پيشنهاد سردبير

سایت شخصی ابوفاطمہ موسوی عبدالحسینی

جستجو

ممتاز عناوین

بایگانی

پربازديدها

تازہ ترین تبصرے

۰

دلیل توحید

 کتابخانہ کاشر دینیات

دلیل توحید

1-قدرتی ماحول کئن جزئیاتن منز پانہ وانی اتھہ واس

قدرتی ماحولس کن وچھتی ائس لبان کہ آفتابس ، زونہ تہ زمینس چھوء پانہ وانی اتھہ واس، زمین ہندہ آفتابس اندی اندی نژنہ ساتھی چھوء زمین ہند ژور موسم  بنان، زمینہ ہندء پانس اندی اندی  نژنہ ساتھی چھوء دوہ تہ رات بنان، آفتاب کہ نورء ساتھی چھوء دریان ہند آب بَہَ بنان سوء چھوء اوبر بنان تہ زمین ہندس سطحس پیٹھ درجہ حرارت کہ اختلاف ساتھی چھوء ہوا پکان، ہوا چھوء اوبرس خشکی کن نوان تہ شین تہ رود کہ شکلہ منز  کوہن تہ بالن پیٹھ پیوان تہ کوہ تہ بال چھئ کولن تہ نالن ہند آگر بنان تہ آبہ کولہ چھی جاری گژھان تہ پانس  اندی پتی سر سبز  کران تہ قسمہ قسمہ نباتات تہ گیاہان ووبدان، حیوانانت تہ انسان امہ کین بٹھین کن  لسن بسن لاگان، نباتات رودء تہ کولن ہندء آبہ ساتھی رشد و نمو کران ، حیوانات آب تہ نباتاتو ساتھی  کھین خوردنی حاصل کران تہ انسان سنز زندگی  آبس،نباتاتن تہ حیوانن ہندء ذریعہ پکان۔

                یتھی پاٹھی چھوء قدرتی ماحول کئن اجزائن پانہ وانی اتھہ واس برقرار تہ یہ اتھہ واس آسن چھئ بئڑ دلیل یمن ہند بناون وول چھوء۔ چنانچہ قرآن چھوء اتھ بارس منز فرماوان:

وَإِلَهُکُمْ إِلَهٌ وَاحِدٌ لَا إِلَهَ إِلَّا هُوَ الرَّحْمَنُ الرَّحِیمُ

إِنَّ فِی خَلْقِ السَّمَاوَاتِ وَالْأَرْضِ وَاخْتِلَافِ اللَّیلِ وَالنَّهَارِ وَالْفُلْکِ الَّتِی تَجْرِی فِی الْبَحْرِ بِمَا ینْفَعُ النَّاسَ وَمَا أَنْزَلَ اللَّهُ مِنَ السَّمَاءِ مِنْ مَاءٍ فَأَحْیا بِهِ الْأَرْضَ بَعْدَ مَوْتِهَا وَبَثَّ فِیهَا مِنْ کُلِّ دَابَّةٍ وَتَصْرِیفِ الرِّیاحِ وَالسَّحَابِ الْمُسَخَّرِ بَینَ السَّمَاءِ وَالْأَرْضِ لَآیاتٍ لِقَوْمٍ یعْقِلُونَ۔

تہند خدا چھوء کُنی خدایی، تمس بغیر چھنہ کانہ بخشن وول تہ مہربان خدایی۔

آسمان تہ زمین پادء کرنس ، دوہ رات بدلنس منزتہ لوکن ہندء فائدہ خاطرہ آبس پیٹھ ناوء پکنس منز تہ یہ کنیہ اللہ آسمان پیٹھہ آب نازل چھوء کران یمہ ساتھی مردہ زمین زندہ چھئی سپدان تہ  قسمہ قسمہ چاروائی چھکراوان تہ زمینس تہ آسمانس درمیان ہوہک تہ اوبرک پکن (یِمَن ہند پانہ وانی اتھہ واس)یمی چھئی  لوکن خاطرء(کُنِس خدای سندء وجودچ)علامژء کہ پننہ عقلہ ہین کامی۔ 

(سورہ 2، آیہ 163تہء 164)

2۔ اکہ ختہ زیادہ خدا آسن نا ممکن

لَوْ کَانَ فِیهِمَا آلِهَةٌ إِلَّا اللَّهُ لَفَسَدَتَا۔

اگر آسمانس تہ زمینس منز اللہ ہس بغیر بیہ کانہ خدا آسہ ہا تباہی آسہ ہا

(سورہ 21،آیہ 22)

یعنی اگر  عالمس منز واریاہ خدای آسہ ہن تمن درمیان آسہ ہا ذاتی تضاد سوء گو یہ زہ پرتھ کانہ یژہہ ہا پَننہ پَننہ کمالء مطابق کائیناتس  نظم دیون اک سند نظم   تہ کمال ٹکراوء ہا بیس سندس نظمس تہء کمالس ساتھی یمہ ٹکراوء ساتھی تباہی مچہ ہا یلہ زن پورء کائینات  چھوء منظم نظامس تحت رواں دواں یمہ ساتھی فکرء چھوء تران کہ اتھ نظامس وجودس منز انن وول چھوء کُنی تہ سوء کُن چھوء اللہ یمس شریک تہء نظیر چھنہ ، پاک چھوہ پرت نقصانہ نشہء ۔

کُنِس خدایس پیٹھ ایمان آسنک اثر

أَأَرْبَابٌ مُتَفَرِّقُونَ خَیرٌ أَمِ اللَّهُ الْوَاحِدُ الْقَهَّارُ

                کیا خدایی خدا(کہ پرتھ اکس سنز  تابعداری کرء پیہ کرن)چھا جان کنہ کُنِس اللہ سنز  خدایی کہ یُس پرتھ چیزس پیٹھ مسلط چھوء؟

