ اِلی اَخیهِ مُحَمَّداً الْمَعْروفَ بِابْنِ الْحَنَفِیَّةِ

 یہ چھئی وصیت حسین بن علی سنز پننہ نس بایس محمد حنفیہ یس۔

اَنَّ الْحُسَیْنَ یَشْهَدُ اَنْ لا اِلهَ اِلا اللّه وَحَدهُ لا شَرِیْکَ لَهُ

امام حسین علیہ السلام چھوء پننہ نس وصیتس منز تہ گوڈء خدای سندء وحدانیتک  شہادت دوان  کہ بہ چھوس شہادت دوان کہ پروردگار عالمس بغئر چھنہ کانہہ  معبودا۔

وَاَنَّ مُحَمَّدا عَبْدُهُ وَرَسُولُهُ جاءَ بِالْحَقِّ مِنْ عِنْدِهِ

بیہ چھوس بہ شہادت دوان کہ محمد مصطفی صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم چھوء خدای سند بندء  تہء تسند رسول ، سوء آو تمسند ، خدای سند پیغام ہیتھ ، اسلام ہیتھ ،آئين ہیتھ ، منشور ہیتھ  حق و حقیت تس پیٹھ مبنی۔

امام حسین علیہ السلام وصیت تس منز توحیدچ شہادت دوان ۔نبوت تچ شہادت دوان۔قیامت تچ شہادت دوان ۔

وَاَنَّ الْجَنَّهَ حَقُّ وَالنّارَ حَقٌ وَالسَّاعَهَ آتِیَهٌ لارَیْبَ فیها

جنت چھوء حق ، جہنم چھوء حق ،قیامت چھوء حق اتھ منز شک کھاہ چھنہ کہین ۔

وَاَنَّاللّه یَبْعَثُ مَنْ فِی الْقُبُورِ

پروردگار عالم  تلہء بیہ قبورو منزء ۔

امام حسین علیہ السلام کیازء چھوء پننہ نس وصیت تس منز توحید نبوت تہ معاد چ تلقین کران ؟

کیازء کہ امام حسین علیہ السلام چھوء درامت "توحید"، "نبوت" تہ "قیامت"احیاء کرنہ،زندء کرنہ ۔

اسلام کس ناوس پیٹھ ،قرآن کس ناوس پیٹھ آو اسلام بیان کرنہ کہ یہ چھئي پادشاہ کتھا۔مرحلہ آو اسلام بیان کرنک یہ کہ یزید ہیوہ نفر چھوء دپان بہء چھوس جانشین رسول رحمت صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم ۔ یعنی وین چھنہ یزید بن معاویہ یس تہ رسول رحمت تس درمیان فرقاہ کہین ۔یتھس مرحلس منز چھوء امام حسین علیہ السلام ہینہ آمت ۔

اگر ائس علی مرتضی علیہ السلام سنز سیرت وچھی ،تمی کور خلفائن ساتھی تعاون کمہ باپت؟

کیازء کہ تمی آئس کم سے کم ظاہر اسلام مچ  حفاظت کرتھ ۔

امام حسن مجتبی علیہ السلام گو مجبور معاویہ ہس ساتھی صلح کرنہ خاطرء کیازء کہ ظاہر اوس کم سے کم رعایت کران ،آخر کار یمہ ساعتہ نہ امام حسن مجتبی علیہ السلامس کانہہ یار و یاور بنیوو ،دوپ ہس چیانی مالی دژ نہ اسہ شمشیری پتھر تھاونہ وین دء تہء اسہ لسنہ کینہ دوہ "البقية، البقية  یابن رسول اللہ"آخرس امام حسن مجتبی علیہ السلامن کور معاویہ ہس ساتھی صلح کمہ باپت؟

" تَرَکتُکَ لِصَلَاحِ الاُمَّه "

امت کہ فائدہ باپت ،ترووکھ ژء میہ یلہ ۔

مگر وین آو یزید بارسس یہندیو حرکتو ساتھی ،یمہ ساتھی وین اصلا سارسی چھوء  گومت وین نبہ دوبہ۔ نہ روز وین "توحید"دچ پہچان ، نہ "رسالت"تچ، نہ "قیامت"تچ۔

یوس پننہ نس پانس چھوء ونان جانشین رسول اللہ صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم  سوء کمہ کردارک چھوء ،سوء کمہ ایمان نک چھوء ، سوء چھوء وپان:

لَعِبَتْ هاشِمُ بِالْمُلْکِ فَلاَ *** خَبَرٌ جاءَ وَ لاَ وَحْىٌ نَزَلْ

دپان بنی ہاشم من گئی یے حکومت کرنک شوق نتہ وحی کتہ آیوو۔یعنی یوس پننہ نس پانس امیرالمؤمنین چھوء ونہ ناوان یزید بن معاویہ یہ چھوء پانہ عقیدء تھاوان نہ توحیدس پیٹھ نہ رسالت تس پیٹھ نہ قیامت تس پیٹھ ۔

وین یوس زن امس حسین سند پیرو چھوء امسنز ذمہ داری کیاہ چھئي بنان؟

سانی  ذمہ داری چھئی بنان کہ ائس گژھو ہر زمانس منز توحیدک، رسالت تک تہ قیامت تک نمونہ عمل آسن۔سون کردار ، سون گفتار ،سون رفتار گژھہ امیوک پرتو آسن  کیازکہ اسہ چھئي نسبت اہل بیتن ساتھی ۔خاص کر یوس زن سانی عزاداری چھئي ، عزاداری چھوء امیوک معراج ،یتین یہ پننہ امہ کردارچ  تہء پننہ امہ  نسبتک  مظاہرء کرء ۔مگر بد قسمتی سان تہ چھنہ ائس کران کینہ تہ۔ائس چھئي رسم پالان ۔

 از گئے امام حسین علیہ السلامس ہجری[قمری] کلنڈر مطابق 1374 وری شہید گئمتس۔عیسائي کلنڈر مطابق گئی 1333 وری شہید گئمتس۔از کیازء چھئی عزاداری کرن ؟ہر زمانس منز کیازء چھئي تازء گی اتھ منز ؟

یہ چھوء سانہ خاطرء پیغام ۔

نہ چھئي امام حسین علیہ السلام سندس شہادتس پیٹھ واویلا کران کیازء گو شہید ۔ کیازء گو مارء  ، نہ چھئي ائس اتھ رشتہ داری تہ اتھ خاندانس،اتھ گھرس کیاہ گو امہ خاطرء ودان۔بلکہ ائس چھئی ودان کہ اسلام کس ناوس ،توحیدکس ناوس پیٹھ کتھہ کئن آو شرک  تہ الحاد حاکم بناونہ ۔رسالت کس ناوس پیٹھ کتھہ کئن آو رسالت تس لورء پارء کرنہ ،مسخ کرنہ ۔قیامت کس ناوس پیٹھ کتھہ کئن آو استحصال کرنہ ۔

