پيشنهاد سردبير

سایت شخصی ابوفاطمہ موسوی عبدالحسینی

جستجو

ممتاز عناوین

بایگانی

پربازديدها

تازہ ترین تبصرے

۰

در بیان اصولء دین مبین اسلام

 کتابخانہ کاشر دینیات

در بیان اصولء دین مبین اسلام

مقدمہ چھوء در بیان اصول دین تہ بعض مسائل تقلید۔زان زء اصول دین چھہء زء2؛ اصول اسلام تہء اصول ایمان۔

بِسْمِ اللَّهِ الرَّحْمَنِ الرَّحِیم

اصول دین

در بیان اصولء دین مبین اسلام

مقدمه

مقدمہ چھوء در بیان اصول دین تہ بعض مسائل تقلید۔زان زء اصول دین چھہء زء2؛ اصول اسلام تہء اصول ایمان۔

اصول اسلام چھئی  ترین3 اصولن ہندس مجموعس ونان:

1.        توحید[1]

2.      نبوت[2]

3.     تہ قیامت[3]

تہ اصول ایمان چھئی پانژن5 اصولن ہندس مجموعس ونان:

1.        توحید

2.      عدل[4]

3.     نبوت

4.     امامت[5]

5.      تہء قیامت

 

توحید

توحیدیعنی ؛ون اللہ چھوء کن[6]،

اللہ چھوء بے نیاز[7]،

اللہ نہ زاو تہء نہ زاس[8]

اللہ ہس ہیوہ  چھونہء کانہہ[9]۔

امی خدای واحد ،صمد ،لم یلد و یولد و لم یکن لہ کفوا احدن سوزی انسان سنزء ھدایتہء باپت اکھ  لچھ ژووہ ساس پیغمبرگوڈنیوک چھوء ابوالبشر حضرت آدم علیہ السلام تہء آخر چھوء سون نبی حضرت محمد رسول اللہ صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم۔

پرتھ نبیس دیوت خداین پننہء زمانہء مطابق معجزء تہء سانس نبی محمد بن عبداللہ  صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم سند معجزء چھوء قرآن یتھی اسلامک آئین اساسی تہء چھئی ونان۔

قرآن دپان، انسان گو خدای سند بہترین شاہکار[10]۔

 انسان گو خلیفہ خدا[11]، 

انسان گو علمک خزانہ[12]،

 انسان گو وتھ ہاوک، انسان گو کرامتک آگر، انسان گو ہمیشہ کمال حاصل کرن وول، انسان گو فرشتن ہند سجدہ گاہ[13]،

 انسان گو صاحب اختیار یعنی متقی ، طاہر ، شاکر ، صابر ، ذاکر ، عادل ، محسن ، مجاہد ، مہاجر، مومن، زاھد، تائب، سلیم، اصیل، شریف تہ کریم وغیرء۔۔

انسان سند صلاحیت ابھر نہء خاطرء خداین کئر انبیاء مبعوث، تاکہ انسان سئنز انسانیت لبہء بہار تہء کمال، تاکہ یہء کہنژاہ خداین تمسندء دائمی زندگی خاطرء تمسند بہشت چھوءپادء  کورمت سوء کرء پننہ صلاحیت تہء محنتہ  ساتھی حاصل۔

الہی ادیان تہء انبیاء اعظامو ہئنزء تعلیمات کہ روشنی منز یعنی" اعتقاد"،"اخلاق" تہ "عملء "ساتھی چھو انسان ہر زمانس منز پنن پنن مقام حاصل کران رودمت،تہ  تمام الہی ادیانن منز چھوءاکوی اصول حاکم رودمت یَتھی زن اصول دین ونو یعنی؛ "توحید"،"نبوت" تہء" معاد"[14]۔

ترء3اعتقادی اصول ؛ " توحید" ، "نبوت" تہء "معاد"  چھئی قرآنس منز کنہ جایہ ایکس سورء منز  بیان سپدمت یتھ کئن سورہ یاسین کس آغازس منزی چھئی "نبوت

[إِنَّکَ لَمِنَ الْمُرْسَلِینَ[15]]

 تہء سورء کس آخرس منز چھوء "معاد" بیان سپدمت؛

 [فَسُبْحَانَ الَّذِی بِیدِهِ مَلَکُوتُ کُلِّ شَیءٍ وَإِلَیهِ تُرْجَعُونَ[16]]۔

کنہ جایہ چھئی اکسی آیہ شریفس منز بیان سپدمت؛

[ آمَنَ الرَّسُولُ بِمَا أُنْزِلَ إِلَیهِ مِنْ رَبِّهِ وَالْمُؤْمِنُونَ کُلٌّ آمَنَ بِاللَّهِ وَمَلَائِکَتِهِ وَکُتُبِهِ وَرُسُلِهِ لَا نُفَرِّقُ بَینَ أَحَدٍ مِنْ رُسُلِهِ وَقَالُوا سَمِعْنَا وَأَطَعْنَا غُفْرَانَکَ رَبَّنَا وَإِلَیکَ الْمَصِیرُ[17]"