(سورہ 12،آیہ 39)

خدای سندس کُنرَس(توحیدس) پیٹھ ایمان آسن چھوء انسانن ہندء اتھہ واسک سبب بنان، قرآنی سماجس منز چھوء تمام کائناتک پادہ کرن وول اکھ خدا تہ سوری چھوء تمسندس تربیتس تحت،تہ پرتھ دوہ چھوء نماز منز امہ سبقچ تلقین سپدان کہ <<الْحَمْدُ لِلَّهِ رَبِّ الْعَالَمِینَ>>(حمدتہ ثناء تس خدای سند یُس تمام عالمن ہند تربیت تہ رہنمائی کرن وول چھوء) صرف خدای سند کُنری یوت نہ بلکہ عالمک پانہ وانی اتھہ واس تہ اتھہ واسک جذبہ چھوء یہ ہیچھہ ناوان کہ سارنی ہند خدای چھوء کُنی تہ کانس چھنہ کانسہ پیٹھ برتری مگر یمس خدایس نش زیادہ قرب چھوء حاصل تقوی ساتھی۔

خدایس تہ انسانس درمیان رشتک تقاضہ چھوء کہ  پننس رب تہ مربیس روزہ تمسندیو صفتو ساتھی یاد کران تاکہ  تمسندء وتہ ڈلہ نہ نماز تہ دعان منز روزء تمسندین صفاتن پھران تاکہ تمی صفت کرء پانس منز پادء ، تہ پنن سماج بناوء خدایی۔تہ یتھہ کئن خدا چھوء کُنی ائس تہ گژھو کُنی  تہ تفرقہ نشہ دور آسن۔

اسماءاللہ

قرآنس منز چھوء  کلمہ<اللہ>سوء ذات مبارک یمس<الرَّحْمَن>(بخشن وول)،<الرَّحِیم>(مہربان)<الْعَلِیم>(زانن وول)<خَبِیر>(خبرتھاون وول)<بَصِیر>(وچھن وول)<عَزِیز>(غالب)<قَوِی>(ہیکن وول) .....ہیہ 99 کھتہ زیادہ صفات چھئی۔

اسلامس منز یمن  صفات تہ ناون ہئنز پہچان چھئی انسان سنزء اخلاقچ بنیاد  کیازکہ اسلامس منز چھوء انسان زمینہ پیٹھ خدای سند جانشین امہ باپت چھوء امس پَنُن پان یمن خدایی صفاتو تہ اخلاقو ساتھی سجاون تہ خدای سنزء جانشینی ہندس درجس تان واتن یتھی کئن روایتن منز آمت چھوء کہ<<تَخَلَّقُوا بِاَخلَاقِ اللهِ >>(پنن پان سجایوی الہی اخلاقو ساتھی)۔

                یتھئی کئن چھوء مثالی قرآنی سماجس تان واتنہ باپت تہ زمین پیٹھ خلافت تہ اقتدار باپت پنن سماج پزء الہی صفاتو ساتھی بناون۔

                یتھئی کن انسانس چھئی اجتماعی زندگی منز صلح تہ سلامچ ضرورت تہ <السَّلَامُ> چھوء خدای سندیو ناوو منزء اکھ ناو۔

                خوش تہ خوشحال انفرادی تہ اجتماعی زندگی خاطرءچھئی رحم تہ درگذرچ ضرورت تہ << الرَّحْمَن>>تہء<<الرَّحِیم>>  چھئی خدای سندیو ناوو منز بیاکھ ناو۔

                سماجس چھئی  اقتدارس، رواداری تہ عمومی اعتماد خاطرء ایمانچ سخت ضرورت تہ خدای سندین صفاتو منز< الْمُؤْمِنُ> چھوء اکھ صفت۔

                استقلال تہء آزادی لبنہ خاطرء چھوء قدرت تہ بے نیازی پانس منز بڑھاون ضروری  <قَوِی>تہء<غَنِی>چھئی خدای سند بیاکھ زء صفت۔

                انسان تہ سماجک امتیاز چھوء تہندء خلاقیتچ صلاحیت،عمل تہء امانتس منز ظراف تہ<الْخَالِقُ>،<الْبَارِئُ>،<الْمُصَوِّرُ><الْأَمِین>چھئی خدای سند باقی صفات تہء ناو۔

            یتھئی کئن  خدای سند ساری ناو تہ تمی ناو تہ صفات یمی نمازء منز، دعان منز تہ قرآنس منز پران چھئی روزان  تہء پنن خدا چھئن تمو صفتو ساتھی یاد روزان کران تاکہ تمی کروکھ پننہ نس روحس منز منعکس تہ یمیوک نتیجہ صلح و صفا،محبت تہ درگذر، ایمان تہ اعتماد،پزر تہ امانتداری، زان تہ پہچان،بصیرت تہ گاش، عزت تہ سربلندی، قدرت تہ صلاحیت ساتھی برتھ سماج آسہ ۔

تبصرے (۰)
ابھی کوئی تبصرہ درج نہیں ہوا ہے

اپنا تبصرہ ارسال کریں

ارسال نظر آزاد است، اما اگر قبلا در بیان ثبت نام کرده اید می توانید ابتدا وارد شوید.
شما میتوانید از این تگهای html استفاده کنید:
<b> یا <strong>، <em> یا <i>، <u>، <strike> یا <s>، <sup>، <sub>، <blockquote>، <code>، <pre>، <hr>، <br>، <p>، <a href="" title="">، <span style="">، <div align="">
تجدید کد امنیتی