گو ائس گژھو میزان امیک بنن  عملی طور پر ،ونہ کینس تہء چھئي دعویدار تمے،میدان کربلاہس منز یمو امام حسین علیہ السلام شہید کور، تمی آئس نہ کافر کینہ ، تمی آئس کلمہ گو ، ودان چھئي اتھ پیٹھ۔تمی تہء آئس ونان "أَشْهَدُ أَنَّ مُحَمَّداً رَسوُلُ الله"(صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم )،تمی تہء آئس نماز پران ۔

عزادار گژھہ امس نماز گزارس تہء اہل بیت تن ہندء تعلیم پیٹھ نماز گزار بننہ والن منز فرق تھاون ۔یہ چھا ائس تھاوان کنہ نہ ؟

اگر ائس [یہ فرق]تھاوان چھئي اسہء منز کیازء چھنہ سوء قیادتک عنصر ہاوی یوس زن اسہ منز آسن گوژھ ۔

کربلا یعنی قیادت ۔ لڑائي چھئي قیادت تس پیٹھ ۔ امام حسین علیہ السلام دپان" وَ عَلَى الاِسْلامِ، السَّلامُ اِذْ قَدْ بُلِیَتِ الاُمَّهُ بِراع مِثْلَ یَزِیدَ"ڈرائيور چھوء غلط کھوتمت گاڈء ،بہء کھسنہ اتھ گاڈء منز کینہ۔یہ گئی یمہ نی مبارک۔امام حسین علیہ السلام دپان بہء ہیکنہ اتھ گاڈء کھست کینہ ۔

گو ائس چھئي دپان ائس کھسو تتھ گاڈء ،یتھی توحید تہء ٹھیک آسہ ، یتھی زن رسالت/نبوت تہء ٹھیک آسہ تہء یتھی زن قیامت تہء ٹھیک آسہ ،یتھی فلسفہ صحیح آسہ ،امیہ خاطرء گژھہ آسن  امامت /ماہر ڈرائيور آسن ۔

 اکھ چھوء امامت ء بغئر پکان ۔

 بیاکھ چھوء امامت ہیتھ پکان ۔

اکھ  چھوء دپان عدل،خدایس خاطرء  ایمان تھاوان کہ خدا چھوء عادل ۔

بیاکھ چھوء دپان نہ عادل آسن چھنہ ضرورت کہین،امام آسن چھنہ ضرورت کہین۔

گو اتھ منز چھوء خاصا امتیاز ،یہ عزادار بیان کران کہ میہ چھوء توحید تہء میہ چھوء رسالت تہء میہ چھوء قیامت تس پیٹھ تہء ایمان مگر اتھ ساتھی ساتھی چھم نہ کہ یہوے چھم آشکار ننہ وانہ بلکہ میہ چھوء خدای سندس عادل آسنس پیٹھ تہء ایمان ۔میہ چھوء رسالتء پتہ ایمان امامتس پیٹھ۔

گو اسہ گژھہ آسن ، شیعہ سندء خاطرء گژھہ آسن یہ قیادت مشخص ۔مگر آئس چھنہ قیادت مطابق پکان کینہ ۔

یوس تہء کانہہ موضوع چھوء بنان ،ائس چھئی دپان رات کیاہ ائس کران ...ہوم کیاہ وون..ہوم صئبن کیاہ وون...یلہ زن آس گژھو ونن سون امام کیاہ چھوء ونان ۔اگر زن امام پانہ پردہ غیبس منز چھوء ، مگر تمسندس غیبتس منز چھا تمسند نائب کنہ نہ ۔پٹھہ تتھ تتھس زمانس منز یمہ ساعتہ ونہ کینس اسلامی حکومت قائم چھئي  اور اسلامی حکومت چھئي امسی نائب امام سندس اتھس منز ۔گو ہر کانسہ شیعس گژھہ آسن اکائي کریکھ،اکوے زبان آسن کہ میانی امامن چھوء وونمت۔یمہ ساعتہ اسہء یہ معیار یی یہءہوے چھوء امام سندء ظہورک وقت۔

یمہ ساعتہ اسہ ونیہ کینس (امام خامنہ ای یس لگن میانی وانس)امام خامنہ ای چھوء سون امام یمہ ساعتہ ہر شیعہ سنز یہ معیار آسہ کہ میہ چھوء امامن وونمت ۔امام خامنہ ای چھوء ونان میہ یتھی کئن کرن ۔گو بہ چھوس کربلا ہوک مصداق سمجھان ۔بہء چھوس کربلا ہس پیٹھ عمل کرن وول ۔

یتین زن امام حسین علیہ السلام سنز آواز آسہ بہء گژھہ امام حسین علیہ السلام سندس آلوس "لبیک" وننہ ،نہ کہ یہ گژھہ میانہ پسند ک عالم آسن،میانہ پسندک ذاکر آسن ، میانہ پسندک نوحہ خواں آسن ،میانہ پسندچ علم آسن یا بینر گژھہ میانہ پسندک آسن ۔بلکہ میانی پسند گژھہ آسن صرف یتھی زن یہوے ولایت آسہ ۔کربلا اوس صرف ولایت۔

از چھوء امام زین العابدین علیہ السلام سنز تہء شہادت۔

 اگر نہ یہ کربلاہ اسہ ہیچھہ ناوء تلہء کوس ہیچھہ ناوء۔

خیمن چھوء نار لگت جناب زینب سلام اللہ علیہا ہن دیوت نہ کانسہ خیمہ منزء نیرنک اجازت کہین ،گوڈ گئي امامس ۔امام زین العابدین علیہ السلامس ، دوپنس خیمن دیتوکھ نار حکم کیاہ چھوء ؟

دوپنس ساری نیرویو نبر۔

ائس چھئي دپان نہ سا  ہانکل واین یہ چھئی میہ پنن مرضی ،مرثی منز اناپ شناپ ونن ، یہ چھئي میانی مرضی  یا ذاکرن ووناہ غلط!

یلہ زن میہ گوژھ آسن کہوٹ  میہ اما م کیاہ چھوء ونان ۔اتہء چھوء تران فکرء اسہء چھنہ امامتی فکرء تئرمژ،میہ گئژھ اکھ اکھ کتھ پتہ آسن میہ کیاہ چھوء امام از ونان ۔ بہء کمسند مقلد چھوس ،میہ کتھ کتھ منز چھئي تقلید ۔یمی چیز چھنہ سانہ خاطرء معیار ۔ گو اتہ چھوء تران فکرء اسہ چھنہ کربلا سمجھنچ کوشش کئرمژ کینہ ۔ائس چھئي رسم پال نس منز [پیش پیش]بالکل اتھ منز چھنہ زء راے کہین بہترین اندازس منز چھئی ائس رسم پالان مگر یہ سمجھہ نچ کوشش چھنہ ائس کران کہ یہ کربلا کیازء آو وجودس منز۔کیاہ وجہ گو توحید کس ناوس پیٹھ آو توحیدی مسخ کرنہ ۔رسالت کس ناوس پیٹھ آیہ رسالت تی مسخ کرنہ،قیامت کس ناوس پیٹھ  کیازء آو قیامت تک تصوری ختم کرنہ  ۔

