پيشنهاد سردبير

سایت شخصی ابوفاطمہ موسوی عبدالحسینی

جستجو

ممتاز عناوین

بایگانی

پربازديدها

تازہ ترین تبصرے

۰

توحید

 کتابخانہ کاشر دینیات

کانہہ اکاہ حتی خاتم الانبیاء کہ اعلم تہ اشرف موجودات چھئی ہیکنہ ذات مقدس اللہ سمجتھہ، یہ کینژاہ بشر ہیکہ سمجھتہ تہء چھئی <اسماءاللہ>(خدای سندصفات)،تہ یمن "اسماءاللہ"ہن تہء چھئی مراتب، بعض مراتب چھئی ائس ہیکان سمجھتہ، بعض چھئی  صرف اولیاء خدا تہ پیغمبر اکرم صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم تہء امہ مکتب تربیت یافتہ  سمجھتہ ہیکان۔

                تمام عالم چھوء "اسماءاللہ"، چونکہ اسم چھوء علامت تہ تمام موجودات زء یمی عالمس منز چھئی یمی ساری چھئی ذات حق تعالی سنزء علامژء۔البتہ کینہ چھئی یمی علامتہء بہتر  امکہ گہرائی  سان سمجھان کہ یمی کمہ قسمچہ علامژء چھئی تہ کینہ چھئی اجمالی طور ہیکان سمجتھہ کہ کمہ قسمچہ علامژء چھئی تہ کانہ موجود چھنہ پانے پادء گژہان۔

                پرتھ انسان سنز عقل چھئی فطری طور پر سمجتھہ ہیکان کہ یُس موجوداہ  ممکن چھوء آسہ نہء، تہ ممکن چھوء آسہ،تہ ممکن چھہ آسہ نہ ، پانے ہیکنہ پادء سپدت بلکہ آخرس واتہ موجودس نش یوس ذاتی طور موجود چھوء،تہ تمس نش ہکنہ وجود سلب کرنہ یتھہ بلکہ سوء چھوء ازلی۔

                تہ یہ چھوء ضرورت عقل خلاف کہ کانہ چیز سپدء کنہ وجہ بغیر بیس چیزس منز تبدیل مثلا ً آبس لگہ ششر یا نیرس بَہَ اتھی چھوء کانہ وجہ سوء وجہ چھوء یہ کہ اگر سردی صفر درجہ کم گژھنہ یا گرمی ہتھ درجہ گژھنہ آب روزء پنی شکلہ منز باقی ۔ اگر آبس مُشِک ووتھہ تتھ تہء آسہ کانہ وجہ ۔

                یہ سرسری کتھہ کہ پرت معلول چھوء علتک محتاج تہ پرتھ ممکن چھوء علتک وجہ، یہ چھئی واضح عقلی کتھ کہ یوس اکھا تھوڑا غور کرء تصدیق کرء۔ لذا چھہ تمام موجودات عالم اسم تہ علامژ خدا۔"

 

بسم الله الرحمن الرحیم

امام خمینی: تفسیر سورہ حمد قسمت1

البتہ(خدا ثابت کرنہ خاطرء) اگرچہ برہان تہ دلائل چھئی جان تہ آسن تہء گژھن مگر سمجھنک وسیلہ چھئی عقل تہ تمیوک کمال تہ چھوء یتوئی، یہ زن وننہ چھوء یوان:"پای استدلال چوبین بود"تمیوک مقصد چھوء یی زہ استدلا چھئ لورء ڈکھ زنگہ(نقلی)یمی انسانس ہیکن  پکاناوتھ، تہ ء یمی زنگہ انسانس حقیقتا پکناون تمی چھئی تمی زنگہ یمہء ساتھی انسان ہیکہ خدای سند جلوہ وچتھ تہ ایمان اننتھ، سوء ایمان یُس دلس سزء تہ ضمیر تہء آسہ تتھ ژھانڈان کہ انسان اکہ پھرء انہ ایمان ، البتہ اتھی چھئی امہ تھئد مرتبہ تہء ، تہء امید چھئم کہ ان شاءاللہ ائس پرو نہ صرف قرآن تہء تفسیر بلکہ پرتھ قرآنک یو اکھاہ کلماہ پرو، تتھ پیٹھ آسہ یقین ۔ یہ کتاب چھئی سوء کتاب یوس انسانس چھئ سوئی انسان بناوان یُس خداین پننہ اسم اعظم ساتھی پادء کور۔