یتھی منز؛

 [ کُلٌّ آمَنَ بِاللَّهِ ]

چھوء {توحید} ؛

[لَا نُفَرِّقُ بَینَ أَحَدٍ مِنْ رُسُلِهِ]۔

{نبوت}تہء

 [وَإِلَیکَ الْمَصِیرُ]

 قیامتک اشارہ سپدمت۔

خلاصہ؛

·        توحید:یعنی خداوند تبارک و تعالی چھوء اکھ، شریک تہ نظیر چھسنہ، پرتھ کمالاہ چھوء تس،پاک چھوء پرتھ نقصانہ نشہ، وچھنہ ییہ نہ، نہ دنیاہس منز ن،ہ آخرتس منز۔

خدا فرماوان ؛پرتھ دین تہءنبی  آو خدای سنزء وحدانیتک تبلیغ کران:

"اعْبُدُواْ اللَّهَ مَا لَکُم مِّنْ إِلَهٍ غَیْرُهُ

سورہ اعراف آیت 59۔

        عدل:

،عدل؛یعنی اللہ چھوء عادل،ظالم چھنہ، ظلم کرء سوء اکھا یوس جاہل آسہء یا محتاج، وحالانکہ اللہ سبحان و تعالی نہ چھوء جاہل تہء نہ چھوء محتاج۔

خدا فرماوان؛خدای سئنز پرتھ عمل چھئی عدلس پیٹھ قائم:

" إِنَّ اللّهَ لاَ یَظْلِمُ النَّاسَ شَیْئًا وَلَکِنَّ النَّاسَ أَنفُسَهُمْ یَظْلِمُونَ "

 سورہ یونس آیت 44.

        نبوت:

نبوت ؛یعنی  اکھ لچھ تہء ژووہ ساس[18] پیغمبر  از جانب اللہ سبحان و تعالی آمتی، تمی ساری چھء بر حق[19]۔اول تہند چھوء حضرت آدم صفی اللہ علیہ السلام تہ آخر تہند چھوء حضرت محمدبن عبداللہ صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم۔آنحضرت چھئ افضل تہء خاتم الانبیاء، یوس اکھاہ تس جنابس پتہ دعوای نبوت کرء سوء چھوء کاذب تہ کافر۔

خدا فرماوان؛پرتھ امژ پیٹھ سوز خداین پنن نبی :

وَلَقَدْ بَعَثْنَا فِی کُلِّ أُمَّةٍ رَّسُولاً

سورہ نحل آیت 36

" کَمَا أَرْسَلْنَا فِیکُمْ رَسُولاً مِّنکُمْ یَتْلُو عَلَیْکُمْ آیَاتِنَا وَیُزَکِّیکُمْ وَیُعَلِّمُکُمُ الْکِتَابَ وَالْحِکْمَةَ وَیُعَلِّمُکُم مَّا لَمْ تَکُونُواْ تَعْلَمُونَ"

سورہ بقرہ آیت 151۔

ولایت/امامت؛

ولایت /امامت'یعنی باہ نفرائمہ ھدی سانس نبیس صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم پتہء تسندجانشین/وصی تہء امژ ہند امام چھئ باہ:

 گوڑنیوک جانشین تہء امتک امام چھوء مومنن ہند امیر سید اوصای رسول اللہ  حضرت علی ابن ابیطالب علیہما السلام[20]۔

 تس پتہء تسند جانشین،آنحضور حضرت محمد رسول اللہ صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم سند دویم وصی تہء امتک امام حضرت حسن مجتبی علیہ السلام۔

تس پتہء تسند جانشین،آنحضور سند تریم وصی  تہء امتک امام حضرت حسین شہید کربلا علیہ السلام۔

تس پتہء تسند جانشین،آنحضور سند ژوریم وصی تہء امتک امام حضرت علی ابن الحسین زین العابدین علیہ السلام۔

تس پتہء تسند جانشین،آنحضور سند پانژم وصی  تہء امتک امام حضرت محمد باقر علیہ السلام۔

تس پتہء تسند جانشین ،آنحضور سند شیم وصی تہء امتک امام حضرت جعفر صادق علیہ السلام۔

تس پتہء تسند جانشین ،آنحضور سند ستیم وصی تہء امتک امام حضرت موسی کاظم علیہ السلام۔

تس پتہء تسند جانشین،آنحضور سند آٹھم وصیتہء امتک امام حضرت علی رضا علیہ السلام۔

تس پتہء تسند جانشین آنحضور سند نیم وصی تہء امتک امام حضرت محمد تقی علیہ السلام۔

تس پتہء تسند جانشین،آنحضور سند  دہم وصی تہء امتک امام حضرت علی النقی علیہ السلام۔

تس پتہء تسند جانشین،آنحضور سند کہم وصی تہء امتک امام حضرت حسن عسکری علیہ السلام۔

تس پتہء تسند جانشین تہء سانس نبی صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم سند ہمنام حضرت مھدی[21]  خاتم الاوصیای رسول اللہ علیہم السلام  سانہء زمانک امام یوس ژھایہ ء بحکم پروردگار چھوء،اسہء چھوء تسندء ظہورک انتظار ۔عجل اللہ تعالی فرجہ الشریف۔خدا دین دستی ظہور تس جنابس۔ یلہء سوء جناب ظاہر سپنہء زمین برء عدل تہء انصافہء ساتھی یلہء زن برتھ آسہ آمژ ظلمہء تہء بیداد ساتھی[22]۔