گو اسہ نشہ گژھہ آسن [سوال]ائس چھا  خدایہ سندء باپت کران ؟ خدای سندس رسول سندء باپت کران ؟

یلہ خدا تہء خدای سندس رسول سندء باپت چھئ کران ۔گو اسہ چھئی کنہ دوہس پیٹھ پژھ تمہ دوہ میلہء اسہ انعام ۔

بہ چھوس عزاداری کران امہ موجوب  کہ میہ چھوء خدا وچھان ۔یتھی کئن زن [اکثر]ہانکلہ والی چھئی آسان کران فئض چھا وچھان ۔ خدا چھا وچھان کنہ نہ ، امام زمان چھا وچھان کنہ  نہ ،[تنہ کینہ بلکہ]فئض چھا وچھان۔یہ کانسہ تمس آسان ہاون ۔ اگر تمس "قربۃً الی اللہ "ہک جذبہ آسہ ہا ... مثلا بہء گنڈء کنہ جایہ نماز  ژء دپک ہے یہ ہا چھے غصب  اتہ یہ یی نہ نماز۔بہء دپے ؛اللہ اکبر۔ بسم اللہ الرحمن الرحیم .....السلام علیکم ورحمت اللہ وبرکاتہ۔دپے آیاہ۔

اگر میہ ایمان آسہ کہ بہ ہیکنہ غصبس پیٹھ نماز پرت میانی نماز چھئي تتین باطل ۔اگر میہ پے چھئی بہء چھوس ثواب باپت کران ، خدای سندء رضا باپت کران ،یلہ ء میہ تور فکرء کہ یہ چھوء غلط بہ کمہ باپت کرء۔اگر میہ بچے ونہ (بہء چھوس یہ پاری نماز پران )لکٹ نا بالغ بچہ یہ چھوء دپان ہے اپاری ہز چھی نہ قبلہ ۔ بہء دپس ژء گژھک بالغ آسن....

اگر میہ مراد چھوء بہء گژھہ رو بقبلہ نماز پرن ،اگر میہ بچے تہء ونہ میہ چھنہ تمہ ساعتہ وچھن بالغ چھا ، یہ عالم چھا ، یہ مجتہد چھا ۔ یہ چھوء میہ بئڑ کتھ ونان کیازکہ میہ چھوء "قربۃ الی اللہ "باپت کرن تمہ قربۃ الی اللہ خاطرء چھوء شرط کہ بہء گژھہ تمی شرایط رعایت کرن ،یلہ نہ بہ رو بقبلہ آسہ خبر کوتاہ بہء توجہ سان نماز پرء میہ چھنہ قبولی کہین ، لذا چھئی میہ امس بچہ سنز کتھ مانن چہ بسا کہ اگر عادل ونہ ۔یمہ ساعتہ انسانس قربۃ الی اللہ جذبہ آسہ سوء چھوء تتھ پیٹھ پننہ تمام وجود سان  عمل کران ۔یمس پنن ذاتی ایگو آسہ کہ میہ اگر ونہ کینس عبا تہء چھہء لگایت دستار تہء چھوء لگایت میہ پئر یپاری نمازبچہ کیازء کڑء میہ غلطی ،امی کیازء وون میہ اپاری چھی نہ قبلہ ۔تمی وون یہ وچھت کہ گھرک ساری بئژ چھئي یپاری پران نماز امی ووچھ مہمان آو امی پئر یپاری امس تور فکرء یہ چھوء غلط کران ،مگر بہء چھوس دپان نہ توتہء بہء پرء یپاری نماز ۔ اللہ اکبر.... کیازء کہ بہء چھوس زیادء زانن وول امس بچس کتہ چھئي پتہ ۔

امام حسین علیہ السلام پننہ کردارء ساتھی ہاوان کہ یوس زن مسلمان آسہ تمس چھوء اتھ کتھہ پیٹھ یقین کامل آسان  کہ میہ چھوء پروردگار عالم وچھا ن، میہ گژھہ خدایہ سندء طرفہ حاصل گژھن ،بہء چھوس تمہ سی پیٹھ بھروسہ کران کیازکہ میہ چھئي تمسی نش جوابدہی میہ چھوء تمسی نش واپس گژھن۔

یلہ مرثیہ منز تہ سون معیار آسہ یہوے ،یلہ وعظ پرنس منز تہ  معیار آسہ یہوے ،یمہ ساعتہ علم کڑنس منز تہء معیار آسہ یہوے، سانہ عملءمنز یے یہ حسینی رنگ پانے حاکم۔

اسہ منز چھنہ حسینی رنگ امہ موجوب حاکم یوان ،ائس چھئی اصلی حسینی پیغام سایڈس تھاوتھ ،امیوک فروعی موضوعس اہمیت دوان۔

رشتہ داری ؛

یقینا رشتہ داری چھو معیار! مگر کوس رشتہ داری؟

رشتہ داری الہی۔اگر الہی آسہ ہا نہ [سرمشق آسہ ہا نہ ]سون رشتہ کیاہ چھوء بیہ ۔اگر یہ گھرک گھرے معیار آسہ ہا تلہ اوس کانہہ تہء،مثلا بنی ہاشم منزء چھوء ابو جہل تہء اہل بیت تن منز یوان ۔نہ ۔ یہ چھوء یوس زن امہ تعلیمء ہند یوس زن رسول رحمت صلی اللہ علیہ وآلہ وسلمن ہوو یوس تمیوک مصداق بنہ ۔

امام حسین علیہ السلام چھوء یہ  واضح کران اسہ پیٹھ پننہ وصیت ساتھی پننہ قلمہء ساتھی  تحریر کرتھ ،پننہ اتھہء مہر موم کرتھ ،یہ ہمیشہ خاطرء صبح قیامت تس تام اسہ یہ منشور برونہ کنہ تھاوان کہ سانی حرکت گژھہ آسن گوڈء خدای سندس وحدانیت تس پیٹھ ایمان کامل آستھ ،رسول رحمت سندس رسالت تس پیٹھ ،تمسندس اسلام مس پیٹھ ،تتھ آئین اسلام مس پیٹھ ایمان آستھ کہ  عمل ہند جزا چھوء میہ قیامت تس منز میلن وول۔

کربلاہن دیوت اسہ یی ہاوت  کہ یوس خدائی عمل چھوء کران تمسنز عمل چھہ نہ دنیا ہس منز ضایعہ گژھان نہ چھئی آخرت تس منز قطعا کنہ رنگ تہء کم رنگ گژھن واجن۔

امہ پتہ امام حسین علیہ السلام فرماوان :

"وَ إِنّى لَمْ أَخْرُجْ أَشِرًا وَلا بَطَرًا وَلا مُفْسِدًا وَلا ظالِمًا"

(میہ کور نہ خود غرضی ، طغیان،فساد انگیزی تہ ظلم  کرنہ باپت  خروج کینہ  ، قیام کینہ)