یژھان چھوء انسان یتھ ناقص مقامس پیٹھ چھوء تمہ پیٹھہ تھود تلتھ  تتھ مرتبس واتناون یمیوک سوء لائق چھوء۔ تہ قرآن تہء آو امی باپت تہ انبیاء تہء آئی امی باپت کہ انسانس کرن تھپ تہء یتھی سَرنِس کِریِلس منز پیومت چھوء(انسان سندء نفسانیتک کریول چھوء پرتھ سرینرء کھوتہ سرون)تمہ منزء کڈیس نئبر تہ خدای سندء جلوہ ہاویس   تاکہ سوری مشراوء تہ خداوند کرن ان شاءاللہ اسہء سارنی یہ مرتبہ نصیب۔

 

قرآن کریم چھوء کُنِس خدای اللہ   سبحان و تعالی سند مخصوص کلامک مجموعہ یُس تمی پننس حبیبس تہء نبی آخر الزمانس حضرت محمد مصطفی صلی اللہ علیہ وآلہ وسلمس ساتھی بے پردہ کور یمکس حرفس حرفس پیٹھ مؤمن سند ایمان آسن چھوء لازم۔ یتھ متعلق تحریف گژہنچ کانہہ گنجایش چھنہ اکہ طرفہ چھوء پانہ اللہ سبحان و تعالی فروامان:

إِنَّا نَحْنُ نَزَّلْنَا الذِّکْرَ وَإِنَّا لَهُ لَحَافِظُونَ

اسی کور قرآن نازل؛ یقینا اسی چھئی امیک محافظ!

(الحجر/9)

حتی آنحضور صلی اللہ علیہ وآلہ وسلمس متعلق تہء فرموون زہ یہ تہء ہیکنہ پنن کتھ اتھ منز اضافہ کرتھ۔

وَلَوْ تَقَوَّلَ عَلَینَا بَعْضَ الْأَقَاوِیلِ۔لَأَخَذْنَا مِنْهُ بِالْیمِینِ۔ثُمَّ لَقَطَعْنَا مِنْهُ الْوَتِینَ

اگر کانہ کتھ پانے اتھہ منز اضافہ کرء ہا تہء دپہ  ہایہ وون خداین  تمی ساعتہ یی ہا امسنز شاہ رگ ژٹنہ

(الحاقة/44-46)

 

تہء پانہ آنحضور صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم فرماوان:

مَنْ فَسَّرَ الْقُرْآنَ بِرَاْیِهِ فَلْیَتَبَوَّا مقْعَدَهُ مِنَ النّار۔

اگر کانہ پننہء گوء قرآنس تفسیر کرء  تمسنز جای چھئی جہنمس منز[1]

آنحضور صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم سند اوصیای معصوم ائمہ علیہم صلوات اللہ تہء رود یِہُوی تلقین کران کہ سون حدیث گژھہ قرآن ساتھی تولن، اگر قرآنس مخالف آسہ سوء گژھنہ سون حدیث زانن:

إِذَا وَرَدَ عَلَیْکُمْ حَدِیثَانِ مُخْتَلِفَانِ فَاعْرِضُوهُمَا عَلَى کِتَابِ اللَّهِ- فَمَا وَافَقَ کِتَابَ اللَّهِ فَخُذُوهُ وَ مَا خَالَفَ کِتَابَ اللَّهِ فَرُدُّوهُ۔