قائم آل محمد عجل اللہ تعالی فرجہ الشریف  چھوء مومنن ہند قائد ، پیشوا تہء سردار۔ مومنن چھئی یہنزی ولایت تہء محبت۔ یہندین دوستن ہند چھوک محبت۔ یہندین دشمنن نشہء چھئ بیزار۔

امام زمان عجل اللہ تعالی فرجہ الشریف سندس دوران غیبتس منز چھئ بنابر توقیع شریف آنحضرت عج مومنن ہئند مقتدی تہء رہنما[23] مرجع تقلید[24] بالعموم تہ ولی فقیہ بالخصوص۔

" وَجَعَلْنَاهُمْ أَئِمَّةً یَهْدُونَ بِأَمْرِنَا وَأَوْحَیْنَا إِلَیْهِمْ فِعْلَ الْخَیْرَاتِ وَإِقَامَ الصَّلَاةِ وَإِیتَاءَ الزَّکَاةِ وَکَانُوا لَنَا عَابِدِینَ "

 سورہ انبیاء آیت 73۔

     قیامت/معاد؛

قیامت /معاد ؛یعنی روح یلہء بدنہ منزء نیرہ دوبارہ ییہ فیرتھ بدنس منز،اکھ قبرء منزء نکیر ومنکر سندء جوابہ باپت، بیہ روزء قیامتس منز حسابہ باپت۔ سوء چھوء دوہا زء پرتھ اکھا واتہ پنہ نہ عملہ ہندس جزاس ثواب گار آستن یا گنہگار۔

 پرتھ دین تہء نبی آو عملن ہند جزاء لبنک دوہچ تلقین کران۔

" ثُمَّ إِنَّکُمْ یَوْمَ الْقِیَامَةِ تُبْعَثُونَ "

 سورہ مومنون آیت 26

شهادت

اصول دینس پیٹھ یقین تہ اعتماد حاصل کرنہ پتہ ون:

گواہی چھوس /چھئس دوان زء اللہ چھوء سوی زء پرتھ کمالاہ چھوء تس ۔ پاک چھوءپرتھ نقصانہ ء نشہء ۔ تمی کروس/کرئس بہء پادء بیہ نم زمین تہء آسمان ، بیہ ء ساری خلق ۔ سوئی چھوء پروردگارمیون بیہء سارنی عالمن ہند ۔ سوء چھوء عادل تہء حکیم۔ بننہء آسن تسند کارراہ قبیح تہء ظلم تہء فائدہ سوا:

" اَشهدُ انْ لا اِلٰهَ الا الله[25] و  اَشهدُ انَّ محمّداً رسولُ الله[26]"۔

·        گواہی چھوس / چھئس دوان محمد صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم چھوء خدای سند بندء تہء  رسول تسند۔ سوزن سہء جناب ہدایت تہء دین حق ہیتھ[27]۔

·        گواہی چھوس/چھئس دوان زء ختم سپن پیغمبری تس جنابس پیٹھ۔ سوء چھوء خاتم انبیاء تہء افضل تمن منزپیغمبراہ[28] تہء یوس اکھاہ تس جنابس پتہء دعوای نبوت کرء سوء چھوء کاذب تہء کافر۔

·        بیہء چھوس/ چھئس گواہی دوان زء یہء کینژاہ آنحضرت ہیتھ آو، ونن تہء باون تہء سوری چھوء حق از جا نب اللہ سبحان وتعالی۔حق چھہء تمہء کتابہء یمہء وژھہء تمن پیٹھ[29]۔

·        بیہ چھوس/چھئس گواہی دوان زء سارنی پیغمبرن ہندنوصین ہند وصی آسن چھوء حق[30]۔

·        بیہء چھوس/چھئس گواہی دوان زء حق تعالاس چھہء بیاکھ جماعتاہ بندن ہئنز یمن ملائکہ چھئء دپان،تمی چھئی تی کران یہء کہنژاہ خدای سبحان و تعالی فرمان دییکھ تہء تمی ساری چھئی معصوم[31]۔

·        بیہء چھوس/ چھئس گواہی دوان زء پیغمبر سون صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم چھوء بہترین خلق تہء معصوم تہء تس پتہء چھئی بہترین خلق تہء معصوم تسند باہ جانشین/وصی علیہم السلام[32]۔

·        بیہء چھوس/چھئس گواہی دوان زء سانس پیغمبر حضرت محمد صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم سئنز کور صدیقہ کبری فاطمہ زہراء سلام اللہ علیہا چھئی سارنی زنانن ہئنز سردار[33]۔

·        بیہء چھوء / چھئس گواہی دوان زء سانس نبیس صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم پتہء تسندجانشین /وصی تہء امژ ہند امام چھئ باہ :