امام مس تہء چھوء پیوان پنن موقف بیان کرن ۔ کیاہ اسہ چھوء نا وزء وزء یہ وژھہ ناونچ ضرورت ؟ائس اگر بیٹھ ونہ کینس مجلس منز کیازء بیٹھ۔اگر مرثیہ چھہ پرنہ کیازء چھئي پرنہ ۔ اگر علم چھئي کڑن کیازء چھئي کڑن ۔ امیوک ما حصل کیاہ چھوء؟

امام حسین علیہ السلام دپان بہء دراس کیازء دراس۔

یلہ امام حسین علیہ السلام چھوہ پنہ نس پانس جواب دہ زانان کہ ژء ما چھی شک کنیوک!بہ چھوس چیون شک یژھان دور کرن ۔

گو سانی تہء چھئي امہ کھوتہ بئڑ ذمہ داری بنان ، ائس تہء گژھو پنن ہر کانہہ حرکت ء منز واضح موقف فک اعلان  تہ کرن کہ یتھی زن نہ شک کچ گنجائش آسہ ۔

"وَ إِنّى لَمْ أَخْرُجْ أَشِرًا وَلا بَطَرًا وَلا مُفْسِدًا وَلا ظالِمًا"

بہء دراس نہ کانہہ شرارت کرنہ  باپت ،کانہہ فساد قائم کرنہ باپت ،دبدبہ قائم کرنہ خاطرء،پنن مونو پلی ثابت کرنہ باپت ، نہ ۔

"وَ اِنَّما خَرَجْتُ لِطَلَبِ الاِصْلاحِ فِی اُمَّهِ جَدِّی،صلى الله علیه وآله"

بلکہ بہء دراس پننہ نس امتس اصلاح کرنہ ۔وین یوس حسینی نیرء تمس کمہ باپت چھوء نیرن؟

اسہ یمی معاشرس منز خامی چھئی اسہ  چھئی تمی خامی دور کرنہ ۔

مجلس ء ہند اہتمام گژھہ آسن اتھ پیٹھ منحصر کہ اسہ یوس زن  پننہ نس سماجس منز رسول رحمت سندء فرمانس بر خلا ف طریقاہ قائم چھوء گومت یہ چھوء ٹھیک کرن ، یہ چھوء اصلاح کرن ۔کیازء کہ امام حسین علیہ السلام ونان  بہء دراس امتس اصلاح کرنہ ۔عزادار تہء گژھہ آسن  مصلح ،یہ گژھہ امتس اصلاح کرنہ باپت آسن ۔سانی حرکت گژھنہ امہ باپت آسن  میانہ مجلسء منز اوس لوکہ ہت ،بیاکھ نفر گژھہ سوء مجلس کرء  لوکہ ساس آسہ تتھ ۔بیاکھ ذکر ووتھہ میانس مجلسء منز دیوت دیوو بوتھہ بوتھہ ،بیاکھ وتھہ سوء گژھہ پنژاہ نفر بوتھہ بوتھہ دیا ناون ۔کیاہ یہ چھا معیار؟

یوتاہ حسین حسین زیادء بڑء گژھہ ،تیوتاہ گوا کہ مجلس کھئژ!

یوتاہ دوگ تئیت تس کالس قائم روزء ،10منٹن ،20منٹن ، اڈس گھنٹس گھنٹس ،دوگ ژھنہ نہ ، دپو مجلس کیاہ  کئژ!

سوء چھا مجلس کنہ یتن زن کانہہ ژر تہء آسنہ گومت مگر کانہہ بے نمازی آسہ نماز گزار بنیومت !کانہہ اپززیور آسہ پئززیور بنیومت !کانہہ وعدء خلاف کرن وول آسہ وعدس پابند بنن وول بنیومت !کانسہ پنن امام فکرء آسنہ تورمت تمس آسہ تعہد پادء گومت کہ پنن امام پرزء ناون ،میون مرجع کوس چھوء ، میون مُقَلَد کوس چھوء ۔

تہ چھا ضروری کنہ یہ درن درن ، وزن گژھہ بنن ۔ائس چھئي تیوتاہ یمن غئر ضروری چیزن ....(وزن چھوء ضروری مثلا  مرثی چھوء وزن تمیوک روح آسان  مگر اگر زن کانسہ چھوء باسان وزنس گو ... دپان چھوء ہا ڈاکھ کورتھس ...پتہ چھوء تیوتھ کلام ونان انسان چھوء مندء چھان سوء زویہ  پیٹھ انن۔وزنس ، وزن ڈول سوء چھوء پتہ مرثیہ یے تبچہ پران ژء کورتھ..)گو  ہوء کلام چھنہ میانہ خاطرء معنی تھاوان کینہ ،بلکہ وزن۔ وزن ڈول اسلئے امہ کتھہ[مرثیہ]ہند چھنہ کانہہ مفہومی!۔ائس چھئی اتھ نہج کن درامت  یلہ زن اسہ اصلاح [چھو مقصد کران دیون]۔امام حسین علیہ السلام دپان اصلاح ۔

" أُريدُ أَنْ آمُرَ بِالْمَعْرُوفِ وَأَنْهى عَنِ الْمُنْكَرِ "

بہء چھوس یژھان امر بالمعروف کرن ، نہی عن المنکر کرن ۔ائس چھا  امر بالمعروف کران؟ ، نہی عن المنکر کران ؟

مسجدء چھئي یتیم ، نماز چھئي نفر ڈائي پران ، یہ چھنہ سونچان کہ اگر ائس امام حسین علیہ السلام سنز پیرو چھئی  سانہء مسجدء کئژاہ گئژھ آسن رونق ،جماعت ہند کوتاہ مفہوم[تہ اہتمام]گوژھ آسن۔دینک احکام زانہ نس منز کوتاہ گئژھ ائس حریص آسن لالچی آسن زیادء کھوتہ زیادء زانہوو۔سون اجتماع کیازء گوژھ زیادء کھوتہ زیادء پر رونق آسن کیازکہ حدیث چھوء یمہ ساعتہ مؤمن تریے نفر سمن  ملائک چھئي تتھ منز شامل گژھان تمی چھئي دعا کران یمی[ملائک}چھئي آمین کران ۔ہر کانسہ مؤمنس چھوء اکھ دعا مستجاب۔یوتاہ ائس زیادء ونو میہ تہء ہا چھوء کانہہ  حاجت بہء تہء گژھہ اتھ مجلسء منز کم سے کم لوکہ لچھہ منزء آسہ نااکھ تہ یمس زن سوء خلوص  آسہ ، لوکن دہن ساسن منز ...یعنی زیادء کھوتہ زیادء کرو [کوشش]سون اجتماع  سون دائرء گوژھ کنوی آسن ، کم سے کم کانہہ نتہ کانہہ آسہ ضرور اتھ منز تمہ خلوص ، تمہ اعتقادک یمس زن خدا تمسنز عمل مئل ہینہ وول آسہ ۔ مگر ائس چھئی الگ الگ ... دائرء الگ ، مجلسء الگ ، جماعت الگ  کہ سانس یتھی [سماجس]منز گوژھ پاٹک وغیرہ ہک رنگ گوژھ حاوی روزن،خدای سند رنگ  حاوی روزیاہ نہ روزیاہ تہءچھنہ اسہ ضروری باسان کینہ۔یلہ زن امام حسین علیہ السلام پننہ حرکت ہند  پنن خروج کرن یزیدس  خلاف دپان بہء چھوس سیرت رسول اللہ یژھان احیاء کرن ،بہء چھوس یژھان امر بالمعروف [کرن]نہی عن المنکر کرن ۔

