پيشنهاد سردبير

سایت شخصی ابوفاطمہ موسوی عبدالحسینی

جستجو

ممتاز عناوین

بایگانی

پربازديدها

تازہ ترین تبصرے

۰

عدل

 کاشر دینیات

•                                         عدل:

                خدای سند اکھ صفت چھوء عدل۔ چونکہ خدا چھوء حکیم یعنی پرتھ کام چھوء برابر، بجا تہ بہترین طریقس منز انجام دوان، علیم تہ خبیر چھوء یعنی تمام خوبین تہ بدین چھوء اصل پاٹھی زانان تہ غنی چھوء یعنی تمسندس ذاتس چھنہ کُنہ قسمچ ضرورت،لذا عقلی طور چھو محال کہ خدا کیا کرء کانسہ رَژھہ پِینتِس سُنب ظلم ۔

                نقل کہ اعتبار تہ چھوء واضح کہ خدای نہ صرف چھوء ظلمس خلاف:<وَلَا یَظْلِمُ رَبُّکَ أَحَدًا[1]>بلکہ سماجس منز اجتماعی عدل تہ انصاف قائم کرن چھوء انبیان ہئنز مہم ترین ذمہ داری قرار دژ مژ:< لِیقُومَ النَّاسُ بِالْقِسْطِ[2]>تہ لوکن چھون اکھ اکس نسبت حق تہ انصاف رعایت کرنچ سفارش کرمژ:

وَأَقِیمُوا الْوَزْنَ بِالْقِسْطِ وَلَا تُخْسِرُوا الْمِیزَانَ

حق و انصافچ تَرَکئر کریو استعمال تہ چھون مہء تولیو

(الرحمن/9)

                مادہ پرست چھئی پرت چیزاہ محدود مادی مقیاساتو ساتھی تولان، کینہ چیز چھئی تبعیض تہ انصافس خلاف سمجھان مگر یلہ وسیع تناظرس منز چھئی وچھان فکرء چھوء تران کہ یہ کینژا خدای سندء طرفہ چھوء سوء چھوء رُت تہ پرتھ شَرس پتہ کنہ چھوء خیر موجود۔ یتھی کئن زن قرآن چھوء فرماوان:

کُتِبَ عَلَیکُمُ الْقِتَالُ وَهُوَ کُرْهٌ لَکُمْ وَعَسَى أَنْ تَکْرَهُوا شَیئًا وَهُوَ خَیرٌ لَکُمْ وَعَسَى أَنْ تُحِبُّوا شَیئًا وَهُوَ شَرٌّ لَکُمْ وَاللَّهُ یعْلَمُ وَأَنْتُمْ لَا تَعْلَمُونَ

تہندء خاطرء چھوء جنگ مقرر کرنہ آمت تہ توہیہ چھوء نہ سوء پسند تہ ممکن چھوء واریاہ چیز آسن نہ توہیہ پسند یلہ زن تمی چھئی تہندء خاطرء مفید تہ سودمند۔

(البقرة/216)

عدل الہی پیٹھ ایمانک اثر

                اسلامی حکومتس/تنظیمس/جماعتس/سماجس منز  اجتماعی عدل و انصافس پیٹھ انحصار آسن  چھوء انسانی سماج خدایی خصلتن تہ صفتن تان واتناوء نہ خاطرء تہ قرآنی مثالی سماج  قائم کرنہ خاطرء خدای سندء عدلک پرتو۔

                اسلامی حکومت/تنظیم/جماعت/سماج چھنہ صرف  انصافس پیٹھ منحصر بلکہ قسط، کتاب تہ میزان قائم کرنس پیٹھ قائم آسنس پیٹھ منحصر:

وَأَنْزَلْنَا مَعَهُمُ الْکِتَابَ وَالْمِیزَانَ لِیقُومَ النَّاسُ بِالْقِسْطِ

تہ اسہ سوزی تمی کتاب تہ میزان ہیتھ تاکہ لوکھ کرن قسط(عدالت)قائم۔

(سورہ 57، آیہ 25)

                1-عدالت یعنی صاحب حق سند حق رعایت کرن تہ پرتھ کانسہ تمسندء استحقاق مطابق حق دیون۔

                2-قسط یعنی یہ کینژاہ حقس تان واتنہ تہ عدل نصیب گژھنس تام چھوء تہ اسلامی رہنما ن پیٹھ چھئی ذمہ داری کہ تمی کرن تیوتھ ماحول تیار کہ پرتھ کانہ ہیکہ پننہ حقک دفاع کرتھ تہ پنن حق حاصل کرتھ۔

                3-کتاب یعنی سوء آئین تہ قانون یمہ ساتھی لوکھ پنن ذمہ داری تہ پنن تہ بیہ سند حقوق زانن تہ  تمچ خلاف ورزی کرن والی سندء خاطرء  سزا عدالت تعین کرء۔

                4-میزان یعنی قابل قبول معیار مطابق تولنک ذریعہ تاکہ کانسہ ہند کمترین حق گژھنہ پایمال ۔ قیامتس منز تہ سپدء لوکن ساتھی عدل تہ میزان مطابق انصاف:

وَنَضَعُ الْمَوَازِینَ الْقِسْطَ لِیوْمِ الْقِیامَةِ فَلَا تُظْلَمُ نَفْسٌ شَیئًا وَإِنْ کَانَ مِثْقَالَ حَبَّةٍ مِنْ خَرْدَلٍ أَتَینَا بِهَا وَکَفَى بِنَا حَاسِبِینَ۔

(تہ قیامتک دوہ)لگہ عدالتچ ترکئرتاکہ کانسہ ساتھی گژھنہ نہ ظلم،(تتہ)حتی   اکہ مونگہ پھلہ  کہ وزنہ برابر آئس تن تتھ تہ لگہ حساب کافی چھوء کہ ائس آسو پانے حساب ہنہ والی۔

(الأنبیاء/47)



[1] سورہ 18 آیت 49

[2] سورہ 57 آیت 25

تبصرے (۰)
ابھی کوئی تبصرہ درج نہیں ہوا ہے

اپنا تبصرہ ارسال کریں

ارسال نظر آزاد است، اما اگر قبلا در بیان ثبت نام کرده اید می توانید ابتدا وارد شوید.
شما میتوانید از این تگهای html استفاده کنید:
<b> یا <strong>، <em> یا <i>، <u>، <strike> یا <s>، <sup>، <sub>، <blockquote>، <code>، <pre>، <hr>، <br>، <p>، <a href="" title="">، <span style="">، <div align="">
تجدید کد امنیتی