1.        گوڑنیوک جانشین[34] تہء امتک امام چھوء مومنن ہند امیر حضرت علی ابن ابیطالب علیہ السلام۔

2.      تس پتہء تسند جانشین تہء امتک امام حضرت حسن مجتبی علیہ السلام

3.     تس پتہء تسند جانشین تہء امتک امام حضرت حسین شہید کربلا علیہ السلام

4.     تس پتہء تسند جانشین تہء امتک امام حضرت علی ابن الحسین زین العابدین علیہ السلام

5.      تس پتہء تسند جانشین تہء امتک امام حضرت محمد باقر علیہ السلام

6.      تس پتہء تسند جانشین تہء امتک امام حضرت جعفر صادق علیہ السلام

7.     تس پتہء تسند جانشین تہء امتک امام حضرت موسی کاظم علیہ السلام

8.     تس پتہء تسند جانشین  تہء امتک امام حضرت علی رضا علیہ السلام

9.       تس پتہء تسند جانشین تہء امتک امام حضرت محمد تقی علیہ السلام

10.     تس پتہء تسند جانشین تہء امتک امام حضرت علی النقی علیہ السلام

11.       تس پتہء تسند جانشین تہء امتک امام حضرت حسن عسکری علیہ السلام

12.     تس پتہء تسند جانشین تہء سانس نبی صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم سند ہمنام حضرت مھدی[35] سانہء زمانک امام یوس ژھایہ ء بحکم پروردگار چھوء،اسہء چھوء تسندء ظہورک انتظار ۔عجل اللہ تعالی فرجہ الشریف۔خدا دین دستی ظہور تس جنابس۔ یلہء سوء جناب ظاہر سپنہء زمین برء عدل تہء انصافہء ساتھی یلہء زن برتھ آسہ آمژ ظلمہء تہء بیداد ساتھی[36]۔گواہی چھوس/چھئس دوان زء یہویی چھوء میون امام، میون قائد ، پیشوا تہء سردار۔ یہندی چھم ولایت تہء محبت۔ یہندین دوستن ہند چھوم محبت۔ یہندین دشمنن نشہء چھوس بیزار[37]۔امام زمان عجل اللہ تعالی فرجہ الشریف سندس دوران غیبتس منز چھئم بنابر توقیع شریف آنحضرت عج میانی مقتدی تہء رہنما[38] مرجع تقلید[39]   ۔

بیہ چھوس / چھئس گواہی دوان زء:

·         مرن چھوء حق[40]

·        ۔ قبر چھئ حق[41]۔

·         سوال نکیر و منکر چھوء حق[42]۔

·         بیہ ء زندء سپنن چھوء حق۔

·        قبرء منز نیرن چھوء حق[43]۔

·         قیامت چھئ حق[44]۔

·         صراط چھوء حق[45]۔

·         میزان چھوء حق[46]۔

·         حساب قیامت چھوء حق[47]۔

·        رٹن تمہء دہہء عملن ہند نامہ چھوء حق[48]۔

·         تہء بیہ ساری واردات  قیامت تہ ہول قیامتک چھوء حق۔

·         شفاعت چھوء حق[49]۔

·         بہشت چھوء حق[50]۔

·        دوزخ چھوء حق[51]۔

·         قیامت چھئی یوان شکاہ چھونہء تتھ۔

·         خدا تلہء تمن یمی آسن قبرن منز۔

"الحمدللہ الذی ھدانا لھذا و ما کنا لنھتدی لو لا ان ھدانا اللہ والحمدللہ رب العالمین

 فروع دین

فروع دین چھئ آٹھ:

1.        نماز

2.      روزء

3.     زکات

4.     خمس

5.      حج

6.      جہاد

7.     امربالمعروف

8.     نہی از منکر

·        تولی تہ تبرا تہء چھوء بعضی رواتو از فروع دین گنزر مت، امّا تم چھئی از لوازم اصول دین۔

تولی؛ یعنی دوست تھاون خدا، پیغمبر تہء اوصیای پیغمبر( ائمہ ھدی )بیہ دوست تہند۔

تبری؛ یعنی دشمن تھاون دشمنان خدا ، پیغمبر تہ اوصیای پیغمبر(ائمہ ھدی) صلوات اللہ علیہم۔

 

مسائل تقلید

احکام تقلید چھئی دھن مطلب منز بیان کرنه آمت

1.        مطلب اول:ممدوح تہ مزموم تقلید زانت  ممدوح تقلید کرن

2.      مطلب دویم:الزام مجتہد جامع الشرائط سئنز تقلید کرن

3.     تریم مطلب: مجتہد جامع الشرائط پرزناونک شرائط

4.     ژورم مطلب:استفتائات حاصل کرنچ کیفیت

5.      پانژم مطلب :تمن مسائلن منز زہ تحصیل کرن تم چھہ لازم

6.      شیم مطلب : واجبی عباداتو منزہ پرت اکہ باپت کوتاہ  گژہن تمکو مسائلو منوہ تحصیل کرن