"وَأَسيرَ بِسيرَةِجَدّى وَأَبى عَلِىِّ بْنِ أَبيطالِب علیه السلام "

بہء چھوس رسول خدای صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم سئنز ، بہ چھوس علی مرتضی علیہ السلام سئنز سیرت  یژھان زندء کرن  ۔ یعنی گژھو اہل بیت اطہارن ہئنز سیرت یژھن زندء کرن ۔کیازء کہ ائس چھئي امام حسین علیہ السلام سندء امہ کریکہء ہند احیاء کران ،زندء کران ۔

امام حسین علیہ السلام اتمام حجت کرتھ، یمن تمام مراحلن منز ،یوس زن اسہ ہر ذاویہ یس منز اسہ یہ پیغام دوان چھوء کہ قرآن کوتا  مظلوم چھوء سپدیوومت  کہ امام حسین علیہ السلام چھوء میدان نیران کمہ باپت  کہ رسول رحمت سنز سیرت گژھ زندء گژھن۔امہ ساتھی چھوء تران  فکرء  کہ سیرت چھئي محو آمژ کرنہ ۔ امہ پتہ مولا امام حسین علیہ السلام فرماوان؛

" فَمَنْ قَبِلَنِی بِقَبُولِ الْحَقِّ فَاللَّهُ أَوْلَى بِالْحَقِّ"

یوس میانس آلوس مثبت جواب دی ،میانس فریادس ، میانس آلوس "لبیک"ونہ چھوء پروردگار عالم سندء بارگاہ ء منز مستحق جزاء۔

" وَ مَنْ رَدَّ عَلَيَّ هَذَا أَصْبِرُ حَتَّى يَقْضِيَ اللَّهُ بَيْنِی وَ بَيْنَ الْقَوْمِ بِالْحَقِّ"

اگر یوس میون دعوت قبول کرنہ ،بہء کرء صبر تتھ پیٹھ ،پروردگار عالم کرء پانے فاصلہ میہ تہء تمن درمیان یمو زن رسول رحمت یا قرآن مظلوم بنوو۔

" وَ هُوَ خَيْرُ الْحاكِمِينَ "

پروردگار عالم چھوء بہترین حکم کرن وول ۔ ژء تہء بہء نہ ء کہین ۔کوس ونہ کوس چھوء صحیح کوس ونہ کوس چھوء غلط ،کہ اگر زن اسہء وننہ کہ  کس یتھی زمانس منز تہ  اسہ تہء چھنہ تگان  وژھہ ناون کہین مثلا :

اہل سنت بائي چھئي  اتھ[روزء عاشوراء ہس]بوڈ دوہ ونان ۔پتہء یلہ پرژھان چھئک توہی کیوزء چھوو اتھ بوڈ دوہ ونان ؟

دپان ائس چھئي ہر کنہ ، یوس تہء کانہہ دینی فنگشن آسہء تتھ چھئی ائس بوڈ دوہ ونان۔یوس تہ وورس آسہ تتھ چھئی بوڈ دوہ ونان ۔

مگر اگر ائس یمن سمجھاوء نس منز کامیاب گژھہ ہوے کہ عزاداری چھئی کیاہ ، یتھی کئن زن تمہ ساعتہ "ظہیر قین" ہیوہ اہل سنت حسینی بنیووی یمو منز تہء نیرن ظہیر قین۔یمو منز تہء نیرن "حر ابن یزید ریاحی "تمی ائس اہل سنت ، تمی آئس نہ امامت [ائمہ اطہار]قبول کران ۔

گو اسہ چھوء یہ وژھہ ناونس منز پانس  منز خطاء، کہ ائس چھنہ ہیکان کہ وژھہ ناوتھ عزاداری ہند مفہوم کیاہ چھوء ،یلہ ء زن کینہ چھئ یتہ تعبیر کران کہ [بوڈ دوہ چھئي امہ باپت مناوان ]کیازء کہ  اسلامن لب فتح۔ کمی اسلامن لب فتح؟

ائس چھئی یہ وننہ نس منز ناکام گژھان  کہ تمہ ساعتہ ائس زء اسلام ۔ اکھ اوس یوس مسخ اوس امت کرنہ ۔ بیاکھ یوس زن اصیل ترین اسلام اوس۔یعنی یزیدی اسلام تہ حسینی اسلام ۔آل ابی سفیان تہ آل محمد چھئي زء پرتو امہ اسلامک ،یتھی قرآن چھوء ونان امام نور تہء امام نار ۔

وین چھوء عزادارس دیون ہاوتھ  کہ ائس چھا امام نورس  پتہ پتہ پکان کنہ امام نارس  پتہ ۔ دین گوا  امہ ساتھی زندء کنہ دین گو مسخ ۔ یمی امامء نارس پتہ پئکی تمو کور دنیا آباد ،یمی امام نارس پتہء پئکی تموو کور آخرت تباہ ۔ مگر یمی زن امام نورس پتہ پتہ چھئی پکان تہند دنیا تہء چھوء آباد تہند آخرت تہء چھوء آباد۔

اللَّهُمَّ صَلِّ عَلَى مُحَمَّدٍ وآلِ مُحَمَّدٍ وعَجِّلْ فَرَجَهُم

لذا اسہ منزء چھئي یہ ذمہ داری بنان  کہ ائس گژھو سوئی کردار اپناون یتھی منز زن اسہ  اہل بیت تن ہندء تعلیمہء ،آل ابو سفیان تہء آل محمدن ہند اسلام الگ الگ تگہء کرن۔

کنہ ساعتہ چھئي ائس بلی نام نہاد چیزو موجوب مثلا واجی چھئي  دچھنس اتھس یہ گو شیعہ آسن ،یتوی یوت چھنہ کافی ۔ دوگ دیون ، یہ گو شیعہ ۔یتوی یوت چھنہ کافی کہین ۔ بلکہ امام موسی کاظم علیہ السلام فرماوان :

" قَد كانَ رَسُولُ اللّهِ صلي الله عليه و آله يَتَخَتَّمُ بِيَمينِهِ وَ هُوَ عَلامَةٌ لِشيعَتِنا يُعْرَفُونَ بِهِ "

رسول رحمت اوس دچھنس اتھس واجی لاگان ،شیعن ہنز علامت چھئی یہوے کہ تمن چھئي دچھنس اتھس واجی آسا ن۔ اسہء چھئی یتہء سی تھپ کئرمژ ،باقی امہ پتہ کیاہ چھوء۔

" وَ بِالْمُحافِظَةِ عَلى أوقاتِ الصَّلاةِ "