یا

مَا خَالَفَ کِتَابَ اللَّهِ فَلَیْسَ مِنْ حَدِیثِی

یا

مَا خَالَفَ کِتَابَ اللَّهِ فَاضرِبُوه عَلی الجِدَار.[2]

 

امی چھئ قرآنس اسلامک آئین اساسی تہء ونان، تہ پرتھ کتھہء ہند پز اپز چھوء قرآن ساتھی تولنہ یوان۔

امیہ برونہ زء دین مبین  اسلامُک  کُل تہ امیہ کُلِیک مول  تہ شاخ زانن یژیو گوڈء یژیو دینس متعلق سر سری کتھ کرن یتھی متعلق بعض علماء[3] سوال کہ شکلہ منز کتھ شروع کران زء:

انسانس کیاہ چھئی دینچ ضرورت؟

امیہ برونہ زء امیوک جواب یی دنہ ،انسان سئنز ضرورت بیان کرن چھئ ضروری۔

پرتھ انسانس سئنز ضروریات چھئی ترین3 قسمن ہئنز:

·         1۔ذاتی ضرورت۔

·         2۔ اجتماعی ضرورت۔

·         3۔بئڑ تہء عالی ضرورت۔

ذاتی ضرورت گئی کھیون چوین ہیوہ، پلو پوشاک ہیوہ،گھرء بار ہیوہ۔

اجتماعی ضرورت گئی انسان سُند سماجس منز روزن تہء تتھ سماجس منز روزنہ خاطرء نظم قانون تہء زیوٹھ بوڈرہنما آسنچ ضرورت۔

بئڑ تہ عالی ضرورت گئی انسان سنز زان پہچان تہء معرفت حاصل کرنچ ضرورت، انسانس چھئی پانس تہ دنیاہس متعلق واریاہ سوالات ،پانس اندی پتی دنیاہس بہتر یژھان زانن ،تمچ زان پہچان یژہان تھاون ،زانن چھوء یژہان دنیا کیاہ چھوء تہ امیوک مقصد تہ انجام کیا ہ چھوء،زندگی ہنز وتھ یژہان زانن، پوز تہء اپر یژہان پَرزءناون یمی چھئی تمی ضرورت تہ خواہشہ یمی پرتھ انسانس منز ہشے چھئی۔

وین کرو بیہ یِہُوی سوال :

انسانس کیاہ چھئی دینچ ضرورت؟

جواب:انسان سندین تمام ضرورتن منز چھوء دین انسان سندین بڑین تہء عالی ضرورتن ہند جواب دوان۔انسانس چھئی پنن بڑئین سوالن ہند جواب زانہ خاطر دینچ ضرورت،تہ دین چھوء تمن سارنی سوالن جواب دوان کہ دنیا آو کتہ گژھہ کوت ، کمی بَنوی ، کمہ خاطرء بَنوون،حقیتک معیار کیاہ چھوء تہ اتھ سارسی منز سیانی کیا ہ ذمہ داری  چھئی۔

 کُوَس وَتھ؟

اسہ انسانن چھئی سعادت تہء کمال حاصل کرنہ خاطرء اکہ پروگرامچ  تہ منصوبچ ضرورت تہ تریو تریقو ہیکو پنن پروگرام بناوتھ، یا ونو ترء طریقہ چھئی اسہ برونہ کنہ:

·         1۔پننہ مرضی پیٹھ کرو عمل۔

·         2۔لوکن ہنزء مرضی مطابق بناو پَنُن پروگرام۔

·         3۔ پان پَشراوو خدایس تہء تمسندء وتہ پیٹھ پکو۔

پنن وتھ

یوس وتھ پانے کڑو،سوء چھنہ ہرگز قابل اطمنان وتھ، کیازکہ انسان سنز زان پہچان چھئی محدود۔ سوء چھوء پنین ہتہ بدین غلطین تہ پشیمانین ہند گواہ۔ پننہ زندگی منز غلطی ہند آسن چھوء بجای خود پنن وتھ غلط آسنچ دلیل، غلط سمجھن، غلط فاصلہ کرن یُس برونہ کن چھوء پتہ لگان کہ غلط اوس۔