7.     ستم مطلب:  مسائل مستحبات تحصیل کرہ نس منز

8.     آٹھم مطلب؛ در تحقیق تقلید

9.       نوم مطلب ؛ در احکام تقلید

10.     دہم مطلب؛ در مسائل ترک تقلید

 

مسئلہ1۔کانہہ تہء مسلمان ہیکنہء اصول دینس منز تقلید کرتھی، بلکہ تس پزء دلیل تہء استدلال سان پانہء اعتقاد پادء کرن مگر فروع دین یعنی احکامات تہء عملی کامین متعلق چھئی مجتہد جامع الشرائط سنز تقلید کرن واجب۔

تقلید کرنک موضوع چھوء بذات خود اکھ مسئلہ،کیازکہ اسلامن چھئی تقلید کرنس منع کرمت لذا چھوء زانن ضروری کہ کوس تقلید چھئی جائز تہء کوس تقلید چھئی ناجائز۔

مسئلہ 2۔احکامن ہئنز تقلید کرنک مطلب گو ہر زمانس منز صاحب شریعت اسلام حضرت محمد رسول اللہ صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم سندس خدمتس منز سوال کرن کہ بہء کتھہء انہء تس جناب سند فرمان بجا ۔ یتھی کئن آنحضرت صلی اللہ علیہ وآلہ وسلمس پتہء تسندس جانشینس امیرالمومنین علی ابن ابیطالب علیہ السلامس لوکھ احکامن متعلق سوال آئس کران تہءتس پتہء تسندس جانشینس  امام حسن مجتبی علیہ السلامس تہء تس پتہء تسندس جانشینس حضرت امام حسین علیہ السلامس تہء تس پتہء تسندس جانشینس حضرت اما م زین العابدین علیہ السلامس تہء تس پتہء تسندس جانشینس حضرت امام محمد باقر علیہ السلامس تہء تس  پتہء تسندس جانشینس حضرت امام جعفر صادق علیہ السلامس تہء تس پتہء تسندس جانشینس حضرت امام موسی کاظم علیہ السلامس تہء پتہء تسندس جانشین حضرت امام علی رضا علیہ السلامس تہء تس پتہء تسندس جانشینس حضرت امام محمد تقی جواد علیہ السلامس تہء تس پتہء تسندس جانشینس حضرت امام علی النقی علیہ السلامس تس پتہء تسندش جانشینس حضرت امام حسن عسکری علیہ السلامس تہ تس پتہء تسندس جانشینس تہء پننس امامس حضرت مھدی عجل اللہ تعالی فرجہ الشریف سنز تقلید کران۔دین مبین اسلام چھوء تا قیام قیامت آخری الہی دین تہ  خداین کئر عمر مبارک ہمنام پیغمبر  صلی اللہ  علیہ وآلہ وسلم تہء سانہء زمانکہ امام،  حضرت مھدی طولانی، تہء تمی تھاوکھ حضرت خضر نبی علیہ السلام سند پاٹھی لوکن ہنزن نظرو نشہ ء پوشیدء تہء غیب۔ یتھی غیبتک زمانہء تہء چھئی ونان۔یتھی دوران  محمد رسول اللہ صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم  تہ اہلبیت رسول اللہ علیہم السلام سندء مکتبک  مستند محدث  چھئی حضرت  امام زمان عجل اللہ تعالی فرجہ الشریف  سنز نیابت سنبھالتھ  لوکن احکام بیان کران یمن مجتہد جامع الشرائط یا نایب امام وننہ چھوء یوان ۔یمن متعلق چھوء آنحضرتن عجل اللہ تعالی فرجہ الشریف پننہ توقیع منز فرمان جاری کورمت زء:

فارجعوا الی روات حدیثنا فانھم حجتی ۔۔

مستند مجتہد جامع الشرائط تہء نایب امام سنز تقلید کرن چھئی امام زمان عجل اللہ تعالی فرجہ الشریف سنز تقلید کرن تہ امام زمان سنز تقلید کرن چھئی  تسندس مولا حضرت امام حسن عسکری علیہ السلام سنز تقلید کرن تہء تسنز تقلید کرن چھئی تسندس مولا حضرت امام علی النقی علیہ السلام سنز تقلید کرن تہء تسنز تقلید کرن چھئی تسندس مولا حضرت امام جواد علیہ السلام سنز تقلید کرن تہء تسنز تقلید کرن چھئی تسندس مولا حضرت امام علی رضا علیہ السلام سنز تقلید کرن ، تہء تسنز تقلید کرن چھئی تسندس مولا حضرت امام موسی کاظم علیہ السلام سنز تقلید کرن ، تہء تسنز تقلید کرن گئی تسندس مولا حضرت امام جعفر صادق علیہ السلام سنز تقلید کرن ، تہء تسنز تقلید کرن چھئی تسندس مولا حضرت امام محمد باقر علیہ السلام سنز تقلید کرن ، تہء تسنز تقلید چھئی تسندس مولا حضرت امام زین العابدین علیہ السلام سنز تقلید کرن تہء تسنز تقلید کرن چھئی تسندس مولا حضرت امام حسین علیہ السلام سنز تقلید کرن ، تہء تسنز تقلید کرن چھئی تسندس مولا حضرت امام حسن علیہ السلام سنز تقلید کرن ، تہء تسنز تقلید کرن گئی تسندس مولا حضرت  امام علی علیہ السلام سنز تقلید کرن ، تہء تسنز تقلید کرن چھئی تسندس مولا حضرت  خاتم الانبیاء محمد رسول اللہ سنز تقلید کرن ۔