بیہ کیاہ چھئي شیعن ہئنز پہچان ؛ تمی چھئی نمازء ہندس وقتس پابند۔اسہ چھوء وقتی رومت،اسہ چھنہ پے یی شرعی وقت کیاہ چھوء۔مثلا  اگر زن وینہ کینس  10 منٹ  اسہ اکہ بجہ  برونہہ پئر[ بانگ]کیژھن آسہ باسیومت  ہے بانبر کررکھ سولے پررکھ[بانگ]۔ یلہ زن ائس گئژھ  تہچان آسن کہ اہل بیت تن ہندیو پیروو نماز گئنڈ ، بانگ وئن  شرعی وقت ووت ۔شرعی وقت گوژھ سانہ ساتھی فکرء ترن ، مگر اسہ چھوء یہ موضوعی ژھتہ کورمت ، یہ چھنہ وین پہچانی ، بلکہ اسہ چھوء یہ جنرلی اکھ بجے تھاومژ ، ظہرواتان یہ چھوء وریہ کس وریہ یسے  اکسی حالت تس منز آسان ۔جماعت ہند  چھوء تتھوی حالاہ۔

بیہ کیاہ چھئي شیعہ سنز علامت ؟

" وَإيتاءِ الزَّكاةِ وَ مُواساةِ الْأخْوانِ"

بیہ چھئی زکات دنہ والی  یمی زن آسان چھئي ، یہ چھئي شیعن ہئنز پہچان ۔بیہ کیاہ چھئي ؟ یمن چھئي براداری ۔

وئچھ تو! امہ منزء چھوءژھروی یہ  اکوئی چیز اسہء اتھس منز سوء تہء گو کانسہ کانسہ یمس آسہ ،گو "وائج"باقی یس چھوء اسہ کنہء سی کوشمت۔

بیہ کیاہ ونان امام موسی کاظم علیہ السلام، بیہء کیاہ چھئي صفت یہنز:

"وَ الأمْرِ بِالْمَعْرُوفِ وَ النَّهْىِ عَنِ الْمُنْكِرَ "

بیہ چھئی (شیعہ کتھہ کئن پرزء ناویون)تمی  آسن  یتہ تھی غلط  آسہ گژھان  تمی آسن دپان ہا غلط ہا چھوء گژھان ۔یتہ تھی ٹھیک آسہ گژھان تمی آسن دپان؛شاباش مرحبا آئس نے۔امہ [صفت]ساتھی گوژھ ترن فکرء[شیعہ]چھا ائس [یتھی]؟

ائس کرو لڑائي علمء پیٹھ!

ائس کرو لڑائي مرثیہ ین پیٹھ!

ائس کرو لڑائي مسجدء پیٹھ!

یوس چیز اسہ جمع گوژھ کرن ، سوئی چھوء اسہء نفاق کک تہ تفرق کک  محور بنوومت ۔

اسہ گژھہ  سارے لڑایہ آسان ختم گژھان  [یمہ ساعتہ ]اکس امام بارس منز آسہ ہئو حسین حسین خاطرء جمع گژھان ۔

سارے لڑایہ آسہ ہن ختم گژھان [یمہ ساعتہ]اکس مسجدء منز آسہ ہئو  ساری جمع گژھان۔ چھنہ گژھان ۔

اہل بیت تن ہند ...اسہ اوس یاد کرن ، پننہ نس پانس محاسبہ کرتھ ائس چھا توت واتتھ ائس چھا تہء کران یہء کینژھا اسہ اہل بیت تو تعلیم دژ خاص کر امام حسین علیہ السلامن!

کیازء کہ امام حسین علیہ السلامن تھاوء نہ کہین تہ  دلیل یتین  زن  ائس  ائچھ وٹو ۔

امام حسین  علیہ السلامن  دیوت یہ تہ اسہ اگر زن یوتاہ زمانہ گذرتھ تہء امام حسین علیہ السلام سندء کتھہ منز تازء گي چھئي لبان وجہ چھوء یی کہ تمی یوژھ سانین دلن منز سانس ایمانس منز یہ چیز منتقل کرن ،یہ اضافہ کرن کہ یوتاہ توہی خدائي بنیوی تیوتاہ چھوی توہی یتہء تہء جاودان ،آخرت تس منز چھو وی جاودان آسنچ ضمانت توہیہ فراہم۔

حسینی بننہ ساتھی چھئي ائچھ یلہ گژھان ۔

جناب زینب سلام اللہ علیہا کیازء چھئی  تمی پارء پارء بدن وئچھت ونان :

"مَا رَاَیْتُ اِلاّ جَمیلا "

اتین کیاہ اوس اصل! ووچھن لایق۔مگر سوء پردء چھوء تھود وتھان ، جناب زینب سلام اللہ علیہا چھئي وئچھان کہ سانہ خون ہارنہ ساتھی  چھوء اسلام زندء روزان ۔ رسول رحمت سنز شبیہ ہیکنہ مسخ وین گژھت کہین ، یہ چھوء جمال امہ کربلاہوک۔

وین ہیکنہ دوژیوت گژھت انسانس ،رسول رحمت تس تہ یزید بن معایہ ہس  کہ دپہ یہ چھا رسول رحمت کنہ ہوء چھوء ۔

"مَا رَاَیْتُ اِلاّ جَمیلا "

یہ چھوء جمال امیوک ۔

وین گژھنہ شک یہ کینژھا اسلامن  ضمانت چھئ دژمژ کہ یوس ژء کامی خدای سندء باپت کرکھ تتھ چھئی خریدار[خدا] اور بہترین خریدار چھئي خدا ۔تردید  گژھنہ کانسہ  کہ اگر زن زانہہ سختی یی یہء....اسہء چھوء تمہ ساعتہ خدا پیوان یاد  یمہ ساعتہ سختی یی یہء۔ مگر کربلا چھوء اسہ دپان نہ ہر وقتہء چھئی ائس راضی ۔

جناب علی اکبر علیہ السلام یمہ ساعتہ امام مس سوال کران کیازء چھیوی کلمہ استرجاح پران <إِنَّا لِلَّهِ وَإِنَّا إِلَيهِ رَاجِعُونَ>(البقرة/156)کیازء پوروو۔"ألَسنَا عَلَى الحَق"کیا ائس چھنا حق کس پیٹھ ؟(گو معیار چھوء بہء چھوس حق)۔دپان تلہء کیاہ چھوء پرء وای موت یی تن اسہ پیٹھ غالب یا ائس یمو موتس پیٹھ ۔اگو اتہ نینس چھئي رضا آرامس منز تہء ، تہء سختی منزتہء۔یہ کردار چھئي اسہ منز یینچ ضرورت ۔

نتہ کروو ...ائس گژھو تلیہ ء مثلا عیسائین ہند پاٹھی (اکثرو چھوء اسہ یی تصور کورمت)عیسائي دپان "نعوذ باللہ"خدای سند نیچیوی کھولکھ دارس ،سانین گنہن ہند کفارء دیوت تمی ۔ائسی تہء چھئي بین الفاظن منز ونان کہ امام حسین علیہ السلام اوس رسول رحمت سند نورء دیدء وچھیوی تمس ساتھی کیاہ کورکھ ،تمس پیٹھ ودوو ائس پروردگار عالم بخشہ اسہ ۔گو اسہ چھوء جرئت گژھان  گناہ کرنک۔لابد یزیدس تہء چھئي ائسمژ کانہہ توقع کہ میہ کرء شفاعت آنحضرت صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم ۔یہ سوری کینہ کرتھ تہء ۔