امہ علاوہ ،انسان سندین غرائزن ہند طوفان یُس انسانس اکہ اندء پیٹھہ بیس اندس کن نوان چھوء تہ نئی  خواہشہ چھوء برونہ کنہ تھاوان، امہ حالہ پزیاہ  سوء وتھ پانے اختیار کرن یمہ وتہ ہند دار و مدار انسان سندء ہمیشہ کہ خاطرہ سعادتہ یا شقاوتہ خاطرء آسہ ، ناقص فکرء تہ محدود زان پہچان ساتھی تتھ وتہ پیٹھ پکن؟!

لوکن ہنز وتھ

دوّیم وتھ تہء چھئی نہ گوڈنچہ وتہ کھوتہ قابل اطمنان،کیازکہ یوس خامی میانس محدود زان پہچانہ منز چھئی سوئی چھئی بیس سندس منز تہء، یتھہ کئن بہء پننس ہوای نفسس منز گرفتار چھوس تتھئی کئن چھوء بیاکھ تہء، یتھئی کن میہ زندگی منز واریاہ غلطی چھئی گمژء تمن تہء چھئی گمژء ، یتھی کئن میہ پننہ غلطین پیٹھ پشیمانی چھئی تمن منز تہء چھئی یژھی پشیمانی۔

یہ سوری تراوتھ ،بہء کیازہ تراوء پنن مرضی تہء آزادی تہء بیہ ہنزء قسمہ قسمچہ مرضی پیٹھ پکہء۔ پنن آزادی تراوء تہ تمن ہنز مرضی رٹہ یمی نہ میانی حقیقت چھئی سمجھان، نہ چھئی میانی ہمیشگی ہنز سعادت زانان تہ نہ چھئم پتہ کہ میانی چھاء خیرخواہ۔

دینچ وتھہ یا بئڑ وتھ

دینچ وتھ چھئی سوء وتھ یوس سانی پادہ کرن والی چھئی سانہ خاطرء تھاو مژ یہ چھئی سزئی کھتا کہ یُس یَتھ چیزس بناوء تمس چھئی تمہ چیزچ ساری پتہ آسان سوء ہیکہ پرتھ کانسہ ہندء خوتہ بہتر  امیوک قاعدہ قانون تہ استعمال کرن طریقہ کار تہ اتھ راچھ راوٹھ کرنک نسخہ دیتھ۔

کیا انسان چھا  انسان سندء اتھہ بناومتو چیزو خوتہ کم یا تمہ خوتہ سادہ؟!سانی وتھ، سانہ زندگی ہند قاعدہ قانون تہ استعمال کرن طریقہ کار تہ اتھ راچھ راوٹھ کرنک نسخہ تہء گژھہ سون خالق یعنی خدای سبحان بیان کرن،کیازکہ سوء چھوء پننہ نس بندس متعلق ہر کانسہ ہندء خوتہ بہتر زانن وول تہ مہربان۔

دینچ وتھہ اختیار کرن چھوء عقلہ ہند حکم

دینچ وتھہ اختیار کرن چھوء بالکل عقلی تہ منطقی ؛ کیازکہ عاقل چھوء خطرکس احتمالس سنجیدہ نوان خاص کر اگر مہم آسہ۔