 


[1] ... اعْبُدُوا اللَّهَ مَا لَکُمْ مِنْ إِلَهٍ غَیرُهُ ..(الأعراف/59)
[2] وَلَقَدْ بَعَثْنَا فِی کُلِّ أُمَّةٍ رَسُولًا(النحل/36)
[3] ثُمَّ إِنَّکُمْ یوْمَ الْقِیامَةِ تُبْعَثُونَ(المؤمنون/16)
[4] إِنَّ اللَّهَ لَا یظْلِمُ النَّاسَ شَیئًا وَلَکِنَّ النَّاسَ أَنْفُسَهُمْ یظْلِمُونَ(یونس/44)
[5]  وَجَعَلْنَاهُمْ أَئِمَّةً یهْدُونَ بِأَمْرِنَا وَأَوْحَینَا إِلَیهِمْ فِعْلَ الْخَیرَاتِ وَإِقَامَ الصَّلَاةِ وَإِیتَاءَ الزَّکَاةِ وَکَانُوا لَنَا عَابِدِینَ(الأنبیاء/73)
[6] قُلْ هُوَ اللَّهُ أَحَدٌ
[7] اللَّهُ الصَّمَدُ
[8] لَمْ یلِدْ وَلَمْ یولَدْ
[9] وَلَمْ یکُنْ لَهُ کُفُوًا أَحَدٌ
[10] لَقَدْ خَلَقْنَا الْإِنْسَانَ فِی أَحْسَنِ تَقْوِیمٍ(التین/4)
[11]  وَإِذْ قَالَ رَبُّکَ لِلْمَلَائِکَةِ إِنِّی جَاعِلٌ فِی الْأَرْضِ خَلِیفَةً (البقرة/30)
[12] وَعَلَّمَ آدَمَ الْأَسْمَاءَ کُلَّهَا ثُمَّ عَرَضَهُمْ عَلَى الْمَلَائِکَةِ فَقَالَ أَنْبِئُونِی بِأَسْمَاءِ هَؤُلَاءِ إِنْ کُنْتُمْ صَادِقِینَ(البقرة/31)
[13] وَإِذْ قُلْنَا لِلْمَلَائِکَةِ اسْجُدُوا لِآدَمَ فَسَجَدُوا إِلَّا إِبْلِیسَ أَبَى وَاسْتَکْبَرَ وَکَانَ مِنَ الْکَافِرِینَ(البقرة/34)
[14] آمَنَ الرَّسُولُ بِمَا أُنْزِلَ إِلَیهِ مِنْ رَبِّهِ وَالْمُؤْمِنُونَ کُلٌّ آمَنَ بِاللَّهِ وَمَلَائِکَتِهِ وَکُتُبِهِ وَرُسُلِهِ لَا نُفَرِّقُ بَینَ أَحَدٍ مِنْ رُسُلِهِ وَقَالُوا سَمِعْنَا وَأَطَعْنَا غُفْرَانَکَ رَبَّنَا وَإِلَیکَ الْمَصِیرُ(البقرة/285)
[15] یس/3
[16] یس/83
[17] (البقرة/285)
[18] 124000
[19] قرآنس منز چھوء حق بعض اوقات ذات اقدس الہی پیٹھ اطلاق سپدمت" ذَلِکَ بِأَنَّ اللَّهَ هُوَ الْحَقُّ" یتھ نہ کانہہ مقابلہ چھوء تہ بعض اوقات فعل الہی پیٹھ اطلاق سپدمت" الْحَقُّ مِنْ رَبِّکَ" یمیوک مقابل باطل، ظلم، بیہودگی وغیرء چھو لذا حق گو قول خدا،فعل خدا، سنّت خدا، انبیاہن ہئز عملی سیرت یمی حق نشہ حکم چھئی حاصل کران۔
[20] قال رسول اللہ صلی اللہ علیه وآله: «ایهاالنَّاسُ، مَنْ اَوْلی بِکُمْ مِنْ اَنْفُسِکُمْ؟ قالوا: الله و رَسُولُهُ. فَقالَ: اَلا من کُنْتُ مَوْلاهُ فَهذا عَلی مَوْلاهُ، اللهمَّ والِ مَنْ والاهُ و عادِ مَنْ عاداهُ وَانْصُرْمَنْ نَصَرَهُ واخْذُلْ مَنْ خَذَلَهُ.
[21]  بَقِیتُ اللَّهِ خَیرٌ لَکُمْ إِنْ کُنْتُمْ مُؤْمِنِینَ وَمَا أَنَا عَلَیکُمْ بِحَفِیظٍ(هود/86)
[22]  وَنُرِیدُ أَنْ نَمُنَّ عَلَى الَّذِینَ اسْتُضْعِفُوا فِی الْأَرْضِ وَنَجْعَلَهُمْ أَئِمَّةً وَنَجْعَلَهُمُ الْوَارِثِینَ(القصص/5)
[23] و امّا الحوادث الواقعه فرجعوا فیها إلی روات حدیثنا فإنهم حجتی علیکم و أنا حجت الله