اسہ ہے خداین چھوء وونمت :

<مَنْ جَاءَ بِالْحَسَنَةِ> (الأنعام/160)، (النمل/89)، (القصص/84)

ژء چھئي اتھ ثوابس رائچھ کرن ۔اگر رائچھی تجی کرن  ژء چھوکھ رستہ گار ۔اگر اکہ لٹہ ژء امام حسین علیہ السلامس وودت،یہ چھی نہ وین ژء بیعت پھٹہ راون کہین  تہ ۔یہ اوش چھی نہ ژء راو راون کہین ۔قطعا اوشش چھی ژء اجر ، مگر تلہء اگر امہ اوشش قدر رژھراوت ۔

اگر نہ رژھراوت ؟

<مَنْ جَاءَ بِالْحَسَنَةِ>

یہ گژھوی  ائس قیامتس تان ،یہ ثواب یوس حاصل کور یہ گژھہ اسہ تگن رژھہ راون ، یہ گژھنہ  اتھ نار آسن دیوتمت وتے ،یہ ثواب آسہ اسہء گنہ ہس منز تبدیل کورمت ۔امہ ساتھی آسہ جرئت گومت میہ دینس بوتھ پھرء نک ، قرآنس بوتھ پھرء نک ۔ لذا سانہ خاطرء چھوء بئڑ ذمہ داری یہوے کہ (کیازءکہ اسہ چھوء کربلا ، یوس زن اسہ زینہ پیٹھء مرنس تان ساتھی چھوء لذا چھوء)اسہ پنن پان تہء نارء نشہ بچاون ،پنن انگ عئشہ ناو تہء بچاون ۔یتھی کن زن آیہ مبارکس منز چھوء:

<قُوا أَنْفُسَكُمْ وَأَهْلِيكُمْ نَارًا>(التحريم/6)

پنن پان تہء چھوء اسہ نارء نشہ بچاون ،پنن انگ عئش ناو تہء ،پنن دچھن کھووریمی تہء چھئي بچاون ۔نہ کہ یا اللہ میہ خئر(نہ کینہ ) بلکہ یا اللہ اسہ خئر۔<إِياكَ نَعْبُدُ>چھوء ونن"إِياكَ اَعْبُدُ"چھنہ ونن کینہ ۔ائس ساری چھئي چیانی عبادت کران ۔ائس ساری چھئي خدایا ژے مددمنگان ۔<وَإِياكَ نَسْتَعِينُ>

ابی بصیر امام جعفر صادق علیہ السلامس نش نقل کران :

فِي قَوْلِ اللَّهِ عَزَّ وَ جَلَّ- اتھ آیہ مبارکہ ہس منز<قُوا أَنْفُسَكُمْ وَأَهْلِيكُمْ نَارًا>(التحريم/6)یعنی پنن پان تہءگھرء بچائیو نارء نشہ ۔دپان امام جعفرصادق علیہ السلامس کورم سوال ۔"قُلْتُ لَه كَيْفَ أَقِيهِمْ"کتھہ کئن بچاووکھ تمی نارء نشہء؟(پنن پان تہء پنن گھرء )۔قال:

تَأْمُرُهُمْ بِمَا أَمَرَ اللَّهُ عزوجل"

بس  یہ توی یوت کہ یہ کہنژاہ خداین حکم کور سوئی حکم کر پننہ نس گھرس ،پننہ نین وابستگانن ۔

وَ تَنْهَاهُمْ عَمَّا نَهَاهُمُ اللَّهُ عزوجل

یہ کہژھاہ پروردگار عالمن منع کور تتھ کرروکھ منع ۔

فَإِنْ أَطَاعُوكَ

اگر چیانی کتھ مانکھ ۔

كُنْتَ قَدْ وَقَيْتَهُمْ

ژء بچائے تکھ تمی  نارء نشہ ۔

کمہ ساتھی ؟

صرف تمن امر بالمعروف تہ نہی عن المنکر کرنہ ساتھی ۔

وَ إِنْ عَصَوْكَ كُنْتَ قَدْ قَضَيْتَ مَا عَلَيْكَ

اگر زن تمو بوتھ پھروی ، تمو مونوی نہ ،ژء زیونتھ پنن ثواب ۔ژء نبھاوتھ پنن ذمہ داری ۔

<قُوا أَنْفُسَكُمْ وَأَهْلِيكُمْ نَارًا>(التحريم/6)

یہ چھوء اسہ ء کلی طور پر اہل بیت تن ہندین پیرون ، امام حسین سندین عزادارن پیٹھ یہ ذمہ داری بنان کہ یوس کتھ اسہ نش چھئي عیاں گمژ...

امام حسین علیہ السلامس چھوء اتھن کیتھ علی اصغر ذبح گژھان ، سوء چھوء فرماوان:

" هَوَّنَ عَلَىَّ ما نَزَلَ بی أَنَّهُ بِعَیْنِ اللَّهِ"

 معبودا یہ مصیبت چھوء میانہ خاطرء آسان ۔کیازء کہ ژء چھوکھ وچھان۔

ائس چھئی حسین حسین کران امہ موجوب کہ سوء چھوء خدایس دیدار کران ، سوء چھوء وچھان عینا۔

زینب سلام اللہ علیہا ہس پیٹھ چھئي آئس نالہ ژھٹان امہ موجوب کہ تمس ووتھ پردء،سوئی چھئی وچھان  "مَا رَاَیْتُ اِلاّ جَمیلا "تمی ووچھ کہ امہ کہ برکتہ کاتیاہ ہو لئب ہدایت ۔کئژاہ گژھن رستہ گار صبح قیامتس تان۔گو یمس یہ کاروان کربلاہوک ،زینہ پیٹھہ مرنس تان ساتھی آسہ ..