کینہ نفر چھئی سفرس نیران،یمو منزء چھئی کینہ عقلہ کامی ہیوان تہ یہ سفرس  منز بکار ہیکہ لگتھ سوء تہء چھی سفر سامانس ساتھی تلوان تہء پریشانی بغیر سفر کران ، کینہ چھنہ عقلہ کامی ہیوان تہ یہ سفرس منز بکار ہکہ لگتھ تہء چھنہ ساتھی تلان ،یمی سفرس منز بکار ینوک سامان ساتھی تُل تہ پریشانی بغیر کورن سفر طی تہ سفرس منز تہء پیس نہ  تمچ ضرورت ،تمی کو پریشانی بغیر سفر تہ ساتھی سامان تلنہ ساتھی تہ گیس نہ کانہ فرق۔  مگر اگر ضرورت پیس تمی کور سوء استعمال تہ سر راہ  پریشان تہ گو نہ۔ امس مقابلہ  یمی نہ بکار ینوک سامان سفر ساتھی تُل تمس پیو نہ سوء سامان سفر ضرورت  مگر اگر ضرورت پیس سوءسر راہ کیاہ کرء۔یہوی حال چھوء تمن ہند یمی یتھ دنیاہس منز دین چھئی اختیار کران، تمہ کین احکاماتن پیٹھ چھئی عمل کران تہ تمن ہند یمی دین چھنہ اختیار کران تہ دین کین آداب و رسومن پیٹھ چھنہ عمل کران ۔

عاقل انسان چھوء انبیا، صالح تہ صادق لوکن ہنزء کتھہ پیٹھ پژھ تہ پژھ کران کہ برونہ کن چھئی خطرناک وتھ، تمو وون کہ : دوہا واتہ کہ پنین اعمالن ہند چھوء جواب دیون، نیک عملن ہند چھوء انعام رٹن تہ غلط تہ نا پسند کامین خاطرء چھوء سزا تلن۔الہی پیغمبرو چھئی تمس گنہن نش دور روزنچ تہ نیک اعمال انجام دنچ سفارش کرمژ۔

امس  دپُک:وریس منز ماہ مبارک رمضانس منز تھاو روزء۔ شراب چنہ بجای چیہ میوہ رس، پرتھ دوہ کر کینژہن منٹن خدایس ساتھی کتھ نماز پر، بیہ سندس ناموسس بے حرمتی رکنہ بجای کر خاندر تہ پنن عفت بچاو۔

وین اگر یمی وعدہ و وعید اپُز ائس، نہ قیامتی ، نہ سوال جوابی  ، نہ جزا تہ نہ سزا آسنہ ، یمی دینچ وتھ اختیار کئر ، تمہ کین احکاماتن پیٹھ عمل کرن  تمس روی نہ کہین ۔ بلکہ یتھی کئن بے دینن  فضول کامین منز وقت گزراوی  ، دیندارن پر نماز، دینک رسم و رسوم پالن، مگر اگر قیامت آئس کہ یقناً چھئی۔ تمہ وقتہ بی دین تہ مذہبس پٹھ عمل نہ کرن والی کیا کرن!؟ اسلئے بہرحال مذہبی لوکھ چھئی زینتھ تہ بے دین تہ لا پراوہ لوکھ چھئی نقصانس تہ خطرس منز۔

البتہ یہ کتھ چھئی واضح کہ دینس پیٹھ پکنس تہ امکین احکامات پیٹھ عمل کرنس چھئی صبرچ تہ استقامتچ ضرورت، دیندارس پزء لاپرواہ لوکن ہندس ٹھٹھہ مسخرس برداشت کرن، خاص کر گھرس منز یا دوستن منز زیادہ پہمت برداشت کرن۔

اتھ بارس منز چھوہ قرآن فرماوان:خلافکار تہء مجرمن ہند طریقہ کار چھوء یی زء تمی چھئی مؤمنن ٹھٹھہ مسخرہ کران۔ یلہ دیندارن  وچھان چھئی یا سمکھان چھہ(تمن چھئی ٹھٹھہ مسخرہ کران)تہ پانہ وانی ائچھ ناٹہ کران۔ یلہ پنن جماعژ نش چھئی گژھان خوش چھئی آسان(مؤمنن چھئی ٹیوپ آسان ژٹان)تہ یلہ تمن چھئی وچھان دپان چھئی: یمی چھئی ڈلہ مت[4]۔