[24] فِی کِتَابِ الْإِحْتِجَاجِ لِلطَّبْرِسِیِّ «رَحِمَهُ اللَّهُ» بِإِسْنَادِهِ إِلَى الْإِمَامِ مُحَمَّدِ بْنِ عَلِیٍّ الْبَاقِرِ عَلَیْهِمَا السَّلَامُ عَنِ النَّبِیِّ صَلَّى اللَّهُ عَلَیْهِ وَ آلِهِ حَدِیثٌ طَوِیلٌ وَ فِیهِ خُطْبَةُ الْغَدِیرِ وَ فِیهَا مَعَاشِرَ النَّاسِ أَنَا الصِّرَاطُ الْمُسْتَقِیمُ‏ الَّذِی أَمَرَکُمْ بِاتِّبَاعِهِ، ثُمَّ عَلِیٌّ (عَلَیْهِ السَّلَامُ) مِنْ بَعْدِی، ثُمَّ وُلْدِی مِنْ صُلْبِهِ أَئِمَّةٌ یَهْدُونَ بِالْحَقِّ وَ بِهِ یَعْدِلُونَ
[25]  شَهِدَ اللَّهُ أَنَّهُ لَا إِلَهَ إِلَّا هُوَ... (آل عمران/18)
[26] مُحَمَّدٌ رَسُولُ اللَّه ...(الفتح/29)
[27]  هُوَ الَّذِی أَرْسَلَ رَسُولَهُ بِالْهُدَى وَدِینِ الْحَقِّ لِیظْهِرَهُ عَلَى الدِّینِ کُلِّهِ وَکَفَى بِاللَّهِ شَهِیدًا(الفتح/28)
[28]  مَا کَانَ مُحَمَّدٌ أَبَا أَحَدٍ مِنْ رِجَالِکُمْ وَلَکِنْ رَسُولَ اللَّهِ وَخَاتَمَ النَّبِیینَ..(الأحزاب/40)
[29] وَالَّذِینَ یؤْمِنُونَ بِمَا أُنْزِلَ إِلَیکَ وَمَا أُنْزِلَ مِنْ قَبْلِکَ وَبِالْآخِرَةِ هُمْ یوقِنُونَ(البقرة/4)
[30]   وَلَقَدْ آتَینَا مُوسَى الْکِتَابَ وَجَعَلْنَا مَعَهُ أَخَاهُ هَارُونَ وَزِیرًا(الفرقان/35)
[31]  ..آمَنَ بِاللَّهِ وَمَلَائِکَتِهِ وَکُتُبِهِ وَرُسُلِهِ لَا نُفَرِّقُ بَینَ أَحَدٍ مِنْ رُسُلِهِ ..(البقرة/285)
[32]  قُلْ هَلْ مِنْ شُرَکَائِکُمْ مَنْ یهْدِی إِلَى الْحَقِّ قُلِ اللَّهُ یهْدِی لِلْحَقِّ أَفَمَنْ یهْدِی إِلَى الْحَقِّ أَحَقُّ أَنْ یتَّبَعَ أَمَّنْ لَا یهِدِّی إِلَّا أَنْ یهْدَى فَمَا لَکُمْ کَیفَ تَحْکُمُونَ(یونس/35)
[33]  فَمَنْ حَاجَّکَ فِیهِ مِنْ بَعْدِ مَا جَاءَکَ مِنَ الْعِلْمِ فَقُلْ تَعَالَوْا نَدْعُ أَبْنَاءَنَا وَأَبْنَاءَکُمْ وَنِسَاءَنَا وَنِسَاءَکُمْ وَأَنْفُسَنَا وَأَنْفُسَکُمْ ثُمَّ نَبْتَهِلْ فَنَجْعَلْ لَعْنَتَ اللَّهِ عَلَى الْکَاذِبِینَ(آل عمران/61)
[34]  اهْدِنَا الصِّرَاطَ الْمُسْتَقِیمَ(الفاتحة/6)
[35]  بَقِیتُ اللَّهِ خَیرٌ لَکُمْ إِنْ کُنْتُمْ مُؤْمِنِینَ وَمَا أَنَا عَلَیکُمْ بِحَفِیظٍ(هود/86)
[36]  وَنُرِیدُ أَنْ نَمُنَّ عَلَى الَّذِینَ اسْتُضْعِفُوا فِی الْأَرْضِ وَنَجْعَلَهُمْ أَئِمَّةً وَنَجْعَلَهُمُ الْوَارِثِینَ(القصص/5)
[37] قال رسول اللہ صلی اللہ علیه وآله: «ایهاالنَّاسُ، مَنْ اَوْلی بِکُمْ مِنْ اَنْفُسِکُمْ؟ قالوا: الله و رَسُولُهُ. فَقالَ: اَلا من کُنْتُ مَوْلاهُ فَهذا عَلی مَوْلاهُ، اللهمَّ والِ مَنْ والاهُ و عادِ مَنْ عاداهُ وَانْصُرْمَنْ نَصَرَهُ واخْذُلْ مَنْ خَذَلَهُ.