زیوو؛زینہ وزء چھئي اسہ  تراوان خاک تربت [کربلا] ائسس منز۔

مرو ؛ مرنہ وزء چھئي اسہ تراوان تربت حاک کربلا ائسس منز۔

گو اسہ ءچھوء زینہ پیٹھہ مرنس تان یہ ساتھی ۔گو سانہ خاطرء چھوء یہ بئڑ ذمہ داری بناوان ۔اسہ آسہ زیادء [سوال] جواب۔اسہ آسہ زیادء ..اگر اعزاز تہ آسہ [سوء تہ آسہ بوڈ]مگر [اگر]سزا تہء آسہ سوء تہ آسہ سانے خاطرء بوڈ ۔اگر اسہ اتھ رائچھ تگہ کرن  کربلاہکس پیغامس سانس مرتبس واتنہ نہ کہین ۔مگر اگر اسہ اتھ ساتھی خیانت کئر ، یوتھ اسہ سزا آسہ تیوتھ تہء آسنہ کانسہ ۔یہ تہء چھوء ذہنس منز تھاون۔

کیازء اسہ چھوء پروردگار عالم ونان:

<لِيبْلُوَكُمْ> (هود/7)، (الملک/2)

بہء آزماوو توہی ۔امام حسین علیہ السلامن دژ آزمایش ۔...< أَيكُمْ أَحْسَنُ عَمَلًا>کوس کرء احسن عمل۔ امام حسین علیہ السلام سنزء زبانی چھنہ  خدا خدا بغئر کانہہ کلامی نیران ۔اور ائس چھئي امہ خاطرء عزاداری کران کہ رسول رحمت سندس ناوس پیٹھ کیازء آو ر سول رحمتس ذبح کرنہ ۔

سانی عزاداری چھئي معرفتچ عزاداری سمجتھ ۔سانی عزاداری چھئي ،سون اوش ہارن چھوء معرفتک اوش۔یتھی زن خدا  مئل چھوء ہیوان :

<تَرَى أَعْينَهُمْ تَفِيضُ مِنَ الدَّمْعِ مِمَّا عَرَفُوا مِنَ الْحَقِّ> (المائدة/83)

یمہ ساعتہ  رسول رحمت سندی صحابی آئس وچھان رسول رحمت تس پیٹھ چھوء وحی نازل سپدان ،تمن آئس سوء حالت [پادء سپدان]منقلب ائس تمی گژھان ،تمن اوس اوش جاری گژھان ۔معرفتک اوش۔عزادار تہء چھوء معرفتک اوش ہاران ،کہ یمس متعلق رسول رحمت تن وون بہء چھوس امسندء ساتھی ،یہ چھوء میانہ ساتھی امس دوپکھ رسول رحمت سندیے شمشیرءساتھی چھوکھ ژء ذبح گژھان۔ اللہ اکبر۔

امام حسین علیہ السلامس متعلق وونکھ کہ امام حسین علیہ السلام آو مارنہ رسول رحمت سنزء شمشیرء ساتھی ۔رسول رحمت تس  آو وننہ کافر ۔ یزیدس آو وننہ مؤمن!۔اتھ پیٹھ چھئي عزاداری کرن ۔

قاضی شریح یوس زن خلفان ہند تہء چیف جسٹس چھوء رودمت ، سوء چھوء فتوی دوان:حسین چھوء کافر !یزید چھوء مؤمن۔امہ خاطرء چھئي عزاداری کران ۔

اتھ اسلامس ، اتھ قرآنس کیاہ اونوکھ پیش ۔معیار کتھہ کئن بدءلایکھ۔کوس بنیوی کافر!کوس بنیوی مومن۔امام حسین علیہ السلامس دوپوکھ واجب قتل۔مگر یزیدس دوپکوکھ واجب الاطاعہ۔اور سوء کیوتھ یزید چھوء ، تی چھئي وچھان ائس تمی کیاہ کور آل رسولن ساتھی ۔اللہ اکبر۔

امام زمانس چھئي تسلیت عرض کران۔مولا ائس چھئی "سِلْمٌ لِمَنْ سَالَمَکُمْ وَ حَرْبٌ لِمَنْ حارَبَکُمْ"سون سمن چھئی  ،ائس عزاداری چھئي کران امہ باپت ،ائس ونوی ژء اسہء چھئي تمنی ساتھی صلح  اے امام زمان یمن ساتھی  ژء  صلح چھی۔اسہء چھئي تمنی ساتھی لڑائي  اے امام زمان یمس ساتھی ژء لڑائی چھئی ۔کیازء کہ توہی چھوئ معیار امام نورس منز تہ امام نارس منز ۔

اللہ اکبر۔

امام حسین  علیہ السلامن اسہ منز یہ قرانچ حقیقت زندء و جاوید روزنہ خاطرء کیاہ نہ کیاہ تحمل کور ۔راوی دپان میہ چھنہ یوتھ نورانی بوتھا ووچھمت کینہ کہ یمس زن رویس خونک خضاب آسہ کرتھ تمہ پتہء تہء آسہ امس منز تیوتاہ جذاب چہرہ کہ انسان چھوء دپان تھلہء تھلہء روزء ہس وچھان ۔

ملعون چھنہ  امام حسین علیہ السلامس  کنہ آنہ ء یژھان مہلت دن ۔امام حسین علیہ السلام یمہ ساعتہ تنہ تنہا امہ قرآن کہ احیاء باپت کہ یوس زن یوس قرآن تہ یوس اسلام تحریف  نشہ گوژھ محفوظ روزن  امہ خاطرء چھوء جہاد کران ۔جہاد کران کران گو ضعف امامس پیٹھ طاری ۔آہ واویلا ۔

بس تھکی یوت ہیژ یون دیون "وَ قَدْ ضَعُفَ عَنِ الْقِتَالِ،فبَینَما هُو واقِفٌ إذْ أتاهُ حَجَرٌ"امامن ہیژیوو ٹہراو کرن ،تھک ہیوہ کڑن ، اتھی اثناء ہس منز اک شقی ین توج لائین کن ،سوء کن آیہ نورء جبین نس "فَأَخَذَ الثَّوْبَ لِیَمْسَحَ الدَّمَ"امام من تل پلو پنن ،یژھیون خون صاف کرن ۔اللہ اکبر۔"فَأَخَذَ الثَّوْبَ لِیَمْسَحَ الدَّمَ،عَنْ جَبْهَتِهِ فَأَتاهُ سَهْمُ"ائتھی اثناءہس منز ،بیے شقی ین کیاہ کور ،تیراہ کورن روانہ امام مس کن "فَأَتاهُ سَهْمُ مَسْمُومُ لَهُ ثَلاثَ شُعَبٍ فَوَقَعَ عَلی قَلْبِهِ"سوء تیراہ کورن روانہ امام حسین علیہ السلامس کن یوس مسموم اوس ،یوس زہر برتھ اوس تروشاکل تیر........

أَلَا لَعْنَةُ اللَّهِ عَلَى الظَّالِمِينَ(هود/18)وَسَيعْلَمُ الَّذِينَ ظَلَمُوا أَي مُنْقَلَبٍ ينْقَلِبُونَ(الشعراء/227)

 امام حسین قرآنک آئينہ -09 PDF فایل ڈاونلوڈ کرنہ باپت

·        امام حسین علیہ السلام قرآنک آینہ -01

·        امام حسین علیہ السلام قرآنک آینہ-02

·        امام حسین علیہ السلام قرآنک آینہ-03

·        امام حسین علیہ السلام قرآنک آینہ-04

·        امام حسین علیہ السلام قرآنک آینہ-05

·        امام حسین علیہ السلام قرآنک آینہ-06

·        امام حسین علیہ السلام قرآنک آینہ-07

·        امام حسین علیہ السلام قرآنک آینہ-08

·        امام حسین علیہ السلام قرآنک آینہ-09

·        امام حسین علیہ السلام قرآنک آینہ-10

 

©2011 . all rights reserved**