قرآن چھوء یمن آیاتن منز خلافکارن ہندین ژون قسمن ؛  ٹھٹھہ کرن، مسخرہ کرن،ٹیپ ژٹن تہ ڈلہ مت زانن  ہئندین برء عادتن کن اشارہ کران۔امہ پتہ فرماوان قیامتک دوہ مؤمن تہء اسن تمن پیٹھ[5]!آ، قیامتک دوہ گژھہ واضح کہ کونہہ اوسء پزی ڈولمت!

وین چھوء وچھن کہ انسان چھا از حضرت آدم علیہ السلام تا خاتم انبیاء محمد مصطفی صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم تہ از اوصیای رسول اللہ علیہم صلوات اللہ از حضرت علی ابن ابیطالب علیہما السلام پیٹھہ تا خاتم اوصیاء امام مھدی عجل اللہ تعالی فرجہ الشریفس عاقل تہ انسان کامل سمجھان کہ یمی دینک تہ توحیدک علمبردار چھئی کنہ یمی پنڈیزمک[6] بے دینی ہند خالق تہ علمبرادرچھئی۔

 

•                                         توحید:

پرتھ دین تہءنبی  آو کُنِس خدای اللہ  سنزء وحدانیتک تبلیغ کران۔

" یا قَوْمِ اعْبُدُوا اللَّهَ مَا لَکُمْ مِنْ إِلَهٍ غَیرُهُ "

ای میانہ قومہء!صرف کریو( کُنِس ) خدای اللہ سنز عبادت  کیازکہ تمس بغیر چُھنہ تُہند کانہ معبود۔

(سورہ7،آیہء 59،73تہء85)

پیغمبر آخرالزمان صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم سند تبلیغ تہء گو "قُولُوا لاَ إِلَهَ إِلاَّ الله تُفْلِحُوا"(ونیوُنِس] خدای اللہ  ہس بغیر چھنہ کانہ معبود تہء رستگار سپدیو)کہ نعرہ ساتھی شروع۔تہء یتھی کئن چھوء اسلام کہ کُلیوک شہ مُول[اصول] توحید۔



[1] ابن ابی جمهور احسائی، کمال الدین، ج ۱، ص ۲۵۶، سید الشهداء، قم، ۱۴۰۵ق.

[2] تفسیر صافی، ج1، ص 21.

[3] اصول عقائد استاد قرائتی

[4] إِنَّ الَّذِینَ أَجْرَمُوا کَانُوا مِنَ الَّذِینَ آمَنُوا یضْحَکُونَ۔وَإِذَا مَرُّوا بِهِمْ یتَغَامَزُونَ۔وَإِذَا انْقَلَبُوا إِلَى أَهْلِهِمُ انْقَلَبُوا فَکِهِینَ۔وَإِذَا رَأَوْهُمْ قَالُوا إِنَّ هَؤُلَاءِ لَضَالُّونَ(المطففین30 الی32)

[5] فَالْیوْمَ الَّذِینَ آمَنُوا مِنَ الْکُفَّارِ یضْحَکُونَ(المطففین/34)

[6] Pandeism

تبصرے (۰)
ابھی کوئی تبصرہ درج نہیں ہوا ہے

اپنا تبصرہ ارسال کریں

ارسال نظر آزاد است، اما اگر قبلا در بیان ثبت نام کرده اید می توانید ابتدا وارد شوید.
شما میتوانید از این تگهای html استفاده کنید:
<b> یا <strong>، <em> یا <i>، <u>، <strike> یا <s>، <sup>، <sub>، <blockquote>، <code>، <pre>، <hr>، <br>، <p>، <a href="" title="">، <span style="">، <div align="">
تجدید کد امنیتی