[38] و امّا الحوادث الواقعه فرجعوا فیها إلی روات حدیثنا فإنهم حجتی علیکم و أنا حجت الله
[39] فِی کِتَابِ الْإِحْتِجَاجِ لِلطَّبْرِسِیِّ «رَحِمَهُ اللَّهُ» بِإِسْنَادِهِ إِلَى الْإِمَامِ مُحَمَّدِ بْنِ عَلِیٍّ الْبَاقِرِ عَلَیْهِمَا السَّلَامُ عَنِ النَّبِیِّ صَلَّى اللَّهُ عَلَیْهِ وَ آلِهِ حَدِیثٌ طَوِیلٌ وَ فِیهِ خُطْبَةُ الْغَدِیرِ وَ فِیهَا مَعَاشِرَ النَّاسِ أَنَا الصِّرَاطُ الْمُسْتَقِیمُ‏ الَّذِی أَمَرَکُمْ بِاتِّبَاعِهِ، ثُمَّ عَلِیٌّ (عَلَیْهِ السَّلَامُ) مِنْ بَعْدِی، ثُمَّ وُلْدِی مِنْ صُلْبِهِ أَئِمَّةٌ یَهْدُونَ بِالْحَقِّ وَ بِهِ یَعْدِلُونَ
[40]  کُلُّ نَفْسٍ ذَائِقَةُ الْمَوْت..(آل عمران/185)
[41] ثُمَّ أَمَاتَهُ فَأَقْبَرَهُ(عبس/21)
[42] کِرَامًا کَاتِبِینَ(الإنفطار/11)
[43] وَأَنَّ السَّاعَةَ آتِیةٌ لَا رَیبَ فِیهَا وَأَنَّ اللَّهَ یبْعَثُ مَنْ فِی الْقُبُورِ(الحج/7)
[44]  کُلُّ نَفْسٍ ذَائِقَةُ الْمَوْتِ وَإِنَّمَا تُوَفَّوْنَ أُجُورَکُمْ یوْمَ الْقِیامَةِ فَمَنْ زُحْزِحَ عَنِ النَّارِ وَأُدْخِلَ الْجَنَّةَ فَقَدْ فَازَ وَمَا الْحَیاةُ الدُّنْیا إِلَّا مَتَاعُ الْغُرُورِ(آل عمران/185)
[45] صِرَاطِ اللَّهِ الَّذِی لَهُ مَا فِی السَّمَاوَاتِ وَمَا فِی الْأَرْضِ أَلَا إِلَى اللَّهِ تَصِیرُ الْأُمُورُ(شوری/53)
[46] اللَّهُ الَّذِی أَنْزَلَ الْکِتَابَ بِالْحَقِّ وَالْمِیزَانَ وَمَا یدْرِیکَ لَعَلَّ السَّاعَةَ قَرِیبٌ(شوری/17)
[47] الْیوْمَ تُجْزَى کُلُّ نَفْسٍ بِمَا کَسَبَتْ لَا ظُلْمَ الْیوْمَ إِنَّ اللَّهَ سَرِیعُ الْحِسَابِ(غافر/17)
[48] یوْمَئِذٍ یصْدُرُ النَّاسُ أَشْتَاتًا لِیرَوْا أَعْمَالَهُمْ(الزلزلة/6)
[49] لَا یمْلِکُونَ الشَّفَاعَةَ إِلَّا مَنِ اتَّخَذَ عِنْدَ الرَّحْمَنِ عَهْدًا(مریم/87)
[50] أُولَئِکَ أَصْحَابُ الْجَنَّةِ خَالِدِینَ فِیهَا جَزَاءً بِمَا کَانُوا یعْمَلُونَ(الأحقاف/14)
[51]  وَالَّذِینَ آمَنُوا بِاللَّهِ وَرُسُلِهِ أُولَئِکَ هُمُ الصِّدِّیقُونَ وَالشُّهَدَاءُ عِنْدَ رَبِّهِمْ لَهُمْ أَجْرُهُمْ وَنُورُهُمْ وَالَّذِینَ کَفَرُوا وَکَذَّبُوا بِآیاتِنَا أُولَئِکَ أَصْحَابُ الْجَحِیمِ(الحدید/19)
 

تبصرے (۰)
ابھی کوئی تبصرہ درج نہیں ہوا ہے

اپنا تبصرہ ارسال کریں

ارسال نظر آزاد است، اما اگر قبلا در بیان ثبت نام کرده اید می توانید ابتدا وارد شوید.
شما میتوانید از این تگهای html استفاده کنید:
<b> یا <strong>، <em> یا <i>، <u>، <strike> یا <s>، <sup>، <sub>، <blockquote>، <code>، <pre>، <hr>، <br>، <p>، <a href="" title="">، <span style="">، <div align="">
تجدید کد امنیتی